سید اطہر علی ہاشمی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سید اطہر علی ہاشمی
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 18 اگست 1946  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 6 اگست 2020 (74 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی فورمن کرسچین کالج
دارالعلوم کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ صحافی،  کالم نگار،  مدیر اعلی[1]،  مصنف[2]،  شاعر  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

سید اطہر علی ہاشمی پاکستان کے مایہ ناز صحافی و مصنف روزنامہ جسارت کے ایڈیٹر انچیف تھے.

وہ 1946ء کو پیدا ہوئے، ایف سی کالج لاہور اور جامعہ کراچی میں تعلیم مکمل کی،اطہر علی ہاشمی نے ’علاؤالدین خلجی کی معاشی پالیسی‘ پر مقالہ لکھ کر ایم فل کی ڈگری حاصل کی تھی۔ "خبر لیجیے زباں بگڑی" کے نام سے مستقل کالم لکھتے رہے، جو اپنے انداز بیان کے اعتبار سے پر مغز ہوتا تھا، [3]جسارت بلاگ بنا رکھا تھا جہاں ان کا کالم روزانہ اپلوڈ ہوتا تھا، وہ “روزنامہ امت” کے ڈپٹی ایڈیٹر انچیف بھی رہے جبکہ “روزنامہ جنگ لندن” سے بھی وابستہ رہے۔ [4]، لاہور قیام کے دوران اچھرہ میں رہائش پذیر رہے، آپ 44 سال تک صحافت سے وابستہ رہے، اور اردو کے استاد بھی تھے ۔ جسارت کے چیف ایڈیٹر اور مختلف اخبارات و میگزین میں لکھتے بھی تھے ۔ اردو نیوز جدہ کے بانیوں میں سے تھے، اپ کے فرزند حماد علی ہاشمی بھی شعبہ صحافت سے وابستہ ہیں،

اطہر ہاشمی جامعہ دارالعلوم کراچی کے ناظمِ تعلیمات اور استاذِ حدیث حضرت مولانا راحت علی ہاشمی صاحب مدظلہ کے بڑے بھائی تھے،

اطہر ہاشمی عارضہ قلب میں مبتلا تھے، ان کا انتقال بعمر 74 برس نیند کے دوران 6 اگست 2020ء کو ہوا، نماز جنازہ بعد نماز ظہر شہباز مسجد بلاک 12 (combine cng) گلستان جوہر میں ادا کی گئی تدفین کراچی کے سخی حسن قبرستان میں ہوئی.

حوالہ جات[ترمیم]