سیکولر انسانیت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

سیکولر انسانیت (انگریزی: Secular humanism) جسے کبھی محض انسانیت پسندی بھی کہا جاتا ہے، ایک فلسفہ یا طرز زندگی ہے جو انسانی توجیہ، اخلاقیات اور فلسفیانہ قدرت پسندی کو تو اپناتا ہے، مگر بطور خاص قدامت پسند مذہبی خیالات، مافوق فطرت کاذب سائنس اور توہم پرستی سے اخلاق اور فیصلہ سازی کے معاملوں میں بچنے کی کوشش ہے۔[1][2][3][4]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Council for Secular Humanism۔ "10 Myths About Secular Humanism"۔ مورخہ 12 مئی 2015 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 12 جون 2015۔
  2. Edwords, Fred۔ "What Is Humanism?"۔ American Humanist Association۔ مورخہ 30 جنوری 2010 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اگست 2009۔ Secular Humanism is an outgrowth of eighteenth century enlightenment rationalism and nineteenth century freethought... A decidedly anti-theistic version of secular humanism, however, is developed by Adolf Grünbaum, 'In Defense of Secular Humanism' (1995), in his Collected Works (edited by Thomas Kupka), vol. I, New York: Oxford University Press 2013, ch. 6 (pp. 115–48)
  3. Compact Oxford English dictionary۔ Oxford University Press۔ 2007۔ humanism n. 1 a rationalistic system of thought attaching prime importance to human rather than divine or supernatural matters.
  4. "Definitions of humanism (subsection)"۔ Institute for Humanist Studies۔ مورخہ 18 جنوری 2007 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 جنوری 2007۔