سید علی شرف الدین موسوی بلتستانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سید علی شرف الدین موسوی علی آبادی بلتستانی
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 19مارچ، 1942ء
شہریت پاکستانی
مذہب اسلام
فقہی مسلک شیعہ علی
عملی زندگی
پیشہ الٰہیات دان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
P islam.svg باب اسلام

سید علی شرف الدین موسوی صاحب کی شخصیت پاکستان کے علما (بشمول شیعہ و سنی) میں احترام کی نگاہ سے دیکھی جاتی ہے۔ آپ اس دور کے ایک عظیم مصلح اور اتحاد بین المسلمین کے داعی ہیں۔ آپ قرآن اور اسلام ناب محمدی کی دعوت دینے والے اسکالرز میں سے ہیں۔ مرحوم مولانا اسحاق فیصل آبادی جو اتحاد بین المسلمین کے داعی تھے، آپ کے ان سے بھی دوستانہ روابط تھے۔ آج بھی علامہ سید علی شرف الدین موسوی پاکستان میں فرقہ بندی کی بجائے صرف اسلام کی طرف دعوت دینے والے گنے چنے اسلامی اسکالرز و علما میں سے ہیں۔

مختصر حالات زندگی[ترمیم]

سید علی شرف الدین موسوی صاحب کی جائے پیدائش بلتستان کے ایک محلہ علی آباد شیگر کی ہے، جو مشہور پہاڑی چوٹی کے ٹو کے گردونواح کی ایک وادی ہے۔ ان کی سنہ پیدائش 1360ھ (1942ء) ہے۔ آپ بلتستان کے ایک شیعہ سادات کے مذہبی گھرانے میں پیدا ہوئے۔ آپ موسوی سید ہونے کی وجہ سے اپنے نام کے ساتھ موسوی لکھتے ہیں۔ آپ نے ابتدائی دینی تعلیم اپنے علاقے بلتستان، شمالی پاکستان، سے حاصل کی۔ اس کے بعد اعلیٰ اسلامی تعلیم کے حصول کے لیے ملک سے باہر جانے کا فیصلہ کیا۔

تعلیم[ترمیم]

سید علی شرف الدین موسوی بلتستانی حصول علم کے لیے ١٣٧٧ ہجری کو نجف اشرف پہنچے آپ کے استادون میں آیت اللہ صادقی تہرانی شامل رہے۔ اور دین کو ثقل اکبر قرآن سے سمجھنے کی خواہش ان کی شاگردی نے ہی پیدا کی۔ آغا صاحب نجف کے مدرسوں میں قرآن و حدیث کو شامل نہ کرنے کا ہر مقام پر شکوہ کرتے رہے ہیں اور یہ شکوہ صرف نجف تک ہی محدود نہیں ہے بلکہ مدارس قم بھی اس میں شامل ہیں۔۔ عراق میں آپ کی ہمنشینی آیت اللہ باقر الصدر سے بھی رہی۔

پاکستان واپسی[ترمیم]

سید علی شرف الدین موسوی بلتستانی تقریباً ١٢ سال کے بعد نجف سے پاکستان آئے، آغا صاحب نے جس ادارے کی بنیاد ڈالی اس کا نام دارالثقافہ الاسلامیہ ہے یہ ادارے اپنے قیام سے اب تک کسی قسم سے بھی مرجعییت کے ذیر تسلط نہیں رہا اور نہ اس ادارے کو چلانے کے لیے کسی قسم کے خمس کا سہاری لیا گیا۔

تبلیغ شیعیت[ترمیم]

پاکستان آنے کے بعد ادارہ" دارالثقافہ الاسلامیہ پاکستان" کے تحت انہوں نے مذہب شیعہ جعفری اثنا عشری سے متعلق کتب کا اردو میں ترجمہ کرنے اور شیعہ مسلک کی تبلیغ کا آغاز کیا۔ انہوں نے شیعہ مسلک کی چوٹی کی کتابوں کا اردو میں ترجمہ کیا اور شیعہ مسلک کو پھیلانے میں پر عزم ہو گئے۔ انہوں نے پاکستان میں امام مھدی علیہ السلام سے متعلق اور ان کی شان میں لکھی گئی کتب اور "دعائے ندبہ" کو بھی عام کیا۔ اس کے علاوہ عربی و فارسی کے شیعہ مسلک سے متعلق کتب "شیعت کا آغاز کب اور کیسے"، تیجانی سماوی کی کتابوں "ہو جاو سچوں کے ساتھ" اور" پھر میں ہدایت پا گیا"، "فلسفہ امامت"، "مذہب اہل بیت"، "شب ہاے پشاور"، "اھل بیت آیت تطھیر کی روشنی میں" اوراس کے علاوہسینکڑوں کتب کے اردو ترجمہ کا بھی اہتمام کیا۔

