شامی خانہ جنگی میں روسی فوجی مداخلت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
شامی خانہ جنگی میں روسی فوجی مداخلت
بسلسلہ the foreign involvement in the شامی خانہ جنگی,
and the military intervention against ISIL
Syrian civil war September 2015.png

Syrian Civil War map.svg
Top: Territorial map of the Syrian Civil War in September 2015
Bottom: Current territorial map of the Syrian Civil War

     Syrian Government Army      Syrian National Army & others      Syrian Democratic Forces      Tahrir al-Sham      ISIL
(For a more detailed, up-to-date, interactive map, see here.)
تاریخ30 September 2015 – present
(5 سال، 1 ماہ اور 3 دن)
مقامسوریہ
نتیجہ

Ongoing

محارب

Flag of Russia.svg روس
Flag of Iran.svg ایران
Flag of Armenia.svg آرمینیا (non-combat role)[1][2]
In support of:


Flag of Russia.svg روس In support of:


Flag of Russia.svg روس
In support of:

Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست داعش

Army of Conquest (2015–17)[12]
Tahrir al-Sham (2017–present)
Supported by:


Flag of Syria 2011, observed.svg سوری حزب اختلاف


Syrian Democratic Forces (2017-2019)[28][29][30]
کمانڈر اور رہنما

Flag of روس ولادیمیر پیوٹن
Flag of روس Sergey Shoygu
Flag of روس Valery Gerasimov
Flag of روس Viktor Bondarev
Flag of روس Sergey Rudskoy
(Chief of Gen Staff. Ops. Dept.)
Flag of روس Aleksandr Dvornikov[45]
September 2015–June 2016
Flag of روس Alexander Zhuravlyov[46]
July–December 2016
Flag of روس Andrey Kartapolov[47]
December 2016–March 2017
Flag of روس Sergey Surovikin
March 2017–December 2017[48]
Flag of روس Alexander Zhuravlyov[49]
December 2017–September 2018
Flag of روس Sergey Kuralenko
[50]September–October 2018
Flag of روس Alexander Lapin[51]
October 2018–January 2019
Flag of روس Sergey Surovikin[52]
January 2019–April 2019
Flag of روس Andrey Serdyukov[52]

April 2019–September 2019
Flag of روس Alexander Chaiko[53]
Since September 2019
Flag of روس Valery Asapov 
Flag of روس Maj Gen Vyacheslav Gladich  [54]

Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست Abu Ibrahim al-Hashimi al-Qurashi (Leader since 31 October 2019)
Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست ابوبکر البغدادی  (Leader)
ابو محمد العدنانی  (Spokesperson)
ابو سلیمان الناصر  (Replacement Military Chief)[55]
ابو علی الانباری  (Deputy, Syria)[حوالہ درکار]
ابو عمر الشیشانی  (Senior commander in Syria) [56][57]
Gulmurod Khalimov (Minister of war in Syria)[58]

Abu Muhammad al-Shimali  (Senior leader)[58]

Flag of سوری حزب اختلاف Basil Zamo  (1st Coastal Division chief of staff)[59]
Flag of سوری حزب اختلافLogo of Ahrar al-Sham.svg Abu Yahia al-Hamawi[60] (Leader of Ahrar al-Sham)
Flag of سوری حزب اختلافLogo of Ahrar al-Sham.svg Nimr Al-Shukri  (Top military commander of Ahrar al-Sham)[61]
Zahran Alloush  (emir of Jaysh al-Islam)
Abdullah al-Muhaysini (Top sharia judge of the Army of Conquest and later a senior member of Tahrir al-Sham)
Abu Rida al-Turkistani  (Leader of TIP)[62]
Abu Salman al-Belarusi (Abu Rofiq) (Leader of Malhama Tactical)[63]


ابو محمد الجولانی (Leader of Tahrir al-Sham)
Abu Jaber (Shura head of Tahrir al-Sham)
Flag of the Al-Nusra Front.svgFlag of Jabhat Fatah al-Sham.svgFlag of Hayat Tahrir al-Sham.svg Salahuddin Shishani  (al-Nusra Front and Tahrir al-Sham top military commander)[64]
Abu Hajer al-Homsi  (al-Nusra Front top military commander)[65]
Ahmad al-Ghizai  (al-Nusra Front security service chief)
Abu Ubeidah al-Kansafra  (Top military commander of Tahrir al-Sham)[66][غیر معتبر مآخذ؟]
Field commanders of Tahrir al-Sham and Al-Nusra Front:

Abu Sulman al-Saudi [67][بہتر ماخذ درکار]
Abu al-Abbas Anadin [67][بہتر ماخذ درکار]
Abu Hasan [67][بہتر ماخذ درکار]
Walid al-Mustafa [67][بہتر ماخذ درکار]
Abu Mudjagid [67][بہتر ماخذ درکار]
12 unknown military commanders 
[68]
Abul Baha Al-Asfari  (al-Nusra Front operations chief in Aleppo and Hama)[69][بہتر ماخذ درکار]
Muhammad Helala [69][بہتر ماخذ درکار]
Abu Jaber Harmuja [69][بہتر ماخذ درکار]
Abu Abdollah Jabal  (al-Nusra Front senior commander in Aleppo)[70]
شریک یونٹیں

Russian Armed Forces:

Armed Forces of the Islamic Republic of Iran:

Military of ISIL

Flag of سوری حزب اختلاف آزاد شامی فوج


Army of Conquest (2015–17)
Tahrir al-Sham (2017–present)

Jund al-Aqsa (Until Feb. 2017)[81]
Turkistan Islamic Party in Syria[82]
Ajnad al-Sham[83]
Ahrar ash-Sham
Sham Legion

Malhama Tactical
(since 2017)
طاقت

Troop strength
4,300 personnel[84][85]
Naval ships
3 Buyan-M-class corvettes[حوالہ درکار]
1 Gepard-class frigate[حوالہ درکار]
2 سانچہ:Sclass-[86]
2 Vishnya-class intelligence ship
4 Improved Kilo-class submarines[87][88]
1 سانچہ:Sclass-[89]
Kuznetsov aircraft carrier battlegroup
1 سانچہ:Sclass-
1 سانچہ:Sclass-
2 سانچہ:Sclass-s
support vessels
[90]
Strategic bombers
14 Tu-22M3[91]
6 Tu-95MSM[91]
5 Tu-160[91]
Tactical bombers
12 Su-24M2
8 Su-34[92]
Attack bombers
4 Su-25SM[93]
لڑاکا طیارہ
4 سخوئی سو-27SM[94]
4 Su-30SM[95]
4 سخوئی سو-35S[96]
4 MiG-29SMT[97][98]
4 Su-57[99][100]
Interceptor aircraft
MiG-31BM[حوالہ درکار]
Reconnaissance aircraft
A-50U[101][102]
Il-20M1
Tu-214R[103][104]
Attack helicopter
12 Mi-24P/35M [105]
6 Mi-28N[106]
4 Ka-52[106]
Utility helicopter
4 Mi-8AMTSh
UAV
Orlan-10
Forpost[107]
Ground arms and equipment
UGV
Uran-6[108]
MRAP
Kamaz Typhoon[حوالہ درکار]
IMV
GAZ Tigr[109]
Iveco Rys'[110]
SRBM (presumed)
2 9K720 Iskander (SS-26) missile launchers[111][112]
SAM

3 SA-22,[113] other anti-aircraft and anti-missile weapons,[114] including S-400,[115] S-300VM,[116] and Vityaz (S-350E) (unconfirmed officially)[117]

Islamic State of Iraq and the Levant:
30,000–100,000 fighters (per the سی آئی اے and the Iraqi Kurdistan Chief of Staff)[118]

Small numbers of tanks and assorted armored vehicles[119][120]

Free Syrian Army:
Between 45,000 and 60,000 fighters (disputed)[121]
Islamic Front : (2015 only)
40,000[122]–70,000[123]


Tahrir al-Sham:
ca. 31,000[124]
Ahrar al-Sham:

10,000–21,000[125][126][127][128]
ہلاکتیں اور نقصانات

117 servicemen killed (officially per Russia′s MoD)[129]
8 planes and 7 helicopters lost[129]
2 BTRs destroyed[129]

For Russian PMCs killed see here
5,361 killed (according to SOHR)[130]
85,000 killed (Unidentified faction. Listed as 'terrorists' according to Russia′s MoD)[129]
6,128 killed (according to SOHR)[131]
Flag of ترکی 38 soldiers killed [132][133][134]
8,651 civilians killed (according to SOHR)[135]
6,856 civilians killed (according to SNHR)[136]
شام کے اوپر ایک بمباری مشن کے دوران ایک روسی ایس یو 34 KAB-500S-E گائیڈڈ بم گرارہا ہے

شام کی خانہ جنگی میں روسی فوجی مداخلت کا آغاز ستمبر 2015 میں شامی حکومت کی طرف سے باغی گروپوں کے خلاف فوجی امداد کی سرکاری درخواست کے بعد ہوا تھا ۔ [137][138] اس مداخلت میں ابتدائی طور پر شمال مغربی شام میں اہداف کے خلاف خیمیم اڈے پر تعینات روسی طیاروں کے فضائی حملے ، اور شامی حکومت کے مخالف شام کے حامی عسکریت پسند گروپوں کے خلاف ، جن میں شامی قومی اتحاد ، دولت اسلامیہ عراق اور لیونتشامل تھے (شامل ہیں۔ داعش) ، النصرہ فرنٹ (شام میں القاعدہ) اور فتح کا لشکر۔[139][140] [141]اس کے علاوہ ، روسی اسپیشل آپریشن فورسز اور فوجی مشیر شام میں تعینات ہیں۔ مداخلت سے پہلے ، شام کی خانہ جنگی میں[142] روسی مداخلت بنیادی طور پر شامی فوج کو اسلحہ اور سامان کی فراہمی پر مشتمل تھی۔ [143]دسمبر 2017 کے آخر میں ، روسی حکومت نے کہا کہ اس کی فوج مستقل طور پر شام میں تعینات کی جائے گی۔[144]

اس کارروائی کے آغاز کے فورا بعد ، روسی عہدے داروں کا حوالہ دیا گیا کہ ، دولت اسلامیہ جیسی دہشت گرد تنظیموں سے لڑنے کے علاوہ ، روس کے اہداف میں شام کی حکومت کو مختلف حکومت مخالف گروہوں سے علاقہ واپس لینے میں مدد کرنا شامل ہے جن پر امریکہ کا لیبل لگا ہوا ہے اور شام میں امریکی زیرقیادت مداخلت بطور "اعتدال پسند حزب اختلاف" ، جو ایک وسیع تر جغرافیائی سیاسی مقصد ہے جو امریکی اثر و رسوخ کو پس پشت ڈالتا ہے۔ اکتوبر 2015 میں ٹیلیویژن انٹرویو میں ، روسی صدر ولادیمیر پوتن نے کہا کہ فوجی آپریشن کو پوری طرح سے پہلے ہی تیار کرلیا گیا تھا۔ انہوں نے شام میں روس کے مقصد کو "شام میں جائز طاقت کو مستحکم کرنے اور سیاسی سمجھوتہ کے لئے حالات پیدا کرنے" کی تعریف کی۔ اکتوبر 2016 کے ایک ٹی وی انٹرویو میں ، جنرل لیونڈ ایوشوف نے کہا کہ مشرق وسطی سے ہائیڈرو کاربن پائپ لائنوں کی تعمیر کو روکنے کے لئے روس کی تنازعہ میں شامل ہونا انتہائی اہم ہے ، جو گیج پروم کے لئے تباہ کن ہوگا اور اس کے نتیجے میں روسی فیڈریشن کے بجٹ کے لئے بھی ۔ [145] [146][147]

2017 کے آخر تک ، مداخلت نے شام کی حکومت کے لئے اہم فوائد حاصل کیے ، جس میں مارچ 2016 میں دولت اسلامیہ سے پالمیرا کی واپسی شامل تھی ، دسمبر 2016 میں حلب کے بڑے شہر کو واپس لے جانا ، جس نے تین سالہ طویل محاصرہ توڑ دیا۔ نومبر 2017 میں دیر الزور اور اس شہر پر کنٹرول حاصل کرنا ۔ جنوری 2017 کے اوائل میں ، روسی مسلح افواج کے چیف آف جنرل اسٹاف ویلری گیریسموف نے کہا کہ ، مجموعی طور پر ، روسی فضائیہ نے 19،160 جنگی مشن انجام دیئے اور "دہشت گردوں کے بنیادی ڈھانچے" پر 71،000 حملے کیے۔ [148] دسمبر 2017 کے آخر میں ، روسی وزیر دفاع نے کہا کہ روسی فوج نے متعدد ہزار دہشت گردوں کا خاتمہ کیا ہے جبکہ 48،000 روسی سروس ممبروں نے شام میں روسی آپریشن کے دوران "جنگی تجربہ حاصل کیا" تھا۔ [149] [150] [151][147]

برطانیہ میں مقیم حامی حزب اختلاف شامی آبزرویٹری برائے ہیومن رائٹس (ایس او ایچ آر) نے بتایا ہے کہ ستمبر 2015 میں مداخلت کی شروعات اور فروری 2016 کے اختتام کے دوران ، روسی فضائی حملوں میں کم از کم 1700 شہری ہلاک ہوئے ، جن میں زیادہ سے زیادہ افراد شامل ہیں۔ 200 بچے۔ سیرین نیٹ ورک فار ہیومن رائٹس (ایس این ایچ آر) اور خلاف ورزیوں کے دستاویزات سنٹر (وی ڈی سی) نے اس تعداد کو زیادہ سے زیادہ بتاتے ہوئے 2،000 سے زیادہ رکھا۔ ایس این ایچ آر کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ روسی حملوں میں دولت اسلامیہ یا شام کی فوج سے زیادہ شہری ہلاک ہوئے ہیں۔ [152] [153] [154] [155] استعمال شدہ ہتھیاروں میں بے ساختہ بم ، کلسٹر بم ، سفید فاسفورس اور تھرموبارک ہتھیاروں کی طرح انجیریاں شامل تھیں۔ [156] [157] [158] ستمبر 2017 کے آخر تک ، ایس او ایچ آر نے بتایا کہ روسی فضائی حملوں میں 5،703 شہری ہلاک ہوئے ، جن میں سے ایک چوتھائی بچے ، النصرہ فرنٹ اور دیگر باغی فوج کے 4،258 داعش جنگجوؤں اور 3،893 عسکریت پسندوں کے ہمراہ تھے۔ [159][147]

مداخلت نے حکومتوں کو پیش قیاسی خطوط پر متنازعہ کردیا۔ چین ، مصر ، عراق اور بیلاروس سمیت روس کے ساتھ قریبی سفارتی اور معاشی تعلقات رکھنے والے ممالک نے عام طور پر مداخلت کی حمایت کی ہے۔ امریکہ کے قریب حکومتوں کے ردعمل عموما اس کے برعکس ہوتے تھے ، متعدد حکومتیں روس کی طرف سے اس جنگ میں کردار ادا کرنے کی مذمت کرتی تھیں اور شامی حکومت کے جنگی جرائم میں اس کی سرگرمی کو اجاگر کرتی تھیں۔ ہیومن رائٹس واچ اور ایمنسٹی انٹرنیشنل نے روس پر جنگی جرائم کا ارتکاب کیا جاتا ہے اور جان بوجھ کر عام شہریوں کو نشانہ بنا، نے کہا ہے [160] [161] امریکی حکومت کی مداخلت کی مذمت کی اور نافذ کردی ہے اقتصادی پابندیوں شامی حکومت کی حمایت کرنے کے لئے روس کے خلاف، [162] اور حکام اقوام متحدہ میں روسی مداخلت کی مذمت کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ روس جنگی جرائم کا ارتکاب کر رہا ہے۔ [163] روسی حکام نے منفی بیانات کو غلط اور سیاسی محرک قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا ہے ، [164] اور کہا ہے کہ اس کے نقاد "بربریت" کا ارتکاب کر رہے ہیں ، اس طرح باغی گروہوں کی حمایت کرنے والی حکومتوں کی طرف سے بھی سخت مذمت کی جارہی ہے۔ [147]

پس منظر اور تیاری کا مرحلہ[ترمیم]

شام کے خانہ جنگی کو 2011 سے متعدد حزب اختلاف (حکومت مخالف) گروہوں اور حکومت کے ساتھ ساتھ ان کے مقامی اور غیر ملکی حمایتی اڈوں کے مابین چھیڑ دیا گیا ہے۔ 2014 کے بعد سے ، شام کی سرزمین کے ایک اہم حصے کا دعوی اسلامی دولت اسلامیہ اور لیونٹ نے کیا تھا ، جو بین الاقوامی سطح پر دہشت گرد کے طور پر تسلیم شدہ ایک ادارہ ہے۔ ملک کے شمال مغرب میں ، حزب اختلاف کا مرکزی گروہ القاعدہ سے وابستہ النصرہ فرنٹ ہے ، جس نے دیگر متعدد چھوٹے چھوٹے اسلامی گروہوں کے ساتھ اتحاد کیا ہے ، جن میں سے کچھ آزاد شامی فوج (ایف ایس اے) کی چھتری میں چل رہے تھے۔ ریاستہائے متحدہ امریکہ اور اس کے علاقائی اتحادیوں کی مدد اور اسلحہ ستمبر 2014 کے بعد سے ، امریکہ کی زیرقیادت اتحاد نے داعش کے خلاف شام میں فضائی حملے کیے تھے ، جو بڑے پیمانے پر اپنے اہداف کے حصول میں ناکام دکھائی دیتے ہیں۔ [147]

روسی اور شامی عہدیداروں کے مطابق جولائی 2015 میں شامی صدر بشار الاسد نے روس سے بین الاقوامی دہشت گردی سے نمٹنے کے لئے فضائی حملوں کے لئے باضابطہ درخواست کی تھی ، جبکہ شام کے فوجی مسائل کو حل کیا تھا۔ گمنام ذرائع کے حوالے سے میڈیا رپورٹس کے مطابق ، 2015 کی پہلی ششماہی میں شامی سرکاری فوج کو کئی بڑی دھچکیوں کا سامنا کرنے کے بعد ، روسی مداخلت کو تیز کرنے کے لئے روس اور شام کے مابین ایک سیاسی معاہدہ طے پایا تھا۔ مشترکہ مہم کی تفصیلات پر روشنی ڈالنے کے لئے ایران کی قدس فورس کے کمانڈر قاسم سلیمانی جولائی میں ماسکو گئے تھے (روسی حکام کے ذریعہ سلیمان کے دورے کی تردید کی گئی تھی [165] [166][147]

اگست 2015 میں ، روس نے روس کے زیرانتظام جنگی طیارے ، ٹی 90 ٹینک اور توپ خانے کے ساتھ ساتھ جنگی فوجیوں کو شام کے بندرگاہ شہر لاتاکیا کے قریب ائیربیس پر بھیجنا شروع کیا۔ [167] [168][147]

26 اگست 2015 کو ، روس اور شام کے مابین ایک معاہدہ طے پایا تھا جس میں شام کے ہمیم ہوائی اڈہ کے روس کی جانب سے بلا معاوضہ اور بغیر وقت کی کوئی حد کے استعمال کی شرائط و استعمال کی شرائط طے کی گئی تھیں۔ [169] یہ معاہدہ ، جسے روس کی پارلیمنٹ نے اکتوبر 2016 میں منظور کیا تھا ، روس کے عملے اور ان کے کنبہ کے افراد کو دائمی استثنیٰ اور دیگر مراعات کی منظوری دیتا ہے جیسا کہ ڈپلومیٹک تعلقات سے متعلق ویانا کنونشن نے تصور کیا ہے۔ [170][147]

ستمبر 2015 میں ، بحیرہ اسودی بحری بیڑے کے روس کے جنگی جہاز مشرقی بحیرہ روم کے علاقے میں پہنچے۔ [171][147]

ستمبر کے آخر میں ، بغداد میں ایران ، عراق ، روس اور شام کی طرف سے داعش کے خلاف اپنی کاروائیوں کو مربوط کرنے کے لئے ایک مشترکہ انفارمیشن سنٹر قائم کیا گیا تھا۔   (نیوزمیڈیا میں اس مرکز کو "بغداد میں مشترکہ آپریشن روم" کے نام سے بھی جانا جاتا ہے جو 4 + 1 کے نام سے جانا جاتا ہے۔ اس میں چار ریاستوں کے علاوہ لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ بھی اشارہ کرتی ہے [172] )۔ اکتوبر میں وسط اکتوبر میں روسی وزیر خارجہ سیرگئی لاوروف کے بیان کے مطابق ، شام میں اپنی کاروائیاں شروع ہونے سے قبل ، روس نے امریکہ کو بغداد میں قائم انفارمیشن سینٹر میں شامل ہونے کی دعوت دی تھی لیکن اسے "غیر تعمیری" جواب دینے کی اطلاع ملی۔ . [173] [174] برطانیہ میں روس کے سفیر الیگزینڈر یاکووینکو کے مطابق ، روسی حکومت کو بھی برطانیہ کی حکومت کی طرف سے اسی طرح کی تردید موصول ہوئی۔ [175] دسمبر 2015 کے آخر میں ، ترکی کے صدر رجب اردگان نے کہا کہ انہوں نے روسی صدر کی اس اتحاد میں شامل ہونے کی پیش کش کو مسترد کردیا ہے کیونکہ وہ "کسی ایسے صدر [اسد] کے ساتھ نہیں بیٹھ سکتے ہیں جس کی قانونی حیثیت" انھیں مشکوک تھی "۔ [147]

30 ستمبر 2015 کو ، روسی فیڈرل اسمبلی کے ایوان بالا ، فیڈریشن کونسل نے روسی صدر ولادیمیر پوتن کی شام میں روسی فضائیہ کی تعیناتی کی درخواست منظور کرلی۔ [176] اسی دن ، مشترکہ انفارمیشن سنٹر میں روسی نمائندہ بغداد میں امریکی سفارت خانے پہنچا اور درخواست کی کہ شام میں ہدف بنائے گئے علاقے میں کسی بھی امریکی فوج کو فوری طور پر وہاں سے چلے جائیں۔ اس کے ایک گھنٹہ کے بعد ، روسی زیر انتظام حکومت کے زیر قبضہ علاقے میں مقیم روسی طیاروں نے داعش اور دیگر باغی اہداف کے خلاف واضح طور پر فضائی حملوں کا آغاز کیا۔ [177][147]

کے طور پر اس کے بعد اس کے ساتھ ساتھ شام میں روسی آپریشن کے آغاز سے قبل، روسی تجزیہ کاروں روس کی فوجی تیاری کے شام میں اصل سیاسی اور سفارتی تنہائی کو ختم کرنے کہ مغربی سلسلے میں پوٹن پر عائد کیا تھا میں دوسری باتوں کا مقصد کیا تھا یوکرائن کی صورتحال کے ساتھ [178] [179]

روسی فوجی دستوں کی کاروائیاں[ترمیم]

ستمبر – اکتوبر 2015[ترمیم]

فضائی حملوں کا پہلا سلسلہ 30 ستمبر 2015 کو حمص اور حما کے شہروں کے آس پاس کے علاقوں میں ہوا ، جس نے مرکزی دھارے میں حزب اختلاف کو نشانہ بنایا۔ [137] روسی جنگی طیاروں نے "حمص صوبے میں الرستین ، تلبیسہ اور ظفرانیا میں، باغیوں کے ٹھکانوں پر حملہ کیا؛ قنیطرہ صوبےمیں ال تلول الحمر؛ سلمیہ شہر کے مضافات میں واقع ایک گاؤں ایدون حما اور حمص کے درمیان ہرن فول اور سلامیہ کے مضافات "۔ مجموعی طور پر ، 20 پروازیں کی گئیں۔   ابتدائی فضائی حملوں میں بیشتر چیچن جنگجوؤں ، اسلامک فرنٹ کے جیش الاسلام (آرمی آف اسلام) ، اور فری سیرین آرمی کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا جاتا تھا ۔ [147]

حزب اللہ کے ذرائع ابلاغ المیادین کے مطابق ، یکم اکتوبر کو روسی طیاروں کے ذریعہ جِشرو ایشگور کے آس پاس فتح یافتہ سعودی / ترکی کی حمایت یافتہ فوج پر بم حملہ کیا گیا تھا۔ کم از کم 30 فضائی حملے کیے گئے۔ [180] اسی دن روسی فضائی حملوں کا ایک اور سلسلہ رقیہ گورنری میں داعش کے ٹھکانوں پر ہوا۔ [147]

روس کے زیر انتظام لٹاکیہ گورنری کے صدر ، لٹاکیہ میں روسی ایس۔ 24 جیٹ طیارہ۔
شام میں جنگی جماعتوں کے لئے روسی فضائیہ کے ایک طیارے کی تیاری۔

2 اکتوبر کی صبح میں، روسی ایئر فورس قدیم میں آئی ایس آئی ایل پر چار فضائی حملوں کا آغاز شامی کے شہر القریاتین ، اور T4-تدمر شاہراہ، حمص صوبے . القریاتین میں ایک فضائی حملے میں داعش کا ایک کمانڈ اینڈ کنٹرول سنٹر تباہ کردیا گیا ، جبکہ تیفور پلمیرا شاہراہ پر جاتے ہوئے ایک داعش کے قافلے پر حملہ کیا گیا۔ فضائی حملوں کے بعد ، شامی فوج اور قومی دفاعی دستوں نے دو گھنٹے کی مصروفیت کے بعد داعش کو قصبہ مین سے باہر القریاتین کی طرف دھکیل دیا جس میں 18 عسکریت پسند ہلاک اور ZU-23-2 کے ساتھ لگے ہوئے دو ٹیکنیکل تباہ ہوگئے۔ اس کے بعد شامی فورسز نے مرکزی سڑک کی بحالی کے لئے القریاتین کے جنوب مغرب میں جوابی حملہ کیا۔ [181][147]

روسی سکھوئ ایس یو 24 کے ایک گزر جاتا شامی ایئر ایئربس A320 پر باسل الاسد انٹرنیشنل ائیرپورٹ لطاکیہ میں.

