شہر بانو بیگم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
شہر بانو بیگم
شہزادی بیجاپور
پادشاہ بیگم
سلطنت مغلیہ کی ملکہ
فرماں روائی14 مارچ 1707 – 8 جون 1707
شریک حیاتمحمد اعظم شاہ
مکمل نام
شہر بانو
خاندانعثمانی (پیدائشی)
تیموری (شادی کے بعد)
والدعلی عادل شاہ دوئم
والدہخورشیدہ خانم
پیدائشت 1663
بیجاپور، کرناٹک، بھارت
مذہباسلام

شہر بانو بیگم (1663 -؟) 14 مارچ 1707 سے 8 جون 1707 تک مغل سلطنت کی ہمسر ملکہ تھی۔ وہ مغل شہنشاہ محمد اعظم شاہ کی تیسری (اور آخری) بیوی تھی۔ وہ پادشاہ بی بی اور پادشاہ بیگم کے لقب سے بھی مشہور ہیں۔

ان کا پیدائشی نام ساحر بانو تھا۔ وہ بیجاپور کے عادل شاہی خاندان کی راجکماری تھیں اور علی عادل شاہ دوم اور ان کی بیگم خورشیدہ خانم کی بیٹی تھیں۔ وہ سکندر عادل شاہ بہن بھی تھیں، سکندر عادل شاہ ان کے والد کے جانشین اور بیجاپور کے آخری حکمران تھے (اس سے پہلے کہ اس کو مغل بادشاہ اورنگ زیب نے اپنے ساتھ ملا لیا تھا)۔

خاندان اور نسب[ترمیم]

ساحر بانو بیگم بیجاپور کے عادل شاہی خاندان کی پیدائشی راجکماری تھیں اور علی عادل شاہ دوم اور ان کی بیگم خورشیدہ خانم کی بیٹی تھیں۔ شہر بانو کے دادا محمد عادل شاہ تھے ، جو ان کے والد کے پیشرو تھے اور ان کی ملکہ تاج جہاں بیگم تھیں۔ شہر کے بہن بھائیوں میں اس کے دو بھائی ، شہزادے حسین اور سکندر شامل تھے ، سکندر 1672 میں چار سال کی عمر میں اپنے والد کی جگہ بادشاہ بن گئے۔

شادی[ترمیم]

علی عادل شاہ 24 نومبر 1672 کو فوت ہوا ، اور اس کے ساتھ ہی بیجاپور کی بادشاہت کی رونق ختم ہوتی گئی۔ ان کے بعد اس کے نوزائیدہ بیٹے ، چار سالہ سکندر عادل شاہ کو حکمران بنایا گیا، اس دور میں انارکی کا دور شروع ہوا، جس کا خاتمہ صرف سلطنت کے ختم ہونے اور بادشاہت کی آزادی کے ساتھ ہی 1686 میں ہوا۔

اس کے کنبے اور بیجاپور کے لوگوں کی پسندیدہ، شہزادی 1 جولائی 1679 کو اپنے کنبہ اور اپنے پیاروں کے غمزدہ ہونے اور اپنے مستقبل کے شوہر کے نفرت انگیز سیرگلیو میں داخل ہونے کے سبب شہر سے روانہ ہوگئی جو یہ بیجاپوری ریاست کی فلاح و بہبود کے لئے ان کی رضامندی سے قربانی تھی۔ وہ 4 مارچ 1680 کو شہنشاہ کے دربار پہنچی اور 26 جولائی 1681 کو محمد اعظم سے شادی کرلی۔ شہنشاہ نے سہرہ باندھ دیا اور قاضی شیخ الاسلام نے خاص اور عام ( جامع مسجد ) میں شادی کا جشن منایا۔ حضرت محمد کی مثال کے مطابق ( خدیجہ کے ساتھ ان کی شادی میں) مہر 500 درہم طے کی گئی تھی۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  • جدوناتھ سرکار ترجمہ ، معاصر عالمگیری: بادشاہ اورنگزیب عالمگیر (راج 1658-1707 ء) کی تاریخ: تحریر محمد صمد مصطفیٰ خان