مندرجات کا رخ کریں

شوکت علی یوسفزئی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
شوکت علی یوسفزئی
کے پی کے وزیر صنعت
مدت منصب
1 April 2014 – 3 May 2014
صدر ممنون حسین
کے پی کے وزیر صحت
مدت منصب
31 May 2013 – 31 March 2014
صدر آصف علی زرداری
ممنون حسین
گورنر
سید ظفر علی شاہ
شہرام خان
پشاور کے ایم پی اے
مدت منصب
31 May 2013 – 28 May 2018
گورنر
معلومات شخصیت
پیدائش 1 فروری 1963ء (61 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ضلع شانگلہ   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت پاکستان   ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت پاکستان تحریک انصاف   ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی ایچی سن کالج   ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان ،  صحافی   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان اردو   ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی ،  اردو   ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وزیر اعلی پرویز خٹک

شوکت علی یوسفزئی پاکستانی سیاست دان ہیں جنھوں نے پاکستان تحریک انصاف کی نمائندگی کرنے والی 10ویں خیبر پختونخوا اسمبلی کے رکن اور پرویز خٹک انتظامیہ میں وزیر صحت اور اطلاعات خیبر پختونخواہ کے طور پر خدمات انجام دیں۔ [1] وہ خیبرپختونخوا کے صوبائی لیول کے سیکرٹری جنرل کے طور پر بھی کام کرتے رہے اور اس سے قبل عمران خان کے سیاسی مشیر کے طور پر بھی کام کر چکے ہیں۔ [2] [3] [4]

پس منظر

[ترمیم]

یوسفزئی سینئر صحافی اور پاکستان تحریک انصاف کے سینئر رہنما ہیں۔ وہ تین مرتبہ خیبر یونین آف جرنلسٹ کے صدر رہے۔ وہ روزنامہ سرخاب کے چیف ایڈیٹر ہیں جو پشاور سے شائع ہوتا ہے۔ بنیادی طور پر ان کا تعلق ضلع شانگلہ کے ایک دور افتادہ گاؤں بشام سے ہے اور وہ 90 کی دہائی سے پشاور میں آباد ہیں۔ وہ صوبائی اسمبلی کے پی کے کے رکن اور ڈپٹی پارلیمانی لیڈر ہیں۔ فی الحال ان کے پاس خیبرپختونخوا میں کوئی وزارت نہیں ہے۔ [5]

تعلیم

[ترمیم]

انھوں نے ابتدائی تعلیم گورنمنٹ ہائی اسکول شانگ ضلع شانگلہ سے حاصل کی اور پھر جہانزیب کالج سوات سے انٹرمیڈیٹ کیا۔ انھوں نے کے پی کے زرعی یونیورسٹی پشاور سے ایم ایس سی کیا ہے۔ انھوں نے پشاور یونیورسٹی سے صحافت کی ڈگری بھی حاصل کی ہے۔

صحافت

[ترمیم]

وہ اپنے کیریئر کے دوران ایک سرگرم صحافی رہے اور مختلف اخبارات سے کام کیا۔ انھوں نے پی ٹی وی اور اے وی ٹی خیبر پر ٹاک شوز کی میزبانی بھی کی۔ وہ پشاور سے شائع ہونے والے روزنامہ سرخاب کے چیف ایڈیٹر ہیں۔ وہ مسلسل تین مرتبہ خیبر یونین آف جرنلسٹ کے صدر رہے۔ اپنے دور میں انھوں نے صحافیوں کی فلاح و بہبود کے لیے بہت کام کیا۔ معاشرے میں ان کا باعزت نام ہے۔

سیاسی کیریئر

[ترمیم]

شوکت علی یوسفزئی اپنی یونیورسٹی کے دوران سیاست میں سرگرم رہے اور کے پی کے زرعی یونیورسٹی پشاور کی پیپلز سٹوڈنٹ فیڈریشن کے صدر رہے۔ انھوں نے 1996 میں پاکستان تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کی اور ضلع شانگلہ سے الیکشن بھی لڑا۔ اس وقت سے وہ سیاست میں سرگرم رہے اور کے پی کے میں پی ٹی آئی کے قیام کے لیے اپنی خدمات فراہم کیں ۔ 2011 میں انھیں چیئرمین عمران خان کا سیاسی مشیر مقرر کیا گیا۔ اس کے بعد انھوں نے انٹرا پارٹی الیکشن لڑنے کے لیے اس عہدے سے استعفیٰ دے دیا۔ وہ کے پی کے میں پاکستان تحریک انصاف کے صوبائی جنرل سیکرٹری منتخب ہوئے۔ 2013 کے عام انتخابات میں، انھوں نے PK-2 پشاور سے صوبائی اسمبلی کی نشستوں کے لیے الیکشن لڑا اور پاکستان پیپلز پارٹی کے سید ظاہر علی شاہ کے خلاف 16000 ووٹوں کے فرق سے بھاری کامیابی حاصل کی۔ پی ٹی آئی نے شوکت علی یوسفزئی کو کے پی کے صوبائی اسمبلی میں ڈپٹی پارلیمانی لیڈر کا عہدہ سونپ دیا ہے۔ وہ خیبرپختونخوا کے وزیر صحت و اطلاعات بھی رہے ۔ وہ صوبہ خیبرپختونخوا کے سب سے بااثر صوبائی رہنما ہیں۔ انھیں 14 جون 2019 کی کانفرنس کے بعد دنیا بھر میں پہچان ملی جب وہ غلطی سے سوشل میڈیا ٹیم کے رضاکار کے ذریعے بلی کے چہرے کے فلٹر سے مزین ہو گئے۔ [6] [7]

حوالہ جات

[ترمیم]
  1. "Yousafzai visits info department"۔ 20 جون 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 اپریل 2022 
  2. PTI to ensure masses’ problems resolution: Yousafzai
  3. Shaukat Ali Yousafzai, Provincial Leader PTI demands politicians disqualified by Supreme Court to resign[مردہ ربط]
  4. "PTI to serve masses selflessly, says Yousafzai"۔ 30 جون 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 اپریل 2022 
  5. Shaukat Yousafzai: from reporter to minister
  6. Rob Picheta۔ "Accidental cat filter derails political press conference"۔ CNN۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جون 2019 
  7. Natt Garun (2019-06-17)۔ "Cat filter derails Pakistani politician's live-streamed press conference"۔ The Verge۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جون 2019 

بیرونی روابط

[ترمیم]