اسی دن ، روسی فضائیہ نے حمص کے صوبے الراستن اور تلبیسہ میں النصرہ فرنٹ کے ٹھکانوں پر بمباری شروع کردی۔ بعدازاں ، انہوں نے صوبہ حما میں کافر زیٹا ، الغاب میدانی علاقے ، کفرنبل ، کفر سجنہ ، اور ال ریکایا میں النصرہ پر بمباری کی۔ شامی فضائیہ اور روسی ایئر فورس نے مشترکہ طور پر میں النصرہپر جسر الشغور میں بمباری کی ۔ رات کے وقت ، روسی فضائیہ نے رقعہ پر 11 فضائی حملوں کے ساتھ داعش کو نشانہ بنایا جبکہ اس کے باہر برقی گرڈوں کو نشانہ بنایا ، شدادی-حسقہ شاہراہ پر دو فضائی حملے ، اور صوبہ دیر ایضور کے مایادین میں تین فضائی حملے۔ تبا ملٹری ایئرپورٹ میں داعش کے بنیادی فوجی اڈے پر بھی حملہ کیا گیا ، دو فضائی حملوں میں بیرکوں کو تباہ کردیا گیا۔ ملٹری ایئرپورٹ کے قریب ، العجراوی فارمس میں داعش کے اسلحے کی فراہمی کے ڈپو پر بھی بمباری کی گئی۔ حکومت نواز ذرائع کے مطابق ، اسی وقت ، روسی فضائی حملے میں تبا نیشنل اسپتال میں داعش کے بنیادی ہیڈکوارٹر کو بھاری نقصان پہنچا۔ [182] صوبہ الہسقہ میں ، روسی فضائیہ نے الشدادی اور الحول میں داعش کو نشانہ بنایا ، جب کہ شام کی فضائیہ نے دیر الزور-حسقہ شاہراہ پر داعش کے قافلے پر حملہ کیا۔ [183][147]

مارچ 2016 میں روسی سیپروں کے ایک گروپ نے پاممیرا کے آزاد کردہ علاقوں کو صاف کیا ، اس سے قبل اسلامک اسٹیٹ کے جہادیوں نے کان کنی کی تھی۔

3 اکتوبر کو ، اطلاعات میں اشارہ کیا گیا کہ حزب اللہ اور ایرانی جنگجو روسی فضائی حملوں کے ساتھ ہم آہنگ ہونے کے لئے بڑے زمینی کارروائیوں کی تیاری کر رہے ہیں۔ سی این این کے مطابق ، روسی وزارت دفاع نے بتایا کہ اس کے فوجیوں نے رقہ میں گروپ کے ڈی فیکٹو دارالحکومت کے قریب داعش کے نو ٹھکانوں پر بمباری کی۔ حزب اختلاف کے گروپوں کے مطابق ، شام کے صوبے ادلیب میں روس کی طرف سے مبینہ طور پر ڈبل ہڑتال میں کم از کم 11 افراد ہلاک ہوگئے۔ دن کے دوران ، روسی فضائیہ نے النصرہ کے زیرقبض جسر الشغور ، اور جبل الزوویہ اور جبل الاکراد میں مزید فضائی حملہ کیا۔ [184] ان اہداف میں سے ایک النصرہ کمک کا قافلہ تھا جس کا مقصد جیسار الشغور سے صوبہ لٹاکیہ کے شمال مشرقی دیہی علاقوں کی طرف جانا تھا۔ [147]

روسی بحریہ نے شام میں اسلامی ریاست کے اہداف پر بحیرہ کیسپین سے بڑے پیمانے پر کروز میزائلوں کا حملہ کیا

7 اکتوبر 2015 کی صبح ، روسی عہدیداروں کے مطابق ، روسی بحریہ کے کیسپین فلوٹلا کے چار جنگی جہازوں نے کالیبر این کے نظام [185] کروز میزائلوں کا 26-3M- 14T لانچ کیا جو شام کے علاقے میں 11 اہداف کو نشانہ بناتا ہے۔ یہ میزائل ایرانی اور عراقی فضائی حدود سے گزرے تاکہ اپنے اہداف تک تقریبا 1، 1500 کلومیٹر (930 میل) سے زیادہ فاصلے پر پہنچ سکیں۔ اسی دن شامی زمینی فوج کو روسی فضائی کور کے تحت کارروائی کرنے کی اطلاع ملی تھی۔ [186] سی این این کے مطابق متحدہ امریکہ کے فوجی اور انٹیلیجنس عہدیداروں کے نام بتاتے ہوئے ، 8 اکتوبر کو 26 میں سے 4 کروز میزائل شام میں اپنے اہداف تک پہنچنے سے پہلے ہی ایران میں گر کر تباہ ہوا۔ روس نے کہا کہ اس کے تمام میزائل اپنے اہداف کو نشانہ بناتے ہیں۔ ایران نے بھی اپنی سرزمین پر کسی بھی میزائل حادثے کی تردید کی ہے۔ [187] [188] ایرانی وزارت دفاع نے کسی بھی ایسی رپورٹ کو مسترد کردیا جس میں یہ الزام لگایا گیا تھا کہ 26 میں سے چار کروز میزائل ایران میں گر کر تباہ ہوئے ہیں اور کہا گیا ہے کہ سی این این کی رپورٹیں مغرب کی "نفسیاتی جنگ" کا حصہ ہیں۔ [147]

8 اکتوبر 2015 کو ، فضائی چھاپوں کی تعداد میں ایک دن میں 60 سے زیادہ تعداد تک نمایاں اضافہ ہوا ، جو اگلے 2 دن تک برقرار رہا۔ روسی وزارت دفاع نے 9 اکتوبر کو اعلان کیا تھا کہ پچھلے 24 گھنٹوں کے دوران داعش کے ساٹھ اہداف کو نشانہ بنایا گیا ، اطلاعات کے مطابق اب تک کے انتہائی شدید حملوں میں 300 شدت پسند ہلاک ہوگئے۔ چھاپوں میں سے ایک ایک کو نشانہ بنایا لیوا الحق کو الرقہ گورنری میں KAB-500KR گائیڈڈ بموں سے نشانہ بنایا، جس میں مبینہ طور پر دو سینئر آئی ایس آئی ایل کمانڈروں اور 200 شدت پسند ہلاک اور داعش۔ ایک اور حملے نے حلب کے قریب ایک سابقہ جیل کو تباہ کردیا جسے داعش بیس اور اسلحہ خانے کے ڈپو کے طور پر استعمال کرتی تھی ، اور متعدد عسکریت پسندوں کی ہلاکت کا بھی مطالبہ کرتی تھی۔ اطلاعات کے مطابق لتاکیہ اور ادلیب صوبوں میں بھی باغیوں کی تربیت گاہوں کو نشانہ بنایا گیا۔ [189] دریں اثنا ، داعش کے عسکریت پسندوں نے 9 اکتوبر کو حلب کے علاقے میں پیش قدمی کرتے ہوئے متعدد دیہاتوں ، جن میں تال قرہ ، تال سوسن ، اور کفار قاریس شامل تھے ، پر قبضہ کیا ، جسے ایسوسی ایٹ پریس نے "بجلی کا حملہ" کہا ہے۔ ان حملوں کا مقابلہ روس یا امریکہ کے زیرقیادت اتحادی فضائی حملوں میں سے کسی پر نہیں ہوا تھا۔ داعش کی پیش قدمی روسی اور شامی افواج کے ذریعہ باغی گروپوں کو بھی نشانہ بنایا گیا۔ اکتوبر 2015 کے وسط میں ، حلب میں باغیوں کو نشانہ بنانے والے مشترکہ روسی شامی ایرانی حزب اللہ کی کارروائی آگے بڑھی۔ [190] شہری صحافی گروپ کے مطابق راققہ کو خاموشی سے ذبح کیا جارہا ہے ، جس نے شام کی حکومت کی مخالفت شروع کردی ، روس نے باققہ کے گرد ابتدائی فضائی حملوں اور میزائلوں میں داعش کو نشانہ بنانے کے بارے میں جھوٹ بولا۔ 17 ستمبر سے 13 اکتوبر کے درمیان انہوں نے داعش کے صرف 2 اہداف (4 داعش کی ہلاکتوں کے ساتھ) کے خلاف 36 روسی حملوں کی گنتی کی اور 22 سویلین اہداف (70 شہریوں کی ہلاکت اور زخمی ہونے کے ساتھ) میں اسپتال ، فائر فائر ہال ، کم از کم ایک اسکول اور ایک شاہراہ فیولنگ اسٹیشن شامل ہیں۔ . [191][147]

نومبر 2015[ترمیم]

شام میں 10 نومبر سے 30 نومبر 2015 تک فوجی پیشرفت (" تسار گراد ٹی وی کے مطابق حرکت پذیری)۔ ریڈ ایریا - یہ علاقہ شام کی حکومت کے ماتحت ہے

روسی وزیر دفاع کی روس کے صدر ولادی میر پوتن کو عوامی رپورٹ کے مطابق ، سنئی پر روسی جیٹ طیارہ اور پیرس حملوں کے بعد ، 17 نومبر 2015 کو ، روس نے روس میں قائم ٹی یو 160 ، ٹو 95 ایم ایس ایم ، اور ٹو 22 ایم 3 لمبی رینج اسٹریٹجک بمباروں کو ملازمت سے نشانہ بنانے کے لئے فضائی لانچ کروز میزائل فائر کیا جس کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ رقعہ ، دیر ایزور میں آئی ایس کے اہداف اور اس کے علاوہ اہداف تھے۔ حلب اور ادلیب کے صوبوں میں۔ [192] روسی وزیر دفاع نے کہا کہ پوتن کے احکامات کے مطابق ، روسی ہوا بازی کا گروپ جو اس وقت 50 سے زیادہ طیاروں پر مشتمل تھا ، اپنی مہم کو تیز کررہا تھا۔ [193] اس کے علاوہ ، پوتن نے کہا کہ انہوں نے بحیرہ روم میں مشرقی بحر روم میں موجود کروزر <i id="mwAuU">موسکوا کے</i> احکامات جاری کیے تھے ، "روسی اتحادیوں کی طرح کام کرنا" ، [194] [195] فرانسیسی بحری گروہ کے ساتھ ، جس کی سربراہی چارلس ڈیگال جو نومبر کے اوائل سے ہی مشرقی بحیرہ روم جا رہا تھا۔ [196] اگلے روز ، روسی وزارت دفاع کے مطابق ، شام میں انہی علاقوں میں کروز میزائل فائر کرنے والے دور دراز بمباروں کی ہڑتالیں بدستور جاری ہیں۔ [197] [198] منگل کو 20 نومبر کو صوبہ دیر ایروزور میں داعش کے خلاف کیے گئے بڑے کروز میزائل حملوں کے نتیجے میں 600 کے قریب عسکریت پسند ہلاک ہوگئے تھے۔ [199][147]

24 نومبر 2015 کو ایک روسی سکھوئ ایس یو 24 ہڑتال والے طیارے کو ترک ایئر فورس کے ایف 16 نے گرا دیا تھا۔ [200] پائلٹ کو پیراشوٹ کے نیچے اترتے وقت شامی باغیوں نے گولی مار کر ہلاک کردیا تھا ، اور اسلحہ سسٹم کے افسر کو بعد میں روسی فورسز نے بچایا تھا۔ امدادی کارروائی کے دوران ایک روسی سمندری زخمی ہوا تھا اور بعد میں میڈیکل سینٹر جاتے ہوئے دم توڑ گیا تھا۔ ویڈیو میں باغی روسی پائلٹ کی نعش پر " اللہ اکبر " کا نعرہ لگاتے ہیں۔ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو ترکی کے پیش کردہ بیانات کے مطابق ، دو طیارے ، جن کی شہریت اس وقت انھیں معلوم نہیں تھی ، نے صوبہ ییلاد over پر 2.19 کلومیٹر (1.36 میل) تک ترک فضائی حدود کی خلاف ورزی کی تھی۔ 17 سیکنڈ کے لئے۔ [201] ترکی کے مطابق ، طیاروں نے متعدد انتباہات کو نظرانداز کیا اور بعد ازاں اس علاقے میں گشت کرتے ہوئے ترکی کے ایف 16 طیاروں نے ان پر فائر کردیا۔ ترکی میں آگ لگنے کے بعد ایک طیارے نے ترک فضائی حدود چھوڑ دیا اور دوسرا طیارہ شام کے علاقے میں گر گیا۔ روسی وزارت دفاع نے تردید کی کہ ان کے کسی بھی طیارے نے ترکی کے فضائی حدود کی خلاف ورزی کی ہے ، اور کہا ہے کہ وہ ییلادğı صوبہ [202] جنوب میں اڑ رہے تھے اور دو نقشے فراہم کیے جس میں ہوائی جہاز کے دو مختلف راستے دکھائے گئے تھے (ان میں سے ایک "ناممکن" موڑ والا تھا۔ اور پینتریبازی)۔ [203][147]

ایس -400 اینٹی ائیرکرافٹ میزائل سسٹم ("ہیمیئم" ایئر بیس ، شامی عرب جمہوریہ) کو اتار رہا ہے

روس اور ترکی کے مابین روس کے فوجی طیاروں کے ذریعہ ترک فضائی حدود کی بار بار خلاف ورزی کی اطلاع پر اس واقعے کے نتیجے میں [204] (جس میں سے ایک روس نے اعتراف کیا   اور ترک وزیر اعظم کا 17 اکتوبر کا یہ بیان کہ ترکی اپنی فضائی حدود کی خلاف ورزی کرنے والے ہوائی جہازوں کو گولی مار کرنے میں دریغ نہیں کرے گا۔ [205] [206][147]

مشرقی بحیرہ روم میں فضائی دفاعی احاطہ فراہم کرنے والے روسی بحریہ کے ٹاسک گروپ کے ایک حصے کے طور پر کام کرنے والا کروزر ماسکووا ۔ جنوری 2016

روس نے جواب میں اعلان کیا کہ وہ علاقے میں فضائی دفاع کے اضافی ہتھیاروں کو تعینات کرے گا اور لڑاکا طیاروں کے ساتھ اپنے بمبار طیاروں کے ساتھ ہوگا۔ [207] 26 نومبر 2015 کو ، روس کے سرکاری نیوز میڈیا [115] سے لتاکیہ اور کروزر موسکوا میں سوار ایس -300 اور S-400 اینٹی ایرکرافٹ سسٹم کی تعیناتی کی اطلاع دی گئی۔ [208] اسی وقت ، روس نے اعلان کیا کہ وہ مزید جیٹ جنگجوؤں اور ایک نئی روسی جنگی برگیڈ کو شام کے سرکاری فوجوں کی داعش کے خلاف جاری کارروائی میں مدد فراہم کرنے کے لئے ایک بار حمص میں شیرات ایئربیس پر تعینات کرنے کی تیاری کر رہا ہے۔ [209][147]

29 نومبر 2015 کو ، روسی طیارے پر شام کے صوبہ ادلیب میں اہداف پر حملہ کرنے کی اطلاع ملی تھی ، بشمول اریحہ قصبہ جسے 6 ماہ قبل ہی فتح القدس کی فوج نے قبضہ کر لیا تھا ، جس سے زمین پر متعدد ہلاکتیں ہوئیں۔ [210] [211] دوسرے اہداف کو نشانہ بنایا گیا ہے جس میں جسر الشغور میں ترکستان اسلامی پارٹی کا دفتر اور سرکیب قصبے میں احرار الشام گروپ کا ایک امدادی دفتر بھی شامل ہے۔ [147]

دسمبر 2015 - فروری 2016[ترمیم]

یکم دسمبر 2015 کو ، ٹائمز نے مقامی ذرائع اور نیوز میڈیا کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ روس شام میں حمص شہر کے قریب الشعیر ایئر بیس کھول کر شام میں اپنی فوجی کارروائیوں کو بڑھانے کی تیاری کر رہا ہے ، جو پہلے ہی روسی حملہ ہیلی کاپٹروں اور ایک ٹیم کے گھر ہے۔ قریب ایک مہینہ پہلے ہی پہنچا تھا۔ [212] [213][147]

8 دسمبر کو روسی وزیر دفاع نے اعلان کیا ہے کہ ایک کلو کلاس آبدوز ، نے روستوف آن ڈان، کا آغاز کیا تھا 3M14K کروز میزائل میں آئی ایس آئی ایل کے اہداف کے خلاف، ڈوب جبکہ الرقہ گورنر ، بحیرہ روم سے پہلے اس طرح کی ہڑتال. [214] انہوں نے صدر کو یہ بھی اطلاع دی کہ پوتن کے حکم کے مطابق ، 5 دسمبر سے روسی فوج نے شام میں فضائی حملوں میں شدت پیدا کردی تھی: بتایا گیا ہے کہ 3 دن کے دوران ، روسی طیارے ، جن میں ٹو 22 ایم 3 اسٹریٹجک بمبار شامل ہیں ، نے 300 سے زائد سورجیاں انجام دے رکھی ہیں۔ مختلف اقسام کے 600 اہداف سے زیادہ مشغول رہنا۔ [215][147]

11 دسمبر کو ، وزارت دفاع میں ایک ٹیلیویژن اجلاس میں ولادیمیر پوتن نے شام میں فوج کو کسی بھی دھمکی آمیز اہداف کو ختم کرنے کا حکم دیا: "میں آپ کو ہر ممکن حد تک سخت گیر کارروائی کا حکم دیتا ہوں۔ کوئی بھی ہدف جو روسی فوجی گروہ بندی یا زمینی انفراسٹرکچر کے لئے خطرہ بنتا ہے اسے فوری طور پر ختم کرنا ہے۔ " [216] انہوں نے یہ تجویز بھی پیش کیا کہ روسی فوج اب حکومت مخالف آزاد شام کی فوج کی مدد کر رہی ہے۔ تاہم ، بعد میں کریملن کے ترجمان نے کہا کہ روس صرف "شامی عرب جمہوریہ کے جائز حکام" کو ہتھیار فراہم کررہا ہے۔ [217][147]

دسمبر 2015 میں روسی فضائی دفاع کی بیٹری۔ پینٹاسر- S1 قریب فاصلاتی دفاعی نظام اور لاتاکیا میں ایس 400 فاصلے تک پرواز کرنے والے میزائلوں کے لئے دو لانچ گاڑیاں۔

16 دسمبر کو ، روس کے وزیر دفاع سیرگی شوگو نے بند دروازوں کے پیچھے ریاستی ڈوما کے ممبروں سے گفتگو کرتے ہوئے ، روسی افواج کے شام میں " فرات تک پہنچنے" کے ایک ممکنہ آپشن کا ذکر کیا۔ [218][147]

19 دسمبر کو ، روسی صدر پوتن نے شام میں روسی مسلح افواج کی کارکردگی کی تعریف کی۔ انہوں نے کہا کہ "اب تک ہماری تمام تر صلاحیتیں استعمال نہیں ہوسکیں ہیں" اور اگر ضروری سمجھا گیا تو "مزید فوجی ذرائع" وہاں ملازمت اختیار کر سکتے ہیں "۔ [219] [220][147]

21 دسمبر کو ، اس سال کی سب سے طویل یلغار کے بعد جب سے روسی افواج ستمبر میں شامل ہوئیں تو اس نے اہم فوائد حاصل کیے جن میں داعش سے اسٹریٹجک خاناسر – اتھیریا ہائی وے پر قبضہ کرنا اور الحدیر اور خان تمن کے مرکزی باغی گڑھوں پر قبضہ کرنا بھی شامل ہے۔ حلب – دمشق شاہراہ اور ان کو جنوبی حلب کے دیہی علاقوں کے تین چوتھائی حصے کے کنٹرول میں چھوڑ دیتے ہیں۔ [221] [222] [223] روسی فوج کے بھاری فضائی حملوں نے شامی فوج کی رفتار کو آسان بنایا جس نے جی آر یو کے روسی خصوصی دستوں کو پہلی بار فوجی مشیر کے طور پر بھی تعینات کرتے ہوئے دیکھا کہ وہ داعش اور باغیوں اور ان کے متعلقہ اتحادیوں دونوں کے خلاف اہم اور مؤثر ثابت ہوئے۔

25 دسمبر 2015 کو ، روسی مسلح افواج کے جنرل اسٹاف کے مین آپریشنل ڈائریکٹوریٹ کے چیف لیفٹیننٹ جنرل۔ سیرگی روڈسکائے نے کہا کہ 30 ستمبر 2015 سے روسی فضائیہ نے شام میں 5،240 پروازیں کیں جن میں لمبی دوری کی ہوابازی کے ذریعہ 145 سورجیاں شامل ہیں۔ [224] [225] 27 دسمبر 2015 کو ، روسی ایرو اسپیس فورس کے چیف کمانڈر کرنل۔ جنرل وکٹر بونڈاریف نے بتایا کہ روسی پائلٹوں نے کبھی شام میں شہری اہداف پر حملہ نہیں کیا تھا۔ [226] [227][147]

30 دسمبر 2015 کو ، بھاری لڑائی کی اطلاع ملی جب روسی فضائی حملوں کی حمایت میں شامی سرکاری فوجیں الشیخ مسکن کے جنوبی شہر میں داخل ہوئیں ، جو الشیخ کی پہلی جنگ کے بعد سے باغی جنوبی محاذ کے زیر قبضہ تھا۔ دسمبر 2014 میں مسکین ۔ شام کی حکومت کا یہ جارحانہ آپریشن جو 28 دسمبر 2015 کو شروع ہوا تھا [228] اور جنوری 2016 کے آخر تک مکمل ہوا تھا روس کے اس لڑائی میں شامل ہونے کے بعد جنوبی شام میں حکومت کا یہ پہلا بڑا حملہ تھا۔ [229][147]

جنوری 2016 کے اوائل میں ، علاقائی سفارت کاروں نے ، جو ماسکو کو سنبھال چکے ہیں ، کو اردن اور اسرائیل کے ساتھ اپنے اثر و رسوخ کے دائرہ کار میں توسیع نہ کرنے کی تفہیم تھی ، شام کے جنوب میں روس کے بڑھتے ہوئے کردار سے حیرت زدہ ہونے کی اطلاع ہے۔ اسی طرح شام کے جنوبی محاذ کے اتحاد کے باغی بھی تھے جن کی افواج براہ راست ملٹری آپریشن کمانڈ کے ذریعہ فراہم کی گئیں ، ایک آپریشن روم جس میں عملہ عرب اور مغربی فوجی دستوں کا عملہ تھا ، جس میں امریکہ بھی شامل تھا۔ [230]

9 جنوری 2016 کو ، شامی آبزرویٹری برائے ہیومن رائٹس نے اطلاع دی ہے کہ شمال مغربی قصبے میرات النعمان میں روسی فضائی حملوں میں نصرہ فرنٹ کے 23 ارکان سمیت تقریبا 60 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ [231][147]

جنوری 2016 میں ، کروزر <i id="mwA48">وریاگ</i> کو ساتھی جہاز ماسکووا [232] کے ساتھ شام کے ساحل سے <i id="mwA48">تعین</i> کیا گیا تھا اور مشرقی بحیرہ روم میں تعینات روسی بحری ٹاسک فورس کا پرچم بردار نامزد کیا گیا تھا۔ [233][147]

14 جنوری 2016 کو ، روسی وزارت دفاع نے کہا کہ پہلا مشترکہ بمباری مشن روسی فضائیہ کے ایس یو 25 جنگجوؤں اور شامی فضائیہ کے میگ 29 طیاروں کے ذریعے انجام دیا گیا تھا۔ [234][147]

کہا جاتا ہے کہ 24 جنوری 2016 کو ، روس کے کردار کو حکومت کی گرفتاری میں ، مغربی صوبہ لتاکیا میں باغیوں کے زیر قبضہ آخری سب سے بڑا قصبہ رابعہ نامی قصبہ تھا۔ کہا جاتا ہے کہ رابعہ کی گرفتاری ، جو حکومت کی لٹاکیہ کارروائی کا حصہ ہے ، کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ ترکی سے باغی سپلائی لائنوں کا خطرہ ہے۔ [235][147]

ہمیم ایئر بیس پر روسی ملٹیروول لڑاکا ایس یو 30۔

پہلی مرتبہ جنوری 2016، روس، کے اختتام، چار تعینات ہیں میں ایس یو 35ایس لڑاکا طیاروں، شاید خیبینی الیکٹرانک اقدامات (ECM) سے لیس سسٹم، خمیمیم بیس پر؛ یکم فروری کو روسی وزارت دفاع نے کہا کہ طیارے نے شام میں مشنوں کا آغاز کرنا شروع کردیا تھا۔ [147]

یکم فروری کو ایک روسی فوجی مشیر شام کے ایک اسپتال میں شدید زخموں کے بعد انتقال کر گیا جب صوبہ حمص میں شامی فوج کے ایک تربیتی مرکز پر گولہ باری کی گئی۔ [236][147]

روسی فوج دیر ایزور میں لینڈنگ کے لئے انسانی امداد کے ساتھ پیراشوٹ پلیٹ فارم پی 7 تیار کررہی ہے۔

یکم فروری کو اقوام متحدہ میں ثالث جنیوا شام امن مذاکرات کے باضابطہ آغاز کے فورا بعد ، روسی وزیر خارجہ سیرگئی لاوروف نے کہا کہ جب تک "جبہت النصرہ اور داعش" جیسی دہشت گرد تنظیموں کو واقعتا شکست نہیں ملتی روس اپنے فضائی حملے بند نہیں کرے گا۔ [237]

