شاہ آل رسول مارہروی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

مخدوم شاہ آل رسول مارہروی قادری برکاتی (فروری 1795ء تا دسمبر 1879ء)بمطابق (رجب 1209 ہجری تا جمعرات 18 ذی الحج 1296ہجری) سلسلہ قادریہ کے سینتیسویں امام اور شیخ ہیں۔ ان کا لقب خاتم الاکابر تھا۔ ان کے والد کا نام سید شاہ آل برکات ستھرے میاں تھا۔[1]

تعلیم[ترمیم]

انہوں نے اپنے والد سے دینی علوم میں تعلیم حاصل کی اس کے علاوہ آپ نے عین الحق شاہ عبد المجید بدایونی، مولانا شاہ سلاست اﷲ کشفی بدایونی، مولانا انوار صاحب فرنگی محلی، حضرت شاہ نورالحق لکھنوی اور مولانا عبد الواسع سے علوم دینیہ سیکھے۔ آپ نے مولانا شاہ عبدالعزیز محدث دہلوی کے درسِ حدیث میں بھی شرکت کی اور حدیث کی سند حاصل کی۔[1][2]

مضامین بسلسلہ

تصوف

Maghribi Kufic.jpg

بیعت و خلافت[ترمیم]

آپ کو خلافت و اجازت حضور سیدآل احمد’’ اچھے میاں‘‘(اپنے تایا جان)سے تھی، والد ِماجد نے بھی اجازت مرحمت فرمائی تھی مگر مرید اچھے میاں کے سلسلے ہی میں فرماتے تھے۔[3]

خلفاء[ترمیم]

آپ کے اکثر خلفاء اپنے دور کے عظیم صوفی تھے ان میں سے کچھ کے نام یہ ہیں:

  • سید شاہ ظہور حسین
  • سید شاہ مہدی حسن مارہروی
  • سید شاہ ظہور الحسن مارہروی
  • سید شاہ ابوالحسن حسین احمد نوری
  • سید شاہ ابوالحسن خرقانی
  • سید شاہ محمد صادق
  • سید شاہ امیر حیدر
  • سید شاہ حسین حیدر
  • امام احمد رضا خان قادری بریلوی
  • سید شاہ علی حسین اشرفی کچھوچھوی
  • قاضی عبد السلام عباسی
  • شاہ احسان اللہ
  • شکراللہ خان
  • حاجی حافظ محمد احمد بدایونی
  • حاجی فضل رزاق بدایونی
  • حافظ مظہر حسین بدایونی
  • حافظ مجاہدالدین صدیقی
  • مفتی محمد شریف علی صدیقی
  • شیخ منور علی
  • مفتی محمد حسن خان بریلوی
  • سید شاہ تجمل حسین قادری
  • مولوی عبد الرحمن صاحب
  • قاضی مولوی شمس الاسلام عباسی بدایونی
  • مولوی ضیاء اللہ خان عباسی بدایونی بریلوی[1]

مزار شریف[ترمیم]

ان کا مزار شریف خانقاہ برکاتیہ مارہرہ شریف، اترپردیش (بھارت) میں ہے۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]