شاہد محمود

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
شاہد محمود ٹیسٹ کیپ نمبر 40
Shahid mehmood.jpeg
کرکٹ کی معلومات
بلے بازیبائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیبائیں ہاتھ کا میڈیم تیز گیند باز
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ کرکٹ فرسٹ کلاس کرکٹ
میچ 1 66
رنز بنائے 25 3117
بیٹنگ اوسط 12.50 31.80
100s/50s -/- 5/-
ٹاپ اسکور 16 220
گیندیں کرائیں 36 5940
وکٹ - 89
بولنگ اوسط - 21.65
اننگز میں 5 وکٹ - 3
میچ میں 10 وکٹ - 1
بہترین بولنگ - 10/58
کیچ/سٹمپ -/- 25/-
ماخذ: cricinfo.com

شاہد محمود انگریزی:Shahid Mahmood (پیدائش:17 مارچ 1939،لکھنؤ، اتر پردیش، بھارت|وفات:13 دسمبر 2020،نیو جرسی،) ایک پاکستانی کرکٹ کھلاڑی تھے۔[1] جنہوں نے پاکستان کی طرف سے 1 ٹیسٹ میچ کھیلا انہوں نے پاکستان کے ساتھ ساتھ کراچی ،پاکستان یونیورسٹیز اور پاکستان ورکس ڈیپارٹمنٹ کی طرف سے بھی کرکٹ کھیلی وہ بائیں ہاتھ کے اوپننگ بلے باز اور کارآمد میڈیم پیس گیند باز تھے انہوں نے 1962ء میں انگلینڈ کا دورہ کیا مگر انکو مناسب مواقع نہ مل سکے اس کی ایک یہی وجہ تھی کہ جب اسے ناٹنگھم ٹیسٹ کے لیے ٹیم میں جگہ ملی تو وہ فارم سے باہر تھے اور وہ متاثر کرنے میں ناکام رہے۔ یہ اس کا واحد موقع تھا تاہم وہ ڈومیسٹک کرکٹ میں کامیابی کے ساتھ کھیلتے رہے اور 1969-70ء میں کراچی وائٹس کی جانب سے خیرپور کے خلاف کھیلتے ہوئے وہ ایک اننگز میں دس وکٹیں لینے والے پہلے پاکستانی بن گئے۔

ابتدائی دور[ترمیم]