فروری کے اوائل میں ، شدید روسی ہڑتالوں نے شام کی فوج اور اس کے اتحادیوں کی کامیابی میں اہم کردار ادا کیا حلب کے شمال مغرب میں جارحانہ آپریشن جس نے ترکی کو باغیوں کی فراہمی کا ایک بڑا راستہ منقطع کردیا۔ [238][147]

مارچ 2016 – وسط اکتوبر 2016[ترمیم]

روسی طیارے نے جون 2016 میں شمالی حلب میں فائر بموں کی بوچھاڑ کردی۔

یکم مارچ 2016 کو ، روسی وزیر خارجہ سیرگئی لاوروف نے کہا کہ اس صلح کو باضابطہ طور پر " دشمنیوں کا خاتمہ " کہا جاتا ہے ، جو 27 فروری 2016 سے 00:00 بجے (دمشق کے وقت) سے نافذ العمل تھا ، [239] زیادہ تر مستحکم اور مضبوط تر تھا۔ یکم مارچ 2016 کی سرکاری سطح پر چلنے والی آر آئی اے نووستی کی رپورٹ کے مطابق ، روسی خیمیم اڈے پر تمام طیارے چار دن کے لئے گرا .نڈ کیے گئے تھے۔ [147]

یکم مارچ کو ، روسی وزارت دفاع نے کہا کہ اس نے خیمیم اڈے پر اضافی ریڈارز اور ڈرونز تعینات کردیئے ہیں: نگرانی کے سامان کے تین سیٹ جن میں ڈرون اور دو ریڈار اسٹیشن شامل تھے۔ [147]

14 مارچ 2016 کو ، روسی صدر ولادیمیر پوتن نے اعلان کیا کہ انہوں نے شام میں روسی فوج کے لئے جو مشن طے کیا تھا ، وہ "مکمل طور پر" تھا اور روسی افواج کے "مرکزی حصے" کو شام سے دستبردار کرنے کا حکم دیا تھا۔ اس اقدام کا اعلان اس روز کیا گیا جب جنیوا میں شام سے متعلق امن مذاکرات دوبارہ شروع ہوئے۔ تاہم ، روسی رہنما نے انخلا کی تکمیل کے لئے کوئی ڈیڈ لائن نہیں دی۔ [240] انہوں نے یہ بھی کہا کہ شام میں روسی فوجی اڈوں ( ترتنس میں بحری اڈے اور خیمیم میں ائیر بیس ) "معمول کے انداز" میں کام جاری رکھیں گے ، کیونکہ وہاں موجود روسی فوجی دستہ سیز فائر حکومت کی نگرانی میں مصروف رہے گا۔ [241][147]

وسط مارچ 2016 میں روسی افواج کی طرف سے انتہائی کارروائیوں شامی حکومت کی حمایت کرنے کا سلسلہ دوبارہ شروع دوبارہ گرفتاری کے لئے بولی کے شہر مقام تدمر بھی شامل ہے کہ یونیسکو کے عالمی ثقافتی ورثہ سائٹ کے تدمر ، [242] [243] مکمل طور پر آئی ایس آئی ایس کی جانب سے دوبارہ گرفتار کر لیا گیا تھا جس میں 27 مارچ۔ اس شہر پر دوبارہ قبضے کے بعد ، روسی ڈی کان کنی ٹیمیں پالمیرا کے قدیم مقام پر داعش کے ذریعہ نصب بارودی سرنگوں کی صفائی میں مصروف تھیں۔ [244][147]

مئی 2016 کے اوائل میں ، خبر رساں میڈیا نے اطلاع دی کہ روسی زمینی فوج نے تدمور شہر کے مغرب میں جین کے انفارمیشن گروپ کو "فارورڈ آپریٹنگ اڈہ" (سرکاری طور پر کان کنی عملے کے لئے ایک اڈہ) کہا تھا ، اور ایک ایئر- سائٹ کی حفاظت کے لئے دفاعی نظام. [245] [246][147]

مئی 2016 کے وسط میں ، اسٹراٹفور نے اطلاع دی کہ روسی ہوائی اڈے پر حملہ کیا گیا اور چار روسی حملہ آور ہیلی کاپٹر ، 20 سپلائی کرنے والے ٹرک اور ایک شامی مگ 25 تباہ ہوگیا۔ [247] تاہم ، امریکہ کے ذرائع ابلاغ نے انٹیلیجنس کمیونٹی کے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ یقین ہے کہ تباہی ایندھن کے ٹینک کے حادثاتی دھماکے کی وجہ سے ہوئی ہے ، کہ اسٹراٹفور تجزیہ غلط تھا اور ہوائی اڈے پر داعش کے حملے کے کوئی اشارے نہیں ملے۔ [248][147]

8 جولائی 2016 کو ، ایک شامی [249] ایم آئی 25 (ایک روسی ایم آئی -35 ، دوسرے غیر سرکاری فوجی ذرائع کے مطابق [250] ) کو ریاستہائے متحدہ میں تیار کردہ بی جی ایم 71 ٹو [251] مشرق سے زمین پر تباہ کردیا گیا۔ پالمیرا نے دو روسی پائلٹوں کے ساتھ ہلاک ہونے کی تصدیق کی ہے۔ [252] کچھ ہی دن بعد ، روس نے اعلان کیا کہ اس نے پہلی بار جزوی جنگ بندی کے نافذ ہونے کے بعد ، پاممیرا اور السکناہ شہروں کے مشرق میں واقع دہشت گردوں کے ٹھکانوں پر فضائی حملے کرنے کے لئے ، اور اراک گاؤں کو ٹی ٹو 22 ایم 3 بمباروں کو ملازم رکھنے کا اعلان کیا تھا۔ .[حوالہ درکار] [147] [ حوالہ کی ضرورت ] یکم اگست 2016 کو ، ایک روسی ایم ای 8 اے ایم ایس ایس ٹرانسپورٹ ہیلی کاپٹر کو خمیم اڈے پر واپس جاتے ہوئے ایک انسانی ہمدردی مشن سے حلب جارہا تھا جب صوبہ ادلیب میں جبہت فتح الشام - قابو شدہ علاقے میں زمینی آگ لگنے سے وہ گولی مار دی گئی۔ شام کے لئے روسی مفاہمت کے مرکز کے عملے کے تین ارکان اور دو افسران کو کچلنے میں ہلاک کیا گیا ، تب ان کے لاشوں کی بے حرمتی کی گئی تھی جب باغی جائے وقوع پر پہنچے تھے۔ [253][147]

16 اگست 2016 کو ، روسی ٹو 22 ایم بمباروں اور ایس یو 34 ہڑتال کے جنگجوؤں نے شام پر چھاپے مارنے کے لئے ایران کے حمادان ایئربیس کا استعمال شروع کیا۔ [254] [255][147]

ایک مدت کے لئے ، جون کے آخر سے لے کر 11 ستمبر کو سمر حلب مہم کے اختتام تک ، روسی ایرو اسپیس فورسز اور روسی بحری پیادہ فوج کے مشیر مہم کے دوران باغیوں اور ان کے اتحادیوں کے خلاف مختلف لڑائیوں میں بہت زیادہ شریک رہے۔ [256][147]

روس کی فضائیہ نے ستمبر 2016 کے آخر میں شروع ہونے والی شام کی حکومت کی جانب سے دوبارہ تازہ کردہ حلب حملے میں سرگرم حصہ لیا تھا ، اس کا ایک نتیجہ اکتوبر کے اوائل میں امریکی حکومت کا روس کے ساتھ شام پر ہونے والے مذاکرات کو معطل کرنا تھا۔ [257] اس جارحیت میں روسی ہتھکنڈوں اور ہتھیاروں کا موازنہ چیچن علیحدگی پسندوں کے خلاف گروزنی میں استعمال ہونے والوں سے کیا گیا ہے ۔ امریکی حکومت نے سرعام بیان دیا کہ روس شام میں بین الاقوامی قانون کی صریح خلاف ورزیوں کا مرتکب ہورہا ہے اور جنگی جرائم کی تحقیقات پر زور دیا ہے۔ [258][147]

وسط اکتوبر 2016 – دسمبر 2016[ترمیم]

ایڈمرل کوزنیٹوسوف 15 اکتوبر 2016 کو بحیرہ روم کے لئے روانہ ہوئے تھے

اکتوبر 2016 پر 15، طیارہ بردار جہاز ایڈمیرل کوزنیتسوف کولا خلیج سے ایک ٹاسک گروپ کے مرکز میں روانہ ہوا ، جس میں کیرووف کلاس میزائل کروزر پیوٹر ویلیکی ، ، جو اڈالائے کلاس تباہ کنندگان اور دیگر جہاز بھی شامل تھے ، بحیرہ روم میں تعینات تھا۔ شام میں کام کرنے والی روسی افواج کی مدد۔[259] [260] 8 نومبر کو ایڈمرل کوزنٹسو کے جیٹ طیارے شام کے ساحل سے اڑان بھرنے ' اطلاع ملی تھی۔ [261] 14 نومبر کو ، ایک مگ 29 کے شام کے بارے میں منصوبہ بند مشن کے بعد کیریئر کے راستے میں گر کر تباہ ہوگیا ،[حوالہ درکار] جب ایس یو 33 کریش ہوا تو پھر 5 دسمبر کو ایک سارٹی کے بعد ایڈمرل کوزنٹسف سے بازیاب ہونے کی کوشش کرتے ہوئے۔ [262][147]

17 نومبر 2016 کو ، روسی وزارت دفاع نے کہا کہ ایس یو 33 کے ذریعہ فائر کیے گئے روسی حملوں میں القاعدہ کے شام سے وابستہ تین "معروف" کمانڈر ، جنھیں سابق النصرہ فرنٹ کے نام سے جانا جاتا تھا ، مارا گیا تھا۔ ادلیب صوبے میں ایڈمرل کوزنٹسف پر مبنی لڑاکا طیارے۔   دیگر بحری جہازوں کے ساتھ ساتھ کے طور پر K-300P بیشن-P کے علاوہ، ایک تجدید بمباری کی مہم میں حصہ لیا ہے کو رپورٹ کیا گیا [86] کے بعد 18 اکتوبر کو چھاپوں میں ایک جزوی وقفے کے بعد. [263]

نومبر کے آخر میں ، سیٹلائٹ کی تصاویر سامنے آئیں جس میں ایڈمرل کوزنیٹوسوف کے لٹکیا میں ہمیم ائیر بیس سے چلنے والے متعدد فکسڈ ونگ طیارے دکھائے گئے تھے ، جن میں یہ تجویز پیش کی گئی تھی کہ روسی وزارت دفاع کی تجویز کے مطابق ، کیریئر سے اڑائے جانے والے افراد کی تعداد کم ہے۔ جہاز کی گرفتاری کیبلوں میں آنے والی پریشانیوں کو مگ 29 کے حادثے کی وجہ کا ایک حصہ قرار دیا گیا تھا ، جو جہاز کے انجن میں خرابی کا شکار ہونے پر چکر لگا رہا تھا۔ اسی وقت ، ڈچ فرگیٹ ایچ این ایل ایم ایس ڈی روئٹر نے ایک تصویر جاری کی جس میں نانوکا کے طبقے کے کاروےٹ میرج کو بحیرہ اسود کو واپس باندھ کر دکھایا گیا ہے۔ [264] اسی وقت ، ڈچ فرگیٹ ایچ این ایل ایم ایس ڈی روئٹر نے ایک تصویر جاری کی جس میں نانوکا کلاس کے کورویٹ میراج کو بحیرہ اسود سے واپس باندھ کر لیجاتا دکھایا گیا ہے۔ [265]

دسمبر 2016 کے وسط تک شامی حکومت نے روس سمیت اپنے اتحادیوں کی مدد سے حلب پر دوبارہ کنٹرول قائم کرلیا ۔ [266]

جنوری 2017 – جون 2017[ترمیم]

یکم جنوری 2017 کو ، روسی اور ترکی کے جنگی طیاروں نے الباب کی لڑائی کے ایک حصے کے طور پر ، داعش کے خلاف مشترکہ فضائی حملے کیے۔ [11]

6 جنوری کو ، روسی وزارت دفاع نے ، ماسکو / انقرہ سے متعلق جنگ بندی کے حوالے سے 30 دسمبر 2016 کو موثر انداز میں ، صدر پوتن کے فیصلے کے نتیجے میں ، شام سے اپنی افواج کا انخلا شروع کرنے کا اعلان کیا۔ اس علاقے سے علیحدہ ہونے والے پہلے عنصر کو ایڈمرل کوزنٹسف جنگ گروپ ہونے کا اعلان کیا گیا تھا۔ [267] [268] [269] تاہم ، پانچ دن بعد ، فاکس نیوز کی رپورٹ میں ″ دو امریکی عہدے داروں کے حوالے سے بتایا گیا کہ روس نے اضافی حملہ طیارے شام میں اپنے ایر بیس پر تعینات کیا تھا ، یعنی چار ایس-25 جیٹ طیارے 9 جنوری کو پہنچے تھے۔ [147]

13 جنوری کو ، شامی عرب فوج نے پلمیرا اور اس کے آس پاس کے علاقوں کو دوبارہ حاصل کرنے کے مقصد کے ساتھ ، مشرقی حمص گورنری میں داعش کے خلاف کارروائی کا آغاز کیا۔ اچانک جوابی کارروائی میں داعش فورسز نے شہر کو واپس لے لیا تھا۔ 2 مارچ 2017 کو ، پالمیرا شہر کو روسی فضائی حملوں اور اسپیشل آپریشن فورسز کی مدد سے پکڑا گیا ، جنرل اسٹاف کے آپریشنز ڈپارٹمنٹ کے چیف سیرگئی روڈسکوئی کے مطابق۔ [270] 5 مارچ کو ، ایک بالکل نیا حملہ شروع کیا گیا جس نے شہر کے ارد گرد 230 مربع میل سے زیادہ کا رقبہ پالمیرا کے آس پاس بفر زون کو وسعت دینے کی غرض سے حاصل کیا۔[147]

20 مارچ کو ، یہ اطلاع ملی تھی کہ روس نے دہشت گردی سے نمٹنے کے لئے وائی پی جی یونٹوں کو تربیت دینے کے لئے آفرین چھاؤنی میں ایک تربیتی اڈہ قائم کیا تھا ، تاہم یہ اڈہ کہاں قائم کیا گیا تھا اس بارے میں متضاد اطلاعات موصول ہوئیں ، رائٹرز کے مطابق یہ اطلاع دی جارہی ہے کہ یہ جندیرس میں ہے اور حکومت المسدر نیوز نے اسے کافر جناح گاؤں میں تلاش کیا۔ مختلف اوقات میں ، افرین اسلام پسند باغی گروپوں [271] کے ساتھ ساتھ ترکی کے ذریعہ توپ خانے سے گولہ باری کا نشانہ تھا۔ [272] [273] [274] جواب میں ، روسی فوجیوں نے مبینہ طور پر YPG کو مزید ترک حملوں سے محفوظ رکھنے کے معاہدے کے تحت عفرین میں خود کو کھڑا کیا۔ [147]

روس نے جنوری اور فروری میں شام میں اپنے فضائی حملوں کی جانچ پڑتال کی ، تاکہ شام اور عراق میں امریکی زیر قیادت اتحاد کے فضائی حملوں کی وجہ سے پہلی بار ہلاکتوں نے شام میں روسی حملوں میں ہلاکتوں سے تجاوز کرنا شروع کیا۔ تاہم ، مارچ 2017 میں ہڑتالوں میں اضافہ ہوا ، 114 واقعات میں 165-292 کے ساتھ غیر جنگجوؤں کی ہلاکت کی اطلاع دی گئی ، بنیادی طور پر صوبہ ادلیب ، ہاما اور دمشق کے مشرقی مضافاتی علاقوں میں۔ [275][147]

18 جون 2017 کو صوبہ رقہ کے قصبہ تبقاہ کے قریب امریکی لڑاکا طیارے کے ذریعہ شامی حکومت کے ایس -22 طیارے کے نیچے گرنے کے جواب میں ، روس نے اعلان کیا تھا کہ امریکی زیر قیادت اتحادی جنگی طیارے فرات کے مغرب میں اڑنے والے روسی طیارے کا سراغ لگائیں گے۔ - آسمان اور زمین پر ہوائی جہاز کی افواج اور اہداف کی حیثیت سے۔ مزید برآں ، روسی فوج نے کہا کہ انہوں نے اپنے عید الید میں مقیم امریکی ہم منصبوں کے ساتھ ہاٹ لائن معطل کردی۔ [276] [277] اس اعلان کے بعد آسٹریلیا نے شام میں اپنی فوجی پروازیں معطل کردی تھیں ، جبکہ میڈیا رپورٹس میں کہا گیا ہے کہ امریکہ شام میں روس اور ایران کے ساتھ بھر پور تصادم کی طرف بڑھ رہا ہے۔ [278] بہر حال ، 27 جون 2017 کو ، امریکی وزیر دفاع جِم میٹیس نے پریس کو یقین دلایا: ″ ہم روسیوں سے فیصلہ سازی نہیں کرتے ہیں۔ یہ ایک بہت ہی فعال ڈیکونفلیکشن لائن ہے. ماسکو میں جوائنٹ چیفس کے چیئرمین اور سکریٹری آف اسٹیٹ اپنے ہم منصبوں ، جنرل گیریسموف اور وزیر لاوروف سے کئی سطحوں پر ہیں۔ اس کے بعد ہمارے پاس تین اسٹار ڈیک فلنکشن لائن ہے جو جوائنٹس چیف آف اسٹاف سے باہر ہے ، وہاں کے جے 5 سے باہر ہے۔ اس کے بعد ہمارے پاس میدان جنگ میں فیصلہ کن لائنیں ہیں۔ ان میں سے ایک پھر تھری اسٹار ہے ، جو بغداد میں ہمارے فیلڈ کمانڈر سے ہے ، اور ان میں سے ایک ریئل ٹائم ڈیککشن کے لئے ہمارے مشترکہ فضائی آپریشن سینٹر ، ہمارے سی او سی سے ہے۔ ″ [279][147]

جولائی 2017 – دسمبر 2017[ترمیم]

24 جولائی کو ، روسی فوج نے اعلان کیا کہ روس نے چار محفوظ زونوں پر منصوبہ بندی میں جن دو منصوبوں پر غور کیا گیا تھا ، جنگ بندی کی نگرانی کے لئے شام میں فوجی پولیس کی تعیناتی شروع کردی ہے ، جن پر عارضی طور پر اتفاق کیا گیا تھا۔ مئی میں روس ، ایران اور ترکی ، [280] [281] اور روس ، امریکہ ، اور اردن نے جولائی کے اوائل میں نقشہ سازی کی تھی: [282] جنوب مغربی شام اور مشرقی غوطہ میں محفوظ مقامات کے آس پاس چوکیوں اور نگرانی کی پوسٹوں کو بتایا گیا تھا۔ قائم کیا گیا ہے۔ [283] حمص شہر کے شمال میں ، اگست کے شروع میں اسی طرح کی ایک اور تعیناتی عمل میں آئی۔ [284][147]

اگست 2017 میں ، روسی فوج نے اعلان کیا تھا کہ السکناہ قصبہ اگست کے اوائل میں روسی ایرواسپیس فورسز کی حمایت سے داعش سے پکڑا گیا تھا۔ روسی ہوابازی نے بتایا کہ انہوں نے شام میں آپریشن کے دوران 28،000 جنگی مشن ، اور اگست 2017 کے آخر تک تقریبا 90،000 حملے کیے تھے۔ [285] [286][147]

5 ستمبر 2017 کو ، روسی وزارت دفاع نے کہا کہ دیر ایزور کے تین سالہ محاصرے کو توڑنا روسی ہوا بازی اور بحریہ کی فعال شرکت سے متاثر ہوا ہے۔ [287] [288] صدر پوتن نے صدر بشار اسد اور روسی کمانڈروں دونوں کو "ایک انتہائی اہم اسٹریٹجک فتح" (اپنے ترجمان کے الفاظ میں) پر مبارکباد پیش کی۔ [289] [290] روسی فوجیوں کے ذریعہ اس شہر کے سرکاری حامی باشندوں کو انسانیت سوز امداد کی فراہمی کی گئی۔ [291] روسی ہوابازی نے دیر الزور میں سرگرم شامی افواج کی فعال حمایت جاری رکھی۔ [292][147]

روسی فوج نے 12 ستمبر کو کہا کہ شام کا 85 فیصد علاقہ غیر قانونی مسلح تنظیموں سے آزاد ہوچکا ہے اور یہ کارروائی جاری رہے گی۔ [293][147]

16 ستمبر کو ، امریکی زیرقیادت اتحادی عہدیداروں نے بتایا کہ روسی جنگی طیاروں نے دیر ایزور میں امریکی حمایت یافتہ عسکریت پسندوں پر بمباری کی ہے ، امریکی اسپیشل آپریشن فورسز نے ایس ڈی ایف کو "زیادہ سے زیادہ ایک دو میل" کے فاصلے پر آنے کا مشورہ دیا جہاں سے یہ بم پھٹا تھا۔ روسی وزارت دفاع نے اس بیان کی تردید کی تھی۔ [294] [295] [296][147]

روسی وزارت دفاع کے مطابق ، ملٹری پولیس پلاٹون (29 فوجی جوان) 19 ستمبر کو ادلیب ڈی ایسکلیشن زون میں ڈی اسکیلریشن آبزرویشن فورس کے حصے کے طور پر تعینات تھی ، جس کے نتیجے میں جبہت النصرہ بھی شامل تھا ، باغیوں نے گھیر لیا تھا۔ شام کے فوجیوں کے خلاف ان کی جارحیت حما کے شمال اور شمال مشرق میں واقع ہے۔ اس گھیراؤ کی خلاف ورزی روسی فورسز نے ایک خصوصی آپریشن میں کی تھی جس کے نتیجے میں روسی اسپیشل آپریشن فورسز کے تین فوجی زخمی ہوگئے تھے۔ روسی وزارت نے بتایا کہ ان کی ذہانت کے مطابق ، باغیوں کی کارروائی امریکی خصوصی ایجنسیوں کے ذریعہ دائر ایزور سے مشرق میں شامی عرب فوج کی کامیابی سے روکنے کے لئے کی گئی تھی۔ [297] [298] [299] باغیوں میں امریکی کردار کے بارے میں روسی وزارت کے بیان کے اگلے ہی دن صدر ولادیمیر پوتن کے ترجمان کی توثیق ہوئی۔ [300] [301] 21 ستمبر کو ، روسی وزارت دفاع ، جس نے اس کو امریکی حمایت یافتہ ایس ڈی ایف کے نام سے منسوب کیا تھا ، اس نے دیر الزور گورنری میں دو بار شامی فوج کے ٹھکانوں پر مارٹر اور راکٹ فائر سے حملہ کیا تھا ، نے کہا: "روس نے امریکی صدر کے کمانڈروں کو غیر واضح طور پر بتایا العید ائیر بیس (قطر) میں فورسز کا کہنا ہے کہ وہ ان علاقوں سے کوئی بھی گولہ باری برداشت نہیں کرے گی جہاں ایس ڈی ایف تعینات ہے۔ علاقوں میں پوزیشنوں سے ہونے والی آگ [SDF کے زیر کنٹرول] ہر طرح سے دبے رہیں گے۔ " [302] اکتوبر کے اوائل میں ، روسی وزارت دفاع نے یہ بیان جاری رکھا کہ امریکی افواج شام کے سرکاری دستوں بالخصوص ال تنف کے علاقے سے ، داعش کے حملوں کی بھیس میں حمایت کررہی ہیں اور کہا ہے: "اگر امریکہ اس طرح کی کارروائیوں کو غیر متوقع سمجھے ۔ 'اتفاق ،' پھر شام میں روسی فضائیہ اپنے کنٹرول والے زون میں ایسے 'اتفاق' کی مکمل تباہی شروع کرنے کے لئے تیار ہے۔ " [303] [304] وزارت دفاع کے 6 اکتوبر کے بیان میں "[التف] فوجی اڈے کے امریکہ کی طرف سے غیر قانونی اسٹیبلشمنٹ" کا حوالہ دیا گیا تھا اور اس نے شام - اردن کی سرحد پر ایک 100 کلو میٹر طویل بلیک ہول قرار دیا تھا۔ [305] [306][147]

گیارہ دسمبر کو ، شام سے داعش سے "مکمل طور پر آزاد" ہونے کے اعلان کے کچھ دن بعد اور اس کے آخری دنوں میں فرات کے مغربی کنارے کو آزاد کرانے کی مہم کے ساتھ ہی ، روسی صدر ولادیمیر پوتن نے شام میں روسی اڈے کا دورہ کیا ، جہاں انہوں نے اعلان کیا تھا کہ شام میں تعینات فورسز کا جزوی انخلا۔ [307] [308] [309] کئی گھنٹوں کے بعد ، سرگئی شوئیگو نے کہا کہ فوجیوں نے واپسی شروع کردی ہے۔ [310][147]

26 دسمبر کو ، وزیر دفاع سیرگی شوگو نے کہا کہ صدر پوتن کے ذریعہ ترتس اور حمیم اڈوں کی ساخت اور اہلکاروں کی طاقت کی منظوری کے بعد ، روس نے ترتس بحری مرکز اور حیمیم ایئربیس پر "مستقل گروپ بندی" کے بارے میں کہا تھا۔ [311] اسی دن پارلیمنٹ کے ایوان بالا نے روس اور شام کے درمیان طرطوس بحری سہولت میں توسیع کے معاہدے کی توثیق کی منظوری دی ، جس کے تحت اس کو ایک مکمل بحری اڈے میں تبدیل کرنے کا تصور کیا گیا ہے۔ [312][147]

جنوری 2018 – اگست 2018[ترمیم]

جنوری — فروری 2018 میں ، روسی فضائیہ نے شامی فوج کو حما گورنری اور ادلیب گورنری میں اپنے جارحانہ کارروائیوں میں جنگی مدد فراہم کی۔ شام میں تعینات روسی فوجوں نے 3 فروری 2018 کو صوبہ ادلیب میں ایس یو 25 ایس ایم [313] محروم کردیا ۔[147]

