سید شیر علی شاہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سید شیر علی شاہ
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 31 دسمبر 1930  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 30 نومبر 2015 (85 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت جمیعت علمائے اسلام  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ اسلامیہ، مدینہ منورہ
دار العلوم حقانیہ  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استاذ احمد علی لاہوری،  عبداللہ درخواستی،  عبد الحق  ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تلمیذ خاص مولانا فضل الرحمٰن صاحب،  جلال الدین حقانی  ویکی ڈیٹا پر (P802) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سائنس دان،  عالم  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت دار العلوم حقانیہ  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

شیخ الحدیث ڈاکٹر سید شیر علی شاہ مدنی (پیدائش؛ 31 دسمبر 1930ء - 30 نومبر 2015ء) ایک پشتون اسلامی اسکالر تھے۔[2]

تعلیم[ترمیم]

شیخ سید شیر علی شاہ نے گھر سے سیکھنا شروع کیا، قرآن، اپنے والد (مولانا قدرت شاہ) سے عربی اور فارسی کی بنیادی کتابیں اور حضرت مولانا عبدالرحیم رحمۃ اللہ علیہ سے فارسی شاعری کی کچھ کتابیں اور "نحو و سرف" (عربی گرامر) سیکھیں۔ حضرت مولانا قاضی حبیب الرحمن صاحب۔ اس کے بعد اکوڑہ خٹک میں دارالعلوم حقانیہ میں داخلہ لیا۔ دارالعلوم حقانیہ سے فارغ التحصیل ہونے کے تقریباً تین ماہ بعد آپ نے جامعہ اشرفیہ لاہور کے اساتذہ شیخ تفسیر مولانا محمد ادریس کاندھلوی اور حضرت مولانا مفتی محمد حسن سے بھی تعلیم حاصل کی۔[3][4]

کیریئر[ترمیم]

5 اپریل 1954ء کو آپ نے گریجویشن کے بعد دارالعلوم حقانیہ اکوڑہ خٹک میں پڑھانا شروع کیا۔ 20 سال تدریس کے بعد شیخ الحدیث مولانا ععبد الحق اکوڑویکے مشورے سے 1973ء میں اسلامی یونیورسٹی مدینہ میں داخل ہوئے اور پندرہ سال تک مختلف شعبوں میں تعلیم حاصل کی اور ماسٹر اور پی ایچ ڈی کیا۔ مسجد نبوی میں درس و تدریس کا سلسلہ بھی جاری رکھا۔ مدینہ کی اسلامی یونیورسٹی سے فارغ التحصیل ہونے کے بعد 1987ء میں جامعہ دارالعلوم کراچی میں بطور استاد مقرر ہوئے۔ بعد ازاں آپ نے مفتی زر ولی خان کے مدرسہ جامعہ احسن العلوم گلشن اقبال کراچی اور مولانا جلال الدین حقانی کے مدرسہ منبہ العلوم میرانشاہ میں بھی پڑھایا۔ آخر کار 1996 ءمیں اپنے دیرینہ ساتھی شیخ الحدیث مولانا سمیع الحق کی دعوت پر آپ تشریف لائے اور دار العلوم حقانیہ میں درس حدیث شروع کیا۔[3][5]

وفات[ترمیم]

ان کا انتقال 30 اکتوبر 2015ء بروز جمعہ رحمان میڈیکل کمپلیکس پشاور میں ہوا۔ اور 31 اکتوبر کو لاکھوں کی تعداد میں علماء کرام، شیوخ، اولیاء اور طلباء نے شرکت کی اور اپنے والد گرامی کے پہلو میں سپرد خاک ہوئے۔[6][7]

حوالہ جات[ترمیم]

 

  1. کتب خانہ کانگریس اتھارٹی آئی ڈی: https://id.loc.gov/authorities/no2003010522 — اخذ شدہ بتاریخ: 8 فروری 2020 — ناشر: کتب خانہ کانگریس
  2. یاسر عزیز؛ ڈاکٹر سید نعیم با دشاہ. "Services of Dr. Syed Sher Ali Shah Madani's in the field of Tafsī r" (PDF). 2 (2016). الازہر جامعہ زرعیہ پشاور. 22 اکتوبر 2020 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 22 نومبر 2021. 
  3. ^ ا ب "حضرت مولانا ڈاکٹر شیرعلی شاہ مدنیؒ". darululoom-deoband.com. 
  4. "شیخ الحدیث ڈاکٹر شیر علی شاہ صاحب رحمۃ اللہ علیہ کی رحلت". banuri.edu.pk. [مردہ ربط]
  5. حامد أشرف همداني. "الدكتور شير علي المدني شاعراً عربي اً" (PDF). 26 (2019). Majallah Al-Qism Al-Arabi جامعہ پنجاب. 
  6. "Maulana Dr Sher Ali Shah's death". thenews.com.pk. 2 November 2015. 
  7. Rahimullah Yusufzai (16 November 2015). "Death of a maulana Syed Sher Ali Shah". thenews.com.pk.