صارف:Kareemsiraji/شاستری سنگیت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

بھارتی موسیقی



سانچہ:भारतीय संगीत


ہندوستانی شاستری موسیقی}} یا مارگ ہندوستانی موسیقی کا لازمی جزو ہے۔  شاستری موسیقی کو کلاسیکی موسیقی بھی کہا جاتا ہے۔  کلاسیکی گانا صوتی اکثریت کی حامل ہوتی ہے ، الفاظ غالب نہیں۔  اس میں اہمیت آواز کی ہے (اس کے اتار چڑھاو کی ، الفاظ اور معانی کی نہیں)۔  اگرچہ یہ صرف کلاسیکی موسیقی بجانے والے مشق کے معمولی کان سے ہی سمجھا جاسکتا ہے ، لیکن غیر مانوس کان بھی الفاظ کے معنی کے ذریعہ دیسی گانوں یا لوک گانوں سے لطف اٹھا سکتا ہے۔  بہت سارے لوگ فطری طور پر اس سے بور ہو جاتے ہیں ، لیکن اس کی وجہ اس موسیقار کی کمزوری نہیں ہے ، بلکہ لوگوں میں معلومات کا فقدان ہے۔

بھارتی शास्त्रीय موسیقی کی روایات भरत मुनि کے नाट्यशास्त्र اور اُس سے پہلے सामवेद کے गायन تک جاتی ہے۔.۔۔.भरत मुनि.۔۔.नाट्यशास्त्र.۔۔.सामवेद भरत मुनि سے रचित भरत नाट्य शास्त्र، بھارتی موسیقی کے تاریخ کا یکم تحریری प्रमाण مانا جاتا ہے۔ اس کی رچنا کے وقت کے بارے ميں کئی मतभेद ہیں۔ آج کے بھارتی शास्त्रीय موسیقی کے کئی پہلو کا ذکر اس قدیم ग्रंथ ميں ملتا ہے۔ भरत मुनि کے नाटयशास्त्र کے بعد मतंग मुनि کی बृहद्देशी اور शारंगदेव रचित موسیقی रत्नाकर، تاریخی दृष्टि سے سب महत्वपूर्ण ग्रंथ مانا جاتا ہے۔ بارہویں صدی کے पूर्वार्द्ध ميں لکھے سات بابوں والے اس ग्रंथ ميں موسیقی व नृत्य کا تفصیل سے وضاحت ہے۔

موسیقی रत्नाकर ميں کئی तालों کا ذکر ہے व اس ग्रंथ سے پتا چلتا ہے کہ قدیم بھارتی روایتی موسیقی ميں बदलाव آنے شروع ہوچکے تھے व موسیقی پہلے سے उदार ہونے لگا تھا مگر نژاد عنصر ایک ہی رہے۔.۔۔.موسیقی रत्नाकर 11ویں اور 12ویں صدی ميں مسلم تہذیب کے प्रसार نے شمال بھارتی موسیقی کی سمت کو نیا आयाम دیا۔ राजदरबार موسیقی کے کلیدی संरक्षक بنے اور जहां अनेक حکمرانوں نے قدیم بھارتی موسیقی کی समृद्ध روایت کو प्रोत्साहन دیا وہیں اپنی आवश्यकता اور रुचि کے تحت اُنہوں نے اس ميں अनेक تبدیلی بھی کیے۔ اسی وقت کچھ نئی طرزیں بھی प्रचलन ميں آئیں جیسے خیال، غزل आदि اور بھارتی موسیقی کا کئی نیے سازوں سے بھی تعرف ہوا جیسے सरोद، सितार وغیرہ۔.۔۔.सरोद.۔۔.सितार