7 فروری 2018 کو پیش آنے والے دیر الزور گورنریٹ میں واقع خشم شہر کے قریب حکومت کی حامی افواج پر امریکی فضائی اور توپ خانے کی ہڑتال میں متعدد روسی نجی نجی ٹھیکیدار کی ہلاکتوں کے بارے میں اطلاعات کے بعد ، شام میں تعینات باقاعدہ روسی افواج کی دستے کو ظاہر ہوا اس پر مزید تقویت ملی ہے ، [102] [314] اگرچہ ہڑتال کے متعدد گواہوں نے ان اطلاعات کو جھوٹ قرار دیا اور روسی باڑے میں شرکت کی تصدیق نہیں کی۔ [315] یعنی ، فروری کے وسط میں ، شام کے خیمیم ہوائی اڈے پر متعدد روسی تازہ ترین پانچویں نسل کا سکھوئ ایس یو 57 لڑاکا طیارہ تعینات کیا گیا تھا۔ اس تعیناتی کی تشریح مبصرین نے پانچویں نسل کے لاک ہیڈ مارٹن ایف 22 رپیٹر کی تعیناتی کے ممکنہ ردعمل کے طور پر کی تھی ، جس نے 7 فروری کی ہڑتال میں حصہ لیا تھا۔ [316] [317] [100][147]

جون اور جولائی 2018 میں ، روسی افواج نے جنوبی شام کے جارحیت کے کامیاب نفاذ میں شامی فوج کی فعال طور پر حمایت کی ، جس کے نتیجے میں شارع حکومت کا درعا اور قینیطرا صوبوں پر مکمل کنٹرول حاصل ہوا۔ [318] [319] اگست میں ، روس نے گولین کی پہاڑیوں میں اقوام متحدہ کے زیر انتظام گشت تباہ کن زون کے ساتھ ساتھ ، قینیطرا میں مشاہداتی چوکیاں قائم کرنا شروع کیں۔ اس طرح کے آٹھ روسی عہدوں کے منصوبوں کا اعلان کیا گیا تھا۔ [320] اگست کے وسط تک ، براوو لائن کے ساتھ پولیس کے زیر انتظام چار ایسی چوکیاں قائم کردی گئیں۔ [321] [322] [323][147]

اگست کے آخر میں ، روسی میڈیا نے بتایا کہ روس مشرقی بحیرہ روم میں اب تک کی سب سے بڑی بحری گروہ بندی کر رہا ہے جس میں کروزر <i id="mwBUk">مارشل اوستینوف</i> اور تینوں ایڈمیرل گریگورووچ کلاس فریگیٹس سروس میں، جس میں جدید ترین <i id="mwBUw">ایڈمرل مکرونوف</i> شامل ہیں۔ [324] 29 اگست کو ماسکو میں سعودی عرب کے وزیر خارجہ عادل الجبیر کے ساتھ بات چیت کے بعد گفتگو کرتے ہوئے ، روس کے وزیر خارجہ نے ، ادلب کے باغی زیر قبضہ انکلیو کے حوالے سے کہا ، "[T] اس کے پھوڑے پھوڑے کو ختم کرنے کی ضرورت ہے۔ [325] [326] اضافی طور پر ، واشنگٹن ، ڈی سی میں روسی سفارت خانے نے ایک سفارتی اناطولی انتونوف کی شام کے خلاف ایک اور بلا اشتعال اور غیر قانونی جارحیت کے خلاف "ایک مرحلہ وار کیمیائی حملے کے بہانے" کے بارے میں امریکہ کو متنبہ کیا۔ [327] [328][147]

30 اگست کو ، روسی وزارت دفاع نے کہا کہ وہ مشرقی بحیرہ روم میں بڑے پیمانے پر مشقیں کرے گا جس میں 25 جہاز اور 30 طیارے شامل ہوں گے۔ یہ مشقیں یکم ستمبر سے 8 ستمبر تک ہوں گی اور یہ علاقہ دوسرے ممالک یعنی جہاز اور ہوائی جہاز کے لئے بند رہے گا۔ [329] یہ اعلان ادلیب صوبے میں شام کی حکومت کی موجودہ کارروائی کی اطلاعات اور امریکہ کی جانب سے متوقع فوجی رد عمل کی اطلاع کے درمیان کیا گیا ہے [330] [331][147]

ستمبر 2018 – مارچ 2019[ترمیم]

17 ستمبر 2018 ء کو، کے دوران ایک سے زیادہ میزائل حملوں مغربی شام میں اہداف پر اسرائیلی ایف 16 جیٹ طیاروں کی طرف سے روس کے ال-20 ELINT پر آرہے ٹوہی طیارے خمیمم ایئر بیس کے بورڈ پر 15 روسی فوجیوں کے ساتھ، نادانستہ طور پر ایک شامی طرف تنڈربولٹ گیا تھا S -200 سطح سے ایئر میزائل۔ اگلے روز روس کے وزیر دفاع نے اس حادثے کے لئے اسرائیلی فوج کو مورد الزام ٹھہرایا [332] [333] اور 23 ستمبر کو پیش کردہ ایک منٹ بہ منٹ کی ایک رپورٹ میں اپنے مؤقف کی تصدیق کی۔ [334] [335] 20 ستمبر کے اوائل میں ، روس کی سرکاری زیر انتظام خبر رساں ایجنسی نے بتایا کہ روس نے مشرقی بحیرہ روم کے متعدد علاقوں کو شام ، لبنان اور قبرص کے قریب "26 ستمبر تک" فضائی اور سمندری ٹریفک کے لئے بند رکھنے کا اعلان کیا تھا ، روسی بحریہ کی مشقوں کی وجہ سے۔ علاقے. [336] فائرنگ کے واقعے کے بعد ، 24 ستمبر کو وزیر دفاع سرگئی شوئیگو نے کہا کہ دو ہفتوں کے اندر شامی فوج کو شام کی جنگی دفاعی صلاحیتوں کو مستحکم کرنے کے لئے ایس -300 فضائی دفاعی میزائل نظام حاصل کیے جائیں گے۔ شام کے ساحل سے دور بحیرہ روم کے علاقوں میں ، دوسرے فوجی اقدامات کے سلسلے میں اعلان کیا گیا تھا کہ شام کے ساحل سے بحیرہ روم کے علاقوں میں ، "شام کے علاقے میں فوجیوں کے طیاروں پر حملہ کرنے والے طیاروں کے ذریعہ استعمال ہونے والے جہاز ، ریڈار اور مواصلاتی نظام" کے سیٹلائٹ نیویگیشن ، ریڈیو اور الیکٹرانک جیم جیسے ریڈیو الیکٹرانک جام۔ [337] [338] [339][147]

8 نومبر کو ، روسی ایم او ڈی کے مطابق ، روسی مفاہمت کے مرکز میں تعینات روسی اسپیشل فورسز نے یا تو براہ راست حصہ لیا یا شامی عرب فوج کو ایک کامیاب خصوصی آپریشن میں رہنمائی کی جس نے پلمیرا کے شمال مشرق میں داعش کے زیر قبضہ ، باقی 19 افراد کو زندہ بچایا تھا۔کچھ اطلاعات میں بتایا گیا ہے کہ روسی اسپیشل فورس کو خفیہ طور پر صوبہ السویدہ میں تعینات کیا جاسکتا ہے تاکہ شام کی فوج کو الصفا کے علاقے میں داعش کی پوزیشنوں پر پیشگی مدد دی جاسکے۔ [340] [341][147]

روسی وزارت دفاع نے اطلاع دی ہے کہ 3 جنوری 2019 تک 68،000 روسی فوج کے جوانوں نے شام کی مداخلت میں حصہ لیا تھا۔ [342][147]

8 جنوری 2019 کو ، روسی فوجی یونٹوں نے منیج کے آس پاس اور ارد گرد کے علاقوں بشمول اریما میں گشت شروع کیا۔ [343][147]

13 مارچ 2019 کو ، روسی وزارت دفاع نے کہا کہ اس کے جیٹ طیاروں نے ادلیب شہر میں حیات تحریر الشمس کے ٹھکانوں پر بمباری کی ہے ، یہ کارروائی ترکی کے ساتھ ہی کلیئر ہوچکی ہے۔ [344] ماس میڈیا رپورٹس کے مطابق ، ایک بے گھر کیمپ کے علاوہ ایک جیل بھی نشانہ بنایا گیا۔ [345] [346][147]

اپریل 2019 – ستمبر 2019[ترمیم]

اپریل 2019 کے آخر میں ادلیب اور قریبی علاقوں میں لڑائی شدت اختیار کرگئی ، شام اور روسی افواج نے باغی کے ٹھکانوں پر حملہ کیا۔ [347][147]

13 جون کو ، روسی فوج نے کہا کہ روس کے اقدام پر فائر بندی کے معاہدے کے نتیجے میں ادلیب ڈی ایسکلیشن زون میں لڑائی ختم ہوگئی تھی جو اس دن قبل ہی نافذ العمل تھا۔ [348][147]

10 جولائی 2019 تک ، یہ خیال کیا گیا کہ ادلب میں ہونے والی حکومتی کارروائی رک رکھی ہے ، ترکی کے ساتھ روس کے تعلقات پورے شمال مغرب میں لینے کی کسی بھی وسیع پیمانے پر کوشش کو مرکزی توڑ قرار دیتے ہیں۔ [349][147]

18 جولائی کو ، رائٹرز کے ذریعہ باغی کمانڈروں کا حوالہ دیا گیا کہ روس نے شمال مغربی شام میں شامی فوج کے ساتھ مل کر لڑنے کے لئے خصوصی فوجیں بھیجی ہیں۔ روس کی وزارت دفاع نے کہا کہ یہ جھوٹے الزامات ہیں۔ [350][147]

29 اگست کو اسد حکومت اور روس کے جنگی طیاروں نے شمال مغربی شام میں حملوں میں سات شہریوں کو ہلاک کردیا۔ یہ خطہ جنگ بندی کی زد میں آچکا تھا۔ [351][147]

باضابطہ طور پر ، یہ مہم اگلے ہی دن 30 اگست کو ختم ہوئی جس کے بعد شامی عرب فوج اور باغی دونوں کی طرف سے جنگ بندی پر اتفاق رائے ہوا تھا جو 31 اگست سے نافذ العمل ہوگا۔ کچھ جھڑپیں ستمبر کے بعد سے ہوچکی ہیں کیونکہ ابھی بھی لڑائی کی اطلاع ہے۔ مجموعی طور پر ، یہ جنوبی ادلیب گورنریٹ کی مکمل آزادی کے بعد شامی فوج کے لئے ادلیب ڈسیکلیشن زون میں ایک اہم پیشرفت تھی۔[147]

اکتوبر 2019[ترمیم]

13 اکتوبر 2019 کو ، شام کی فوج کے ساتھ ، روسی زمینی فوج نے ایس ڈی ایف اور شامی حکومت کے مابین ایک معاہدے کے بعد شام کے شمال میں واقع ایس ڈی ایف کے زیرقبضہ علاقوں میں داخل ہوکر قبضہ کرلیا ، جس کے فورا بعد ہی ترکی نے سرحد پار سے کردستان میں دخل اندازی کا آغاز کیا۔ غلبہ والا خطہ اور امریکی فوجیں اس علاقے سے پیچھے ہٹ گئیں۔[352] [353] روس کے فوجی پولیس یونٹوں نے منبیج شہر میں گشت کرنا شروع کیا۔ [354]

نومبر 2019 سے[ترمیم]

2 نومبر 2019 کو ، روسی ہوابازی نے صوبہ ادلیب میں جیسر الشغور کے علاقے میں عسکریت پسندوں کی توجہ کا مرکز بنایا۔ اس زبردست بمباری کے دو دن بعد اس علاقے کے شدت پسندوں کو الٹی میٹم جاری کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا جس میں ان کا مطالبہ ہے کہ وہ چھوڑ دیں یا ہتھیار ڈال دیں۔ [355][147]

24 نومبر 2019 کو ، شامی عرب فوج نے روسی فضائی حملوں کی مدد سے صوبہ ادلیب میں باغیوں کے مضبوط گڑھ کے خلاف کارروائی کا "مرحلہ ایک" شروع کیا ، جس کا اعلان جنگ بندی معاہدوں کے خاتمے کے بعد 19 دسمبر کو باضابطہ طور پر کیا گیا تھا۔ روسی حمایت یافتہ شامی حکومت کی کارروائی 2020 تک کامیابی کے ساتھ جاری رہی ، اور دوسرے مقاصد کے ساتھ ، 2012 کے بعد سے پہلی بار پوری ایم 5 شاہراہ پر اس علاقے پر مکمل سرکاری کنٹرول کا قیام حاصل ہوا ۔ [356] [357] دریں اثنا ، روس اور ترکی کے مابین تعلقات ، جو بھاری اسلحہ بھیج رہے تھے اور اس کی ہزاروں باقاعدہ فوج باغیوں کی طرف سے حکومت کو روکنے کے لئے لڑنے کے لئے لڑنے کے لئے بھیج رہی تھی ، کافی کشیدہ اور باقاعدہ ترک افواج پر روسی حملے کی اطلاع دی گئی ، ترکی کے صدر اردگان نے علاقے میں ترک ترک مداخلت کا اعلان کیا۔ [358] [359] 20 فروری کو ، ترکی کے وزیر دفاع ہولسی اکار نے نیوز میڈیا کو بتایا کہ اس میں "کوئی شک نہیں" ہونا چاہئے کہ ترکی 2019 میں روس سے خریدے گئے ایس -400 میزائل نظام کو چالو کرے گا۔ [360][147]

27 فروری 2020 کو ، جائے وقوع سے موصولہ اطلاعات کے مطابق ، دو روسی ایس یو 34 نے ترک فوجی قافلے پر فضائی حملہ کیا جس میں کم از کم 34 ترک باقاعدہ فوجی ہلاک ہوئے۔ [361] [362] [363] اس فضائی حملے کے لئے ترکی نے باضابطہ طور پر روس کو ذمہ دار نہیں ٹھہرایا جب کہ روس نے یہ کہتے ہوئے اس کی ذمہ داری سے انکار کردیا کہ شامی فضائیہ اس حملے کے پیچھے ممکنہ طور پر تھی۔ [364] [365] روس کی وزارت دفاع کے مطابق ، ترک سروس کے لوگ "جب دہشت گرد گروہوں کی لڑائی کی شکل میں تھے" جب وہ شام کی فوج کی آتش زدگی میں آگئے۔ دریں اثنا ، روس نے سرکاری بیانات اور سرکاری سرپرستی میں جاری عام میڈیا دونوں کے ذریعہ اپنی پروپیگنڈہ کی کوششوں کو بڑھاوا دیا جس کا مقصد یہ پیغام بھیجنا تھا کہ ترکی خود ہی اس کی ہلاکتوں کا ذمہ دار ہے کیونکہ ترکی کی افواج کو پہلے شام میں نہیں ہونا تھا۔ [366][147]

2 مارچ کو ، روسی فوج نے اعلان کیا کہ اس اسٹریٹجک قصبے پر قابو پانے کے لئے ہفتوں کی شدید لڑائی کے بعد روس کی فوجی پولیس دستہ سرکیب کے پاس تعینات کردی گئی تھی جس نے دیکھا کہ اس نے کئی بار ہاتھ بدلے۔ اعلان شدہ مقصد ایم4 اور ایم5 شاہراہوں پر سفر کرنے والی گاڑیوں اور شہریوں کے محفوظ راستہ کو محفوظ بنانا تھا۔ [367] [368][147]

15 مارچ کو ، روس اور ترکی کی افواج نے روس اور ترکی کے مابین جنگ بندی کے معاہدے کے ایک حصے کے طور پر ، ایم 4 شاہراہ پر مشترکہ گشت شروع کیا۔ ترک وزیر خارجہ میلوت کیوسوگلو کے مطابق ، روسی فوجی دستے جنوبی اطراف میں گشت کریں گے جبکہ ترکی کی فوج شاہراہ کے شمال میں گشت کرے گی۔ [369][147]

16 اگست 2020 کو سابق سعودی جاسوس سربراہ سعد الجبری ، جو میں روپوش ہے کینیڈا کے ایک خود ساختہ جلاوطنی کے تحت دعوی کیا ہے کہ سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان خفیہ طور پر مدعو کیا روس میں مداخلت شام ایک ایسے وقت میں جب کے دور حکومت بشار اسد گرنے کے قریب تھا۔ دی گارڈین کے ذریعہ قانونی چارہ جوئی کے بارے میں شائع ہونے والی رپورٹ میں مزید دعوی کیا گیا ہے کہ سعودی شہزادے کے اماراتی ہم منصب ، محمد بن زاید نے ان کے فیصلوں پر بہت زیادہ اثر ڈالا ۔ [370][147]

18 اگست کو ، شام میں ایک سڑک کے کنارے نصب بم کے نتیجے میں ایک روسی میجر جنرل ہلاک اور دو خدمت گار زخمی ہوگئے جب دیر الزور سے حمیم ائیر بیس جاتے ہوئے تھے۔ [371][147]

تاثیر کا اندازہ[ترمیم]

فروری 2016 کے آخر تک ، روسی فضائیہ نے روزانہ 60 کے قریب فضائی حملے کیے ، جبکہ امریکی زیرقیادت اتحاد کی اوسط اوسط سات تھی۔ روسی فضائی حملوں نے مبینہ طور پر صحرائے شام میں داعش کے تیل کی تجارت اور رسد کے راستوں کے خلاف خاص طور پر مؤثر ثابت کیا ہے۔ ایک اندازے کے مطابق 209 شام کے تیل کی سہولیات فضائی حملوں کے ذریعہ 2 ہزار سے زائد پٹرولیم ٹرانسپورٹ سازوسامان کے ساتھ تباہ کردی گئیں۔ مارچ کے وسط میں اپنی افواج کے "مرکزی حصہ" کے انخلا کے وقت تک ، روس نے ساڑھے پانچ ماہ کے دوران 9،000 سے زیادہ سورorیوں کا مقابلہ کیا تھا ، جبکہ شامی فوج نے 400 شہروں پر قبضہ کرنے اور 10،000 مربع کلومیٹر کے حصول میں مدد کی تھی۔ علاقہ [372] روسی فوج نے چیچنیا انسداد بغاوت کے ماڈل کی پیروی کی ، اور "ایک تجدید کار روس ، یہاں تک کہ ایک مستحکم مونو صنعتی معیشت کے باوجود ، حملے کی رفتار سے بین الاقوامی برادری کو حیرت اور اس کارروائی کو برقرار رکھنے کے لئے اپنی مرضی کے مطابق ہے۔" [373]

جنوری 2016 میں ، شام میں روس کی مداخلت کے چند ماہ بعد ، سفارت کار رنجیت گپتا نے کامن ویلتھ جرنل آف انٹرنیشنل افیئر کے شائع کردہ ایک مضمون میں لکھا تھا کہ روسی کمک "اسد کے لئے خدا کا معاہدہ" ہے ، جس سے حکومت کے ٹوٹے ہوئے حوصلے کو بہت فروغ ملا ہے۔ مسلح افواج." گپتا نے جاری رکھا:[147]

فروری 2016 میں ، لندن اسکول آف اکنامکس کے پروفیسر فوض اے گارجز نے کہا کہ روسی فوجی مداخلت شام کی خانہ جنگی میں گیم چینج ثابت ہوئی ہے: ″ مسٹر پوتن کا شام میں مداخلت اور مسٹر کو کنارے کرنے کا فیصلہ اسد نے نئے لڑاکا طیاروں ، فوجی مشیروں اور جدید ہتھیاروں کے ساتھ شامی فوج کا خون بہانا روک دیا اور اسے دفاع سے بدعنوانی کی طرف منتقل ہونے دیا۔ ″ [147]

ڈیفنس انٹیلی جنس ایجنسی کے ڈائریکٹر ونسنٹ آر اسٹیورٹ نے فروری 2016 میں بیان کیا تھا کہ "روسی کمک نے پوری طرح سے حساب کتاب کو تبدیل کر دیا ہے" اور مزید کہا کہ اسد "ابھی چھ ماہ پہلے کے مقابلے میں زیادہ مضبوط مذاکرات کی پوزیشن میں ہے"۔ [147]

مغربی میڈیا اور تجزیہ کاروں نے یہ نتیجہ اخذ کیا ہے کہ شام میں روس کی مداخلت نے اسد کو اقتدار میں رکھا اور یہاں تک کہ جنگ کو اپنے حق میں موڑ دیا۔ [374] [375] [376][147]

جنگی مشنوں کے آغاز کے ایک ہفتہ میں ، ویب سائٹ ریئل کلیئر ڈیفنس ، ریئل کلیئر پولیٹکس گروپ کے ایک حصے نے ، فضائی حملوں کے ایک پلیٹ فارم کے طور پر ایڈمرل کوزنیٹوسوف کی تاثیر کا اندازہ شائع کیا ، جس میں اس کے ہوائی گروپ کے چھوٹے سائز کا اندازہ کیا گیا (مجموعی طور پر ایک اندازے کے مطابق آٹھ ایس یو 33 اور چار مِگ 29 کے ہوائی جہاز) ، مگ 29 کے ساتھ مشکلات ، جو ہڑتال مشنوں کے لئے زیادہ موثر پلیٹ فارم کے طور پر دیکھا جاتا ہے ، ایس یو 33 کے لئے سمارٹ ہتھیاروں کی تھوڑی مقدار (جو بنیادی طور پر بحری بیڑے کی ہوا ہے) دفاعی طیارہ) ، [377] اور کیریئر پر کیٹپلٹس کی کمی ، جو اپنے طیارے کے اتار وزن کو محدود کرتی ہے۔ [378][147]

استعمال کا اسلحہ[ترمیم]

شام میں روسی ہوائی گروپ کے اہلکار ہمیم میں واقع ایس یو 34 جیٹ پر KAB-500KR ہدایت والا بم فٹ کر رہے ہیں

اطلاعات کے مطابق ، شام میں روسی افواج نے صحت سے متعلق ہدایت والے اسلحہ اور غیر ہتھیاروں کا آمیزہ استعمال کیا ہے۔ [379] [380] اکتوبر 2015 کے فضائی حملوں میں صحت سے متعلق رہنمائی شدہ اسلحہ خانہ کا روس کا پہلا آپریشنل استعمال تھا ، جس کی ترقی 1990 کی دہائی میں معاشی عدم استحکام کی وجہ سے روس میں ترقی سے دیگر ممالک سے پیچھے رہ گئی تھی۔ تاہم ، استعمال شدہ ہتھیاروں کی اکثریت بے قابو تھی۔ [381] بیشتر روسی جیٹ طیارے ایس وی پی 24 رہنمائی نظام میں ملازمت کرتے ہیں ، جس کی مدد سے وہ بہت کم اخراجات کے ساتھ رہنمائی کرنے والوں کی صحت سے متعلق اعلی صحت سے متعلق غیرصحابی اسلحہ استعمال کرسکتے ہیں۔ [147]

روس نے کوریٹیٹس ، ایڈمرل گریگوروویچ کلاس فرگیٹ اور کلو کلاس آبدوزوں سے لانچ کیے گئے کروز میزائل بھی استعمال کیے۔ [382] روسی توپ خانے بھی ہوٹزرز اور ایک سے زیادہ راکٹ لانچروں کی شکل میں استعمال ہوتا رہا ہے۔ [383] اس فضائی مہم کے ابتدائی مرحلے میں ایک دن میں 2.3 سے 4 ملین ڈالر لاگت آنے کا تخمینہ لگایا گیا تھا۔ [384] مزید برآں ، روس نے بڑے پیمانے پر استعمال کیے جانے والے 3M-14T کروز میزائلوں کی لاگت فی یونٹ تقریبا$ 1.2 ملین ڈالر ہے۔ [385][147]

شہری ہلاکتوں اور جنگی جرائم کی اطلاعات[ترمیم]

ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق ، فروری 2016 کے آخر میں روسی جنگی طیاروں نے اپنی بمباری مہم کے دوران جان بوجھ کر عام شہریوں اور امدادی کارکنوں کو نشانہ بنایا۔ انسانی حقوق کے گروپ نے اسکولوں ، اسپتالوں اور سویلین گھروں پر حملوں کی دستاویز کی ہے۔ ایمنسٹی انٹرنیشنل نے یہ بھی کہا کہ "روس نے کئی دہائیوں میں" جنگی نوعیت کے انتہائی گھناؤنے جنگی جرائم "جو" اس نے "دیکھا تھا" کے لئے مجرم ہے۔ ایمنسٹی کے بحران جوابی پروگرام کی ڈائریکٹر ، ترانا حسن نے کہا ہے کہ سویلین اہداف پر بمباری کرنے کے بعد ، روسی جنگی طیاروں نے دوسرے حملہ کرنے کے لئے انسانی ہمدردی کے کارکنوں اور عام شہریوں کو نشانہ بنانے کے لئے "لوپ آس پاس" کیا ، جو پہلے سورسے میں زخمی ہونے والے افراد کی مدد کے لئے کوشاں ہیں۔ [155] [147]

