شاہ میر خاندان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

شاہ میر خاندان ایک مسلمان خاندان تھا جس نے کشمیر پر حکمرانی کی۔ [1] اس خاندان کی حکمرانی کے دوران 1339 سے لے کر 1561 تک ، کشمیر میں مضبوطی سے اسلام قائم ہوا تھا۔

اصل[ترمیم]

لوا خطا ماڈیول:Location_map/multi میں 13 سطر پر: Unable to find the specified location map definition: "Module:Location map/data/کشمیر" does not exist۔

شاہ میر نے 1339 عیسوی خاندان قائم کیا تھا کی طرف سے ، وہاں شاہ میر کی اصلیت کے بارے میں دو نظریات ہیں۔ مؤرخ اے کیو رفیقی(A. Q. Rafiqi ) کہتا ہے کہ کچھ فارسی تواریخ کشمیر کی وضاحت مطابق شاہ میر سوات کے حکمرانوں کی نسل ہے ہے .[ا] وہ کہتا ہے کہ یہ زیادہ امکان ہے کہ وہ ترک یا فارسی تارکین وطن اولاد کی اولاد ہو جو سوات میں آباد ہو گئے اور مقامی لوگوں کے ساتھ شادی بیاہ کرنے لگے.[3] یہ بھی بتایا گیا ہے کہ اس کا تعلق ایک ایسے خاندان سے ہو سکتا ہے جو بابا میر سید علی ہمدانی, کے ہمراہ تھے اور جو کبراویہ صوفی سلسلے سے منسلک ہوں.[4]

دوسری طرف ، 15 ویں صدی کے کشمیری مؤرخ جوناراجا ، جو شاہ میر کی اولاد بڈھ شاہ کے دربار میں مورخ تھا، لکھتا ہے کہ شاہ میر اپنے قبیلے کے ساتھ پنچ گہوارا ملک سے کشمیر آیا (جس کی شناخت راجوریاور بدھل کے درمیان پنجگبار وادی کے نام سے ہوئی ہے)۔ان کا تعلق پرتھا نامی ایک آباؤ اجداد کے گھرانے سے تھا ، جسے دوسرا پرتھا ( مہابھارت کا ہیرو ارجن کا اشارہ) بتایا گیا تھا۔ [5] کچھ اسکالروں کا کہنا ہے کہ وادی پنجگبار کو کھاسا لوگوں نے آباد کیا تھا اور اسی وجہ سے شاہ میر کھاسا ذات سےہے۔ [6] [7] [8]

زیادہ تر جدید مورخین شاہ میر کی سواتی ابتدا کو قبول کرتے ہیں۔ سواتی افغان ہیں جو محمود غزنوی کے زمانے میں دیر ملاکنڈ کے علاقے آئے تھے۔ [4] [9] [10] [11] کشمیری اسکالر این کے زوتشی ، نے ذرائع کا تنقیدی جائزہ لینے کے بعد ، ان دو نسخوں پر اتفاق کرتے ہوئے یہ ذکر کیا ہے کہ فارسی تاریخ میں سوات کی بجائے سوادگیر کا تذکرہ کیا گیا ہے ، جسے اس نے سوادگبار سے تعبیر کیا ہے ، جس کا مطلب ہے "گبر کے مضافات" ، جو جوناراجا کی پنچ گہوارا سیمانی کی وضاحت کے ساتھ موافق ہے ( پنچ گہوارا کی سرحدوں پر)۔

. [12]

اے کیو رفیقی کہتے ہیں:

شاہ میر سوہدیوا (1301–1320) کے دور میں اپنے اہل خانہ کے ساتھ 1313 میں کشمیر پہنچے ، جن کی خدمت میں وہ داخل ہوئے۔ بعد کے برسوں میں ، اپنی حکمت عملی اور قابلیت کے ذریعے شاہ میر مقبول ہوا اور وہ اپنے وقت کی اہم شخصیات میں شامل ہوگیا۔

[13]

فن تعمیر[ترمیم]

کشمیر میں شاہ میر خاندان کے تعمیر کیے جانے والے کچھ فن تعمیراتی منصوبوں میں شامل ہیں:

شاہ میر[ترمیم]

شاہ میر نے کشمیر میں اسلام کے قیام کے لیے کام کیا تھا اور ان کی اولاد حکمرانوں خصوصا سکندر بتشکن نے اس کام کو جاری رکھا۔ اس نے 1339–42 تک تین سال پانچ ماہ حکومت کی۔ وہ کشمیر کے حکمران اور شاہ میر خاندان کا بانی تھا۔ اس کے بعد اس کے دو بیٹے تھے جو پے درپے بادشاہ بنے۔ [14]