انقلاب ایران اور پاکستانی شیعوں کی قیادت[ترمیم]

سید علی شرف الدین موسوی بلتستانی نے ١٩٧٩ کے انقلاب اسلامی کے بعد مقام رہبری اور مقام ولایت فقیہ کو پاکستان میں روشناس کرانے میں اہم کردار ادا کیا۔ آغا صاحب کی پر جوش شخصیت ہی تھی کہ جس کی وجہ سے قائد عارف حسین کی شہادت کے بعد اپ کا نام بھی قیادت کے لیے سنا جاتا رہا۔

قرآن فہمی کیلے جد و جہد[ترمیم]

سید علی شرف الدین موسوی بلتستانی نے ہی سب سے پہلے کراچی میں قرآن فہمی کے پروگرام کرائے اور قرآن فہمی کے عنوان سے مختلف مقابلے بھی کرائے۔ آغا صاحب نے ہی سب سے پہلے کراچی میں دعائے ندبہ کی محافل کا آغاز کیا۔ دروس کا سلسلہ بھی آغا صاحب کے ادارے میں طویل عرصے جاری رہا- جس کے ذریعے سینکڑوں عاشقان دین مستفید ہوتے رہے-

انہوں نے قرآن فہمی کے سلسلے میں رمضان 1407 ھجری میں پہلا سیمینار "یوم القرآن" منعقد کیا، تاکہ قرآنی تعلیمات کی اہمیت، قرآنی علوم کی نشر و اشاعت ہو سکے۔ اس سیمینار میں ملک کے علما و دانشوروں کو مختلف موضوعات پر قرآن کی روشنی میں اظہار خیلا کرنے کی دعوت دی گئی۔ یہ سیمینار مسلسل آٹھ(8) سال تک منعقد ہوتی رہیں۔ چنانچہ رمضان 1415 ھجری میں پہلی مرتبہ ملکی سطح پر مقابلہ معارف قرآن کا انعقاد کیا تاکہ کراچی شہر کی حدود سے نکل کر ملک کے دور دراز علاقوں کے لوگوں تک کو قرآنی تعلیمات کی جانب توجہ اور ان کے حصول کی ترغیب دی جائے اور یوں پورے ملک میں قرآن شناسی کی فضا پیدا ہو جائے۔ 1417 رمضان کو بھی آپ نے تیسری مرتبہ معارف قرآن کا اعلان کیا، جس میں حصہ لینے والوں اور اس کے ناظر افراد کی تعداد ہزاروں میں تھی۔10 ہزار کی تعداد میں یہ سوالات تقسیم کرنے کا اہتمام کیا۔

عزاداری اور قیام امام حسین[ترمیم]

علامہ شرف الدین موسوی نے نہ صرف عزاداری اور قیام امام حسین علیہ السلامسے متعلق کتب لکیھں بلکہ عزاداری کی مجلسوں میں بھی شیعت اور اہل بیت پر مبنی خطبات دیے۔ چنانچہ تحقیقات و علمی جستجو کے دوران میں آپ پر عزاداری میں موجود خرافات ظاہر ہو گئیں چنانچہ اس سلسلے میں پہلے مشہور کتب شیعہ جو اصلاح عزاداری کے سلسلے میں تھی ان کا اردو میں ترجمہ کیا جیسے جناب علامہ طبرسی کی "اللولو والمرجان" کا اردو ترجمہ "آداب اہل منبر" اور آیت اللہ یزدی کی "حسین شناسی" جیسی کتب کے ترجمے شایع کیں۔ اس کے بعد آپ نے بذات خود ان خرافات کے خلاف کتابیں لکھنے کا فیصلہ کیا چنانچہ "عزاداری کیوں"، ا"نتخاب مصائب امام حسین"، "قیام امام حسین کا سیاسی جائزہ"، "تفسیر عاشورا" وغیرہ درجنوں کتب لکھیں۔ جلد ہی آپ نے پہچان لیا کہ مذہب تشیع میں بہت سی رسومات و خرافات بھی شامل ہو گئے ہیں چنانچہ آپ نے "عقائد و رسومات شیعہ" اور "شیعہ اہل بیت" اور "موضوعات متنوعہ" لکھی۔ اس کے علاوہ ان تمام رسومات اور بدعات کو رواج دینے والے اصل لوگوں کی پہچان کیلے"باطنیہ و اخوتھا" لکھی۔ ان سب کتابوں کو لکھنے کے علاوہ قرآن فہمی کے سلسلے میں "اٹھو قرآن کا دفاع کرو" اور اس جیسی 10 کے قریب کتابیں لکھیں۔