فروری 2016 میں ، ہیومن رائٹس واچ (ایچ آر ڈبلیو) نے شام اور روس کے ذریعہ کلسٹر ہتھیاروں کے وسیع پیمانے پر استعمال کی اطلاع دی ، جس میں اقوام متحدہ کی قرارداد 2139 کی 22 فروری 2014 کی خلاف ورزی کی گئی ، جس میں مطالبہ کیا گیا کہ تمام فریقین "آبادی والے علاقوں میں ہتھیاروں کی اندھا دھند ملازمت کو ختم کریں"۔ ایچ آر ڈبلیو نے کہا کہ "روسی یا شامی افواج ان حملوں کے لئے ذمہ دار ہیں" اور یہ کہ اسلحہ خانہ "سابق سوویت یونین یا روس میں تیار کیا گیا تھا" اور یہ کہ کچھ ایسی نوعیت کے تھے جو "شام میں استعمال ہونے والے دستاویزات" کے مطابق روس سے پہلے نہیں تھے۔ جنگ میں شمولیت ، جس کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ ، "روسی طیاروں نے انہیں گرایا یا روسی حکام نے حال ہی میں شامی حکومت کو مزید کلسٹر اسلحہ فراہم کیا ، یا دونوں"۔ [157] ایچ آر ڈبلیو نے یہ بھی کہا کہ اگرچہ نہ ہی روس اور نہ ہی شام کلسٹر اسلحہ سازی کنونشن کی فریق ہیں ، لیکن اس طرح کے اسلحے کا استعمال شامی حکومت کے جاری کردہ بیانات سے متصادم ہے کہ وہ ان کو استعمال کرنے سے باز آئیں گے۔ [147]

فروری 2016 میں ، میڈیسنز سنز فرنٹیئرس نے کہا ہے کہ یا تو "شامی حکومت" یا روسی جنگی طیاروں نے معارات النعمان کے ایک اسپتال پر جان بوجھ کر حملہ کیا۔ [386] شامی آبزرویٹری برائے انسانی حقوق نے بتایا ہے کہ یہ روسی جنگی طیارے تھے جنہوں نے اسپتال کو تباہ کردیا۔ [387][147]

سن 2016 میں ، حزب اختلاف کے کارکنوں اور مقامی گواہوں نے اطلاع دی ہے کہ روس نے رقعہ [388] اور ادلیب میں اہداف کے خلاف سفید فاسفورس کا استعمال کیا ہے ، [389] اسلحہ سے شہریوں کی ہلاکت کا سبب بنی۔ [147]

امریکی عہدیداروں نے بار بار کہا کہ شام میں اسپتالوں پر روسی افواج نے حملہ کیا۔ شامی آبزرویٹری برائے ہیومن رائٹس نے اطلاع دی ہے کہ فروری 2016 کے وسط تک ، روسی فضائی حملوں میں ستمبر 2015 میں مداخلت کے آغاز سے اب تک ایک ہزار عام شہری ہلاک ہوگئے تھے ، جن میں 200 بچے بھی شامل تھے۔ [390] مارچ 2016 میں ، ایمنسٹی انٹرنیشنل نے کم از کم چھ ایسے حملوں کے "مجبور ثبوت" کی اطلاع دی تھی۔ [391] روسی فضائیہ کے طیاروں کے ذریعہ دو اسپتالوں پر بمباری سمیت ان اطلاعات کی روسی حکام نے تردید کی ہے۔ [392] [393] مئی 2016 میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں روسی وفد نے 5 مئی کو ادلیب میں پناہ گزین کیمپ پر فضائی حملوں کی مذمت کرنے والے بیان کو ویٹو کیا۔ [394][147]

جون 2016 میں ، روس ٹوڈے ، وزیر شوئگو کے ہمیم ائیر بیس کے دورے کی اطلاع دہندگی کے دوران ، ظاہر ہوا نشانات کی وجہ سے RBK-500 ZAB-2.5SM کے طور پر شناخت شدہ روسی ہوائی جہازوں پر آگ لگائے جانے والے کلسٹر بموں کو ، دکھایا گیا ہے۔ اس معلومات کے بعد ، روسی سرکاری بیانات سے متصادم ، ویڈیو کو ہٹا دیا گیا تھا لیکن بعد میں اسے دوبارہ بحال اور آر ٹی نے اپلوڈ کیا تھا۔ ویڈیو کے نیچے ایڈیٹوریل نوٹ میں اسلحہ کا کوئی ذکر نہیں کیا گیا ، جس میں کہا گیا ہے کہ ویڈیو میں موجود ایک فریم نے پائلٹ کے قریب ہونے کی وجہ سے "اہلکاروں کی حفاظت کے لئے تشویش" پیدا کردی ہے۔ آر ٹی کے بیان میں کہا گیا ہے کہ "دوبارہ جائزہ لینے کے بعد یہ سمجھا گیا تھا کہ فریم کو کوئی خطرہ لاحق نہیں ہے اس کے بعد سے اسے بحال کردیا گیا تھا اور ویڈیو اس کی اصل کٹائی میں ہے۔" [158] [147]

2018 کے اختتام تک ، فضائیہ ، جو تمام فضائی حملوں کی ہلاکتوں کی اطلاعات پر نظر رکھتی ہے ، نے شام میں تقریبا 39،000 روسی حملوں میں 2،730–3،866 شہری ہلاکتوں کی دستاویز کی تھی ، جن میں 690–844 بچے اور 2،017 نامزد متاثرین بھی شامل تھے ، اگرچہ روس نے سرکاری طور پر ان میں سے کسی کی بھی تصدیق نہیں کی۔ [395] روس نے بتایا کہ اس نے 2018 کے آخر تک 39،000 پروازیں (حملے نہیں) اڑائیں۔ [396] ایئروارس کے مطابق 2018 کے لئے سالانہ مجموعی طور پر 730 حملے ہوئے جن میں 2،169 شہری ہلاک ہوئے۔ [397][147]

مئی 2019 میں اقوام متحدہ کے عہدے داروں نے کہا کہ روسی اور شامی حکومتوں نے جان بوجھ کر ادلیب کے آٹھ اسپتالوں پر بمباری کی جن کے جی پی ایس کوآرڈینیٹ "حادثاتی بمباری" کی روک تھام کے لئے متفقہ "تنازعہ میکانزم" کے ایک حصے کے طور پر روس کو منتقل کردیئے گئے تھے ، جسے پہلے بھی عذر کے طور پر استعمال کیا جاتا تھا۔ حکومتیں۔ [147]

اگست 2019 میں ، جنوبی ادلیب میں ہس گاوں کے قریب "بے گھر افراد کے کیمپ" پر روسی فوج کی طرف سے فضائی حملے کیے جانے کے دو دن کے اندر ہی 19 سے زیادہ شہری ہلاک ہوگئے۔ [398] اگست میں بھی ، اقوام متحدہ نے اسپتالوں پر بمباری کی تحقیقات کا آغاز کیا تھا۔ [399][147]

اکتوبر 2019 میں ، نیویارک ٹائمز نے ہوائی جہازوں کے نظارے پر مشتمل ہوائی جہازوں پر نظر رکھنے ، پائلٹوں کی مداخلت شدہ ریڈیو گفتگو اور مخصوص اسپتالوں کے جی پی ایس کوآرڈینیٹ کا تبادلہ کرنے والے اسپتالوں کے خلاف روسی ہوا بازی کے مربوط حملوں کے مزید شواہد شائع کیے جس کے فورا بعد ہی بمباری کی گئی۔ [147]

ایئر وارس کی 2019 کی رپورٹ میں شام میں روسی ہلاکتوں کے 710 واقعات ریکارڈ کیے گئے تھے - جو 2018 میں 3٪ کمی ہے - جس میں 1،099 سے 1،745 عام شہری ہلاک ہوئے۔ واقعات میں 81 ٪ ادلب ، 13٪ حما ، اور 5٪ حلب میں تھے۔ یہ ہڑتالیں بنیادی طور پر مئی سے ستمبر کے ادلیب حملے کے دوران ہوئی ہیں ، جس کا ایک ہی بدترین واقعہ 22 جولائی کو میرات النعمان میں ہڑتال تھا جس میں 42 شہری ہلاک ہوئے تھے۔ [397] نیو یارک ٹائمز کی ایک تفتیش نے مؤخر الذکر میں روس کے مجرم ہونے کی تصدیق کی ہے۔ تحقیقات میں 28 اپریل 2019 کو قلات المادق کے شہداء اکرم علی ابراہیم الاحمد اسکول پر روسی حملوں کے بارے میں بھی تفصیل سے بتایا گیا ہے۔ [400][147]

اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کی 2020 کی رپورٹ میں پہلی بار روسی فضائیہ پر براہ راست ذمہ داری عائد کی گئی جس میں سویلین اہداف پر "کسی جنگی جرم کی رقم" پر خاص طور پر ہاس میں پناہ گزینوں کی پناہ گاہوں پر بمباری اور ما میں بازار کی جگہ پر ہونے والے وسیع شواہد کا حوالہ دیا گیا تھا۔ گرمیوں میں 2019 میں النعمان۔ [147]

ایران کے ساتھ تعاون[ترمیم]

ولادی میر پوتن نے 29 ستمبر 2015 کو نیویارک میں ایرانی صدر حسن روحانی سے ملاقات کی۔

ایران شام میں اپنے جنگی فوجیوں کی موجودگی سے باضابطہ طور پر انکار کرتا ہے ، اس بات کو برقرار رکھتے ہوئے کہ وہ صدر اسد کی افواج کو دہشت گرد گروہوں کے خلاف جنگ میں فوجی مشورے فراہم کرتا ہے۔ بیان کیا گیا ہے کہ شامی عرب فوج کو قدس فورس کی جانب سے بھرپور تعاون حاصل ہے۔ جون 2015 میں ، کچھ اطلاعات میں بتایا گیا تھا کہ ایرانی فوج جنگ کے میدان میں شامی سرکاری فوجیوں کے مؤثر طریقے سے انچارج ہے۔ [401][147]

2015 کے پہلے نصف حصے میں باغی کارروائی میں صوبہ ادلیب کے ہار جانے کے بعد ، اسعد کی بقا کے لئے اس صورتحال کو نازک قرار دیا گیا۔ ماسکو اور تہران کے درمیان 2015 کے پہلے نصف میں اعلی سطح کے مذاکرات ہوئے اور ایک سیاسی معاہدہ ہوا۔ 24 جولائی کو ، ایران اور P5 + 1 ممالک کے مابین جوہری معاہدے پر دستخط کرنے کے دس دن بعد ، جنرل قاسم سلیمانی شام میں مربوط فوجی کارروائی کے منصوبے کی تفصیلات کے لئے ماسکو [402] کا دورہ کیا۔ [403][147]

ستمبر 2015 کے وسط میں ، ایرانی پاسداران انقلاب کی جانب سے مغربی شام میں ترتس اور لٹاکیہ پہنچنے سے نئی ٹکڑی کی پہلی اطلاعات سامنے آئیں ۔شامی عرب فوج اور نیشنل ڈیفنس فورس کے بیشتر یونٹوں نے مزید مستحکم محاذوں پر تعینات ہونے کی وجہ سے ، روسی میرینز اور ایرانی انقلابی گارڈ کور (IRGC) نے سلونفح (مشرقی لٹاکیہ گورنری) کے شہروں میں فوجی چوکیاں لگا کر اپنی پوزیشنوں کو چھوڑ دیا ہے ،مصیاف ( ایسٹ ٹارٹس گورنریٹ) اور راس البسیت (لٹاکیہ ساحلی شہر) [404] اکتوبر 2015 کے اوائل میں نئی ایرانی دستے شام میں تعینات کیے جانے کی بھی اطلاعات تھیں۔ [405] روسی آپریشن کے آغاز کے بعد ، عام طور پر یہ خیال کیا جاتا تھا کہ شام شام کی فوج اور اتحادیوں کی زمینی کارروائیوں میں ایران قائدانہ کردار ادا کرے گا ، جب کہ روس شام کی عرب فضائیہ کے ساتھ مل کر فضا میں آگے بڑھائے گا ، اور اس طرح اس کا تکمیلی کردار قیام عمل میں لایا جائے گا۔ ۔ [147]

23 نومبر 2015 کو تہران میں ولادیمیر پوتن اور علی خامنہ ای کے مابین ہونے والی ملاقات کے بعد ، ایران کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ روس کے ساتھ شامی قیادت کے ساتھ اپنے موقف کو یکجا کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اگست 2016 کے وسط میں شروع ہونے والے روسی فوجی طیاروں کے ذریعہ ایران کے حمادان ایئربیس کے استعمال سے شام کے حکومت کی حمایت میں ان ممالک کے مابین تعاون کی ایک نئی سطح [406][147]

رد عمل[ترمیم]

اس فوجی کارروائی کا حصہ نہیں ، 30 ستمبر 2015 سے شام اور روسی اقدامات پر مزید روسی تبصرے کے لئے ، ملاحظہ کریں: شام کی خانہ جنگی میں روسی شمولیت[147] [147]

شام[ترمیم]

Flag of Syria.svg سوریہ:

  • یکم اکتوبر 2015 کو ، روس میں شام کے سفیر ، ریاض حداد نے بیان دیا کہ روسی فضائیہ شامی فوج کے ساتھ مکمل ہم آہنگی کے ساتھ کام کر رہی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ شام کا مؤقف یہ ہے کہ روسی مداخلت بین الاقوامی قانون کے تحت واحد جائز مداخلت ہے اور دوسرے ممالک سے شام میں "غیر مجرم" روسی مداخلت میں شامل ہونے کا مطالبہ کیا ہے۔

بین اقوامی[ترمیم]

سپر نیشنل[ترمیم]

اقوام متحدہ - 31 اکتوبر 2015 کو ، اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل بان کی مون نے ہسپانوی روزنامہ ال مونڈو کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا "اسد کے مستقبل کا فیصلہ شامی عوام کو کرنا ہوگا ،" اور "شامی حکومت نے کہا ہے کہ صدر اسد نے حصہ لیا ( کسی بھی عبوری حکومت میں ) لیکن دوسرے ، خاص طور پر مغربی ممالک کا کہنا ہے کہ اس کے لئے کوئی جگہ نہیں ہے ، لیکن اس کی وجہ سے ہم نے تین سال کھوئے ہیں ، 250،000 سے زیادہ ہلاک ہوچکے ہیں ، شام میں 13 لاکھ سے زیادہ بے گھر ہوچکے ہیں ... 50 فیصد اسپتال ، اسکول اور بنیادی ڈھانچہ تباہ ہوگیا ہے۔ کھونے کا کوئی وقت نہیں ہے۔ " [407]

سن 2016 میں ، جنگی جرائم کے سبکدوشی پراسیکیوٹر کارلا ڈیل پونٹے ، جو شام میں جمہوریہ شام سے متعلق آزادانہ تحقیقات کے آزاد کمیشن کے حصے کے طور پر شام میں حقوق پامالیوں کی تحقیق کررہے تھے ، نے ایک انٹرویو کو بتایا ، "میرے خیال میں روسی مداخلت ایک اچھی چیز ہے ، کیوں کہ آخر کسی نے ان دہشت گرد گروہوں پر حملہ کر رہا ہے "، لیکن انہوں نے مزید کہا کہ روس دہشت گردوں اور دوسرے گروہوں کے مابین کافی فرق نہیں کر رہا ہے۔ [408] 2017 میں ، اس نے شکایت کی تھی کہ روس شام میں جنگی جرائم کے مقدمات چلانے سے روکنے کے لئے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ویٹو کا استعمال کررہا ہے ، جس کی وجہ سے وہ شام میں اپنے کردار سے مستعفی ہوجاتا ہے۔ [409] [410]

Flag of NATO.svg نیٹو – نیٹو نے روسی فضائی حملوں کی مذمت کی ہے اور روس پر زور دیا ہے کہ وہ شام کے صدر بشار الاسد کی حمایت بند کرے۔[411] 8 اکتوبر 2015 کو ، انہوں نے "روسی فوجی سرگرمیوں میں اضافہ" کے پیش نظر اتحادیوں کا دفاع کرنے کی یقین دہانیوں کی تجدید کی۔[412]

امریکہ کے زیرقیادت اتحاد - یکم اکتوبر 2015 کو ، امریکہ کی زیرقیادت داعش مخالف اتحاد کے شرکاء نے روس سے شام میں اپنی فضائی مہم کو روکنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ فضائی حملوں سے شامی حزب اختلاف کے گروپوں اور عام شہریوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔ ریاستہائے متحدہ ، برطانیہ ، ترکی اور اتحادی ممالک کے دیگر ارکان کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ اس طرح کی ہڑتالوں سے "مزید شدت پسندی کو ہوا ملے گی"۔ [413] "ہم روسی فیڈریشن سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ شامی حزب اختلاف اور عام شہریوں پر اپنے حملے فوری طور پر بند کرے اور داعش سے لڑنے پر اپنی کوششوں پر توجہ دے۔" ریاستہائے متحدہ امریکہ کے صدر باراک اوباما نے 2 اکتوبر کو ایک نیوز کانفرنس میں اتحادیوں کے بیان کی تاکید کرتے ہوئے کہا کہ روسی کارروائی اعتدال پسند حزب اختلاف کے گروہوں کو زیرزمین چلا رہی ہے ، اور اس کے نتیجے میں داعش کو "مضبوطی" حاصل ہوگی۔ [414]

2017 میں ، کمیونٹی فار ڈیموکریسی اینڈ رائٹس آف نیشنس کی بین الپارلیمانی اسمبلی ، جو ایک جزوی طور پر تسلیم شدہ جمہوریہ ابخازیا ، جنوبی اوسیتیا اور ٹرانسنیسٹریہ پر مشتمل ایک بین الاقوامی تنظیم ہے ، نے مشترکہ بیان اپنایا جس میں شام میں روسی فیڈریشن کی پالیسی کی حمایت کی گئی تھی۔ . [415]

قومی حکومتیں[ترمیم]

Flag of Armenia.svg آرمینیا: آپریشنل اور لاجسٹک مدد فراہم کرکے شام میں روسی کارروائیوں کے لئے معاونت فراہم کرتا ہے۔ سی ایس ٹی(CSTO) او کے ممبر کی حیثیت سے ، آرمینیا روسی فوجی مداخلت کی حمایت کرتا ہے۔

Flag of Belarus.svg بیلاروس, اکتوبر 2015 میں ملک کے قائم مقام وزیر خارجہ ولادیمیر میکی نے کہا کہ بیلاروس ، جو سی ایس ٹی او کا ممبر بھی ہے ، شام میں روسی فوجی مداخلت کی حمایت کرتا ہے۔

Flag of the People's Republic of China.svg چین شام میں روس کی فوجی مداخلت پر چین نے مثبت رد عمل ظاہر کیا ہے۔ چینی حکومت دہشت گردی کے خلاف عالمی جنگ کے ایک عنصر کی حیثیت سے اسے جانتی ہے۔ چین کو شام میں فوجی طور پر شامل ہونے سے کوئی دلچسپی نہیں ہے ، لیکن شام میں بحران کے لئے چین کے خصوصی ایلچی نے جنگ میں روس کے فوجی کردار کی تعریف کی ہے۔ اگست 2016 میں ، چین کے مرکزی فوجی کمیشن کے دفتر برائے بین الاقوامی فوجی تعاون کے ڈائریکٹر ، گوان یوفی دمشق میں تھے اور کہا تھا کہ "چین اور شام کی عسکریت پسندوں کا روایتی طور پر دوستانہ تعلقات ہیں ، اور چین کی فوج تبادلہ اور تعاون کو مستحکم رکھنے کے لئے تیار ہے۔ شام کی فوج "

Flag of Egypt.svg مصر : مصر نے روسی فضائی کارروائی کی حمایت کا مطالبہ کیا۔ 3 اکتوبر 2015 کو ، وزیر خارجہ سمیع شوکری نے کہا کہ شام میں جنگ میں روسی داخلے کا پابند تھا "شام میں دہشت گردی کو محدود رکھنے اور اس کے خاتمے پر اثر انداز ہوگا۔"

Flag of Iraq.svg عراق شام میں روسی مداخلت کی حمایت کرتا ہے اور روس کو اپنے جنگی طیاروں کے ذریعے عراق پر پرواز کرنے کی اجازت دیدی ہے۔[416]

بنیامن نیتن یاہو نے 21 ستمبر 2015 کو ماسکو میں ولادیمیر پوتن سے ملاقات کی

Flag of Israel.svg اسرائیل –روسی مداخلت سے کچھ دیر قبل ، اسرائیلی دفاعی افواج اور روسی فوج نے فضائی ، بحری اور برقی مقناطیسی علاقوں میں شام سے متعلق اپنی سرگرمیوں کو مربوط کرنے کے لئے ایک مشترکہ ورکنگ گروپ تشکیل دیا تھا۔ اسرائیلی حکومت بنیادی طور پر اس بات کو یقینی بنانے کی فکر میں تھی کہ حزب اللہ اور روس کے مابین ممکنہ اتحاد اس کی سلامتی کے لئے نقصان دہ نہیں ہے۔ [417]اسرائیلی حکومت بنیادی طور پر اس بات کو یقینی بنانے کی فکر میں تھی کہ حزب اللہ اور روس کے مابین ممکنہ اتحاد اس کی سلامتی کے لئے نقصان دہ نہیں ہے۔ ماسکو میں سابق سفیر زوی میگن کے مطابق ، "اسرائیل نے ان [پوتن] کو واضح کیا کہ ہمیں اسد کے ساتھ ، صرف ایران ، حزب اللہ اور داعش کے ساتھ کوئی حقیقی مسئلہ نہیں ہے ، اور اس پیغام کو سمجھا گیا ہے۔" ایک اسرائیلی فوجی عہدیدار نے کہا ہے کہ اسرائیل کسی بھی روسی طیارے کو گولی سے نہیں اڑائے گا جو غلطی سے اسرائیلی سرزمین کو زیر کرتا ہے کیونکہ "روس دشمن نہیں ہے"۔

Flag of Jordan.svg اردن –23 اکتوبر 2015 کو ، اردن نے شام میں روس کے ساتھ فوجی اقدامات کو مربوط کرنے کے لئے عمان میں ایک "خصوصی ورکنگ میکانزم" قائم کرنے پر اتفاق کیا۔ روسی وزیر خارجہ ، سیرگئی لاوروف نے اتحاد کی توسیع کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ، "ہم سمجھتے ہیں کہ دوسری ریاستیں جو انسداد دہشت گردی کی لڑائی میں حصہ لیتی ہیں وہ بھی اس میکانزم میں شامل ہوسکتی ہیں۔"[418]

Flag of Kyrgyzstan.svg کرغیزستان – کرغیز صدر الماز بیک اتم بائیف نے کہا کہ ان کا ملک (سی ایس ٹی او کا ممبر بھی) مداخلت کی حمایت کرتا ہے۔[419]

Flag of Saudi Arabia.svg سعودی عرب – یکم اکتوبر 2015 کو ، اقوام متحدہ میں سعودی عرب کے سینئر سفارت کار نے مطالبہ کیا کہ روس اپنی مداخلت ختم کرے ، مغربی سفارت کاروں کے بیانات کو دہرایا کہ روس داعش کے بجائے نامعلوم "اعتدال پسند" حکومت مخالف اپوزیشن کو نشانہ بنا رہا ہے۔[420]

23 ستمبر 2015 کو ، ایردوان شام کے بارے میں تبادلہ خیال کرنے اور نئی تعمیر شدہ گرجا مسجد کے افتتاح میں شرکت کے لئے ماسکو کا دورہ کیا

Flag of Turkey.svg ترکی – صدر رجب طیب ایردوان نے ، اکتوبر 2015 کے اوائل میں روسی فوجی طیارے کے ذریعہ ملک کی فضائی حدود کی خلاف ورزیوں کی ایک سیریز کے بعد ، انتباہ کیا تھا کہ شام میں روس کے فوجی آپریشن دونوں ممالک کے مابین دوطرفہ تعلقات کو خطرے میں ڈال سکتے ہیں۔ [421].23 دسمبر کو ، ترکی کی کرد نواز پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کے شریک رہنما صلاح الدین دیمیرتاش نے نومبر 2015 میں ترکی کے ذریعہ مار گرا دیئے گئے روسی جیٹ کے بارے میں انقرہ کے موقف پر تنقید کی۔[422]

Flag of the United Arab Emirates.svg متحدہ عرب امارات – ابتدائی طور پر ، متحدہ عرب امارات نے روسی مداخلت پر کوئی تبصرہ نہیں کیا تھا۔[423]وزیر خارجہ انور محمد قرقاش نے بعد میں مداخلت کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ وہ ایک "مشترکہ دشمن" کے خلاف ہیں۔

Flag of the United Kingdom.svg مملکت متحدہ – وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون نے کہا کہ "یہ بات بالکل واضح ہے کہ روس داعش اور جائز شامی حزب اختلاف کے گروہوں میں تفریق نہیں کر رہا ہے اور اس کے نتیجے میں وہ دراصل قصاب اسد کی پشت پناہی کر رہے ہیں اور اس کی مدد کر رہے ہیں"۔ شام میں روس کی مداخلت کے بعد برطانوی فوج کو بالٹک ریاستوں اور پولینڈ بھیجا جائے گا تاکہ "کسی اور اشتعال انگیزی اور جارحیت کا منہ توڑ جواب دیا جاسکے"۔

روسی اور امریکی نمائندوں کا اجلاس 29 ستمبر 2015 کو شام کی صورتحال پر تبادلہ خیال کے لئے ہوا

Flag of the United States.svg ریاستہائے متحدہ – اکتوبر 2015 کے اوائل میں ، براک اوباما کے بارے میں بتایا گیا تھا کہ وہ "داعش کے خلاف" 25،000 شامی کردوں اور شامی حزب اختلاف کے 5،000 مسلح افراد کی [داعش کیخلاف] دوبارہ حمایت کا اختیار دے چکے ہیں ، امریکہ اب یہ تعاون جاری رکھے گا جب روس تنازعہ میں شامل ہو گیا تھا۔[424][425]


