سینٹ پیٹرزبرگ کا معاہدہ (۱۷۲۳)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
سینٹ پیٹرزبرگ کا معاہدہ (۱۷۲۳)
قسممعاہدہ
دستخط۲۱ ستمبر ۱۷۲۳
(۳۰ شهریور ماه ۱۱۰۲ خورشیدی)
مقامسینٹ پیٹرزبرگ، روس Flag of Russia.svg روس
دستخط کنندگانFlag of Russia.svg روس روسی سلطنت
Safavid Flag.svg ایران
زبانیںروسی اور فارسی

سینٹ پیٹرزبرگ کا معاہدہ روسی اور ایرانی سلطنتوں کے درمیان ( صفوی دور کے دوران) 21 ستمبر 1723 کو ہوا، جو 20 ستمبر 1102 کے برابر ہے، اور ایران اور روس کے درمیان جنگ کا خاتمہ ہوا۔ اس معاہدے کے مطابق، ایران کو شمالی قفقاز، جنوبی قفقاز اور موجودہ ایران کے شمال میں اپنی زمینیں، بشمول دربند ( داغستانباکو ، شیروان کے آس پاس کی زمینوں کے ساتھ ساتھ گیلان ، مازندران کے صوبوں کو دینے پر مجبور کیا گیا تھا۔ اور استرآباد [1] معاہدے کے مطابق روسی فوجیوں کو داخلی امن و سکون کے قیام میں ایران کے شاہ کی مدد کرنا تھی۔ [2]

جیسا کہ ایران میں کیمبرج کی تاریخ کہتی ہے:

"23 ستمبر 1723 کو سینٹ پیٹرزبرگ میں اس کے سفیر اسماعیل بیگ نے ایک ذلت آمیز معاہدے پر دستخط کیے جس میں یہ شرط عائد کی گئی تھی کہ زار شاہ سے دوستی اور باغیوں کے خلاف مدد کرے گا اور شاہ کو اپنے تخت پر پرسکون قبضے میں رکھے گا۔ اس کے بدلے میں شاہ نے مستقل طور پر روس کے حوالے کرنے کا وعدہ کیا: … دربند کے قصبے (دربند، باکو، ان کے تمام علاقوں کے ساتھ ساتھ صوبے: گیلان، مازندران، اور استراباد، تاکہ وہ ان قوتوں کی حمایت کر سکیں جنہیں اس کی شاہی عظمت [زار] باغیوں کے خلاف شاہین عالیہ کی مدد کے لیے بھیجے گی، بغیر اس کے لیے رقم کا مطالبہ کیا۔ "[3]

صفویوں کے دستخط کنندہ کا نمائندہ اسماعیل بی تھا، جسے خود شاہ [4] دوم نے بھیجا تھا۔ لیکن جب معاہدہ اپریل 1724 میں عبوری دارالحکومت قزوین میں داخل ہوا، [5] تہمسیب دوم نے معاہدے کی شرائط سے اتفاق نہیں کیا، اور اس کے نتیجے میں اس کی طرف سے توثیق نہیں کی گئی، [6] جیسا کہ واضح تھا، روسی افواج کا قبضہ ایرانی علاقہ وہ بہت چھوٹا تھا جو ایران کے لیے سنگین خطرہ تھا۔ [5] اسماعیل بے واپسی کے فوراً بعد سزا سے بھاگنے پر مجبور ہو گئے اور بیس سال بعد استراخان میں جلاوطنی میں انتقال کر گئے۔ [4]

وہ تمام زمینیں جو 1732 اور 1735/1148 میں اور ملکہ انا کے دور میں فتح کی گئی تھیں بالترتیب رشت اور گانجہ معاہدوں کے تحت ایران (جس کی قیادت اس وقت نادر شاہ کر رہے تھے) کو واپس کر دی گئی تھی۔ [7]

متعلقہ مضامین[ترمیم]

ذرائع[ترمیم]

  1. THE CAUCASUS IN THE SYSTEM OF INTERNATIONAL RELATIONS: THE TURKMANCHAY TREATY WAS SIGNED 180 YEARS AGO Научная библиотека КиберЛенинка p 142
  2. Alexander Mikaberidze.
  3. William Bayne Fisher,P. Avery,G. R. G. Hambly,C. Melville. The Cambridge History of Iran, Volume 7 Cambridge University Press, 10 okt. 1991 آئی ایس بی این 0521200954 p 321
  4. ^ ا ب William Bayne Fisher, P. Avery, G. R. G. Hambly, C. Melville.
  5. ^ ا ب Alexander Mikaberidze.
  6. Abraham (Erewantsʻi), George A. Bournoutian.
  7. THE CAUCASUS IN THE SYSTEM OF INTERNATIONAL RELATIONS: THE TURKMANCHAY TREATY WAS SIGNED 180 YEARS AGO Научная библиотека КиберЛенинка p 142

لاک ہارٹ، لارنس، صفوی خاندان کا خاتمہ اور ایران میں افغان تسلط کے ایام، ترجمہ مصطفیٰ غولی عماد، تہران، موروارد پبلی کیشنز، تہران، 1985،