صابی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(صائبی سے رجوع مکرر)
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

صابی، نصرانیوں اور مجوسیوں کی بےدین جماعت کو کہتے ہیں اور صرف مجوسیوں کو بھی کہا جاتا ہے۔

لغوی معنی[ترمیم]

صابی کے لفظی معنی ہیں جو کوئی بھی اپنے دین کو چھوڑ کر دوسرے دین میں آجائے یا اس کی طرف مائل ہوجائے۔ من خرج اومال عن دین الی دین۔ (قرطبی) قیل لکل خارج من الدین الی دین اخر صابیء (راغب)

اصطلاحی معنی[ترمیم]

اصطلاح میں صابیون (Sabians) کے نام کا ایک مذہبی فرقہ تھا جو عرب کے شمال ومشرق میں شام وعراق کی سرحد پر آباد تھا۔ یہ لوگ دین توحید اور عقیدہ رسالت کے قائل تھے اور اس لیے اصلا اہل کتاب تھے۔

عقائد و معمولات[ترمیم]

صابئین ۔ صابی کی جمع ہے۔ یہ لوگ وہ ہیں جو یقینا ابتداء کسی دین حق کے پیرو رہے ہوں گے ( اسی لئے قرآن میں یہودیت وعیسائیت کے ساتھ ان کا ذکر کیا گیا ہے) لیکن بعد میں ان کے اندر فرشتہ پرستی اور ستارہ پرستی آگئی یا یہ کسی بھی دین کے پیرو نہ رہے۔ اسی لئے لامذہب لوگوں کو صابی کہا جانے لگا۔[1] صابی مذہب والے یہ اعتقاد رکھتے تھے کہ ان کا مذہب الہامی مذہب ہےاور وہ حضرت شیث علیہ السلام اور حضرت اخنوح[2] یعنی ادریس علیہ السلام کے پیرو ہیں۔

ان کے یہاں سات وقتوں کی نمازیں اور ایک قمری مہینہ کا روزہ ہوتا تھا۔
یہ جنازے کی نماز بھی پڑھتے تھے۔ ان حالات سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ شاید ان کا دعویٰ صحیح ہو، لیکن یہ عیب ان میں آگیا تھا کہ سبع سیارہ (سات ستاروں) کی پرستش کرتے تھے،
بایں ہمہ خانہ کعبہ کی بڑی تعظیم کرتے تھے۔[3] الصّٰبِئيْنَ یہ ’’ صَابِئٌ ‘‘ کی جمع ہے، اس کا مادہ ص، ب، ء ہے، جو شخص ایک دین سے دوسرے دین کی طرف نکل جائے، گویا یہ ’’ صَبَأَ نَابُ الْبَعِیْرِ ‘‘ سے ہے، جس کا معنی ہے اونٹ کی کچلی نکل آئی۔ ایک قراءت میں ’’ صابین ‘‘ ہے، وہ اسی ’’ صابئین ‘ میں سے ہمزہ کی تخفیف سے ہے اور بعض نے کہا بلکہ وہ صَبَا یَصْبُوْ سے ہے، جس کے معنی مائل ہونا ہیں، یعنی وہ ایک دین سے دوسرے دین کی طرف مائل ہوگیا۔ ( راغب) [4]

تاریخی حیثیت[ترمیم]

اپنے کو ’’ نصارائے یحیی‘‘ کہتے تھے، گویا حضرت یحیی (علیہ السلام) کی امت تھے۔ حضرت عمر (رض) جیسے مبصرونکتہ رس خلیفہ راشد اور حضرت عبداللہ بن عباس (رض) جیسے محقق صحابی نے صابیوں کا شمار اہل کتاب میں کیا ہے اور حضرت عمر (رض) نے ان کا ذبیحہ بھی حلال مانا ہے۔قال عمر ابن الخطاب وابن عباس ھم قوم میں اھل الکتاب وقال عمر تحل ذبائحھم مثل ذبائح اھل الکتاب (معالم) تابعین میں سے متعدد اکابران کے اہل کتاب یا موحد ہونے کے قائل ہوئے ہیں۔ ھم طائفۃ من اھل الکتب (ابن جریر، عن السدی) فرقۃ من اھل الکتاب (ابن کثیر، عن ابی العالیۃ والربیع بن انس والضحاک والسدی واسحاق بن راہویہ) ابن زید ان کے موحد ہونے کے قائل تھے، اور قتادہ اور حسن بصری (رح) سے تو یہاں تک منقول ہے کہ اہل قبلہ تھے اور نماز پانچ وقت کی پڑھتے تھے (ابن جریر) اور ہمارے امام ابوحنیفہ (رح) جو خود بھی عراقی تھے اور اس لیے صابیوں سے براہ راست واقفیت کا موقع رکھتے تھے، ان کا فتوی ہے کہ ان کے ہاتھ کا ذبیحہ بھی حلال ہے اور ان کے ہاں کی عورتوں سے نکاح بھی جائز۔قال ابو حنیفۃ لا باس بذبائحھم ونکاح نساءھم (قرطبی) تاریخ ایران پر ایک مستند مستشرق کی کتاب کا اردو ترجمہ ابھی حال ہی میں نکلا ہے (انجمن ترقی اردو، دہلی) اس کے صفحہ 47 پر فاضل مترجم، ڈاکٹر شیخ محمد اقبال اور نٹیل کالج لاہور، لفظ مینڈین (Mandean) پر حاشیہ دیتے ہیں :۔’’ مینڈین بہ زبان آرامی بمعنی اولوالعلم۔ اس فرقہ کے لوگ عراق میں اب بھی موجود ہیں اور صابیون کہلاتے ہیں۔ وہ لوگ اگرچہ عیسائی نہیں ہیں، تاہم جان دی بپٹسٹ کو مانتے ہیں عراق میں عوام الناس ان کو حضرت یحیی کی امت کہتے ہیں۔‘‘ (ایران بہ عہد ساسانیاں)[5] صابی دراصل وہ ستارہ پرست اور سورج پرست قوم ہے جس نے اپنے معبودوں کی حمایت میں حضرت ابراہیم کو آگ میں ڈالا تھا۔ یہ لوگ اپنے آپ کو حضرت نوح کا پیروکار بتلاتے ہیں اور باقی بعد میں آنے والے سب انبیاء کے منکر ہیں۔ بعد میں صباء کا لفظ دین میں تبدیل کرنے یا آبائی مذہب سے سے روگردانی کرنے کے معنوں میں استعمال ہونے لگا اور ایک گالی کی حیثیت اختیار کر گیا۔ چنانچہ مشرکین مکہ بھی اسلام لانے والوں کو اسی محبت سے نوازتے تھے اور کہتے تھے کہ فلاں شخص صابی ہوگیا ہے۔ یعنی بےدین اور لا مذہب ہوگیا ہے[6]۔


حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ تفسیر مکہ، صلاح الدین یوسف، سورۃ البقرہ، آیت62
  2. ^ حضرت اخنوح، حضرت ادریس علیہ السلام کو کہا جاتا ہے۔
  3. ^ تاریخِ ابن خلدون، ج-دوم، ص-۳۸
  4. ^ تفسیر القرآن الکریم، حافظ عبد السلام بھٹوی،سورہ البقرہ، آیت62
  5. ^ تفسیر ماجدی عبدالماجد دریا آبادی سورۃ البقرہ زیر آیت62
  6. ^ تفسیر تیسیر القرآن عبدالرحمن کیلانی سورۃ الحج آیت17