شاہ عنایت اللہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
صوفی
شاہ عنایت اللہ
معروفیت صوفی شاہ عنایت اللہ
پیدائش 1655ء بمطابق 1066ھ
وفات 7 جنوری 1718ء بمطابق 17 صفر 1130ھ
نسل سندھی
عہد قرون وسط
شعبۂ زندگی سندھ، مغلیہ سلطنت
مذہب اسلام
مکتب فکر تصوف
شعبۂ عمل عارفانہ کلام، ذکر، سماجی مصلح
اہم نظریات تصوف، سندھی صوفی شاعری

شاہ عنایت اللہ (1655ء – 1718ء)، المعروف صوفی شاہ عنایت شہید، شاہ شہید، جن کو سندھ کا مصلحِ اول بھی کہا جاتا ہے مغلیہ دور کے ایک صوفی تھے۔[1]

ان کے والد مخدوم صدو لانگاہ تھے۔ 8 جنوری 1718 شاہ عنایت کو قتل کر دیا گیا۔ ان کی خانقاہ پر حملہ ہوا جہاں ایک اندازے کے مطابق 24 ہزار صوفیوں کو قتل کیا گیا۔ان صوفیوں کی اجتماعی قبریں، جن کو 'گنجِ شہیدان' کے نام سے پکارا جاتا ہے، یہاں موجود ہیں۔[2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. صوفی عنایت اللہ شاہ بن مخدوم فضل اللہ بغدادی شہید (متوفّٰی: 1130ھ) انجمن ضیاءِ طیبہ۔ اخذ کردہ بتاریخ 3 جولائی 2017ء
  2. ابوبکر شیخ (2 مئی 2016)۔ "صوفی شاہ عنایت: سندھ کے پہلے سوشلسٹ"۔ ڈان نیوز۔