شمیم حنفی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
شمیم حنفی
Shamim Hanfi.jpg

معلومات شخصیت
پیدائش 17 نومبر 1938(1938-11-17)
سلطان پور، اتر پردیش
وفات 6 مئی 2021(2021-50-06) (عمر  82 سال)
نئی دہلی
شہریت Flag of India.svg بھارت
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی الہ آباد یونیورسٹی، علی گڑھ مسلم یونیورسٹی
پیشہ اردو مصنف، نقاد اور ڈراما نگار
پیشہ ورانہ زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کارہائے نمایاں جدیدیت کی فلسفیانہ اساس، نئی شعری روایت
P literature.svg باب ادب

شمیم حنفی (17 نومبر 1938ء - 6 مئی 2021ء) ایک بھارتی اردو نقاد، ڈراما نگار اور اردو ادب میں جدیدیت پسند تحریک کے حامی تھے۔ جدیدیت سے متعلق ان کی کتابوں میں "جدیدیت کی فلسفیانہ اساس" اور "نئی شعری روایت" شامل ہیں۔

1938ء میں پیدا ہوئے، حنفی الہ آباد یونیورسٹی اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے سابق طالب علم تھے۔ اپنے دور ارتقا کے دوران؛ انھوں نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی اور جامعہ ملیہ اسلامیہ میں پروفیسر رہے۔ انھوں نے مٹی کا بلاوا اور بازار میں نیند جیسے ڈرامے لکھے۔ انھیں اردو ادب میں نمایاں کردار ادا کرنے پر جنن گریما مند النکرن ایوارڈ اور غالب ایوارڈ جیسے اعزازات سے نوازا گیا۔ ان کا انتقال 6 مئی 2021ء کو نئی دہلی میں ہوا۔

حالاتِ زندگی[ترمیم]

شمیم حنفی 17 نومبر 1938ء کو سلطان پور میں پیدا ہوئے۔[1] انھوں نے 1967ء اور 1972 میں الہ آباد یونیورسٹی سے ایم اے اور الہ آباد یونیورسٹی سے ایک پی ایچ ڈی اور 1976ء میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے ڈاکٹریٹ حاصل کیا۔[2]

حنفی کو 2010 میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی (اے ایم یو) عدالت کا رکن منتخب کیا گیا تھا۔[3] انھوں نے اے ایم یو اور جامعہ ملیہ اسلامیہ (جے ایم آئی) میں تعلیم دی اور پروفیسر ایمریٹس کی صلاحیت میں جے ایم آئی سے وابستہ رہے۔[4] جے ایم آئی میں انھوں نے انسانیت اور زبان کی فیکلٹی کے ڈین کی حیثیت سے خدمات انجام دیں ، جہاں سے انھوں نے 2012 میں استعفیٰ دیا تھا۔[5] حنفی نے جشن ادب اور ریختہ کے سرپرست کی حیثیت سے بھی خدمات انجام دی ہیں۔[6]

حنفی کو 2015 میں بھارتیہ جننپتھ کے ذریعہ پہلا جنن گریما مند النکرن ایوارڈ دیا گیا تھا۔[7] انہوں نے قطر میں مقیم ایک ادبی تنظیم "مجلسِ فروغِ اردو ادب" سے جنوری 2021 میں "اردو ادب کے فروغ کے لیے بین الاقوامی ایوارڈ" (International award for promotion of Urdu literature) حاصل کیا۔[2] انھیں "مولانا ابوالکلام آزاد ایوارڈ" ، "پرویز شاہدی ایوارڈ" ، "دہلی اردو اکیڈمی ایوارڈ" اور "غالب ایوارڈ" بھی مل چکا ہے۔[2] 20 ستمبر 2015 کو ، انہیں ہندوستان گیان پیٹھ سے نوازا گیا۔

شمیم حنفی 6 مئی 2021 کو نئی دہلی میں کوویڈ ۔ 19 کے سبب؛ دنیا سے چل بسے۔[1] آرٹس کونسل ، کراچی کے صدر احمد شاہ نے شمیم حنفی کی موت پر غم کا اظہار کیا اور کہا کہ "شمیم اپنے ادبی کاموں کی وجہ سے ہم میں زندہ رہیں گے".[8]