امریکہ نے شام میں روس کے ساتھ فوجی تعاون کو مسترد کردیا۔ سکریٹری برائے دفاع اشٹن کارٹر اور دیگر اعلی امریکی عہدیداروں نے کہا کہ روس کی اس مہم کا مقصد بنیادی طور پر اسد کی حمایت کرنا تھا ، جسے بار بار اوباما نے اقتدار چھوڑنے کا مطالبہ کیا ہے۔ 8 اکتوبر 2015 کو ، انہوں نے ، برسلز میں نیٹو کے وزرائے دفاع کے اجلاس میں کہا ، کہ روس جلد ہی انتقامی حملوں اور ہلاکتوں کی صورت میں شام میں اپنی فوجی مداخلت کی قیمت ادا کرنا شروع کردے گا۔ [426] انہوں نے مزید کہا کہ انھیں توقع ہے کہ "اگلے چند روز میں شام میں روسیوں کا شکست ہونا شروع ہوجائے گا۔" انہوں نے مزید کہا کہ روس کی مہم کا مقصد بنیادی طور پر اسد کو فروغ دینا ہے۔
9 اکتوبر کو ، اوبامہ انتظامیہ نے دولت اسلامیہ کا مقابلہ کرنے کے لئے شام کے اندر ایک نئی باغی فورس بنانے کے لئے اپنی کوششوں کو ترک کردیا ، اور ہزاروں جنگجوؤں کو تربیت دینے کے لئے اس کی 500 ملین ڈالر کی مہم میں ناکامی کو تسلیم کرتے ہوئے اعلان کیا کہ وہ اس رقم کو گولہ بارود مہیا کرنے کے لئے استعمال کرے گی۔ اور جنگ میں مصروف گروہوں کے لئے کچھ ہتھیار۔
روسی ایس یو 24 کے پائلٹ کی لاش جس کو ترکی نے 30 نومبر 2015 کو روس کے چکالوسکی ایئرپورٹ پر گولی مار کر ہلاک کردیا تھا۔
24 نومبر کو ، اوبامہ نے کہا کہ ترکی کو شام کے بارڈر کے قریب 17 سیکنڈ کے لئے مبینہ طور پر ترک فضائی حدود کی خلاف ورزی کرنے پر روسی بمبار کو گولی مارنے کے بعد ، "اپنے علاقے اور اپنی فضائی حدود کا دفاع کرنے کا حق ہے"۔ اوبامہ نے یہ بھی کہا کہ "[روسی] اعتدال پسند مخالفت کے بعد جارہے ہیں جن کی حمایت نہ صرف ترکی بلکہ متعدد ممالک کی حمایت ہے۔" روسی فضائیہ کے تعاون سے شامی سرکاری فوجیں اس اتحاد کے خلاف لڑ رہی تھیں جس میں ترکی کی حمایت یافتہ شامی ترکمن بریگیڈ اور القاعدہ کا شام سے وابستہ النصرہ فرنٹ بھی شامل تھا۔

ملیشیا اور مذہبی ایجنٹ[ترمیم]

کے نمائندوں کرد YPG اور PYD اسلامی ریاست، النصرہ فرنٹ اور کے خلاف روسی فضائی حملوں کے لئے اپنی حمایت کا اظہار کیا احرار الشام . انہوں نے اسلحہ سازی میں روسی مدد اور دولت اسلامیہ کے خلاف جنگ میں روس کے ساتھ تعاون کے لئے بھی مطالبہ کیا۔ [427] روسی فضائی حملے شروع ہونے کے فورا بعد ہی ، پی وائی ڈی کے شریک صدر ، صالح مسلم نے ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ "امریکہ اعتراض کرے گا کیونکہ [جبہت] النصرہ اور احرار الشام داؤش سے مختلف نہیں ہیں۔ وہ تمام دہشت گرد تنظیمیں ہیں اور ایک جیسی بنیاد پرست ذہنیت رکھتے ہیں۔ "

30 ستمبر کو ، روسی آرتھوڈوکس چرچ کے ترجمان ویسولوڈ چیپلن نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ "اخلاقی جنگ ، ایک مقدس جنگ ہے اگر آپ چاہیں گے"۔ [428] [429] [430] روس کے مسلمانوں کی مرکزی روحانی انتظامیہ کے رہنما ، چیف مفتی طلعت تغز الدین نے کہا: "ہم بین الاقوامی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں روسی مسلح افواج کے دستے کے استعمال کی پوری حمایت کرتے ہیں۔" [431] واشنگٹن پوسٹ کے مطابق ، "روسی مسلمان شام میں مداخلت کے حوالے سے الگ ہو چکے ہیں ، لیکن جنگ مخالف سے زیادہ اس کے حامی ہیں۔"

احرار الشام ، جیش الاسلام اور لیونٹ فرنٹ جیسے دھڑوں سمیت 40 سے زیادہ حکومت مخالف گروہوں کو ، 5 اکتوبر کو ، ماسکو کی فضائی مہم کے انتقامی کارروائی میں روسی افواج پر حملہ کرنے کا عزم ظاہر کرنے کی اطلاع ملی تھی۔ [432]

القاعدہ کی سعودی حمایت یافتہ شامی شاخ کا جھنڈا

القاعدہ کے شام سے وابستہ النصرہ فرنٹ نے روسی فوجیوں کے 2500،000 شامی پاؤنڈ (تقریبا 13،000 امریکی ڈالر) ضبط کرنے کا ایک انعام مقرر کیا ہے۔ [433] روسی زبان بولنے والے ابو عبید الممدنی نے روسیوں کو مخاطب ایک ویڈیو جاری کی جس میں کہا گیا ہے کہ وہ روسی فوجیوں کا قتل عام کریں گے۔ [434] ابو محمد الجلانی نے روسی شہریوں سے سابق سوویت مسلمانوں پر حملہ کرنے کا مطالبہ کیا اور شام کے علاوی گاؤں پر حملے کرنے کا مطالبہ کیا۔ [435] [436] [437]


عراق اور دولت اسلامیہ نے ابو محمد العدنانی کے ذریعہ ایک ریکارڈ شدہ مخاطب گفتگو میں روسیوں کے خلاف جہاد کا اعلان کیا۔ [438] 12 نومبر کو ، داعش نے اپنی میڈیا برانچ ، الحیات میڈیا سنٹر کے ذریعہ ایک میوزک ویڈیو شائع کیا ، جس میں انھوں نے دھمکی دی تھی کہ وہ بہت جلد روس پر حملہ کردیں گے اور "خون ایک سمندر کی طرح پھیل جائے گا"۔

اخوان المسلمین نے شام میں ایک بیان جاری کیا جس میں روس کو لازمی طور پر ( فرد عین) ہتھیار لے جانے کے قابل اہل بیت المقدس کے خلاف جہاد کا اعلان کیا گیا ہے۔ [76] [439] [440] [441] انہوں نے روسی آرتھوڈوکس چرچ کے آپریشن کو ہولی جنگ قرار دیا۔ [442] [443] [444] [445] [446] [447] [448]

پچاس سعودی دینی علماء نے روسی مداخلت کے خلاف ایک بیان پر دستخط کیے ، پہلے روسیوں کو "اوہ روسیوں ، صلیب کے اوہ انتہا پسند لوگ" کی حیثیت سے خطاب کرتے ہوئے ، سوویت کمیونسٹوں کے وارث کی حیثیت سے آرتھوڈوکس روس سے خطاب کیا۔ ، یہ کہتے ہوئے کہ وہ " نصیری حکومت کی حمایت کر رہے ہیں" اور "مسلم شام" پر حملہ کر رہے ہیں ، یہ کہتے ہوئے کہ روسی آرتھوڈوکس چرچ کے رہنماؤں نے "صلیبی جنگ" کا اعلان کیا ہے اور ان سے کہا تھا کہ وہ سوویت یونین کی تقدیر کو پورا کریں گے اور "شرمناک شکست کا سامنا کریں گے"۔ لیونٹ "۔ بیان میں "لیوینٹ میں ہمارے لوگ" کو بھی مخاطب کرتے ہوئے ، قابل جسمانی اور ان افراد کو بتایا گیا جو ہجرت کرنے کے بجائے "جہاد" میں شامل ہونے میں حصہ ڈالنے کے اہل ہیں۔ بیان میں شام میں حکومت کے خلاف تمام دھڑوں کو متحد ہونے کا بھی مطالبہ کیا گیا ہے۔ مزید یہ کہ ، "عرب اور مسلم ممالک" سے خطاب کرتے ہوئے ، انھیں یہ بتاتے ہوئے کہ "مغربی روسی اور صفوی اور نوسائری اتحاد" کے ہاتھوں "سنیوں اور ان کے ممالک اور شناخت کے خلاف ایک حقیقی جنگ ہے" ، اور تمام تعلقات کو ختم کرنے کا مطالبہ کیا۔ ایران اور روس کے ساتھ مسلم ممالک کے ساتھ اور "سرزمین اور لیوینت کے عوام کو فارس اور روسیوں کے اثر و رسوخ سے بچانے" کے لئے ، خاص طور پر قطر ، ترکی اور سعودی عرب سے لیونٹ کی حمایت کرنے کا مطالبہ۔ [449] [450] [451] [452] [453] [454] [455] [456] [457]

مفت شامی فوج کی "حمص لبریشن موومنٹ" نے شام میں روسیوں کے خلاف خودکش بم دھماکوں کی دھمکی دی تھی۔ [458]

ترکستان اسلامی پارٹی کے ایغور جنگجوؤں کی تصاویر عربی زبان میں سرخیوں کے ساتھ جاری کی گئیں جن میں کہا گیا ہے کہ "نوصری فوج اور روسیوں کے ساتھ کھڑے ہو کر۔" (المجاهدين التركستانيين يتصدى بقوة للجيش النصيري ومن قبل الروس)۔ [459]

ترکمن حزب اختلاف کے ایک گروپ نے فری سیرین آرمی اور النصرہ فرنٹ کے ساتھ اتحاد کیا بیان کیا ہے کہ روسی فضائیہ نے ترکمان دیہات اور ترکمان پہاڑی علاقے میں پوزیشنوں کے خلاف بیک وقت فضائی حملے کیے۔ [460] [461] ایک واقعے میں 40 سے زیادہ شہریوں کی ہلاکت کی اطلاع ہے۔ [462] [463]

