شمس الحسن شمس بریلوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
شمس الحسن شمس بریلوی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1917  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
بریلی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات سنہ 1997 (79–80 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
کراچی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (1917–14 اگست 1947)
Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
مذہب اسلام
فرقہ اہلسنت
فقہ حنفی
عملی زندگی
پیشہ مترجم،  مصنف  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات
P islam.svg باب اسلام

شمس الحسن شمس بریلوی (پیدائش بریلی، برطانوی بھارت، 1917ء تا 12 مارچ 1997ء،کراچی پاکستان) ایک پاکستانی مسلمان عالم اور عربی و فارسی کے قدیم ورثے کو اردو میں ترجمہ کرنے والے ایک ماہر تھے۔ وہ کراچی، پاکستان کی طرف ہجرت سے قبل جامعہ رضویہ منظر اسلام میں عربی اور فارسی پڑھاتے بھی رہے۔

تصنیف و تالیف[ترمیم]

انہوں نے ایک کتاب نظامِ مصطفٰی کے عنوان سے تصنیف کی جس میں انبیا کرام علیہم السلام کی زندگیوں کے اقتصادی اور ثقافتی پہلوؤں پر سیر حاصل بحث کی گئی ہے۔ انہوں نے غنیۃ الطالبین کا سلیس اردو ترجمہ کیا اور اس کے آغاز میں غوث اعظم شیخ عبدالقادر جیلانی کی مختصر سوانح عمری بھی لکھی۔

انعامات[ترمیم]

انہیں 1995ء میں ان کے تعلیمی کام کے لیے ستارہ امتیاز موصول ہوا اور ادبی خدمات پر ہلال قائد اعظم دیا گیا۔

حوالہ جات[ترمیم]