ادبی خدمات[ترمیم]

شمیم نے اپنا پہلا ڈراما "آخری کش" لکھا، جسے 1965ء میں ان کے دوست امین حنفی نے تیار کیا تھا۔[4] وہ جامعہ ملیہ اسلامیہ کے رسالہ "جامعہ" کے مدیر رہ چکے ہیں۔[9] ایک ڈراما نگار کی حیثیت سے انھوں نے مٹی کا بلاوا ، بازار میں نیند اور مجھے گھر یاد آتا ہے سمیت کئی ڈرامے لکھے ہیں۔[10] جون 2015 میں ان کا شعری مجموعہ آخری پہر کی دستک ہندی کے شاعر اشوک واجپئی نے جاری کیا۔[10] 2012 میں آرٹس کونسل ، کراچی کے زیر اہتمام ، حنفی نے اردو کانفرنس میں ریمارکس دیے کہ ، "کتابیں ہماری یکجہتی کا احترام کرتی ہیں" اور "انفارمیشن ٹکنالوجی کی آمد نے کتابوں اور مشینوں کے مابین تنازعات کو جنم دیا ہے۔ " [11] وہ جامعہ ملیہ اسلامیہ تحریک ، تاریخ ، روایت کے بھی مرتب ہیں۔ [12]

ان کی کتابوں میں شامل ہیں: [9][13]

  • جدیدیت کی فلسفیانہ اساس
  • نئی شعری روایت
  • تاریخ، تہذیب اور تخلیقی تجربہ
  • اردو کلچر اور تقسیم کی روایت
  • خیال کی مسافت
  • قاری سے مکالمہ
  • منٹو: حقیقت سے افسانے تک[1]
  • غالب کی تخلیقی حسیت
  • آزادی کے بعد دہلی میں اردو خاکہ
  • غزل کا نیا منظر نامہ

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ "Famous Urdu writer and critic Shamim Hanafi succumbs to coronavirus". جیو نیوز. اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2021. 
  2. ^ ا ب پ "MFUA names Urdu literary award winners". گلف ٹائمز. 22 January 2021. اخذ شدہ بتاریخ 07 مئی 2021. 
  3. "New AMU Court elected, anti-VC camp among the losers". ٹو سرکلز. 1 February 2010. اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2021. 
  4. ^ ا ب Zaman Khan (7 January 2018). ""Literature cannot be divided by geography"". The News International. اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2021. 
  5. "Urdu scholar Shamim Hanfi awarded literary honour". Business Standard India. 20 September 2015. اخذ شدہ بتاریخ 07 مئی 2021. 
  6. "No one has monopoly over Urdu". سعودی گزٹ. 27 June 2018. اخذ شدہ بتاریخ 07 مئی 2021. 
  7. "Urdu Author Shamim Hanfi Chosen for Jnangarima Manad Alankaran Award". آؤٹ لک. 13 August 2015. اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2021. 
  8. "اردو کے معروف ادیب و دانشور شمیم حنفی کورونا وائرس کے باعث نئی دہلی میں انتقال کرگئے" [Famous Urdu scholar Shamim Hanfi passes away]. روزنامہ جنگ. اخذ شدہ بتاریخ 07 مئی 2021. 
  9. ^ ا ب "Shamim Hanafi". دی ٹائمز آف انڈیا. 3 November 2017. اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2021. 
  10. ^ ا ب S M Amir (12 June 2015). "Some sonnets this summer". دی ہندو. اخذ شدہ بتاریخ 07 مئی 2021. 
  11. Peerzada Salman (7 December 2012). "Quality prose rendition, speeches kick off international Urdu moot". ڈان (اخبار). اخذ شدہ بتاریخ 07 مئی 2021. 
  12. Manzar Imam (25 October 2020). "Jamia Millia Islamia and Shaikhul Hind Maulana Mahmud Hasan". Ummid. اخذ شدہ بتاریخ 07 مئی 2021. 
  13. "Books by Shamim Hanafi". ورلڈکیٹ. اخذ شدہ بتاریخ 07 مئی 2021.