شاہی کتب خانہ قسطنطنیہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

شاہی کتب خانہ قسطنطنیہ، بازنطینی سلطنت کے دارالحكومت میں تھا، جو قدیم دور کے عظیم کتب خانوں میں سے آخری تھا۔کتب خانہ اسکندریہ اور دوسرے عظیم کتب خانوں کی تباہی کے بعد، ایک ہزار سال تک یہ یونانیوں اور رومیوں کے علم کی حفاظت کرتا رہا۔ کئی سال تک حادثاتی آگ اور جنگ سے نقصان ہوتا رہا، آخر کار 1204ء میں چوتھی صلیبی جنگ کے درمیاں کتب خانہ نائٹس کا نشانہ بنا۔کتب خانہ کی عمارت تباہ کر دی، کتب کو جلایا گيا اور فروخت کیا گيا۔ بعد میں کتب خانہ کا ایک بڑا حصہ، عثمانی بادشاہ محمد دوم کی فوج نے بادشاہ کے کتب خانے میں ضم کر دیا۔[1]

تاریخ[ترمیم]

قدیم یونان میں اکثر تحریریں اور ادب پیپرس پر لکھا گیا۔ چوتھی صدی کے آس پاس، قسطنطین اعظم نے تحریری مواد کو پیپرس کی اہمیت کو کم کرنے کے لیے جھلی (چرمی کاغذ) کی طرف منتقل کرنے کی تحریک شروع کی، لیکن اس تحریک کا خاص مقصد مقدس صحائف کے لیے تھا۔ قسطنطین اعظم کے وارث قسطنطین دوم نے اس تحریک کو جاری رکھا۔ قسطنطنیہ کی شاہی کتب خانے کی بنیاد قسطنطین دوم نے ہی رکھی۔ اندازہ لگایا گیا ہے کہ اس کتب خانہ میں 100,000 جلدیں موجود تھیں۔[2]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