مخالفت اور رد عمل[ترمیم]

سید علی شرف الدین موسوی بلتستانی کی کتابوں اور بعض سوالات و نظریات اور اصلاحات کے خلاف بہت سے شیعہ علما ان کے مخالف ہو گئے۔ بہت سے علما نے ان کو شیعہ مسلک سے خارج قرار دیا۔ لیکن پھر بھی آغا شرف الدین کی پاؤں میں لغزش نہ آیا اور آپ مسلسل اسلام میں شامل کی گئی رسومات اور بدعات کے خلاف نبرد آزما رہے۔ ان سب سے تنگ آکر درباری ملاؤں نے ان کے قتل کا فتوی صادر کیا، کسی نے ان کو وہابی ایجنٹ کہا تو کسی نے استعماری ایجنٹ اور کسی نے کہا کہ آغا صاحب سنی ہو گئے ہیں۔ غرض آغا صاحب کے گھر کا گھیراؤ کیا گیا اور ان کو مسلسل 10 سال تک گھر میں محبوس رکھا۔ ان کی کتب پر آج بھی پابندی ہے۔ لیکن برقی کتب ان کی آفیشل ویب سائیٹ "صبغۃ الاسلام"پر دستیاب ہیں۔

شیعہ علی، کا نظریہ[ترمیم]

سید علی شرف الدین موسوی بلتستانی نے حال ہی میں تہمتوں اور بہتانوں کے بارے میں "محرم 2013 عیسوی" میں ایک کتابچہ"دارالثقافہ سے عروۃ الوثقی" لکھی۔ اس سے پہلے بھی "شیعہ اہل بیت نامی کتاب میں اور حالیہ کتاب "دارالثقافہ سے عروۃ الوثقی " میں بھی شیعہ اثنا عشری جعفری وغیرہ کی بجائے خود کو "شیعہ علی" کے نام سے پہچان کرایا ہے۔ ڈاکٹر علی شریعتی شیعہ علی کا نظریہ اپنی کتاب "تشیع علوی و تشیع صفوی" میں پیش کر چکے ہیں۔ اس کے بعد ڈاکٹر موسی الموسوی نے بھی اپنی کتاب "الشیعہ و التصحیح" میں شیعوں کو "علی کے شیعہ" اور خرافات سے پر شیعہ میں تقسیم کیا ہے۔ آیت اللہ ابو الفضل برقعی قمی اور حیدر علی قلمداران بھی اپنے نام کے ساتھ "شیعہ اثنا عشری جعفری" کی بجائے "شیعہ علی"لکھتے تھے۔

سید علی شرف الدین موسوی بلتستانی کے عقائد و نظریات[ترمیم]