مذید دیکھیں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Understanding Armenia's Syrian Gamble". Jamestown Foundation. اخذ شدہ بتاریخ 29 ستمبر 2018. 
  2. "Armenia sends military deminers and medics to support Russian mission in Syria". EurasiaNet. اخذ شدہ بتاریخ 11 فروری 2019. 
  3. "Syrian Kurds use Russian and US support to make rapid advances". Middle East Eye. 17 February 2016. 
  4. "Russian support for PKK's Syrian arm PYD". Anadolu Agency. 08 دسمبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  5. "Kurds attack Turkish-backed Syrian opposition forces with Russian help". i24 News. 28 November 2015. 
  6. "YPG advances near Turkey's border". Rudaw Media Network. 28 November 2015. 
  7. "Russian-Kurdish-Syrian military cooperation is happening in secret". The Independent (بزبان انگریزی). 2017-07-24. اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2017. 
  8. theregion.org. "SDF units coordinating efforts in Syria with Russia despite cooperation with U.S. – PYD". اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2017. 
  9. "Syrian Kurds seize territory from IS with US, Russian support". Deutsche Welle (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2017. 
  10. "Russia says it supplies air cover to YPG in eastern Syria". DailySabah. اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2017. 
  11. ^ ا ب "Turkey, Russia continue joint airstrikes against ISIL near al-Bab". Hürriyet Daily News. 2 January 2017. 
  12. "US and Russian military to hold urgent talks over Syria crisis after Putin defies West". The Telegraph. اخذ شدہ بتاریخ 30 ستمبر 2015. 
  13. ^ ا ب Tom Kutsch (8 October 2015). "Gulf states increase arms to Syrian rebels in counter to Russia airstrikes". Al Jazeera America. اخذ شدہ بتاریخ 01 نومبر 2015. 
  14. ^ ا ب Gareth Porter (28 May 2015). "Gulf allies and 'Army of Conquest'". Al-Ahram Weekly. 
  15. Kim Sengupta (12 May 2015). "Turkey and Saudi Arabia alarm the West by backing Islamist extremists the Americans had bombed in Syria". The Independent. 13 مئی 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  16. "'Army of Conquest' rebel alliance pressures Syria regime". Yahoo News. 28 April 2015.
  17. "Syria peace talks end in Lausanne without significant progress". Daily Sabah. 15 October 2016. 
  18. "Russia unleashes first wave of airstrikes in Syria". Al Arabiya. 30 September 2015. 
  19. "Who are the Turkmen in Syria?". BBC. 24 November 2015. اخذ شدہ بتاریخ 25 نومبر 2015. 
  20. "Syrian rebels fired on parachuting Russian pilots, killing at least one after Turkey shot down warplane: official". National Post. 24 November 2015. اخذ شدہ بتاریخ 13 دسمبر 2015. 
  21. Fisk، Robert (4 October 2015). "Syria's 'moderates' have disappeared... and there are no good guys". The Independent. اخذ شدہ بتاریخ 08 اکتوبر 2015. 
  22. "Saudi Arabia just replenished Syrian rebels with one of the most effective weapons against the Assad regime". Business Insider. 9 October 2015. 
  23. "Turkey supports Free Syrian Army". Anadolu Agency. 25 October 2014. 20 نومبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  24. "U.S. Weaponry Is Turning Syria into Proxy War With Russia". نیو یارک ٹائمز. 12 October 2015. 
  25. "US drops ammunition to rebels fighting ISIL in Syria". الجزیرہ. 13 October 2015. 
  26. "U.S. weapons reaching Syrian rebels". Washington Post. 11 September 2013. 
  27. "U.S. MILITARY WILL LEAVE SYRIA BASE IN DEAL WITH RUSSIA, REPORTS SAY". Newsweek. 29 May 2018. 
  28. "U.S.-backed militias says Russian jets struck its fighters in east Syria". روئٹرز. 25 September 2017. اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2017. 
  29. Andrew Illingworth (25 September 2017). "BREAKING: Russian warplanes bomb Kurdish forces in east Deir Ezzor: reports". al-Masdar News. اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2017. 
  30. Andrew Illingworth (25 September 2017). "Syrian Army, Russian artillery shells Kurdish forces in east Deir Ezzor: reports [Update]". al-Masdar News. اخذ شدہ بتاریخ 25 ستمبر 2017. 
  31. "(in Russian)". 
  32. "Russian aircraft deliver almost 6,000 strikes on gunmen in Syria in 2 months". TASS. 
  33. Genevieve Casagrande؛ Christopher Kozak؛ Jennifer Cafarella (24 February 2016). "Syria 90-Day Forecast: The Assad Regime and Allies in Northern Syria" (PDF). Institute for the Study of War. اخذ شدہ بتاریخ 01 جون 2016. 
  34. Laura Pitel, Nadia Beard (14 March 2016). "Vladimir Putin orders Russian military to begin withdrawal from Syria". The Independent. اخذ شدہ بتاریخ 02 مئی 2016. 
  35. "Putin orders Russian troops to begin pulling out of Syria". Fox News. اخذ شدہ بتاریخ 02 مئی 2016. 
  36. "Obama, Putin discuss Russia's 'partial withdrawal' from Syria". The Express Tribune. 15 March 2016. اخذ شدہ بتاریخ 02 مئی 2016. 
  37. Desk، News (6 October 2016). "Russian Air Force considers indefinite deployment in Syria". Al-Masdar News. 
  38. "Syria conflict: Russia 'to continue air strikes' after withdrawal". BBC News. اخذ شدہ بتاریخ 02 مئی 2016. 
  39. "Russia Finds Itself In The Middle As Turkey Continues Offensive In Syria". NPR.org. 2019-10-15. اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2020. 
  40. Semenov، Kirill (19 March 2020). "Russia, Turkey conduct first joint patrol in Idlib". Al-Monitor. اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2020. 
  41. "News Analysis: Russian and Syrian troops take the place of Kurdish forces in key cities". Los Angeles Times. 2019-10-23. اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2020. 
  42. "Syrian army enters Kurdish-held city, air base to help counter Turkish assault". www.xinhuanet.com. 
  43. "Syrian army moves to confront Turkish forces as US withdraws". www.timesofisrael.com. 
  44. "Syrian forces enter key border town". Times. 16 October 2019. 
  45. Командующий группировкой войск РФ в Сирии дал первое интервью. Rossiskaya Gazetta.
  46. Источник: назначен новый командующий российской группировкой войск в Сирии RIA, 22 July 2016.
  47. Андрей Картаполов возглавляет группировку российских войск в Сирии с 19 декабря Kommersant, 6 January 2017.
  48. Российской группировке в Сирии нашли нового командующего RBK Group, 2 November 2017
  49. В Минобороны опровергли сообщения о замене командующего российской группировкой в Сирии Interfax, 21 February 2018.
  50. С начала операции ВКС в Сирии прошло три года TASS, 30 September 2018.
  51. Командующий ЦВО уехал воевать, оставив в штабе округа две вакансии: Генерал-лейтенант Александр Лапин возглавил группировку российских войск в Сирии ural.aif.ru (АиФ-Урал), 24 October 2018.
  52. ^ ا ب Командующего ВДВ десантировали в Сирию. Российские силы в республике возглавил Андрей Сердюков Kommersant, 12 April 2019.
  53. Минобороны РФ сменило командующего российской группировкой в Сирии Interfax, 13 November 2019.
  54. "Russian General Killed by 'Explosive Device' in Syria: Agencies". 18 August 2020. 
  55. Alessandria Masi (11 November 2014). "If ISIS Leader Abu Bakr al-Baghdadi Is Killed, Who Is Caliph of the Islamic State Group?". International Business Times. 
  56. "Kadyrov Claims Red-Bearded Chechen Militant al-Shishani Dead". ElBalad. 14 November 2014. 28 جنوری 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  57. "Kadyrov Says Islamic State's Leader From Georgia Killed". Radio Free Europe/Radio Liberty. 14 November 2014. 
  58. ^ ا ب "Don't let the Islamic State slip the noose in Syria". 11 September 2017. اخذ شدہ بتاریخ 23 ستمبر 2017. 
  59. "Third Russian air strike on Syrian rebel group kills leader". Reuters. 20 October 2015. 
  60. "Abu Yahia al-Hamawi, Ahrar al-Sham's New Leader". Syria Comment. 12 September 2015. اخذ شدہ بتاریخ 01 اکتوبر 2015. 
  61. استشهاد القائد العسكري لقطاع حلب في حركة فجر الشام ومسؤولين في الحركة بغارات جوية على مدينة حلب (بزبان عربی). اخذ شدہ بتاریخ 17 فروری 2017. 
  62. https://web.archive.org/web/20170113222919/https://microsyria.com/2017/01/13/%D9%85%D9%82%D8%AA%D9%84-%D9%82%D9%8A%D8%A7%D8%AF%D9%8A%D9%8D-%D9%81%D9%8A-%D8%A7%D9%84%D8%AD%D8%B2%D8%A8-%D8%A7%D9%84%D8%A5%D8%B3%D9%84%D8%A7%D9%85%D9%8A-%D8%A7%D9%84%D8%AA%D8%B1%D9%83%D8%B3%D8%AA/%7Caccess-date%3D 15 January 2017
  63. Al Mudiq، Qalaat (2019-08-15). "#Syria: reports emerging tonight Abu Salman Belarus, military commander of Malhama Tactical, was killed today in Greater #Idlib. He played prominent role in training 100s of Rebels, including #HTS "Red Bands".". @QalaatAlMudiq (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2019. 
  64. Weiss، Caleb. "A prominent Chechen commander in Syria has been killed, reportedly by a Russian airstrike". Business Insider. 
  65. "Air strike kills top commander of former Nusra group in Syria". Reuters. 9 September 2016. 
  66. A prominent Tahrir al-Sham commander killed in southern Idlib, Islamic World News
  67. ^ ا ب پ ت ٹ Andrew Illingworth (2017-09-27). "Al-Qaeda leadership, dozens of jihadists wiped out by Russian missile strike in Idlib" (بزبان انگریزی). Al Masdar. 
  68. "Russia Says Injures Al-Nusra Front Leader, Kills 12 Field Commanders In Air Strike". اخذ شدہ بتاریخ 06 اکتوبر 2017. 
  69. ^ ا ب پ "3 Nusra commanders, dozens of jihadists killed in airstrikes from Russian aircraft carrier – MoD". RT. 2016-11-11. 
  70. https://en.farsnews.ir/newstext.aspx?nn=13950402000792%7Caccess-date= 13 July 2016
  71. Leith Fadel (30 September 2015). "Russian Air Force Pounds Al-Qaeda in Latakia and Hama". Al-Masdar News. اخذ شدہ بتاریخ 01 اکتوبر 2015. 
  72. Anne Bernard, Andrew E. Kramer (7 October 2015): Escalating Syria Attack, Russia Fires Missiles From Warships, The New York Times.
  73. "Russia turns to backwater navy for Syria missile strikes". Reuters. 9 October 2015. 27 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 اکتوبر 2015. 
  74. "Russia Said to Redeploy Special-Ops Forces From Ukraine to Syria". The Wall Street Journal. 23 October 2015. اخذ شدہ بتاریخ 27 اکتوبر 2015. 
  75. Jihadists kill 4 Russian soldiers in western Aleppo
    Four FSB special forces officers reportedly killed in Syria
    4 Russian Special Forces Officers Killed in Syria – Reports
  76. ^ ا ب "Syrian rebel groups call for unity, attacks on Russia". Deutsche Welle. 5 October 2015. 
  77. "Iran troops to join Syria war, Russia bombs group trained by CIA". Reuters. 1 October 2015. 
  78. "Rebels say US-made missiles turning tide against regime". Agence France-Presse. 13 October 2015. 19 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 13 اکتوبر 2015. 
  79. "US accuses Russia of 'throwing gasoline on fire' of Syrian civil war". The Guardian. 30 September 2015. اخذ شدہ بتاریخ 02 اکتوبر 2015. 
  80. "Syrian war's al-Qaida affiliate calls for terror attacks in Russia". The Guardian. 13 October 2015. 
  81. "Search for the dead begins in Idlib after Islamic State-linked brigade leaves for Raqqa". Syria Direct. 
  82. "Russian strikes kill 18, wound dozens, according to Syrian opposition". Fox News. 
  83. "Islamic State closes in on Syrian city of Aleppo; U.S. abandons rebel training effort". Reuters. 9 October 2015. 14 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 اکتوبر 2015. 
  84. "Russian soldiers geolocated by photos in multiple Syria locations", MARIA TSVETKOVA, 8 November 2015, Reuters. "U.S. security officials and independent experts told Reuters last week that Moscow had increased its forces in Syria to 4,000 personnel from an estimated 2,000. A U.S. defense official said multiple rocket-launcher crews and long-range artillery batteries were deployed outside four bases the Russians were using".
  85. News، abc (16 June 2017). "Key moments in Russia's campaign, involvement in Syrian war". 16 جون 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 جون 2017.  Russia's Defense Ministry never said how many troops it has in Syria, but turnout figures in voting from abroad in the September 2016 parliamentary elections indicated that Russian military personnel in the Arab nation at the time likely exceeded 4,300.
  86. ^ ا ب Sputnik. "Russian Admiral Grigorovich Frigate Targets Terrorists in Syria With Missiles". 
  87. "Rosyjskie rakiety manewrujące uderzyły w IS. Wystrzelone z okrętu podwodnego". اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2015. 
  88. "Veliky Novgorod and Kolpino submarines fired the Kalibr cruise missiles from submerged position against the ISIS critical objects in Syria : Ministry of Defence of the Russian Federation". eng.mil.ru. 
  89. "Russian missile cruiser ordered to work with French in Syria". New York Daily News. 17 November 2015. اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2015. 
  90. Голландская подлодка опасно приблизилась к кораблям ВМФ в Средиземном море RIA Novosti, 9 November 2016.
  91. ^ ا ب پ "Russia Pounds ISIS With Biggest Bomber Raid in Decades". The Daily Beast. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2015. 
  92. "Russian Marines Position Themselves in Eastern Latakia". The Aviationist. 29 September 2015. 29 ستمبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اکتوبر 2015. 
  93. Thomas Gibbons-Neff (21 September 2015). "This is the airpower Russia has in Syria". The Washington Post. اخذ شدہ بتاریخ 30 ستمبر 2015. 
  94. "Восемь Су-34 и звено Су-27СМ3 усилили авиагруппу ВКС РФ в Сирии - Еженедельник "Военно-промышленный курьер"". vpk.almaz-media.ru. 14 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  95. "Russian Fighter Aircraft Arrive in Syria". Stratfor. 21 September 2015. 23 ستمبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اکتوبر 2015. 
  96. Rosenberg، Steve. "The Russian air base near Latakia earlier today. We're back here nearly 2 years after Russia launched its military operation in Syria.pic.twitter.com/PVVAKVE7Cj". 
  97. "ЦАМТО / Новости / "Коммерсант": МиГ-29СМТ пройдет испытание Сирией". armstrade.org. 
  98. New Russian stealth fighter spotted in Syria: Two Su-57 jets are the latest high-tech military system Russia has deployed in Syria conflict The Guardian, 22 February 2018.
  99. ^ ا ب СМИ сообщили о прибытии еще двух истребителей Су-57 в Сирию‍ RIA Novosti, 24 February 2018.
  100. Ripley، Tim (13 January 2016). "Russia operates 'Mainstay' AEW&Cs over Syria". Jane's Defence Weekly (Surrey, UK: Jane's Information Group) 53 (10). doi:ڈی او ئي. آئی ایس ایس این 0265-3818. 
  101. ^ ا ب В Сирии замечены новейшие российские истребители - на фоне активизации армии Асада и недовольства действиями США NEWSru, 22 February 2018.
  102. Аналитики обнаружили в Сирии секретный российский самолет-разведчик NEWSru, 16 February 2016.
  103. Cenciotti، David (15 February 2016). "Russia has just deployed its most advanced spyplane to Syria". The Aviationist. 16 فروری 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2016. 
  104. "Russian Fighter Aircraft Arrive in Syria". Stratfor. 15 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 08 اکتوبر 2015. 
  105. ^ ا ب Илья Щеголев (30 November 2015). "В Сирии заметили Ка-52 и Ми-28Н". Rossiyskaya Gazeta. اخذ شدہ بتاریخ 26 مارچ 2016. 
  106. ""Форпост" замечен в небе над Сирией". warfiles.ru. اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2016. 
  107. ""Уран-6" используют российские военные для разминирования Пальмиры". اخذ شدہ بتاریخ 02 مئی 2016. 
  108. Sputnik. "Desert Tiger: Russian-Made Armored Vehicle Well-Proven in Syrian Conflict". sputniknews.com. 
  109. "Под Пальмиру перебросили "Рыси" и "Тайфуны" для саперов (видео)". 
  110. Israeli satellite spots launchers for Russian nuclear-capable missiles in Syria The Times of Israel, 6 January 2017.
  111. Majumdar، Dave. "Report: Russia's Dangerous Iskander-M Ballistic Missiles Are Now in Syria". The National Interest. 
  112. Schmitt، Eric؛ MacFarquhar، Neil (21 September 2015). "Russia Expands Fleet in Syria With Jets That Can Attack Targets on Ground". The New York Times. اخذ شدہ بتاریخ 16 اکتوبر 2015. 
  113. Главком ВКС РФ признал: в Сирию были переброшены зенитные ракетные системы NEWSru, 5 November 2015.
  114. ^ ا ب "Россия развернула в Сирии ЗРК С-400". Kommersant. 26 November 2015. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2015. 
  115. "Истерика США от размещения С-300ВМ в Сирии имеет исчерпывающее объяснение". 
  116. Advanced Russia-Made Air-Defense System Deployed in Central Syria Fars News Agency, 24 September 2017.
  117. Cockburn، Patrick (16 November 2014). "Islamic State has 200,000 fighters, claims Kurdish leader". The Independent. Erbil, Iraqi Kurdistan. اخذ شدہ بتاریخ 22 دسمبر 2014. 
  118. "US-led forces drop nearly 5,000 bombs on ISIS". Al Arabiya. 8 January 2015. اخذ شدہ بتاریخ 08 جنوری 2015. 
  119. "Fears of massacre as Isis tanks lead assault on Kurdish bastion". The Times. 4 October 2014. 
  120. "Who is Russia bombing in Syria? The militant groups determined to fight to the death". The Independent. 1 October 2015. Patrick Cockburn stated that "The Free Syrian Army was always a mosaic of fractions and is now largely ineffectual."
  121. Richard Hall (9 January 2014). "Factbox: Syria's rebel groups". Reuters. 09 جنوری 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  122. "Front to Back". Foreign Policy. 
  123. Al-awsat، Asharq (30 January 2017). "Syria: Surfacing of 'Hai'at Tahrir al-Sham' Threatens Truce - ASHARQ AL-AWSAT English". 15 فروری 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  124. "Is Syria's Idlib being groomed as Islamist killing ground?". Asia Times.  "Last January, Idlib sank into a "rebel civil war" as fighting broke out between Jabhat al-Nusra and the Turkish-backed Ahrar al-Sham, a militia in the Syrian north that boasts of a powerbase of at least 20,000 fighters."
  125. "Syrian opposition merger in Jan 2017". archicivilians. اخذ شدہ بتاریخ 26 جنوری 2017. 
  126. Charles Lister (15 March 2017). "Al Qaeda Is Starting to Swallow the Syrian Opposition". Foreign Policy.  "HTS and Ahrar al-Sham are the most militarily powerful, with the former likely commanding 12,000 to 14,000 fighters and the latter closer to 18,000 to 20,000."
  127. Aaron Y Zelin (June 2017). "How Al Qaeda survived drones, uprisings and the Islamic State" (PDF). Washington Institute for Near East Policy. "Overnight [after its January 2017 expansion], Ahrar al-Sham had gained approximately 8,000 additional fighters to supplement its already large membership of 12,000."
  128. ^ ا ب پ ت Russia lost 112 servicemen over three years of counter-terror operation in Syria - MP
    Russian soldier killed in attack by Turkish-backed rebels
    The Ministry of Defense of the Russian Federation reported the death of three Russian soldiers in Syria, March 25, 2019.
  129. "Second month in a row | Russian airstrikes leave no civilian fatalities". SOHR. May 30, 2020. اخذ شدہ بتاریخ May 30, 2020. 
  130. على الرغم من وقف إطلاق النار المتواصل منذ 26 يوماً.. استشهاد 27 مدنياً بضربات جوية روسية خلال شهر آذار/مارس 2020. SOHR. July 1, 2020. اخذ شدہ بتاریخ July 1, 2020. 
  131. Butler، Suleiman Al-Khalidi and Daren (10 February 2017). "Russian bombing mistake kills three Turkish soldiers in Syria". The Sydney Morning Herald. 
  132. "Nearly 45 regime and Turkish soldiers and rebels killed in shelling and violent battles on Al-Nayrab frontline, east of Idlib • The Syrian Observatory For Human Rights". 21 February 2020. 
  133. "Syrian, Turkish armies engage in new deadly clashes in Idlib". 
  134. "July 2020 | Russian airstrikes kill civilian in Al-Bab and tens of ISIS members in the Syrian desert • The Syrian Observatory For Human Rights". 1 July 2020. 
  135. Rights، Syrian Network For Human (18 July 2020). "Civilian Death Toll". 
  136. ^ ا ب Patrick J. McDonnell؛ W.J. Hennigan؛ Nabih Bulos (30 September 2015). "Russia launches airstrikes in Syria amid U.S. concern about targets". Los Angeles Times. اخذ شدہ بتاریخ 07 اکتوبر 2015. 
  137. "Russia carries out first air strikes in Syria". Al Jazeera. 30 September 2015. اخذ شدہ بتاریخ 01 اکتوبر 2015. 
  138. "Clashes between Syrian troops, insurgents intensify in Russian-backed offensive". U.S. News & World Report. 8 October 2015. اخذ شدہ بتاریخ 10 اکتوبر 2015. 
  139. "Officials: CIA-Backed Syrian Rebels Under Russian Blitz". The New York Times. 10 October 2015. اخذ شدہ بتاریخ 10 اکتوبر 2015. 
  140. Dearden، Lizzie (8 October 2015). "Syrian army general says new ground offensive backed by Russian air strikes will 'eliminate terrorists'". The Independent. اخذ شدہ بتاریخ 10 اکتوبر 2015. 
  141. "Сирия: русский гром". Rossiyskaya Gazeta. 23 March 2016. اخذ شدہ بتاریخ 22 جولا‎ئی 2016. 
  142. Galpin، Richard (10 January 2012). "Russian arms shipments bolster Syria's embattled Assad". BBC News. اخذ شدہ بتاریخ 04 فروری 2012. 
  143. "Russia establishing permanent presence at its Syria bases: RIA". Reuters. 26 December 2017. 
  144. "Российский генерал признал, что РФ воюет в Сирии чтобы обеспечить сбыт "Газпрому" в Европу". gordonua.com. اخذ شدہ بتاریخ 25 مئی 2020. 
  145. "Вечер с Владимиром Соловьевым. Эфир от 04.10.2016". russia.tv (بزبان روسی). 2016-10-04. اخذ شدہ بتاریخ 25 مئی 2020. L. Ivashov: - If Russia did not engage in Syria and support the Assad regime, our budget would face the most severe difficulties by now. Three pipelines are competing there. Quatar has just discovered one of the largest gas resources: 51 trillions 50 billions of condensate. The first pipeline they attempted to lay was to Europe, through Syria and Turkey, where Turkey would become the operator. B. Nadezhdin: - So we entered the Syrian conflict to ensure demand for Gazprom? L. Ivashov: - Yes, for our survival. 
  146. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ ذ ر​ ڑ​ ز ژ س ش ص ض ط ظ ع غ ف ق ک گ ل​ م​ ن و ہ ھ ی ے اا اب ات اث اج اح اخ اد اذ ار از اس اش اص اض اط اظ اع اغ اف اق اك ال ام ان اہ او ای ب​ا ب​ب ب​پ ب​ت ب​ٹ ب​ث ب​ج ب​چ ب​ح ب​خ ب​د ب​ڈ​ ب​ذ ب​ر​ ب​ڑ​ ب​ز ب​ژ ب​س ب​ش ب​ص ب​ض ب​ط ب​ظ ب​ع ب​غ ب​ف ب​ق ب​ک ب​گ بل ب​م​ ب​ن ب​و ب​ؤ ب​ہ ب​ھ ب​ی ب​ئ ب​ے ب​أ ب​ء ب​ۃ پا پب پپ "Russia steps up military presence in Syria, despite Putin promise". FoxNews.com. Fox News. 11 January 2017. 
  147. Американский Б-52 разбомбил сирийскую деревню Rossiyskaya Gazeta, 10 January 2017.
  148. Расширенное заседание коллегии Министерства обороны kremlin.ru, 22 December 2017.
  149. Более 48 тысяч российских военных получили опыт в Сирии Rossiyskaya Gazeta, 23 December 2017.
  150. "Шойгу: Армия получила бесценный боевой опыт и готова к защите Отечества". Российская газета (بزبان روسی). اخذ شدہ بتاریخ 31 اکتوبر 2019. 
  151. Russian airstrikes in Syria killed 2,000 civilians in six months The Guardian, 15 March 2016.
  152. "In January, Russia topped a dark league table, a Syria watchdog reports.". 15 February 2016. 
  153. "Russian warplanes kill 5081 civilians 40% of them were civilians". sohr.com. 31 March 2016. 
  154. ^ ا ب "Russia Guilty Of Syria War Crimes, Says Amnesty". News.sky.com. 21 February 2016. اخذ شدہ بتاریخ 28 فروری 2016. 
  155. Russia unleashes lethal aerial arsenal on Aleppo by Tom Parfitt, 22 June 2016, The Times.
  156. ^ ا ب "Russia/Syria: Extensive Recent Use of Cluster Munitions | Human Rights Watch". Hrw.org. اخذ شدہ بتاریخ 28 فروری 2016. 
  157. ^ ا ب "Russia Today covering up war crimes in Syria | Conflict Intelligence Team". citeam.org. اخذ شدہ بتاریخ 20 جون 2016. 
  158. "More than 7700 civilian casualties are the victims of Russian bombardment in 31 months and regime's warplanes kill about 25500 civilians since the start of the Syrian revolution • The Syrian Observatory For Human Rights". 30 April 2018. 
  159. "Syria/Russia: International Inaction as Civilians Die". Human Rights Watch. 
  160. "Syria: Relentless bombing of civilians in eastern Ghouta amounts to war crimes". Amnesty International. 
  161. "US sanctions against Russia over Ukraine and Syria to remain". BBC. 
  162. "Russia accused of war crimes in Syria at UN security council session". The Guardian. 
  163. "Russia rejects Syria war crime claim". BBC. 
  164. "Ъ – Иранский генерал потерялся между Тегераном и Москвой". kommersant.ru. اخذ شدہ بتاریخ 16 اکتوبر 2015. 
  165. "МИД России: иранский генерал Сулеймани в Москве не был". Радио Свобода. اخذ شدہ بتاریخ 16 اکتوبر 2015. 
  166. "Россия в Сирии: вид сверху". Kommersant. 3 October 2015. اخذ شدہ بتاریخ 26 اکتوبر 2015. 
  167. Alec Luhn (14 September 2015). "Russia sends artillery and tanks to Syria as part of continued military buildup". The Guardian. اخذ شدہ بتاریخ 09 اکتوبر 2015. 
  168. Договор о размещении авиагруппы РФ в САР заключен на бессрочный период [The agreement on deployment of RF air force group is concluded for a limitless period]. RIA Novosti (بزبان روسی). 14 January 2015. اخذ شدہ بتاریخ 14 جنوری 2016. 
  169. Дума ратифицировала соглашение о бессрочном размещении авиагруппы в Сирии [Duma ratified agreement on limitless deployment of aviation group in Syria]. TASS (بزبان روسی). 7 October 2016. اخذ شدہ بتاریخ 08 اکتوبر 2016. 
  170. "Russian Warships in Eastern Mediterranean to Protect Russian Strike Fighters in Syria". USNI News. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2015. 
  171. "Why Russia is pressing the 'accelerate' pedal in Syria". CNN. 15 October 2015. اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2015. 
  172. "Russia's Lavrov says Washington declines deeper military talks on Syria". NEWSru. اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2015. 
  173. ""Это обидно": Лавров сообщил, что США отказались принять делегацию РФ для обсуждения сирийского кризиса". NEWSru. اخذ شدہ بتاریخ 16 اکتوبر 2015. 
  174. "Britain has frozen us out, says Russian envoy". The Times. 26 October 2015. اخذ شدہ بتاریخ 26 اکتوبر 2015. 
  175. Shaun Walker (30 September 2015). "Russian parliament grants Vladimir Putin right to deploy military in Syria". The Guardian. اخذ شدہ بتاریخ 30 ستمبر 2015. 
  176. "Syria crisis: Russia begins air strikes against Assad foes". ВВС News. 30 September 2015. 
  177. "View from Moscow: Syria Move Aimed at Ending International Isolation". Voice of America. 29 September 2015. اخذ شدہ بتاریخ 13 اکتوبر 2015. 
  178. "Ввяжемся в бой, а там смотрите сами: Россия изобретает новый тип дипломатии". Vedomosti. 15 September 2015. اخذ شدہ بتاریخ 18 اکتوبر 2015. 
  179. "After Denying Claims They're Killing Civilians, Russia Has Launched Fresh Airstrikes in Syria". Vice News. 1 October 2015. 01 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اکتوبر 2015. 
  180. Leith Fadel (3 October 2015). "Russian Air Force Destroys a Large ISIS Convoy in East Homs Amid the Syrian Army's Counter-Attack". Al-Masdar News. اخذ شدہ بتاریخ 05 اکتوبر 2015. 
  181. Leith Fadel (2 October 2015). "Russian Air Force Begins Massive Aerial Campaign Against ISIS in East Syria". Al-Masdar News. اخذ شدہ بتاریخ 02 اکتوبر 2015. 
  182. Leith Fadel (2 October 2015). "ISIS Rocked in Al-Raqqa: Russian Air Force Strikes Tabaqa Airport". Al-Masdar News. اخذ شدہ بتاریخ 03 اکتوبر 2015. 
  183. Leith Fadel (3 October 2015). "Breaking: Russian Air Force Strikes Al-Qaeda in Jisr Al-Shughour and Northeast Latakia". Al-Masdar News. اخذ شدہ بتاریخ 05 اکتوبر 2015. 
  184. "Analysis: Is Russia flexing its missiles in Syria?". Al Jazeera. اخذ شدہ بتاریخ 08 اکتوبر 2015. 
  185. "Russian missiles 'hit IS in Syria from Caspian Sea'". BBC. 7 October 2015. 
  186. "URGENT: Iran Rejects Russian Missile Crash". Farsnews. 09 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 14 اکتوبر 2015. 
  187. "اصابت چند موشک روسی به مواضع داعش درخاک ایران تکذیب شد". irinn.ir. 15 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 اکتوبر 2015. 
  188. "Russian air force hits 60 Islamic State targets in Syria, kills 300 jihadists". The Times of India. 7 October 2015. 12 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  189. "Syria and allies Iran and Russia prepare for Aleppo offensive". euronews. اخذ شدہ بتاریخ 16 اکتوبر 2015. 
  190. Abu Ibrahim Raqqawi. "Russia lied about targeting ISIS". Raqqa is Being Slaughtered Silently. 21 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 دسمبر 2015. 
  191. Cenciotti، David (20 November 2015). "Russian Air Force Strategic Bomber Fleet in Action Over Syria 17–20 November 2015". The Aviationist. اخذ شدہ بتاریخ 01 دسمبر 2015. 
  192. "TASS: Military & Defense – Russia involves strategic missile carriers in operation against Islamic State in Syria". TASS. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2015. 
  193. "Russia steps up attacks against IS with missile bombardment". BBC. 18 November 2015. اخذ شدہ بتاریخ 19 نومبر 2015. 
  194. Путин поручил ВМФ РФ установить контакт с военно-морской группой Франции Interfax, 17 November 2015.
  195. "France to deploy largest warship in mission against IS". BBC. 5 November 2015. اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2015. 
  196. "Авиация РФ нанесла второй массированный удар по объектам ИГ в Сирии". RIA Novosti. 18 November 2015. اخذ شدہ بتاریخ 19 نومبر 2015. 
  197. "Минобороны РФ опубликовало видео пусков крылатых ракет с борта Ту-160". РИА Новости. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2015. 
  198. "Russia says eliminated 600 rebels in Syria". The Daily Star. 20 November 2015. اخذ شدہ بتاریخ 21 نومبر 2015. 
  199. "Turkish F-16s shoot down Russian warplane near Syrian border". ABC News. اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2015. 
  200. "Turkey's statement to the United Nations Security Council". Al Jazeera. اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2015. 
  201. "Turkey 'downs Russian warplane on Syria border'". BBC News. اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2015. 
  202. Вадим Лукашевич. "Гибель российского Су-24 в Сирии: некоторые вопросы". Forbes.ru. اخذ شدہ بتاریخ 04 دسمبر 2015. 
  203. "Турция выразила России новый протест на нарушение воздушного пространства". РБК. اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2015. 
  204. Reuters Editorial (18 October 2015). "Turkey would shoot down planes violating its air space: PM". Reuters. اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2016. 
