سیتا کانت مہاپاتر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
سیتا کانت مہاپاتر
(اڑیہ میں: ସୀତାକାନ୍ତ ମହାପାତ୍ର ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Sitakant Mahapatra.jpg
مہاپاتر 2015ء میں

معلومات شخصیت
پیدائش 17 ستمبر 1937ء (عمر 85 سال)
ضلع کیندرا پاڑہ، اڈیشا، بھارت
قومیت بھارتی
عملی زندگی
مادر علمی راونشا کالج
الہ آباد یونیورسٹی
پیشہ شاعر، ادبی نقاد
مادری زبان اڑیہ  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اڑیہ[1]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت آئی اے ایس  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات

سیتا کانت مہاپاتر (پیدائش: 17 ستمبر 1937ء) اڑیا کے ساتھ ساتھ انگریزی زبان کے بھی ایک بھارتی شاعر[2] اور ادبی نقاد ہیں۔[3][4] انھوں نے 1961ء سے لے کر 1995ء میں ریٹائر ہونے تک انڈین ایڈمنسٹریٹو سروس (آئی اے ایس) میں خدمات انجام دیں، اور اس کے بعد سے نیشنل بک ٹرسٹ، نئی دہلی کے چیئرمین جیسے عہدے پر فائز ہیں۔

انہوں نے متعدد تراجم کے علاوہ 15 شعری مجموعے، 5 مضامین کے مجموعے، ایک سفرنامہ، 30 سے ​​زیادہ فکری تصانیف شائع کیں۔ ان کا شعری مجموعہ کئی ہندوستانی زبانوں میں شائع ہو چکا ہے۔ ان کی قابل ذکر تصانیف ہیں: شبدر آکاش (1971)، سمدر (1977) اور انیک شرت (1981)۔[5][6][7]

انھیں 1974ء میں اڑیا میں ان کے شعری مجموعہ شبدر آکاش کے لیے ساہتیہ اکادمی اعزاز سے نوازا گیا۔[8] انھیں 1993ء میں "ہندوستانی ادب میں شاندار شراکت کے لیے" گیان پیٹھ اعزاز سے نوازا گیا تھا اور اس کے حوالہ میں بھارتیہ گیان پیٹھ نے نوٹ کیا، "مغربی ادب میں گہرائیوں میں ڈوبے ہوئے ہیں، ان کے قلم میں آبائی مٹی کی نایاب خوشبو ہے"؛ انھیں ادبی خدمات کے لیے 2002ء میں پدم بھوشن اور 2011ء میں پدم وبھوشن سے بھی نوازا گیا تھا،[9] نیز اس کے علاوہ انھیں سوویت لینڈ نہرو ایوارڈ، کبیر سمان اور کئی دیگر باوقار اعزازات سے بھی نوازا گیا تھا۔[5]

ان کی کتاب”شبدر آکاش“ کا؛ ”لفظوں کا آکاش“ کے نام سے اردو منظوم ترجمہ کرنے کے لیے کرامت علی کرامت کو 23 اگست 2005ء کو گوپی چند نارنگ، سابق صدر ساہتیہ اکادمی کے ہاتھوں حیدرآباد، دکن کی ایک تقریب میں ساہتیہ اکادمی ٹرانسلیشن پرائز برائے 2004ء سے نوازا گیا اور اسی کتاب کے لیے 2005ء میں بہار اردو اکیڈمی نے بھی انعام سے نوازا۔ نیز ان کی اچھی خاصی منظوم اڑیا شاعری کا کرامت نے منظوم اردو ترجمہ کیا[10][11]

کیریئر[ترمیم]

انھوں نے آئی اے ایس کا امتحان دینے سے پہلے اتکل یونیورسٹی کے پوسٹ گریجویٹ ڈیپارٹمنٹ میں دو سال تک تدریس کی خدمت انجام دی۔

