شیخ محمد اکرام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
شیخ محمد اکرام
SM Ikram at his desk.jpeg
S. M. Ikram at his desk, c. 1935.
مقامی نام شیخ محمد اِکرام
پیدائش شیخ محمد اکرام
10 ستمبر 1908(1908-09-10)ء
رسول نگر، ضلع گوجرانوالہ برطانوی ہند، اب پاکستان
وفات 17 جنوری 1973(1973-10-17) (عمر  64 سال)
لاہور
پیشہ سول سرونٹ، مورخ، سوانح نگار، مصنف
شہریت پاکستان
مادر علمی گورنمنٹ کالج، لاہور
اصناف تاریخ، سوانح، اردو ادب
شریک حیات زیب النساء (1910–1991)
اولاد حامد، خالد اور زاہد اکرام اور شاہدہ اظفر

مورخ، محقق، ممبر ریونیو بورڈ اور چیف سیٹلیمنٹ کمشنر، 10ستمبر 1908 کو رسول نگر ضلع گوجرانوالہ میں پیدا ہوئے۔ گورنمنٹ کالج لاہور اورآکسفورڈ میں تعلیم پائی۔ 1933ء میں انڈین سول سروس میں شامل ہوئے اور سوات، شولا پور، بڑوچ اور پونا میں اعلٰی انتظامی عہدوں پر فائز رہے۔ وہ پونہ کے پہلے ہندوستانی کلکٹر اور ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ تھے۔ تقسیم ہند کے بعد پاکستان کی وفاقی وزارت اطلاعات و نشریات کے ڈپٹی سیکرٹری مقرر ہوئے، پھر اسی وزارت جوائنٹ سیکریٹری اور بعد میں کچھ مدت کے لیے سیکریٹری کے عہدے پر بھی فائز ہوئے۔ 1955ء سے 1957ء تک مشرقی پاکستان میں متعین رہے، پہلے کمشنر ڈھاکہ اور پھر ممبر بورڈ آف ریونیو کی حیثیت سے۔ 1958ء تک محکمہ اوقاف کے ناظم اعلیٰ پاکستان مقرر ہوئے۔ 1965ء کو ممبر بورڈ آف ریونیو، چیف سیٹلمنٹ کمشنر اورکسٹوڈین مقرر ہوئے۔

دفتری کاموں کے ساتھ ساتھ ادبی سرگرمیاں بھی جاری رہیں۔ ہندوستانی مسلمانوں کی ثقافتی اور مذہبی تاریخ لکھی جو تین جلدوں میں شائع ہوئی۔ آب کوثر (1952ء)[1]، رود کوثر (1957ء)[1]، موج کوثر (1962ء)[1]، غالب اور شبلی کی سوانح بھی مرتب کیے۔ برصغیر پاک و ہند کی فارسی شاعری کا ایک مجموعہ (ارمغان پاک) مرتب کیا۔ جو 1950ء میں شائع ہوا۔ بعد میں اس کاایک ایڈیشن تہران سے شائع ہوا۔ 1952ء میں پاکستانی ترانوں اور حب الوطنی کے گیتوں کا ایک مجموعہ نوائے پاک کے نام سے شائع کیا۔ انگریزی زبان میں بھی آپ کی متعدد تالیفات انگلستان اور امریکا سے چھپ چکی ہیں۔ علمی خدمات کی بنا پر حکومت ایران نے آپ کو نشان سپاس اور حکومت پاکستان نے (ستارہ امتیاز) کے اعزازات عطا کیے۔ پنجاب یونیورسٹی کی طرف سے ڈاکٹر آف لٹریچر کی اعزازی ڈگری ملی۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ تاج کمپنی، 3151، ترکمان گیٹ، دہلی، 1991ء