بھارتی موسیقی کے جدید मनीषी واقع کر چکے ہیں کہ वैदिक काल سے आरम्भ حیی بھارتی سازوں کی عمرہ क्रमश: ایک کے بعد دوسری خصوصیت سے ان यंत्रों کو سنوارتی گئی۔ ایک-तंत्री वीणा ہی त्रितंत्री بنی اور सारिका युक्त ہوکر मध्य-काल کے گذشتہ किन्नरी वीणा کے نام سے प्रसिद्ध حیی۔ मध्यकाल ميں یہ यंत्र जंत्र کہلانے لگا جو بنگال کے कारीगरों سے آج بھی اس نام سے پکارا جاتا ہے۔ بھارت ميں پہنچے مسلم संगीतकार تین तार والی वीणा کو سہ (تین) + तार = सहतार یا सितार کہنے لگے۔ اسی قسم सप्त तंत्री अथवा चित्रा-वीणा، सरोद کہلانے لگی۔ شمال بھارت ميں مغل مملکت زیادہ پھیلا ہوا تھا جس وجہ شمال بھارتی موسیقی پر مسلمان ثقافت व اسلام کا प्रभाव زیادہ محسوس کیا گیا۔ جبکہ جنوب بھارت ميں رائج موسیقی کسی قسم کے مسلم प्रभाव سے अछूता رہا۔

بعد ميں صوفی تحریک نے بھی بھارتی موسیقی پر اپنا प्रभाव جمعیا۔.۔۔.صوفی تحریک آگے چلکر دیش کے مختلف حصہ/حصوں ميں کئی نئی पद्धतियों व घरानों کا پیدائش ہوا۔ برطانوی शासनकाल کے دوران کئی نیے ساز प्रचलन ميں آئے पाश्चात्य موسیقی سے بھی بھارتی موسیقی کا تعرف ہوا۔ آم جنتا ميں مقبول آج کا ساز हारमोनियम، اُس‬ی وقت प्रचलन ميں آیا۔.۔۔.हारमोनियम اسطرح بھارتی موسیقی کے عروج व اُس ميں تبدیلی لانے ميں ہر युग کا اپنا महत्वपूर्ण योगदान رہا۔

بھارتی ساز यंत्र[ترمیم]

आमतौर پر ہندوستانی موسیقی ميں इस्तेमाल کیے گئے اوزار ميں सितार، सरोद، सुरबहार، ईसराज، वीणा، तनपुरा، बन्सुरी، शहनाई، सारंगी، वायलिन، संतूर، पखवज اور तबला #شامل ہیں۔ आमतौर پر कर्नाटिक موسیقی ميں इस्तेमाल کیے جانے والے اوزار ميں वीना، वीनू، गोत्वादम، हार्मोनियम، मृदंगम، कंजिर، घमत، नादाश्वरम اور वायलिन #شامل ہیں۔

بھارتی शास्त्रीय موسیقی पद्धतियां[ترمیم]

بھارتی शास्त्रीय موسیقی کی دو کلیدی पद्धतियां ہیں- ہندوستانی موسیقی اور کرناٹک موسیقی۔.۔۔.ہندوستانی موسیقی.۔۔.کرناٹک موسیقی

ہندوستانی موسیقی[ترمیم]

یہ शास्त्रीय موسیقی، شمال بھارت ميں رائج ہوا۔

ہندوستانی موسیقی کے کلیدی راگوں کی فہرست

کرناٹک موسیقی[ترمیم]

یہ جنوب بھارت ميں رائج ہوا۔ ہندوستانی موسیقی مغل بادشاہوں کی छत्रछाया ميں विकसित ہوا اور کرناٹک موسیقی جنوب کے मन्दिरों ميں۔ اسی وجہ جنوب بھارتی कृतियों ميں भक्ति रस متعدد ملتا ہے اور ہندوستانی موسیقی ميں शृंगार रस۔

کرناٹک موسیقی کے کلیدی راگوں کی فہرست

راگ हंसध्वनि

चित्रवीथिका[ترمیم]

सन्दर्भ[ترمیم]

انھیں بھی دیکھیں[ترمیم]

बाहरी कड़ियाँ[ترمیم]

[[زمرہ:اصناف موسیقی]] [[زمرہ:موسیقی]]