انھوں نے 1961ء میں یو پی ایس سی امتحان میں بھارت میں اول آنے والے پہلے اڈیا کے طور پر آئی اے ایس میں شمولیت اختیار کی، اور کئی اہم عہدوں پر فائز ہوئے، جن میں ہوم سکریٹری، حکومت اڑیسہ، سکریٹری، وزارت ثقافت، حکومت ہند، اور یونیسکو کا عالمی عشرہ برائے ثقافتی ترقی (1994-1996) کا صدر شامل ہیں۔ وہ ہارورڈ یونیورسٹی کے سینئر فیلو سمیت کئی دیگر سابق عہدوں پر فائز رہے ہیں۔ انٹرنیشنل اکیڈمی آف پوئٹس، کیمبرج یونیورسٹی کے اعزازی فیلو، اور نیشنل بک ٹرسٹ، نئی دہلی کے چیئرمین۔[12] وہ اڑیسہ ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ، 1971ء اور 1984ء سمیت کئی ایوارڈز کے وصول کنندہ ہیں۔ ساہتیہ اکادمی ایوارڈ، 1974ء؛ سرلا ایوارڈ، 1985ء؛ 1993ء میں ہندوستان کے سب سے بڑے ادبی اعزاز گیان پیٹھ ایوارڈ پر اختتام پذیر ہوا۔

اڑیا میں ان کی شاعری کا پہلا مجموعہ، دیپتی او دیوتی 1963ء میں شائع ہوا، ان کا دوسرا مجموعہ اشتاپدی 1967ء میں شائع ہوا، اور انھیں اڈیشا ساہتیہ اکیڈمی کا ایوارڈ ملا، جب کہ ان کا تیسرا اور سب سے مشہور انتھولوجی، سارا آکاش (1971ء) نے انھیں ساہتیہ اکادمی، ہندوستان کی قومی اکیڈمی ادبیات کے ذریعہ ساہتیہ اکیڈمی اعزاز دیا گیا۔[13] تب سے اس نے اڑیا میں 350 سے زیادہ نظمیں اور ادبی تنقید اور ثقافت پر انگریزی میں تقریباً 30 اشاعتں شائع کیں۔ اس نے مشرقی بھارت کے قبائلیوں کا مطالعہ کے سلسلے میں دو سال (1975ء-1977ء) ہومی جہانگیر بھابھا کی رفاقت میں گزارے۔[14] ان کی معاشرتی بشریات پر بھی دو کتابیں ہیں جو آکسفورڈ یونیورسٹی پریس نے شائع کی ہیں، یہ کتابیں پرانی رسوم پر مبنی معاشرے اور ریاستی سرپرستی میں ہونے والی ترقی کے درمیان متضاد تعلق سے متعلق ہیں، اور ریاستی کوششوں کے باوجود قبائلی علاقوں میں ترقیاتی پروگراموں کے ناکام ہونے کی وجہ تلاش کرتی ہیں۔ قبائلیوں کے ساتھ قریبی تعلقات، اور سنتھال قبائلی ثقافت اور سنتالی زبان کے ساتھ ان کی روانی نے قبائلیوں کی زبانی شاعری کے نو منتخبات کی اشاعت کا باعث بنی، جو انھوں نے نہ صرف جمع کیا بلکہ ان کا ترجمہ بھی کیا۔[7]

قابل ذکر کاموں میں یہ شامل ہیں: اشتاپد i، 1963ء، شبدر آکاش، 1971ء، آرا درشیہ، 1981ء، شریسٹھا کویتا، 1994ء، (مجموعۂ شاعری)؛ شبد، سپنا او نرویکتا، 1990ء (مضمون)، انیک سرت، 1981ء (سفر نامہ)؛ اوشاولاسا، 1996ء (کھجور کے پتوں کا مخطوطہ)؛ انگریزی میں: The Runed Temple and other poems، 1996 (شاعری، ترجمہ)؛ اور ان اینڈنگ ریتھمز (ترجمے میں ہندوستانی قبائل کی زبانی شاعری)۔

1974ء میں، گیت نگار اور مصنف پرفلا کر نے مہاپاتر کے کاموں کو اڈیشا میں "نئی شاعری" کا حصہ قرار دیا جس میں تیزی سے "شہری اور تکنیکی ماحول" کے درمیان اڑیا ثقافت کے "عصری شعور" کا اظہار کیا۔ کر کے مطابق، مہاپاتر انسانی وجود کے فلسفیانہ مسائل کو "ماضی کے ساتھ ایک نئی قسم کی روحانی شناخت کی بیداری" کے ساتھ "نئی اقدار" کی تلاش میں حل کرتی ہے جس کے ساتھ ایک "افراتفری وجود" کا احساس ہوتا ہے۔[15]

