شکیل احمد ضیا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
شکیل احمد ضیا
معلومات شخصیت
پیدائش 25 دسمبر 1921 (98 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
عرفیت شکیل احمد ضیا
نسل مہاجر
عملی زندگی
صنف غزل، نظم، گیت، سیاسیات
تعليم بی اے (آنرز)
مادر علمی جامعہ علی گڑھ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ شاعر، محقق
P literature.svg باب ادب

شکیل احمد ضیا (پیدائش: 25 دسمبر، 1921ء - وفات: 7 مارچ، 1999ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو، ہندی، فارسی زبان کے ممتاز شاعر اور ادیب تھے۔

حالات زندگی[ترمیم]

شکیل احمد ضیا 25 دسمبر، 1921ء کو جھانسی، اتر پردیش، برطانوی ہندوستان میں پیدا ہوئے[1][2]۔ ان کے والدناصرعلی، شیخ الہند محمود الحسن (اسیر مالٹا) کے بھتیجے تھے۔ سات سال کی عمر میں حفظ قرآن کے علاوہ فارسی کی چند درسی کتب اور مولوی محمد اسماعیل میرٹھی کی تمام اردو ریڈرز پڑھ لیں۔ انیس برس کی عمر میں انہوں نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے بی اے (آنرز) کیا اور اسی دوران الہ آباد بورڈ سے علوم شرقیہ کے تمام امتحانات پاس کیے[2]۔ 1934ء میں صحافت سے اپنی عملی زندگی کا آغاز کیا۔ انہیں شعروسخن کا شوق کم عمری سے تھا۔ 1939ء میں صادق جھانسوی اور پھر مولانا حسرت موہانی سے شرف تلمذ حاصل کیا[1]۔ 1942ء میں ہندی کے شاعر کان شرن گپت کی شاگردی اختیار کی۔ تقسیم ہند کے بعد 1947ء میں شکیل احمد ضیا پاکستان منتقل ہو گئے اور کراچی میں سکونت پزیر ہوئے۔[2]

تصانیف[ترمیم]

  • 1939ء - گیت مالا (ہندی گیتوں کا مجموعہ)* 1940ء - لمعۂ طور (اُردو اور فارسی غزلیات کا مجموعہ)
  • 1944ء - توریت عجم (اُردو غزلیات و منظومات)
  • 1966ء -جدید نظری سیاسیات (سیاسیات)
  • 1974ء - موج گل (شاعری)
  • 1980ء - شعلۂ رنگ (شاعری) * 1993ء - دوسرا قدم (شاعری)
  • موج صبا (1970ء سے 1980ء تک کی غیر مطبوعہ غزلیات و منظومات کا مجموعہ)
  • A History of Jewish Crimes (انگریزی، تاریخ)

وفات[ترمیم]

شکیل احمد ضیا 7 مارچ، 1999ء کو کراچی،پاکستان میں وفات پاگئے۔[1][2]

حوالہ جات[ترمیم]