  205. "Турция будет сбивать самолеты, нарушившие воздушное пространство страны". ТАСС. اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2015. 
  206. "Выступление начальника Главного оперативного управления Генштаба ВС РФ генерал-лейтенанта Сергея Рудского по факту провокационных действий ВВС Турции : Министерство обороны Российской Федерации". function.mil.ru. اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2015. 
  207. "Turkey Takes Action Against Russia's Syrian Air War". Aviation International News. 26 November 2015. 
  208. https://ejmagnier.com/2015/11/30/over-100-russian-jet-fighters-and-a-new-brigade-are-expected-in-syria-once-shaayrat-airport-is-in-service/%7Caccess-date= 1 December 2015
  209. "Deadly 'Russian airstrike' hits market in Syria's Idlib". Al Jazeera. 29 November 2015. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2015. 
  210. "Российская авиация в Сирии разбомбила овощной рынок: минимум 40 погибших". NEWSru. 29 November 2015. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2015. 
  211. "Russia builds new base for more jets in Syria". The Times. 1 December 2015. اخذ شدہ بتاریخ 01 دسمبر 2015. 
  212. "The Times: Россия готовится развернуть в Сирии вторую авиабазу, увеличив число самолетов и военных". NEWSru. 1 December 2015. اخذ شدہ بتاریخ 01 دسمبر 2015. 
  213. "Russia hits targets in Syria from Mediterranean submarine". BBC. 8 December 2015. اخذ شدہ بتاریخ 09 دسمبر 2015. 
  214. Встреча с главой Минобороны Сергеем Шойгу The Kremlin website, 8 December 2015.
  215. "Putin vows 'extremely tough' action on Syria threats". BBC. 11 December 2015. اخذ شدہ بتاریخ 12 دسمبر 2015. 
  216. В Кремле уточнили, что Россия не поставляет оружие ССА, и попросили "не цепляться" к формулировкам NEWSru, 12 December 2015.
  217. "Шойгу рассказал депутатам о плане "дойти до Евфрата" в Сирии". RBC. 16 December 2015. اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2015. 
  218. Путин: Вооруженные силы РФ показали в Сирии не все свои возможности RIA Novosti, 19 December 2015.
  219. Reuters Editorial (19 December 2015). "Putin: Russia ready to use 'more military means' in Syria if need be – agencies". Reuters UK. اخذ شدہ بتاریخ 23 دسمبر 2015. 
  220. Paul Antonopoulos. "Syrian army cut Damascus-Aleppo highway". Al-Masdar News. اخذ شدہ بتاریخ 23 دسمبر 2015. 
  221. Hala Jaber [@] (21 December 2015). ".2/ #SAA now controls 3/4 of #Aleppo's southern Reef." (ٹویٹ). اخذ شدہ بتاریخ 23 دسمبر 2015ٹویٹر سے. 
  222. Leith Fadel. "Hezbollah, Syrian Army control 3/4 of southern Aleppo after completing phase 2 of the offensive". Al-Masdar News. اخذ شدہ بتاریخ 23 دسمبر 2015. 
  223. Генштаб РФ: самолеты ВКС совершили уже более 5 тысяч вылетов в Сирии и уничтожили больше 2 тысяч бензовозов с нефтью ИГ NEWSru, 25 December 2015.
  224. Начальник Главного оперативного управления Генерального штаба Вооруженных Сил Российской Федерации подвел итоги деятельности российских ВКС в Сирии в 2015 году Russian Defence ministry website, 25 December 2015.
  225. Russian Aerospace Force never attack civil facilities in Syria – commander TASS, 27 December 2015.
  226. "Новости NEWSru.com :: Российская авиация ни разу не атаковала гражданские объекты в Сирии, заявил главком ВКС". newsru.com. اخذ شدہ بتاریخ 11 جنوری 2016. 
  227. "Сводка контртеррористических операций Сирийской армии за 6 января". Сирийское арабское информационное агентство САНА. اخذ شدہ بتاریخ 11 جنوری 2016. 
  228. "Syrian army backed by jets clashes with rebels holding southern town". Reuters. 30 December 2015. اخذ شدہ بتاریخ 31 دسمبر 2015. 
  229. "Russia helps shift balance against rebels in southern Syria". FT. 7 January 2016. اخذ شدہ بتاریخ 08 جنوری 2016. 
  230. "Air strike kills dozens in Syria as U.N. envoy visits Damascus". Reuters. 9 January 2016. 
  231. Крейсер "Варяг" вышел в Средиземное море, где сменит у берегов Сирии крейсер "Москва" TASS, 3 January 2016.
  232. "Russian warships make Soviet-era display of might off coast of Syria". The Guardian. اخذ شدہ بتاریخ 22 جنوری 2016. 
  233. ВКС РФ и ВВС Сирии впервые выполнили совместную боевую задачу в небе [RF Air Force and Air Force of Syria have conducted a joint combat mission for the first time]. RIA Novosti (بزبان روسی). 14 January 2015. اخذ شدہ بتاریخ 14 جنوری 2016. 
  234. Syria regime advances in northwest ahead of peace talks AFP, 24 December 2016.
  235. Nechepurenko، Ivan (4 February 2016). "Shelling Kills Russian Military Adviser in Syria". The New York Times. ISSN 0362-4331. اخذ شدہ بتاریخ 04 فروری 2016. 
  236. Лавров назвал условия прекращения операции РФ в Сирии NEWSru, 3 February 2016.
  237. Tom Perry, Jack Stubbs and Estelle Shirbon (5 February 2016). "Russia and Turkey trade accusations over Syria". Reuters UK. اخذ شدہ بتاریخ 05 فروری 2016. 
  238. "Syria 'cessation of hostilities': full text of the support group's communique". the Guardian. اخذ شدہ بتاریخ 02 مئی 2016. 
  239. Dyomkin، Denis (14 March 2016). "Putin orders start of Russian forces' withdrawal from Syria". روئٹرز. اخذ شدہ بتاریخ 14 مارچ 2016. 
  240. "Putin orders to begin withdrawal of Russian forces from Syria from March 15". TASS. 14 March 2016. اخذ شدہ بتاریخ 14 مارچ 2016. 
  241. "Отбить Пальмиру у террористов сирийцам помогла российская авиация". اخذ شدہ بتاریخ 02 مئی 2016. 
  242. ВКС РФ за сутки уничтожили более 100 боевиков в районе Пальмиры RIA Novosti, 26 March 2016.
  243. "Palmyra's dynamited temple can be restored, de-miners use robots". Reuters. 21 March 2016. 
  244. Russia's military in Syria: Bigger than you think and not going anywhere CNN, 9 May 2016.
  245. Russia sets up Palmyra base Jane′s, 10 May 2016.
  246. "Discerning Damage to a Crucial Syrian Air Base". Stratfor. اخذ شدہ بتاریخ 24 مئی 2016. 
  247. "Russian attack helicopters destroyed in Syria; US officials say 'accident' to blame". Fox News Channel. 25 May 2016. اخذ شدہ بتاریخ 25 مئی 2016. 
  248. Вертолет с российскими летчиками в Сирии сбили из американского оружия Interfax, 9 July 2016.
  249. "Коммерсант": российские летчики погибли вблизи Пальмиры не на том вертолете, о котором сообщили в Минобороны NEWSru, 11 July 2016.
  250. "Противостояние США и РФ в Сирии только начинается". 
  251. "Two Russian helicopter pilots shot down, killed in Syria: Interfax". 10 July 2016. 
  252. "Syria war: Russian helicopter shot down, killing five on board". BBC News. 1 August 2016. اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2016. 
  253. "Syrian conflict: Russian bombers use Iran base for air strikes". 16 August 2016. 
  254. Russia uses Iran as base to bomb Syrian militants for first time Reuters, 16 August 2016.
  255. Fadel، Leith (29 August 2016). "Russian troops head to Aleppo City". Al-Masdar News. اخذ شدہ بتاریخ 30 اگست 2016. 
  256. "Syria′s war:US suspends". Al Jazeera. 4 October 2016. 
  257. US-Russian Feud Over Syria Escalates with Talk of War Crimes VOA, 7 October 2016.
  258. "Авианосная группа кораблей Северного флота начала поход в Средиземное море". RIA Novosti. 15 October 2016. اخذ شدہ بتاریخ 15 اکتوبر 2016. 
  259. Ripley، Tim (17 October 2016). "Russian carrier sails for the Mediterranean". IHS Jane's 360. Jane's. 18 اکتوبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2016. 
  260. Над Сирией замечены истребители с "Адмирала Кузнецова" RG, 8 November 2016.
  261. Cenciotti، David (5 December 2016). "Russian Su-33 crashed in the Mediterranean while attempting to land on Kuznetsov aircraft carrier". The Aviationist. اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2016. 
  262. "МИД: Авиация России и Сирии не наносит удары по восточному Алеппо с 18 октября". 
  263. O'Connor، Sean؛ Binnie، Jeremy؛ Ripley، Tim (28 November 2016). "Russian carrier jets flying from Syria, not Kuznetsov". janes.com. IHS Janes 360. 27 نومبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2016. 
  264. "#NATO flagship SNMG2 HNLMS De Ruyter encounters Russian guided missile corvette Mirazh (Nanuchka class) towed back to Black Sea.". twitter.com. Zr.Ms. De Ruyter. 18 November 2016. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2016. 
  265. "Final phase of evacuations from rebel-held eastern Aleppo underway". Sky News. 21 December 2016. اخذ شدہ بتاریخ 22 دسمبر 2016. 
  266. "Russia starts cutting grouping of forces in Syria". tass.com. TASS. 6 January 2017. اخذ شدہ بتاریخ 06 جنوری 2017. 
  267. "Russian Military Says It Has Begun Drawdown Of Forces In Syria". RadioFreeEurope/RadioLiberty. 
  268. Возвращение Rossiyskaya Gazeta, 10 January 2017.
  269. https://www.rt.com/news/379303-syria-palmyra-russia-operation/%7Caccess-date=15 March 2020
  270. "Nusra militants shell Kurdish areas in Syria's Afrin, Kurds respond". ARA News. 30 August 2015. اخذ شدہ بتاریخ 23 اکتوبر 2016. 
  271. "Turkish forces shell Afrin countryside, killing and injuring about 16 most of them from the self-defense forces and Asayish". SOHR. 9 July 2016. اخذ شدہ بتاریخ 23 اکتوبر 2016. 
  272. Thomas Schmidinger (24 February 2016). "Afrin and the Race for the Azaz Corridor". Newsdeeply. اخذ شدہ بتاریخ 23 اکتوبر 2016. 
  273. "Turkey strikes Kurdish city of Afrin northern Syria, civilian casualties reported". ARA News. 19 February 2016. 03 نومبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 23 اکتوبر 2016. 
  274. "International airstrikes and civilian casualty claims in Iraq and Syria: March 2017". Airwars. 13 April 2017. اخذ شدہ بتاریخ 04 جنوری 2019. 
  275. Syria conflict: Russia issues warning after US coalition downs jet BBC, 19 June 2017.
  276. Inside the Air War Over Syria: A High Altitude ‘Poker Game’ NYT, 23 May 2017.
  277. US shoots down armed Iranian-made drone as tensions mount in the skies over Syria The Telegraph, 20 June 2017.
  278. News Transcript: Media Availability with Secretary Mattis en route to Europe U.S. Department of Defense, 27 June 2017.
  279. Russia, Turkey and Iran map out de-escalation zones in Syria TASS, 16 May 2017.
  280. Russia, Turkey, Iran fail to agree on Syria de-escalation zones Reuters, 5 July 2017.
  281. RUSSIAN MILITARY POLICE DEPLOY CLOSE TO ISRAEL'S GOLAN TO MONITOR SAFE ZONES The Jerusalem Post, 25 July 2017.
  282. Russian Military Police Deployed to Monitor Syria Safe Zones VOA, 24 Julz 2017.
  283. Russian military police deploy north of Syrian city of Homs The Washington Post, 4 August 2017.
  284. Ruptly.TV on YouTube, 6 August 2017
  285. Russian Ministry of Defence, 25 August 2017
  286. Сирийская армия деблокировала Дейр-эз-Зор, сообщили в Минобороны РФ NEWSru, 5 September 2017.
  287. tvzvezda.ru، Редакция. "Удар главным "Калибром" по ИГИЛ*: эксклюзивный репортаж со Средиземного моря". tvzvezda.ru. 
  288. Путин поздравил Минобороны со «стратегической победой» в Сирии RBC, 5 September 2017.
  289. Putin, in telegram to Syria's Assad, hails 'strategic' Deir al-Zor victory Reuters, 5 September 2017.
  290. Российские военнослужащие при поддержке ВКС РФ прибыли в освобожденные районы Дейр-эз-Зора Zvezda, 10 September 2017.
  291. Syrian forces break ISIS siege of Deir ez-Zor airfield after Russian air strike TASS, 9 September 2017.
  292. ВКС РФ за сутки уничтожили в районе Акербата 180 объектов боевиков TASS, 12 September 2017.
  293. Russia bombed location in Syria near where US troops were present CNN, 18 September 2017.
  294. Russian strike wounds US-backed forces in Syria, says coalition 17 September 2017.
  295. Russia rejects allegation it bombed U.S.-backed fighters in Syria Reuters, 17 September 2017.
  296. "Chief of the Main Operational Directorate of the Russian General Staff Colonel General Sergei Rudskoy held a briefing for media representatives : Ministry of Defence of the Russian Federation". syria.mil.ru. 
  297. Начальник Главного оперативного управления Генштаба ВС РФ генерал-полковник Сергей Рудской провел брифинг для представителей СМИ Russian defence ministry, 20 September 2017.
  298. Трое российских военных были ранены при наступлении боевиков в Сирии: Всего в окружение попали 29 российских военных, однако их удалось вызволить Vedomosti, 20 September 2017.
  299. Кремль солидарен с Минобороны РФ в оценке роли США в атаке боевиков в "Идлибе" TASS, 21 September 2017.
  300. Кремль согласился с оценкой Минобороны роли США в атаке боевиков в Идлибе vz.ru, 21 September 2017.
  301. Москва заявила Вашингтону о недопустимости обстрелов спецназа РФ боевиками оппозиции в САР TASS, 21 September 2017.
  302. В Минобороны рассказали, что препятствует разгрому ИГ* в Сирии RIA Novosti, 4 September 2017.
  303. Russia says IS attacks in Syria come from location near U.S. forces Reuters, 4 September 2017.
  304. U.S. al-Tanf base hinders Syrian army’s advance against ISIS Syria Times, 6 October 2017.
  305. Минобороны назвало американскую базу в Сирии "черной дырой" RIA Novosti, 6 October 2017.
  306. Putin announces Russian troop withdrawal from Syria during visit BBC.
  307. Владимир Путин посетил авиабазу Хмеймим в Сирии kremlin.ru, 11 December 2017.
  308. Vladimir Putin announces Russian withdrawal from Syria during visit to airbase The Telegraph, 11 December 2017.
  309. Шойгу сообщил о начале возвращения российских военных из Сирии NEWSru, 11 December 2017.
  310. Россия начала формировать постоянную группировку в Тартусе и Хмеймиме TASS, 26 December 2017.
  311. Russia’s upper house ratifies agreement on naval base in Syria’s Tartus TASS, 26 December 2017.
  312. Russian pilot shouts 'this is for our guys' as he blows himself up to evade capture in Syria The Telegraph, 5 February 2018.
  313. Посадка Су-57 в Сирии попала на видео Rossiyskaya Gazeta, 22 February 2018.
  314. "Syria: The Truth About the Russian Deaths in US Airstrikes". SPIEGEL ONLINE. 2 March 2018. 
  315. Russia's most advanced fighter arrives in Syria CNN, 24 February 2018.
  316. Проверка Сирией: зачем новейший истребитель Су-57 прилетел на Хмеймим rbc.ru, 22 February 2018.
  317. "Rebels in southern Syria reach deal to end violence". www.aljazeera.com. 
  318. Сирийская армия взяла под контроль главный пограничный переход с Иорданией
  319. Russian military police to set up posts in vicinity of demilitarized zone near Golan Heights in Syria Interfax, 10 August 2018.
  320. Russian military police deploys four posts on Golan heights TASS, 14 August 2018.
  321. На Голанских высотах появились четыре поста российской военной полиции RIA Novosti, 14 August 2018.
  322. Российская военная полиция заняла посты на Голанских высотах в Сирии: Всего вдоль демилитаризованной зоны было размещено четыре наблюдательных пункта Komsomolskaya Pravda, 14 August 2018.
  323. Морской щит для Сирии: Российский ВМФ вывел в Средиземное море самую мощную группировку кораблей с начала участия РФ в конфликте Izvestiya, 28 August 2018.
  324. Russia says militants in Syria's Idlib province need liquidating Reuters, 29 August 2018.
  325. Сирийско-иранский тест для России и Саудовской Аравии: Лавров призвал ликвидировать "гнойник" в Идлибе Nezavisimaya Gazeta, 29 August 2018.
  326. Антонов предостерег США от очередной безосновательной и незаконной агрессии в Сирии TASS, 30 August 2018.
  327. Russian navy to hold drills off Syria as Idlib offensive looms Reuters, 30 August 2018.
  328. Россия проведет учения в Средиземном море с участием 25 кораблей и 30 самолетов: Маневры будут проходить в период с 1 по 8 сентября TASS, 30 August 2018.
  329. США готовы создать в Сирии бесполетные зоны: ПРО коалиции защитит сепаратистские анклавы от ударов Дамаска и Москвы Nezavisimaya Gazeta, 30 August 2018.
  330. Russia and Syria vow to 'wipe out terrorists' in Idlib Al Jazeera, 30 August 2018.
  331. Шойгу: Россия не оставит без ответа действия Израиля, приведшие к гибели экипажа Ил-20: Глава Минобороны РФ заявил, что израильские истребители нанесли удары без предупреждения TASS, 18 September 2018.
  332. Putin sees chance circumstances behind downing of Russian plane off Syrian coast Reuters, 18 September 2018.
  333. Минобороны РФ предоставило факты, указывающие на вину Израиля в крушении Ил-20 в Сирии: В ведомстве отметили, что действия израильских летчиков-истребителей говорят как минимум о преступной халатности TASS, 23 September 2018.
  334. Создали угрозу: Российские военные целиком возложили вину за гибель самолета Ил-20 на Израиль Rossiyskaya Gazeta, 23 September 2018.
  335. В Восточном Средиземноморье закрыты морские районы в связи с ракетными пусками ВМФ РФ Interfax, 20 September 2018.
  336. Syria to get Russia's S-300 air-defense missile system within two weeks TASS, 24 September 2018.
  337. Russia to upgrade Syrian air defences BBC, 24 September 2018.
  338. Россия передаст Сирии С-300 в течение двух недель Kommersant, 24 September 2018.
  339. "Syrian Army Liberates 19 Hostages Held by Islamic State Since July". Time. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2018. 
  340. "Syria army frees IS hostages - state media". 8 November 2018. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2018. 
  341. Савелов، Алексей. "В Минобороны раскрыли число участников военной операции ВС РФ в Сирии". Телеканал «Звезда». 
  342. Sly، Liz (2019-01-09). "Turkey and the Kurds turn to Russia to solve problems sparked by U.S. exit from Syria". Washington Post. اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2020. 
  343. Российская авиация уничтожила склад боевиков в сирийском Идлибе. Interfax, 13 March 2019.
  344. Russia restarts bombing campaign over rebel-held Syrian city of Idlib. The Telegraph, 15 March 2019.
  345. Russian and Syrian air strikes intensify on last rebel bastion. Reuters, 13 March 2019.
  346. Damascus presses Idlib attack, artillery hits Turkish position. Reuters, 4 May 2019.
  347. Violence in Syria’s Idlib subsides as Russia-brokered ceasefire takes effect – ministry. TASS, 13 June 2019.
  348. Assad hits a wall in Syrian war as front lines harden. Reuters, 10 July 2019.
  349. Syrian rebels say Moscow deploys ground forces in Idlib campaign. روئٹرز, 18 July 2019.
  350. "Syrian regime, Russia attacks kill 7 civilians in Idlib". Anadolu Agency. اخذ شدہ بتاریخ 29 اگست 2019. 
  351. "Syrian army to enter SDF-held Kobani, Manbij: Monitor". english.alarabiya.net (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 13 اکتوبر 2019. 
  352. "Syrian government forces set to enter Kobani and Manbij after SDF deal". The Defense Post (بزبان انگریزی). 13 October 2019. اخذ شدہ بتاریخ 13 اکتوبر 2019. 
  353. "US is out of the picture in Syria-Turkey crisis. Putin now owns this mess" (بزبان انگریزی). CNN. 20 October 2019. 
  354. "A Huge Airstrikes Over Syria's Idlib by Russian Fighter Jets (Video)". Bulgarian Military. اخذ شدہ بتاریخ 04 نومبر 2019. 
  355. "Assad vows to defeat rebels, as forces capture new ground". AP NEWS. 2020-02-16. اخذ شدہ بتاریخ 16 فروری 2020. 
  356. Desk، News (2020-02-16). "Battle of Aleppo city ends in Syrian Army victory after 7+ years of fighting". AMN - Al-Masdar News | المصدر نيوز (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 16 فروری 2020. 
  357. "Turkey Edges Toward Direct Conflict With Russian-Backed Syria". The Moscow Times. 2020-02-19. اخذ شدہ بتاریخ 24 فروری 2020. 
  358. "Flare-Up In Syria Bring Russia, Turkey Closer To Direct Conflict". Radio Liberty. 2020-02-19. اخذ شدہ بتاریخ 24 فروری 2020. 
  359. "Turkey will activate Russian S-400 missile systems: minister". روئٹرز. 2020-02-20. اخذ شدہ بتاریخ 24 فروری 2020. 
  360. After a Face-Off in Syria, Turkey and Russia Try to Pull Back From the Brink. نیو یارک ٹائمز 28 February 2020
  361. SPIEGEL، DER. "Türkische Soldaten sterben durch Luftangriffe in Idlib - DER SPIEGEL - Politik". www.spiegel.de. 
  362. Dozens of Turkish soldiers killed in strike in Idlib in Syria, The Guardian
  363. "Airstrike Hits Turkish Forces in Syria, Raising Fears of Escalation". نیو یارک ٹائمز. 2020-02-27. اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2020. 
  364. "Airstrike kills 33 Turkish soldiers in Syria while Russia says troops were amongst 'terrorists'". The Telegraph. 2020-02-28. اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2020. 
  365. "As Tensions Rise Over Idlib, Russian Pundits Blame Turkey For Past And Potential Bloodshed". Radio Liberty. 2020-03-02. اخذ شدہ بتاریخ 03 مارچ 2020. 
  366. Services، Compiled from Wire (2 March 2020). "Russia announces deployment of military police in Saraqib amid clashes". Daily Sabah. 
  367. Российская военная полиция введена в Саракиб: Российские военные будут обеспечивать безопасность при передвижении автотранспорта и мирных граждан по трассам М4 – М5. TASS
  368. https://www.themoscowtimes.com/2020/03/10/turkish-russian-forces-to-patrol-either-side-of-new-syrian-corridor-a69575 |date=12 March 2020
  369. "Saudi strongman 'encouraged' Russia intervention in Syria, lawsuit claims". The Guardian. اخذ شدہ بتاریخ 16 اگست 2020. 
  370. "Russian General Killed by 'Explosive Device' in Syria: Agencies". The Moscow Times. 18 August 2020. 
  371. [tt_news=45204&no_cache=1#.V0-5oHroycw Putin the 'Peacemaker' Ends Operations in Syria]. 15 March 2016. doi:ڈی او ئي. http://www.jamestown.org/single/?tx_ttnews[tt_news]=45204&no_cache=1#.V0-5oHroycw. 
  372. Assessment: Russian Military Strategy, Operational Tactics and Objective in Syria. doi:ڈی او ئي. 
  373. Bill Bray، Miyako Yerick (31 August 2017). "Putin Saved Assad, Will He Save Maduro?". The National Interest. 
  374. Polyakova، Alina (26 February 2018). "Russia Is a Great Power Once Again". The Atlantic. 
  375. "It's about time we all admit that Putin has prevailed in Syria". openDemocracy. 
  376. Williams، Mel، ویکی نویس (2002). "Sukhoi 'Super Flankers'". Superfighters: The Next Generation of Combat Aircraft. Norwalk, Connecticut: AIRtime Publishing. صفحہ 128. ISBN 1-880588-53-6. OCLC 51213421. 
  377. "Russian carrier aviation joins Syria campaign". Combat Aircraft. Key Publishing. 14 November 2016. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2016. 
  378. Majumdar، Dave (6 October 2015). "Russia's Half-Baked Air War in Syria". The National Interest. اخذ شدہ بتاریخ 20 اکتوبر 2015. 
  379. "Syria: Russia's shameful failure to acknowledge civilian killings | Amnesty International". www.amnesty.org. اخذ شدہ بتاریخ 25 دسمبر 2015. 
  380. Bodner، Matthew (18 October 2015). "Russia Shows Early Success, New Capabilities in Syria". Defense News. اخذ شدہ بتاریخ 21 اکتوبر 2015. 
  381. Russia fires first submarine missiles against Isis targets in Syria The Independent, 10 December 2017.
  382. Martinez، Luis (7 October 2015). "Russian Troops Fire Artillery and Rockets in Syria". ABC News. اخذ شدہ بتاریخ 06 نومبر 2015. 
  383. How Much Is Intervention in Syria Costing Russia?, "Fiscal Times", 26 October 2015.
  384. Calculating the Cost of Russia's War in Syria, 20 October 2015.
  385. Tomkiw، Lydia (15 February 2016). "Who Bombed Doctors Without Borders Hospital In Syria? MSF Slams 'Deliberate' Airstrike". Ibtimes.com. اخذ شدہ بتاریخ 28 فروری 2016. 
  386. "UN: Nearly 50 civilians killed in Syria by airstrikes on hospitals, schools". Usatoday.com. 16 February 2016. اخذ شدہ بتاریخ 28 فروری 2016. 
  387. "Syria: Kurds close in on Isis capital of Raqqa as ceasefire looms". International Business Times. 26 February 2016.
  388. "An internal struggle: Al Qaeda's Syrian affiliate is grappling with its identity". Brookings Institution. 31 May 2015. 
  389. Edward. "Russia's airstrike on a Syrian hospital was no accident. It was a cold-blooded, targeted attack". Syrian Observatory For Human Rights. اخذ شدہ بتاریخ 02 مئی 2016. 
  390. "Syrian and Russian forces have deliberately targeted hospitals near Aleppo". amnesty.org.uk. اخذ شدہ بتاریخ 20 جون 2016. 
  391. "Минобороны России: штурмовики США в среду нанесли удары по Алеппо". РИА Новости. اخذ شدہ بتاریخ 03 مارچ 2016. 
  392. "Russian defence ministry says Amnesty report on Syria biased, ungrounded". Reuters. 23 December 2015.
  393. "Russia blocks UN statement on Syria airstrikes". uatoday.tv. اخذ شدہ بتاریخ 07 مئی 2016. 
  394. "Russian Military in Syria". Airwars. December 2018. اخذ شدہ بتاریخ 04 جنوری 2019. 
  395. "Russia's military role in Syria grows". 23 August 2018. 
  396. ^ ا ب https://airwars.org/wp-content/uploads/2020/02/2019-Annual-Report-Web.pdf
  397. "Russian airstrikes kill 19 civilians in Idlib 17". Hurriyet Daily News. اخذ شدہ بتاریخ 17 اگست 2019. 
  398. "Secretary-General Establishes Board to Investigate Events in North-West Syria since Signing of Russian Federation-Turkey Memorandum on Idlib | Meetings Coverage and Press Releases". www.un.org. اخذ شدہ بتاریخ 13 اکتوبر 2019. 
  399. "Hospitals and Schools Are Being Bombed in Syria. A U.N. Inquiry Is Limited. We Took a Deeper Look.". The New York Times. 2020-01-01. اخذ شدہ بتاریخ 04 اگست 2020. 
  400. "Iran is taking over Assad's fight in crucial parts of Syria". Business Insider. 8 June 2015. 
  401. Jay Solomon؛ Sam Dagher (21 September 2015). "Russia, Iran Seen Coordinating on Defense of Assad Regime in Syria". The Wall Street Journal. 
  402. "Israeli official: Iran mastermind went to Russia – Business Insider". Business Insider. 10 September 2015. 
  403. Leith Fadel. "Russian Marines and Iranian Revolutionary Guardsmen Build a Protectorate in Western Syria". Al-Masdar News. 
  404. "Iranian troops prepare to aid Russia with Syrian ground assault, officials say". Fox News Channel. 04 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  405. "Российско-иранский прорыв: крылатые ракеты и аэродром Хамадан". 
  406. "Flash – UN's Ban says Syrian talks 'hostage' to Assad's future – France 24". France 24. 31 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 14 نومبر 2015. 
  407. "Russian air strikes in Syria 'good thing': Del Ponte". Yahoo News. 8 February 2016. اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2016. 
  408. Syria investigator del Ponte says enough evidence to convict Assad of war crimes: SonntagsZeitung, Reuters, 13 August 2017
  409. UN Syria investigator quits over concern about Russian obstruction, Guardian, 7 August 2017
  410. "NATO Condemns Russian Bombings in Syria". The Wall Street Journal. 8 October 2015. 
  411. "Syria crisis: Nato renews pledge amid Russia 'escalation'". BBC. 8 October 2015. اخذ شدہ بتاریخ 08 اکتوبر 2015. 
  412. "Syria conflict: Russia strikes 'will fuel extremism'". BBC. 2 October 2015. 
  413. "Syrian crisis: Russia air strikes 'strengthen IS'". BBC. 2 October 2015. 
  414. "Parliaments of South Ossetia, Abkhazia and Transnistria supported Russia's policy in Syria". Государственное информационное агентство "Рес". 10 November 2017. 
  415. NRC Handelsblad, 22 October 2015.
  416. "'Israel won't down a Russian warplane if it enters its air space'". The Jerusalem Post. 26 November 2015. 
  417. "Russia, Jordan agree on military coordination on Syria". Reuters. 24 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 25 اکتوبر 2015. 
  418. "Caught in the Middle: Central Asia and the Russia-Turkey Crisis". Carnegie Moscow. 16 December 2015. اخذ شدہ بتاریخ 26 جنوری 2016. 
  419. "Saudi Arabia demands Russia end Syria raids, criticizes Iran". Reuters. 1 October 2015. 02 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اکتوبر 2015. 
  420. "Turkey warns Russia of fallout over Syria". Financial Times. 6 October 2015. 
  421. "Russia hosts pro-Kurdish Turkish politician who condemns Ankara". Reuters. 23 December 2015. 
  422. "Russia's holy war in Syria". Middle East Eye. اخذ شدہ بتاریخ 23 دسمبر 2015. 
  423. Down but not yet out, The Economist.
  424. "Obama authorizes resupply of Syrian opposition". CNN. 5 October 2015. اخذ شدہ بتاریخ 08 اکتوبر 2015. 
  425. "Russia will pay price for Syrian airstrikes, says US defence secretary". The Guardian. 8 October 2015. 
  426. "U.S. Kurdish allies welcome Russian airstrikes in Syria". McClatchyDC. 2 October 2015.
  427. "Всеволод Чаплин об операции ВВС РФ в Сирии: Борьба с терроризмом – священна". РЕН ТВ. 
  428. "Новости NEWSru.com :: В РПЦ объяснили разницу между "священной борьбой" и джихадом". newsru.com. اخذ شدہ بتاریخ 16 اکتوبر 2015. 
  429. Tom Parfitt (1 October 2015). "Russian Orthodox church backs 'holy war' against Isis". The Times. 
  430. "Church Says Russia Fighting 'Holy Battle' in Syria". Newsmax. 30 September 2015. 
  431. "Syrian insurgent groups vow to attack Russian forces". US News & World Report. اخذ شدہ بتاریخ 14 اکتوبر 2015. 
  432. "Al-Qaeda Affiliate Issues Bounty for Capture of Russian Soldiers in Syria". Newsweek. 2 October 2015. اخذ شدہ بتاریخ 16 اکتوبر 2015. 
  433. "Syria's Russian Jihadists Vow To Slaughter Putin's Invading Army". vocativ.com. 28 مئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  434. "Russian Embassy shelled in Syria as insurgents hit back". Yahoo News. 13 October 2015. اخذ شدہ بتاریخ 14 اکتوبر 2015. 
  435. "Syria's Nusra Front leader urges wider attacks on Assad's Alawite areas to avenge Russian bombing". The Daily Telegraph. 13 October 2015. 
  436. "Head of al Qaeda's Syrian branch threatens Russia in audio message". The Long War Journal. اخذ شدہ بتاریخ 16 اکتوبر 2015. 
  437. "Islamic State, Al-Nusra Front Call For 'Jihad' Against Russia". RadioFreeEurope/RadioLiberty. اخذ شدہ بتاریخ 21 اکتوبر 2015. 
  438. "جماعة اخوان سوريا تستنفر المسلمين لرد "العدوان" الروسي"". Rudaw. 
  439. "إخوان سوريا يعلنون الجهاد ضد ( الاحتلال الروسي )". زيم الاخباري. 
  440. عرب نيوز. "روسيا وقعت في فخ كبير". شبكة عرب نيوز. 06 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  441. "55 داعية وهابي يدعون إلى "أفغنة" الجهاد بسوريا ضد روسيا". almasalah.com. 
  442. "إخوان سوريا يحذرون: روسيا وقعت في فخ كبير". @Elaph. 
  443. abojwad. "إخوان سوريا: الاحتلال الروسي لسوريا لا يمكن تبريره وجهاد الدفع أصبح فرض عين". شبكة رصد سوريا الإخبارية. 
  444. Mohamed Alabdallah. "جماعة الإخوان المسلمين في سورية: الاحتلال الروسي لسورية لا يمكن تبريره – وكالة مسار برس". وكالة مسار برس. 
  445. "جماعة الإخوان المسلمين "سورية" :-: إحتلال روسي سوف يدفعه الشعب السوري بالجهاد". ikhwansyria.com. 05 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  446. أنباء اليوم. ""إخوان سوريا" يعتبرون التدخل الروسي "احتلالا" ويرفعون "راية الجهاد" – أنباء اليوم المغربية". أنباء اليوم المغربية.