انھوں نے اپنے ادبی مشن کے ذریعے قوم اور ریاست کے لیے اپنی کوششوں اور کوششوں میں حصہ ڈالا تھا۔ جشن کلنگ ادب کلنگ کا افتتاح ان کے ذریعہ 24 فروری 2014ء کو کیا گیا تھا اور وہ اس میلے کے مہمان خصوصی اور کلیدی مقرر تھے۔[16] اس کے علاوہ وہ جشن ادب کیرلا کے کلیدی اسپیکر بھی رہے ہیں۔[17]

اعزازات اور شناخت[ترمیم]

  1. اڑیسہ ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ - 1971ء و 1984ء
  2. ساہتیہ اکیڈمی اعزٹ - 1974ء
  3. سارلا ایوارڈ - 1985ء
  4. گیان پیٹھ اعزاز، ہندوستان کا سب سے بڑا ادبی اعزاز - 1993ء
  5. پدم بھوشن (ہندوستان کا تیسرا سب سے بڑا شہری اعزاز)- 2003ء
  6. پدم وبھوشن (ہندوستان کا دوسرا سب سے بڑا شہری اعزاز) - 2010ء
  7. ساہتیہ اکادمی فیلو - 2013ء
  8. سارک ادبی ایوارڈ - 2015ء
  9. ٹیگور پیس ایوارڈ - 2017[18]

قلمی خدمات[ترمیم]

  • Quiet violence. Writers Workshop, کولکاتا 1970. آئی ایس بی این 0-89253-605-5.
  • The Empty distance carries ...: Oraon & Mundari tribal songs transcreated, with an introduction by Edward Tuite Dalton. Writers Workshop, کولکاتا 1972.
  • The other silence, Writers Workshop, کولکاتا 1973.
  • The Wooden Sword, Utkala Sahitya Bikash, 1973.
  • Old man in Summer and other poems, United Writers, 1975.
  • Staying is nowhere: an anthology of Kondh and Paraja poetry, Ind-U. S. Incorporated, 1976.
  • The Curve of meaning: studies in Oriya literature, Image Publications, 1978.
  • Barefoot into reality, United Writers, 1978.
  • Forgive the words: the poetry in the life of the Kondhs in Orissa, United Writers, 1978.
  • Bākhen: Ritual invocation songs of a primitive community, Prachi Prakashan, 1979.
  • The Jester and other poems, Writers Workshop, کولکاتا 1979.
  • Gestures of intimacy. United Writers, 1979.
  • The song of Kubja and other poems, Samkaleen Prakashan, 1980.
  • Men, patterns of dust, Bookland International, 1981.
  • Bhima Bhoi (Makers of Indian literature), Sahitya Akademi, 1983.
  • Primitive Poetry as Love and Prayer, Prasārānga, University of Mysore, 1983.
  • The Awakened Wind: the Oral Poetry of the Indian Tribes, Vikas, 1983. آئی ایس بی این 0-7069-2153-4.
  • An Anthology of Modern Oriya poetry, Vikas Publishing House, 1984. آئی ایس بی این 978-0-7069-2583-8.
  • Selected poems, Prachi Prakashan, 1986.
  • Modernization and Ritual: Identity and Change in Santal society, Oxford University Press, 1986.
  • Tradition and the Modern Artist, Sterling Publishers, 1987.
  • Jagannatha Das (Makers of Indian literature), Sahitya Akademi, 1989.
  • Tribal Wall Paintings of Orissa, Orissa Lalit Kala Akademi, 1991.
  • Death of Krishna and other poems, Rupa & Co., 1992. آئی ایس بی این 8171670741.
  • Reaching the Other Shore: the world of Gopinath Mohanty's fiction, B.R. Pub. Corp., 1992. آئی ایس بی این 81-7018-746-X.
  • Unending rhythms: Oral Poetry of the Indian Tribes, Inter-India Publications, 1992. آئی ایس بی این 812100277X.
  • The Realm of the Sacred: Verbal Symbolism and Ritual Structures, Oxford University Press, 1992.
  • The Tangled Web: Tribal Life and Culture of Orissa, Orissa Sahitya Academy, 1993.
  • Discovering the Inscape: Essays in Literature, B.R. Pub. Corp., 1993. آئی ایس بی این 81-7018-768-0.
  • Beyond the word: the multiple gestures of tradition. Motilal Banarsidass Publ., 1993. آئی ایس بی این 81-208-1108-9.
  • The Ruined Temple and other poems. Harper Collins Publishers India, 1996. آئی ایس بی این 81-7223-222-5.
  • The Sky of words and other poems. Sahitya Akademi, 1996. آئی ایس بی این 81-7201-816-9.
  • The Role of Tradition in Literature, Vikas Pub. House, 1997. آئی ایس بی این 8125902465.
  • A child even in arms of stone. Sahitya Akademi, 2000. آئی ایس بی این 81-260-0769-9.
  • Beyond Narcissism and other essays, UBS Publishers', 2001. آئی ایس بی این 8174763643.
  • Let Your Journey be Long, Rupa and Co., 2001. آئی ایس بی این 81-7167-520-4.
  • They sing Life: Anthology of Oral Poetry of the Primitive Tribes of India, UNESCO. Inter-India Publications, 2002. آئی ایس بی این 81-210-0407-1.
  • The Alphabet of Birds: Hymns for the Lord of the Blue Mountain, National Book Trust, 2003. آئی ایس بی این 81-237-4098-0.
  • Anek sharat: (travelogue). Bhartiya Jnanpith, 2003. آئی ایس بی این 8126309431.
  • A Screen from Sadness, Current Books, 2004. آئی ایس بی این 812401390X.
  • The Rainbow of Rhythms: Folk Art Tradition of Orissa, Prafulla, 2005. آئی ایس بی این 81-901589-8-8.
  • Ethnicity and the State: Raghunath Murmu and emergence of Jharkhand, UBS Publishers', 2008. آئی ایس بی این 8174766138.
  • Memories Of Time : Selected Poems. Pratiksha Publishers', 2011. آئی ایس بی این 978-0-557-66656-0.
  • Till My Time Come: Twenty Poems from SAMUDRA (Odia). Translated by Prabhat Nalini Das. Lekhalekhi Publishers, Bhubaneswar, 2018. آئی ایس بی این 978-81-931588-9-0