سید علی شرف الدین موسوی بلتستانیچند مخصوص عقائد و نظریات یہ ہیں۔

  • امامت کو نص قرآنی سے نہیں مانتے اور ان کا یہ کہنا ہے کہ نص وہ ہوتی ہے جس میں کوئی ابہام نہ ہو اور جب امت کے ایک بڑے طبقے نے غدیر خم کے موقع پر رسول اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کا خطبہ سننے کے باوجود مولا کے معنوں میں اختلاف کیا تو اس سے یہ پتا چلتا ہے کہ یہ نص نہیں ہے۔ اس کے علاوہ آغا صاحب کا یہ بھی کہنا ہے کہ علی ابن ابی طالب ہمیشہ اپنی فضیلت کو معیار بنا کر خلافت پر اپنے حق کو ثابت کیا ہے اور نص کا ذکر نہیں کیا۔ اس کے علاوہ علی ابن ابی طالب کا خلافت کی نامزدگی کے لیے ہونے والے ہر طریقہ کار میں شامل ہونا بھی اس بات کی دلیل ہے۔ اہلیبیت کے خاندان کے مختلف لوگوں نے امامت کا دعویٰ کیا۔
  • اس کے علاوہ آغا صاحب تقلید غیر مشروط کے مخالف ہیں۔[1]
  • توسل کے مخالف ہیں۔
  • نکاح متعہ [2] کو غلط اور حرام سمجھتے ہیں۔
  • تقیہ کو درست نہیں سمجھتے۔
  • امام مہدی سے متعلق روایات کو صحیح نہیں سمجھتے۔ بلکہ ایسی تمام روایات کو افسانہ پردازوں اور قصہ سازوں کی گھڑی گئی روایات قرار دیتے ہیں۔۔[3] اور حالیہ برسوں میں سید علی شرف الدین نے عقیدہ مہدویت پر سب سے زیادہ تنقید کی ہے اور اپنی کتاب خطداھیون صفحہ 34 سے صفحہ 50 تک روایات مہدی اور وجود مہدی کو غیر اسلامی،باطل ،غیر قرآنی اور مفاد پرستوں کی اختراع و کارنامہ قرار دیا۔کتاب خطداحیون مولف سید علی شرف الدین صفحہ 34 تا آخر
  • قبروں پہ تعمیرات کو درست نہیں سمجھتے۔
  • فرقہ کی بجائے صرف اسلام کی دعوت دیتے ہیں۔
  • توحید پہ بہت زور دیتے ہیں۔
  • خلفاءراشدین کے دور کو بہترین اسلامی دور قرار دیتے ہیں۔[4]
  • خلفاء و اصحاب رسول پر سب و شتم اور تبراء و لعن کو جائز نہیں سمجھتے۔
  • علم، ذوالجناح، زنجیر زنی اور دیگر رسومات عزاداری کو بھی غیر شرعی سمجھتے ہیں۔
  • تربت حسینی یا ٹکیے پر سجدہ کرنا ان کے خیال میں ضروری نہیں ہے۔ اس لیے وہ اب کارپیٹ یا قالین یا جائے نماز پر ہی سجدہ کرتے ہیں۔

سید علی شرف الدین موسوی بلتستانی اور چند احادیث[ترمیم]

سید علی شرف الدین بہت سی احادیث کو جعلی سمجھتے ہیں،جن کا ذکر ان کی کتاب صفحہ 64[5] پر ہیں جیسے:

  • اول ما خلق اللہ نوری و نور علی۔
  • اولنا محمد و اوسطنا محمد و آخرنا محمد و کلنا محمد۔
  • آسمان و زمین کو اللہ تعالی نے آل محمد کے لیے خلق کیا ہے،یہ حدیث کساء کے نام سے بھی مشہور ہے۔
  • من عرف نفسہ فقد عرف ربہ۔
  • علی نفس رسول اللہ ہیں۔
  • اہل بیت کے لیے صدقہ حرام ہے۔
  • ائمہ مخلوق نوری ہیں۔
  • ائمہ محدث ہیں۔
  • حضرت علی ابراہیم و موسی و عیسی کے ساتھ تھے۔
  • ذکر علی عبادت ہے۔
  • علی ؑ سے منسوب جملہ میں تیری عبادت جہنم کے خوف اور جنت کی لالچ میں نہیں کرتا ہوں۔
  • علی ؑ لاکھوں ھروف جانتے تھے۔
  • نبی ص نے علی ؑ کو ہزار کلمات سکھائے ہیں۔
  • نبی ص نے مجھے ہزار باب سکھائے،ہر باب سے ہزار باب کھل گئے۔
  • انا مدینۃ العلم و علی بابھا۔
  • سلونی قبل ان تفقدونی۔
  • علی ع عالم غیب و غیوب ہیں۔
  • حضرت علی ؑ کا بتوں کو توڑنا۔
  • انا و علی من نور واحد۔
  • چہرہ علی ؑ کو دیکھنا عبادت ہے۔
  • علی ؑ کے لیے سورج کا پلٹانا۔
  • علی ؑ کعبہ میں پیدا ہوئے۔
  • امامت افضل از نبوت ہے۔
  • لولاک لما خلقت الافلاک۔