آٹھ بہن بھائیوں میں سے ایک شاہد محمود کا تعلق دودھیال اور ننھیال دونوں طرف کرکٹرز سے تھا جس میں اصغر علی، غلام احمد اور بہت بعد میں آصف اقبال بھی شامل ہوئے اس لیے شاہد محمود کا کھیل میں جانا فطری لگتا تھا۔ ان کے والد محبوب علی ایک ریڈیو براڈکاسٹر تھے، جنہوں نے حیدرآباد میں خاندان کی رہائش گاہ پر ایک اسٹوڈیو قائم کیا تھا۔ان کا خاندان 1947ء میں حیدرآباد سے بمبئی منتقل ہوگیا۔ گیارہ سال کی عمر میں امتیاز احمد کو 1950-51ء میں بمبئی میں دولت مشترکہ کی ٹیم کے خلاف 300 کا اسکور دیکھ کر شاہد متاثر ہوئے 1952-53ء میں بمبئی میں ہونے والے ایک ٹیسٹ میں انڈین بالنگ کو ناکام بناتے ہوئے دیکھنے کے بعد وہ ہیرو حنیف محمد کے مداح بن گئے بائیں ہاتھ کے بلے باز اور بائیں ہاتھ کی درمیانی رفتار سے بولنگ کرنے والے، شاہد نے آل سینٹ اسکول، بمبئی کے جونیئر سیکشن کی کپتانی کرتے ہوئے ایک یادگار آل راونڈ ڈسپلے پیش کیا۔ 97 سکور کرنے کے بعد، اس نے گیند سے23/8 پر قبضہ کر لیا، اس کی تصویر 'ٹائمز آف انڈیا' میں میچ کی رپورٹ کے ساتھ چھپی تھی۔ ستمبر 1955ء میں وہ خاندان کےساتھ کراچی منتقل ہو گئے۔چرچ مشن ہائی سکول، کراچی میں 1955-56ء کے انٹر اسکول روبی شیلڈ ٹورنامنٹ میں شاہد محمود نے اپنی پہلی اننگز میں 60 رنز بنائے۔ اسے سندھ مدرسہ کے ضیا اللہ خان کی قیادت میں ایک کمبائنڈ سکول ٹیم کے لیے کھیلنے کے لیے منتخب کیا گیا تھا۔اس کے بعد وہ کراچی کرکٹ ایسوسی ایشن (KCA) کے بڑے اسکواڈ کا حصہ بن گئے جس کی تین ٹیموں وائٹس، بلیو اور گرین نے 1956-57ء کے قائد اعظم ٹرافی کے چار زونل میچوں میں حصہ لیا۔ اپنی پہلی فرسٹ کلاس اننگز میں 17 سالہ شاہد محمود نے کراچی جم خانہ میں ریلوے کے خلاف بلیوز کے لیے ون ڈائون بیٹنگ کرتے ہوئے 43 رنز بنائے اور والیس میتھیاس (45) کے ساتھ چوتھی وکٹ کے لیے 69 رنز کی شراکت داری کی۔ اگلے سیزن میں انہیں کراچی بی کے لیے اوپننگ کرنے کے لیے کہا گیا اور اس نے کراچی میں کپتان اکرام قریشی (80) کے ساتھ 134 رنز کی شراکت میں 55 رنز بنائے اور 75 میں اپنے میچ میں کامیابی حاصل کرنے میں کامیاب رہے۔ 1958ء میں، شاہد محمود , مشتاق محمد اور انیس الغنی کے علاوہ تین نوجوان کھلاڑیوں میں سے ایک تھے، جن کے پاکستان ایگلٹس کے ساتھ انگلینڈ کے دورے کے اخراجات حکومت پاکستان نے برداشت کیے تھے۔ بلے اور گیند دونوں میں شاہد محمود نے شاندار مظاہرہ کے ساتھ دکھایا۔ 891 رنز 23.90 کی اوسط سے جبکہ 12.10 کی اوسط سے 64 وکٹیں لیں۔ اس دورے کی خاص بات دس وکٹوں کا حصول (27-6-58-10) تھا جو اس نے آئل آف وائٹ کرکٹ ایسوسی ایشن کے خلاف انجام دیا۔ ڈی جے سائنس کالج میں جہاں اس نے 1957ء میں داخلہ لیا، شاہد محمود نے اپنی عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ تب کیا جب اس نے کراچی کیلئے 289 رنز 220 منٹ اور 23 چوکوں کی مدد سے پشاور کے خلاف BVS پارسی سکول گرائونڈ، کراچی میں 1958-59ء کی انٹر یونیورسٹی چیمپیئن شپ میں سکور کئے جس سے ان کی ٹیم پنجاب یونیورسٹی کو ہرا کر جیت گئی۔ 1959-60ء میں پنڈی کلب میں رے لنڈوال، گورڈن رورک اور ایان میکف کے آسٹریلوی پیس اٹیک کے خلاف پریذیڈنٹ الیون کی طرف سے مجموعی طور پر 132میں ان کا ٹاپ سکور 43 موجود تھا۔ حنیف محمد کے ساتھ کراچی کی پہلی ٹیم میں اس کے کپتان اور دیگر چھ پاکستانی ٹیسٹ کھلاڑی شامل تھے، شاہد محمود نے بلے سے مایوس کن رنز بنائے۔ اس کے بعد کراچی میں لاہور کے خلاف فائنل میں 53 کے ساتھ آٹھویں نمبر پر کھیلتے ہوئے 95 رنز بنا کر 1959-60ء میں 99 رنز سے قائد اعظم ٹرافی جیتنے میں ٹیم کی مدد کی 1962ء کے دورہ انگلینڈ کیلئے شاہد محمود کے انتخاب پر زیادہ بحث نہیں ہو سکتی تھی کیونکہ انہوں نے 1958ء کے پاکستان ایگلٹس کے ساتھ بلے اور گیند دونوں کے ساتھ بہت اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیا تھا درحقیقت اس موسم سرما میں شاہد محمود کے لیے کچھ بھی غلط نہیں ہو سکتا تھا کیونکہ وہ کراچی بلیوز کے لیے قائد اعظم ٹرافی اور کراچی کے لیے ایوب ٹرافی دونوں میں فاتح کیمپ میں تھے۔ رنز بنانے کے علاوہ وہ بڑے موقع کے لیے مزاج کا مظاہرہ کر رہے تھے، جو کراچی میں منعقد ہونے والے دونوں ٹورنامنٹ کے فائنل میں ظاہر ہوا۔ کپتان علیم الدین کے ساتھ اننگز کا آغاز کرنے کے لیے اس نے کمبائنڈ سروسز کے خلاف رن کے تعاقب میں 79 رنز بنائے اور نارتھ زون کے خلاف ایک صبر آزما 392 رنز 174 منٹ میں 20 چوکوں کی مدد سے جوڑے۔ رچی بینو کی قیادت میں انٹرنیشنل الیون کے خلاف بی سی سی پی الیون کے ساتھ 56 اور 45 رنز کی اننگز کے ساتھ کوئی شک دور ہو گیا۔ صبر کرنے والے اور چوکس رہنے والے، شاہد محمود نے اکثر اپنا وقت نکالا اور اپنے اسٹروک کا انتخاب کیا، زیادہ تر قدامت پسند، احتیاط سے علیم الدین کو شاہد محمود کی بالنگ ٹیلنٹ کو پہچاننے اور اس کا استعمال کرنے والے پہلے کپتان کے طور پر کریڈٹ دیا جا سکتا ہے، کیونکہ انہوں نے 12.23 کی اوسط سے 23 وکٹیں حاصل کیں جو گیند کے ساتھ ان کا بہترین سیزن تھا۔ اس کی خاص بات بہاولپور میں 2 دفعہ 5 پانچ وکٹوں کا حصول تھا۔ قائداعظم ٹرافی میں بہاولپور کے خلاف 19 اوورز میں 5/12 اور ایوب ٹرافی میں سنٹرل زون کے خلاف 5/18 کو ایک بہترین کھلاڑی قرار دیا جاسکتا ہے۔1962ء کا دورہ انگلینڈ شاہد محمود اور متعدد نوجوان کھلاڑیوں کے لیے زیادہ کامیابی نہیں لا سکا، غیر متوقع تین بھاری ٹیسٹ شکستوں کے بعد پاکستان ناٹنگھم پہنچا، چوتھے ٹیسٹ میں شاہد محمود نے نمبر 7 پر ناقابل شکست 77 رنز بنا ڈالے۔ بارش کی زد میں آنے والے کھیل میں اور پاکستانی بلے بازوں کو ایک کھلی وکٹ پر دھندلے حالات میں بیٹنگ کرنی پڑی، شاہد محمود کو حنیف محمد کے ساتھ اننگز کا آغاز کرنے کے لیے کہا گیا، اور دو تجربہ کار اوپنرز امتیاز احمد اور علیم الدین کو ڈھال دیا گیا، جنہوں نے نیچے آرڈر پر بیٹنگ کی۔ اس نے پہلی اننگز میں 16 اور دوسری اننگز میں ساتویں نمبر پر آتے ہوئے 9 رنز بنائے، کیونکہ پاکستان ٹیسٹ ڈرا کرنے میں کامیاب رہا۔ اوول میں آخری ٹیسٹ میں ان کو ڈراپ کردیا گیا اور اس دورے پر ان کے فرسٹ کلاس 369 رنز 16.04 کی اوسط سے قابل ذکر قرار نہیں دیئے جاسکتے۔ 1962ء کے بعد کا دور شاہد محمود کے بین الاقوامی عزائم کے لیے مخالف ثابت ہوا۔ انہیں فروری 1963ء میں ایک مبینہ بدتمیزی کے بعد BCCP نے معطل کر دیا تھا۔ 1964-65ء کی ایوب ٹرافی کے لیے، انہوں نے پاکستان ورکس ڈیپارٹمنٹ (PWD) کے پہلے کپتان بننے کے لیے تقرری قبول کی۔ اس نے اکثر بیٹنگ اور بالنگ کا آغاز کیا اور ایک کھیل میں 54/4 اور حیدرآباد کے خلاف 113 رنز بنائے۔ یہ رنز ایسے موقع پر تھے جب 57 رنز پر 4 وکٹیں گر گئی تھیں۔ اسی سیزن میں انہوں نے قائداعظم ٹرافی کی فاتح کراچی بلیوز کی نمائندگی کی۔ شاہد محمود 1973ء میں کراچی چھوڑ کر امریکہ چلے گئے، انہوں نے لائف انشورنس ایجنٹ کے طور پر کام کیا۔ انہوں نے رونالڈ ریگن، جارج بش سینئر اور پرویز مشرف کے مشیر کے طور پر ریاستہائے متحدہ کی اسلامی برادری سے متعلق امور پر کام کیا۔ 1991ء میں مین ہٹن میں منعقد ہونے والے ایک ثقافتی پروگرام پاکستان جشن کے پیچھے شاہد محمود ہی محرک تھے جس میں 120,000 لوگوں نے شرکت کی۔ انہوں نے امریکہ میں پاکستانی تارکین وطن کے بارے میں دقیانوسی تصور کو چیلنج کرنے کی کامیابی سے کوشش کی۔ شاہد محمود اسلام میں روحانیت کا شوقین طالب علم تھا اور امریکہ میں اس کی کامیابیاں سب سے زیادہ قابل ذکر تھیں کیونکہ 1977ء کے بعد سے اسے صحت سے متعلق بہت سے خدشات لاحق تھے لیکن قرآن پاک سے طاقت حاصل کر کے اس کا مقابلہ کیا، جسے اس نے میرا ساتھی کہا تھا۔