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb120343643 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: فرانس کا قومی کتب خانہ — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. "Sahitya Akademi : Who's Who of Indian Writers". Sahitya Akademi. Sahitya Akademi. اخذ شدہ بتاریخ 27 اکتوبر 2015. 
  3. "Deceptive simplicity". The Hindu. 1 December 2002. 25 فروری 2003 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  4. Keki N. Daruwalla (25 September 1996). "The Mahapatra Muse: Two deeply vivid volumes of poems from the oriya masters". The Outlook. 
  5. ^ ا ب Jnanpith, p. 18
  6. "Ayyappa Paniker commemoration today". Ebuzz – Indian Express News Service. 20 September 2009. 28 مئی 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  7. ^ ا ب
  8. Sahitya Akademi Award winners in Oriya آرکائیو شدہ 23 فروری 2010 بذریعہ وے بیک مشین ساہتیہ اکادمی
  9. "Padma Awards" (PDF). Ministry of Home Affairs, Government of India. 2015. 15 اکتوبر 2015 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ July 21, 2015. 
  10. صدیقی، افتخار امام (2012). کرامت علی کرامت: ایک مطالعہ (شاعر کا خصوصی گوشہ اور دیگر مضامین) (ایڈیشن پہلا). لال کنواں ،دہلی: ایجوکیشنل پبلشنگ ہاؤس. صفحہ 14-15. 
  11. محمد روح الامین میُوربھنجی (28 جولائی 2022ء). "کرامت علی کرامت: حیات و خدمات". قندیل آن لائن. اخذ شدہ بتاریخ 29 جولائی 2022ء. 
  12. "Universal appeal". دی ہندو. 1 January 2006. 10 جون 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  13. Jnanpith, p. 20
  14. Kar، Parfulla C.؛ Kar، Prafulla C. (January–June 1974). "The Poetry of Sitakant Mahapatra". Indian Literature. 17 (1/2): 43–51. JSTOR 23329846. 
  15. "Mystic Kalinga Festival to focus on Bhakti poetry- The New Indian Express". cms.newindianexpress.com. اخذ شدہ بتاریخ 07 نومبر 2020. 
  16. "Sitakant Mahapatra- Speaker in Kerala literature Festival KLF –2020| Keralaliteraturefestival.com". keralaliteraturefestival.com. 31 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 نومبر 2020. 
  17. "Odia poet Sitakant Maapatra wins Tagore Peace Award". Incredible Orissa. April 26, 2017. اخذ شدہ بتاریخ April 30, 2017. 

کتابیات[ترمیم]

مزید مطالعہ[ترمیم]

en:Sitakant Mahapatra

بیرونی روابط[ترمیم]