علمی و ادبی خدمات[ترمیم]

آغا سید علی شرف الدین موسوی کی لکھی گئی کتابوں کے نام یہ ہیں۔

  • قرآن سے پوچھو
  • انبیا قرآن(محمد مسطفی)
  • مکتب تشیع اور قرآن
  • سوالات و جوابات معارف قرآن
  • قرآن اور مستشرقین
  • قرآن میں مذکر و مونث
  • قرآن میں شعر و شعرا
  • انبیا قرآن(آدم، نوح، ابراہیم)
  • انبیا قرآن(موسی، عیسی)
  • قرآن میں امام و امت
  • تفسیر عاشورا
  • تفسیر سیاسی قیام امام حسین
  • قیام امام حسین کا جغرافیائی جائزہ
  • اسرار قیام امام حسین
  • عزاداری کیوں؟
  • انتخاب مصائب۔ ترجیحات-ترمیمات
  • مثالی عزاداری کیسے منائیں؟
  • عنوان عاشورا
  • قیام امام حسین غیر مسلم دانشوروں کی نظر میں
  • معجم کتب مولفین امام حسین
  • حج و عمرہ قرآن و سنت کی روشنی میں
  • عقائد و رسومات شیعہ
  • مسجد
  • آمریت کے خلاف ائمہ طاہرین کی جدو جہد
  • افق گفتگو
  • مدارس دینی و حوزات علمیہ پر نگارشات
  • ہماری ثقافت و سیاست کیا ہے؟اور کیا ہونی چاہیے؟
  • شکوؤں کے جواب
  • مجلہ اعتقاد
  • شکوہ جواب شکوہ
  • فصل جواب
  • جواب سے لاجواب
  • عوامی عدالت کے شمارے
  • مجلہ فصلنامہ عدالت
  • موضوعات متنوعہ
  • تعدد قرآت مترادف تحریفات
  • فرقوں میں جذور شرک و الحاد
  • ادوار تاریخ اسلام

تنقید[ترمیم]

  • آپ کے کچھ مسلکی مخالفین آپ کو امت کے لیے فتنہ گردانتے ہیں۔ ناقدین کی نظر میں آپ متنازع شخصیات میں سے ہیں، دقائق اسلام نامی، کتاب میں آیت اللہ محمد حسین نجفی نے آپ پر عصمت ائمہ، امام مہدی اور تقلید کے حوالے سے آپ کے نظریات کی وجہ سے تنقید کی۔
  • کچھ علما کرام آپ کے امام مہدی سے متعلق نظریات پر ناراضی کا اظہار کرتے ہیں۔
  • اتحاد امت کی کوششوں اور سنی علما سے اچھے تعلقات کی بنا پر اہل سنت مخالف گروہوں نے ان پر تنقید کی۔
  • اماموں کی عصمت اور منصوص من اللہ ہونے کا انکار کرنے کی وجہ سے بعض علما اہل تشیع نے آپ کو اہل تشیع سے خارج قرار دیا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. کتاب موضوعات متنوعہ (اجتہاد،متعہ،توسل) از علی شرف الدین موسوی صفحہ 31 تا 129 نکاح متعہ سید علی شرف الدین کا موقف
  2. کتاب موضوعات متنوعہ(اجتہاد،متعہ،توسل) از علی شرف الدین موسوی صفحہ 162 تا 267 نکاح متعہ سید علی شرف الدین کا موقف
  3. کتاب باطنیہ مولف سید علی شرف الدین صفحہ 134 تا 180 کتاب باطنیہ و اخوتھا یا تخریب دین میں باطنیہ کا کردار از علی شرف الدین موسوی
  4. کتاب رشد و رشادت صفحہ نمبر 12 تا آخر صفحات کتاب رشد و رشادت یا بہترین حکمرانی کا دور از سیدعلی شرف الدین موسوی
  5. Khatdaahiyon

بیرونی روابط[ترمیم]