شیشہ (کشیدہ کاری)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

شیشہ یا ابلہ بھرت کشیدہ کاری ( فارسی شیشہ ، ابلہ بھرت ؛ ہندی : आभला भरत، ابلہ بھرت ؛ گجراتی : شکلا بھرت)، یا آئینے کا کام ، کڑھائی کی ایک قسم ہے جو آئینے کے چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں کو جوڑ کر تیار کی جاتی ہے جس سے دھات کی عکاسی ہوتی ہے۔ آئینہ کڑھائی پورے ایشیاء میں پھیلی ہوئی ہے ، اور آج کل یہ برصغیر پاک ، افغانستان ، چین اور انڈونیشیا کی روایتی کڑھائی میں پائی جاتی ہے۔

تاریخ[ترمیم]

گجرات کی ابلہ بھرت یا شیشہ کڑھائی

شیشا کڑھائی کا آغاز ہندوستان میں 17 ویں صدی میں ہوا تھا۔ روایتی طور پر ، شیشے یا ابلہ بھرت کا کام ابرق کا استعمال کرتے ہوئے کیا جاتا تھا لیکن بیٹل ، ٹن ، چاندی یا سکے اس خطے کے لحاظ سے غیر معمولی نہیں تھے۔ اس کی جگہ شیشے کو بڑے پتلی بلبلوں میں بدل دیا گیا تھا اور اس کے استعمال کے لئے چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں میں توڑا جاتا تھا۔ روایتی شیشہ کے آئینے میں اس عمل کی وجہ سے محدب وکر ہوتا ہے۔ سرکلر شیشہ بنانے کی روایت جنوبی ایشیاء کی خواتین نے بڑے پیمانے پر کی تھی ، جو خاص قینچی استعمال کرتی ہیں جو فلائنگ شارڈ کو روکنے کے لئے بار بار نم کی جاتی ہیں اور انہیں چھوٹی سرکلر شکلوں میں چھیل لیتی ہیں۔

مذہبی اہمیت[ترمیم]

راجستھان ، گجرات ، مدھیہ پردیش اور ہریانہ میں ہندوؤں کے سامنے سامنے کے دروازے میں بندھا ہوا ابلا تورات یا شیشا توران کا استعمال بد نظریوں کو روکنے کے لئے مانا جاتا ہے۔ یہ عقیدہ ان خطوں میں بسنے والے مسلمان اور جین بھی رکھتے ہیں۔

تصاویر[ترمیم]

مزید دیکھیں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]