سیرت نگار

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

سیرت نگار سے مراد وہ لوگ ہیں جنہوں نے سیرت کے موضوع پر لکھا ہے۔

شہرہ آفاق سیرت نگار[ترمیم]

  • خلفاء راشدین بلکہ خلیفۂ عادل حضرت عمر بن عبد العزیزاموی کے دورخلافت سے کچھ قبل تک چونکہ حدیثوں کا لکھنا ممنوع قرار دے دیا گیاتھا تاکہ قرآن وحدیث میں خلط ملط نہ ہونے پائے اس لیے سیرت نبویہ کے موضوع پر حضرات صحابہ کرام کی کوئی تصنیف عالم وجود میں نہ آسکی مگر حضرت عمر بن عبد العزیز کے دور خلافت میں جب احادیث نبویہ کی کتابت کا عام طور پر چرچا ہوا تو دور تابعین میں محدثین کے ساتھ ساتھ سیرت نبویہ کے مصنفین کابھی ایک طبقہ پیداہو گیا۔
  • حضرات صحابہ کرام سیرت نبویہ کے موضو ع پر کتابیں تو تصنیف نہ کرسکے مگر وہ اپنی یادداشت سے زبانی طور پر اپنی مجالس، اپنی درسگاہوں، اپنے خطبات میں احادیث احکام کے ساتھ ساتھ سیرت نبویہ کے مضامین بھی بیان کرتے رہتے تھے۔ اسی لیے احادیث کی طرح مضامین سیرت کی روایتوں کا سرچشمہ بھی صحابہ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنہم ہی کی مقدس شخصیتیں ہیں۔
  • بہر حال دور تابعین سے گیارہویں صدی تک چند مقتدر محدثین ومصنفین سیرت کے اسمائے گرامی ملاحظہ فرمائيے ۔
  • (1)حضرت عروہ بن زبیر تابعی (متوفی 92ھ)
  • (2)حضرت عامر بن شراحیل امام شعبی (متوفی 104ھ)
  • (3)حضرت ابان بن امیر المومنین حضر ت عثمان (متوفی 105ھ)
  • (4)حضرت وہب بن منبہ یمنی (متوفی 110ھ)
  • (5)حضر ت عاصم بن عمر بن قتادہ (متوفی 120ھ)
  • (6)حضرت شرجیل بن سعد (متوفی 123ھ)
  • (7)حضرت محمد بن شہاب زہری (متوفی 124ھ)
  • (8)حضرت اسمٰعیل بن عبد الرحمن سدی (متوفی 127ھ)
  • (9)حضرت عبد اللہ بن ابوبکر بن حزم (متوفی 135ھ)
  • (10)موسیٰ بن عقبہ (صاحب المغازی) (متوفی 141ھ) [[موسیٰ بن عقبہ
  • (11)حضرت معمر بن راشد (متوفی 150ھ)
  • (12) محمد بن اسحاق (صاحب المغازی) (متوفی 150ھ)
  • (13)حضرت زیاد بکائی (متوفی 183ھ)
  • (14) محمد بن عمر الواقدی (صاحب المغازی) (متوفی 207ھ)
  • (15) محمد بن سعد (صاحب الطبقات) (متوفی 230ھ)
  • (16) ابوعبداللہ محمد بن اسماعیل بخاری(مصنف بخاری شریف) (متوفی256ھ)
  • (17) مسلم بن حجاج قشیری (مصنف مسلم شریف) (متوفی 261ھ)
  • (18)حضرت ابو محمد عبد للہ بن مسلم بن قتیبہ(متوفی 267ھ)
  • (19)حضرت ابو داود سلیمان بن اشعث سجستانی صاحب السنن (متوفی 275ھ)
  • (20)حضرت ابو عیسیٰ محمدبن عیسیٰ ترمذی (متوفی 279ھ) (مصنف جامع ترمذی)
  • (21)حضرت ابو عبد اللہ محمد یزید بن ما جہ قزوینی (متوفی 273ھ) (صاحب السنن)
  • (22)حضرت ابو عبد الرحمن احمد بن شعیب نسائی (متوفی 303ھ) (مصنف سنن نسائی)
  • (23) محمد بن جریر طبری (صاحب التاریخ) (متوفی 310ھ)
  • (24)حضرت حافظ عبد الغنی بن سعید امام النسب (متوفی 332ھ)
  • (25)حضرت ابو نعیم احمد بن عبد اللہ (صاحب الحلیہ) (متوفی 430ھ)
  • (26)حضرت شیخ الاسلام ابو عمر حافظ ابن عبد البر (متوفی 463ھ)
  • (27)حضرت ابوبکر احمد بن حسین بیہقی (متوفی 458ھ)
  • (28)قاضی عیاض مالکی (صاحب الشفاء) (متوفی 544ھ) قاضی عیاض
  • (29)حضرت عبد الرحمن بن عبد اللہ سہیلی (صاحب الروض الانف) (متوفی 581ھ)
  • (30)عبدالرحمان جوزی (صاحب شرف المصطفیٰ) (متوفی 597ھ)
  • (31)حضرت احمد بن محمد بن ابوبکر قسطلانی (متوفی 923ھ) (صاحب مواہب لدنیہ)
  • (32)حضرت امام شرف الدین عبد المومن دمیاطی (متوفی 705ھ) (صاحب سیرت دمیاطی )
  • (33)حضرت ابن سید الناس بصری (صاحب عیون الاثر) (متوفی 734ھ)
  • (34)حضرت حافظ علاء الدین مغلطائی (صاحب الاشارۃ الی سیرۃ المصطفیٰ )(متوفی 762ھ)
  • (35)حضرت علامہ ابن حجر عسقلانی (متوفی 852ھ) (شارح بخاری)
  • (36)حضرت علامہ بدرالدین محمود عینی (شارح بخاری) (متوفی 855ھ)
  • (37)حضرت ابو الحسن علی بن احمد سمہودی (صاحب وفاء الوفاء) (متوفی 911ھ)
  • (38)حضرت محمد بن یوسف صالحی (صاحب السیرۃ الشامیہ) (متوفی 942ھ)
  • (39)حضرت علی بن ب رہان الدین (صاحب السیرۃ الحلبیہ) (متوفی 1044ھ)
  • (40)حضرت شیخ عبدالحق محدث دہلوی (صاحب مدارج النبوۃ) (متوفی 1052ھ)[1]

مزید دیکھیے[ترمیم]

*سیرت

حوالہ جات[ترمیم]

  1. سیرتِ مصطفی مؤلف عبد المصطفیٰ اعظمی صفحہ36 ناشر مکتبۃ المدینہ کراچی