اعدادوشمار[ترمیم]

شاہد محمود نے 1 ٹیسٹ میچ کی 2 اننگز میں 25 رنز بنائے جس میں 16 ان کا سب سے زیادہ سکور تھا۔ انہیں 12.50 کی اوسط حاصل ہوئی۔جبکہ 66 فرسٹ کلاس میچوں کی 107 اننگز میں 6 بار ناٹ آئوٹ رہ کر انہوں نے 3117 رنز بنائے۔ 220 ان کا بہترین سکور تھا۔ 31.80/کی اوسط سے بنائے گئے ان رنزوں میں 5 سنچریاں اور 15 نصف سنچریاں بھی شامل تھیں۔ فرسٹ کلاس کرکٹ میں انہوں نے 89 وکٹ بھی لے رکھے تھے انہوں نے کراچی وائٹس کی طرف سے خیر پور کے خلاف نیشنل سٹیڈیم کراچی میں کھیلے گئے میچ کے دوران اپنی ٹیم کو ایک اننگ اور 56 رنز کی فتح سے ہمکنار کرنے میں نمایاں کردار ادا کیا۔ انہوں نے 25 اوورز میں 58 رنز دے کر خیر پور کی تمام ٹیم کو پویلین بھجوا دیا۔ اس کی اس شاندار کارکردگی کی بدولت خیر پور کی ٹیم 146 رنز تک محدود ہوگئی۔ شاہد محمود کا یہ ریکارڈ 2 عشروں تک قائم رہا جب تک بہاولپور کے میڈیم پیسر عمران عادل نے فیصل آباد کے خلاف 1989ء میں 92 رنز دے کر تمام کی تمام 10 وکٹیں حاصل کرلیں۔ اس کے بعد راولپنڈی بلیوز کے نعیم اختر نے 1995ء میں 28 رنز کے عوض پشاور کی ٹیم کی تمام وکٹیں سمیٹ لی تھیں۔ اس طرح 2009ء میں ذوالفقار بابر نے ملتان کی طرف سے اسلام آباد کے خلاف 143 رنز دے کر 10 وکٹیں حاصل کرلی تھیں[2]

وفات[ترمیم]

لمبے اور دبلے پتلے، شاہد محمود پاکستان اور امریکہ دونوں میں ایک مکمل شریف آدمی، مخلص دوست، شائستہ، دلکش، خوش مزاج، اچھے لباس میں ملبوس اور پڑھے لکھے فرد کی مثبت میراث کا حامل یہ کھلازی 13 دسمبر 2020ء کو امریکہ کے شہر نیو جرسی میں 81 سال 272 دن کی عمر میں اس عارضی جہان کو خیر باد کہہ گئے دو شادی شدہ شاہد محمود کے پسماندگان میں دو بیٹیاں اور تین بیٹے ہیں۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. انگریزی ویکیپیڈیا کے مشارکین. "Shahid Mahmood". 
  2. https://www.espncricinfo.com/player/shahid-mahmood-42645