شمسیہ حنسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
شمسیہ حنسی
Portrait Shamsia Hassani.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1988 (عمر 33–34 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تہران  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the Taliban.svg افغانستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ کابل  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مصور،  گرافٹی مصورہ،  استاد جامعہ،  فن کار  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل شہری آرٹ  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نوکریاں جامعہ کابل  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شمسیہ حسنی افغانستان میں

شمسیہ حسنی ( دری : شمسیہ حسنی) (اصل نام اومولبنین حسنی) (پیدائش 1988ء) ایک افغان گرافٹی آرٹسٹ، فائن آرٹس لیکچرر، اور کابل یونیورسٹی میں ڈرائنگ اور اناٹومی ڈرائنگ کی ایسوسی ایٹ پروفیسر ہیں۔ انھوں نے " اسٹریٹ آرٹ " کو کابل کی گلیوں میں مقبول بنایا ہے اور کئی ممالک بشمول بھارت، ایران، جرمنی، ریاستہائے متحدہ امریکا، سوئٹزرلینڈ، ویتنام، ناروے، ڈنمارک، ترکی، اٹلی، کینیڈا اور سفارتی مشنوں میں اپنے فن کی نمائش کرچکی ہے۔ کابل میں [2] حسنی کابل میں جنگی سالوں کے بارے میں بیداری لانے کے لیے گرافٹی پینٹ کر تی رہی ہیں۔ [3] 2014ء میں، حسنی کو ایف پی کے سرفہرست 100 عالمی مفکرین میں شامل کیا گیا۔ [4]

سوانح[ترمیم]

حسنی 1988ء میں پیدا ہوئیں اور اپنا بچپن ایران میں گزارا۔ ان کے والدین جنگ کے دوران میں قندھار، افغانستان سے عارضی طور پر وہاں ہجرت کر گئے تھے۔ [2] حسنی نے بچپن ہی سے مصوری میں دلچسپی ظاہر کی۔ نویں جماعت کے دوران میں، حسنی کو آرٹ کی کلاسوں تک رسائی حاصل نہیں تھی، کیوں کہ ایران میں افغانوں کو اس کی اجازت نہیں تھی۔ 2005ء میں کابل واپسی پر، انھوں نے جامعہ کابل سے آرٹس میں ڈگری حاصل کی۔ شمسیہ نے پینٹنگ میں بی اے کی ڈگری اور افغانستان کی جامعہ کابل سے بصری فنون میں ماسٹر کی ڈگری حاصل کی۔

بعد میں انھوں نے لیکچر دینا شروع کیے اور بالآخر جامعہ کابل میں ڈرائنگ اور اناٹومی ڈرائنگ کی ایسوسی ایٹ پروفیسر بن گئیں، جہاں انھوں نے عصری آرٹ کے ایک اجتماعی بیرنگ آرٹس کو قائم کیا۔ [5] رنگین گرافٹی تخلیق کرتے ہوئے، حسنی جنگ کی نفی کو چھپانے کے لیے کام کرتی ہیں۔ [6] وہ دعوی کرتی ہیں کہ، "تصویر الفاظ سے زیادہ اثر رکھتی ہے، اور یہ لڑنے کا ایک دوستانہ طریقہ ہے۔" [6] وہ اپنے فن کو خواتین کے حقوق کے لیے لڑنے کے لیے بھی استعمال کرتی ہیں، لوگوں کو ان المیوں کی یاد دلاتی ہیں جن کا سامنا خواتین کو افغانستان میں کرنا پڑا ہے اور ان کا سامنا کرنا جاری ہے۔ [6]

حسنی نے دسمبر 2010ء میں کابل میں برطانیہ کے گرافٹی آرٹسٹ چو کے زیر اہتمام ایک ورکشاپ کے دوران میں گرافٹی کے فن کا مطالعہ کیا۔ [7] ورکشاپ کے بعد، حسنی نے کابل کی گلیوں میں دیواروں پر اسٹریٹ آرٹ کی مشق شروع کی۔ چوں کہ گرافٹی کی فراہمی روایتی آرٹ فارم کے سامان سے سستی ہے، حسنی نے آرٹ فارم کو جاری رکھنے کا انتخاب کیا۔ اس کا ایک کام کابل کے ثقافتی مرکز کی دیواروں پر ہے، اور اس میں ایک برقعہ پوش خاتون سیڑھیوں کے نیچے بیٹھی ہوئی ہے۔ اس کے نیچے لکھا ہوا (انگریزی میں)، "پانی خشک دریا میں واپس آسکتا ہے، لیکن اس مچھلی کا کیا ہوگا جو مر گئی؟" عوامی ایذا رسانی اور اپنے کام کے "غیر اسلامی" ہونے کے دعووں سے بچنے کے لیے، وہ اپنا کام تیزی سے مکمل کرتی ہے (15 منٹ کے اندر)۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. https://www.bbc.com/news/world-59514598
  2. ^ ا ب "Shamsia Hassani". Kabul Art Project. 28 فروری 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 27 مارچ 2016. 
  3. "A World Disrupted: The Leading Global Thinkers of 2014 | Shamsia Hassani". اخذ شدہ بتاریخ 4 اپریل 2019. 
  4. "شبکہ آموزشی تربیتی رشد" [Educational Network Growth] (بزبان فارسی). اخذ شدہ بتاریخ 4 اپریل 2019. 
  5. ^ ا ب پ "Street Art Bio | Street Artists Biographies". Street Art Bio | Street Artists Biographies. 31 اگست 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 04 مئی 2017. 
  6. "Portfolio of interior and exterior artwork designed and painted by Chu". 24 جون 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 4 اپریل 2019.