صلاۃ التسبیح

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

صلوٰۃالتسبیح ہر وقت غیر مکروہ میں پڑھ سکتے ہیں اور بہتر یہ ہے کہ ظہر سے پہلے پڑھے۔ اس نماز میں بے انتہا ثواب ہے۔ بعض محققین فرماتے ہیں کہ اس کی بزرگی سن کر ترک نہ کرے گا مگر دین میں سستی کرنے والا، حدیث میں ہے کہ اگرتم سے ہو سکے تو اسے ہر روز ایک بار پڑھو ورنہ ہفتہ میں ایک بار اور یہ بھی نہ ہو سکے تو مہینہ میں ایک بار اور یہ بھی نہ کر سکو تو سال میں ایک بار اور یہ بھی نہ ہو سکے تو عمر میں ایک بار پڑھ لو۔ اس نماز کے پڑھنے کی ترکیب ہم حنفیوں کے طو ر پر وہ ہے جو ترمذی شریف میں مذکور ہے کہ اللہ اکبرکہہ کر سبحٰنک اللھم (الیٰ الآ خرہٖ) پڑھ کر پندرہ بار سبحٰن اللہ والحمد للہ ولا الٰہ الا اللہ واللہ اکبر پڑھے پھر اعوذ اور بسم اللہ اور الحمد شریف اور سورت پڑھ کر دس مرتبہ یہی تسبیح پڑھے۔ پھر رکوع کرے اور رکوع میں دس بار پڑھے پھر رکوع سے سر اٹھائے اور سمع اللہ لمن حمدہٗ او ر اللھم ربنا ولک الحمد کہہ کر یہی تسبیح دس بار کہے پھر سجدہ کو جائے اور اس میں دس مرتبہ پڑھے۔ پھر سجدہ سے سر اٹھا کر دس بار کہے پھر سجدے کو جائے اور اس میں دس مرتبہ پڑھے۔ یونہی چار رکعت پڑھے۔ ہر رکعت میں 75 بار تسبیح اور چاروں میں تین سو ہوئیں اور رکوع و سجود میں سبحٰن ربی العظیم اور سبحٰن ربی الا علیٰ کہنے کے بعد تسبیحات پڑھے۔ بہتر یہ ہے کہ پہلی رکعت میں الھٰکم التکاثر دوسری میں والعصر تیسری میں قل یاٰ یھاالکفرون اور چوتھی میں قل ھو اللہ احد پڑھے۔