جمشید[ترمیم]

سلطان شمس الدین شاہ کے بعد اس کے بڑے بیٹے سلطان جمشید نے ان کی جگہ لی جس نے ایک سال اور دو مہینے حکومت کی۔ 1343 میں ، سلطان جمشید کو اپنے بھائی کے ہاتھوں شکست کا سامنا کرنا پڑا جو 1347 میں سلطان علاؤ الدین کی حیثیت سے تخت پر بیٹھا۔ [15]

علاؤ الدین[ترمیم]

سلطان علاؤ الدین کے دو بیٹے پے درپے بادشاہ بنے ، سلطان شہاب الدین اور سلطان قطب الدین۔ [16]

حکومت اور کامیابیاں[ترمیم]

فوقیت نام عیسوی
1 شمس الدین شاہ 1339
2 جمشید 1342
3 علاؤ الدین 1343
4 شہہ الدین 1354
5 قطب الدین 1373
6 سکندر 1389
7 علی شاہ 1413
8 زین العالدین 1420
9 حسن شاہ 1472
10 محمد شاہ (i) 1484
11 فتح شاہ (i) 1486
12 محمد شاہ (II) 1493
13 فتح شاہ (II) 1505
14 محمد شاہ (iii) 1514
15 فتح شاہ (ii1) 1515
16 محمد شاہ (iv) 1517
17 ابراہیم شاہ (i) 1528
18 نازک شاہ (i) 1529
19 محمد شاہ (و) 1530
20 شمس الدین (II) 1537
21 اسماعیل شاہ (i) 1540
17 نازک شاہ (ii) (i) 1540
18 ابراہیم شاہ (i) 1552
19 اسماعیل شاہ (ii) (v) 1555
20 حبیب شاہ 1557–1561

نوٹ: محمد شاہ کی 1484 سے 1537 تک پانچ الگ الگ حکومت رہی۔ [17]

یہ بھی دیکھیں[ترمیم]

سکندر بتشکن

نوٹ[ترمیم]

  1. Unreliable Sources - The chronicles include those of Tahir, Haidar Malik, Rafiu'd Din Ahmad and Muhammad A'azam.[2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. A Comprehensive History of India، 1992 
  2. Gull، Surayia (2003)، Mir Saiyid Ali Hamadani And Kubraviya Sufi Order In Kashmir، Kanikshka Publishers, Distributors، صفحہ 3، ISBN 978-81-7391-581-9 
  3. Baloch & Rafiq 1998.
  4. ^ ا ب Schimmel 1980.
  5. A Comprehensive History of India، 1992، Jonaraja records two events of Suhadeva's reign (1301-20), which were of far-reaching importance and virtually changed the course of the history of Kashmir. The first was the arrival of Shah Mir in 1313. He was a Muslim condottiere from the border of Panchagahvara, an area situated to the south of the Divasar pargana in the valley of river Ans, a tributary of the Chenab. 
  6. Muslim rule in Kashmir, 1554 A.D. to 1586 A.D.، 1987، Shamir was a Khasa by birth and descended from the chiefs of Panchagahvara. 
  7. Geographical Survey of the Purāṇas: The Purāṇas, a Geographical Survey، 1995، In the Rajatarangini, the rulers of Rajapuri (modern Rajauri) are called the lord of Khasas and their troops as Khasas. They occupied the valleys of Ans river, now called Panjagabhar (Pancagahvara of Srivara IV 213). 
  8. Sultan Zain-ul-Abidin of Kashmir: an age of enlightenment، 1976، "This area in which Panchagahvara was situated is mentioned as having been the place of habitation of the Khasa tribe. Shah Mir was, therefore, a Khasa by birth. This conclusion is further strengthened by references to the part of the Khasas increasingly played in the politics of Kashmir with which their connections became intimate after the occupation of Kashmir. 
  9. Wink 2004.
  10. Jammu and Kashmir 
  11. Understanding Kashmir and Kashmiris 
  12. Sultan Zain-ul-Abidin of Kashmir: an age of enlightenment 
  13. Baloch & Rafiq 1998, p. 312.
  14. Baharistan-i-Shahi – Chapter 3 – EARLY SHAHMIRS
  15. Baharistan-i-Shahi – Chapter 3 – EARLY SHAHMIRS
  16. Baharistan-i-Shahi – Chapter 3 – EARLY SHAHMIRS
  17. http://coinindia.com/galleries-kashmirsultans.html

بیرونی روابط[ترمیم]