مندرجات کا رخ کریں

روزہ (اسلام)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(صوم سے رجوع مکرر)

170PX

بسلسلہ مضامین:
اسلام

روزہ اسلام کے 5 ارکان میں سے ایک ہے جسے عربی میں صوم کہتے ہیں۔ مسلمان اسلامی سال کے مقدس مہینے رمضان المبارک میں روزے رکھتے ہیں۔ روزے میں مسلمان صبح صادق سے غروب آفتاب تک کھانے، پینے اور اپنی بیوی سے ہمبستری کرنے سے باز رہتے ہیں۔ روزہ رکھنے کے لیے صبح صادق سے قبل کھانا کھایا جاتا ہے جسے سحری کہتے ہیں جس کے بعد نماز فجر ادا کی جاتی ہے جبکہ غروب آفتاب کے وقت اذان مغرب کے ساتھ کچھ کھا پی کر روزہ کھول لیا جاتا ہے جسے افطار کرنا کہتے ہیں۔ لفظ صوم کا مادہ ص، و اور م ہے۔ لغت میں صوم کہتے ہیں کسی چیز سے رک جانا۔[1] اورشعری اصطلاح میں ایک مخصوص طرز پر صبح صادق سے لے کر غروب شمس تک مخصوص شرائط اور نیت کے ساتھ کھانے پینے سے رک جانا۔ صوم صرف رمضان کے فرض روزوں پر دلالت نہیں کرتا ہے بلکہ اس سے تمام طرح کے روزے مراد ہیں۔روزے یا تو فرض عین و فرض کفایہ ہوں گے جیسے رمضان کے روزے، رمضان کے علاوہ واجب روزے ہوتے ہیں جیسے قضا روزے یا نذر یا کفارہ کا روزہ۔ یہ مسنون ہوں گے اور اس کی دو اقسام ہیں؛ سنت مؤکدہ اور مستحب۔ یا نفل روزہ ہوگا۔ شریعت نے مخصوص اوقات روزہ رکھنے سے منع بھی کیا ہے جیسے یوم شک کا روزہ، عید الفطر اور عید الاضحی کا روزہ۔

روزہ کی فرضیت اور ماہیت پر تمام عالم اسلام متفق ہے۔ یہ ایک عبادت ہے اور طلوح فجر سے غروب شمس تک نیت کے ساتھ کھانے پینے سے رک جانے کا نام ہے۔ ہر سال رمضان کا روزہ بالاجماع فرض ہے۔ یہ اسلام کے پانچ ارکان میں سے ایک رکن ہے۔ رمضان کے روزوں کی بہت ساری فضیلتیں قرآن اور حدیث میں رواد ہوئی ہیں۔ رمضان کی راتوں کا قیام بھی بہت فضیلتیں رکھتا ہے۔ خصوصا اخیر عشرہ میں عبادت کی اہمیت اور ثواب بڑھ جاتا ہے۔ آخری عشرہ میں ہی شب قدر آتی ہے۔ رمضان کے بعد اگلے ماہ شوال کا پہلا دن عید الفطر کہلاتا ہے جس میں صدقہ فطر ادا کیا جاتا ہے جو رمضان میں ہوئی کوتاہیوں کا کفارہ ہوتا ہے۔ یہ دن مسلمانوں میں خوشی و مسرت کا دن ہوتا ہے۔ اس دن نیکی کرنا، صدقہ دینا، سب سے دعا سلام کرنا اور خوش رہنا ہوتا ہے۔ رمضان کے روزے دوسری ہجری میں فرض ہوئے۔ اللہ عزوجل نے ارشاد فرمایا:

كُتِبَ عَلَيْكُمُ الصِّيَامَُ

[2] اور فرمایا

فَمَن شَهِدَ مِنكُمُ الشَّهْرَ فَلْيَصُمْهُ

[3] حدیث میں پیغمبر اسلام ﷺنے ارشاد فرمایا : «بني الإسلام على خمس» اور اس میں روزہ کا ذکر فرمایا، یعنی اسلام کی بنیاد پانچ چیزوں پر ہے اور رمضان کا روزہ ان میں سے ایک ہے۔ ایک اور حدیث میں ہے کہ ایک اعرابی نے سوال کیا کہ شریعت کے اہم امور کیا ہیں تو آپ ﷺنے فرمایا کہ رمضان کے روزے، اس نے پوچھا اور کچھ تو آپ ﷺنے جواب دیا کہ نہیں لیکن اگر تم چاہو تو۔ رمضان کا روزہ ہر سال فرض ہے تمام مسلمان عاقل بالغ پر۔ سفر یا مرض کی وجہ سے یہ معاف نہیں ہوتا ہے۔ اگر کوئی رمضان میں روزہ رکھنے پر قادر نہیں ہے تو جب قادر ہو گا تب قضا کرے گا۔ روزہ رکھنے کے لیے مسلمان ہونا اور عورت کا حیض و نفاس سے پاک ہونا ضروری ہے۔ فقہ میں روزہ سے متعلق مفصل احکام موجود ہیں۔ ان میں روزہ کے واجبات، مستحبات، مکروہات، عید الفطر کے احکام، نماز کے اوقات، سحری و افطار کے اوقات و احکام اور روزہ کی قضا وغیرہ جیسے احکام شامل ہیں۔

روزہ کی تعریف

[ترمیم]

لغت میں لفظ صوم

[ترمیم]

صوم عربی زبان کا لفظ ہے اور اس کے معنی مطلقا رک جانا ہے جیسے چلنے سے رک جانا ، بات کرنے سے پرہیز کرنا، کھانے پینے سے پرہیز کرنا وغیرہ۔ ابو عبیدہ کہتے ہیں: کھانے پینے اور بات کرنے اور چلنے پھرنے سے رک جانے والا روزہ دار ہے۔[4] لفظ صوم کا مادہ ص، و اور م ہے۔ اس کا فعم صام بنتا ہے۔ صوم اور صیام واحد ہیں۔ القاموس المحیط میں اس کے معنی ہے: کھانے، پینے، بات کرنے، جماع کرنے اور چلنے پھرنے سے رک جانا۔[5]

زبان میں روزہ کا مصدر ہے: مطلق پرہیز، خواہ وہ چلنے پھرنے یا حرکت و حرکت سے پرہیز ہو یا بولنے سے، کھانے پینے سے پرہیز ہے۔ ابو عبیدہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں: ہر وہ شخص جو کھانے، بولنے یا چلنے پھرنے سے پرہیز کرے۔ روزہ دار ہے؟ [6] ( [7] [8] اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان ہے:﴿فَكُلِي وَاشْرَبِي وَقَرِّي عَيْنًا فَإِمَّا تَرَيِنَّ مِنَ الْبَشَرِ أَحَدًا فَقُولِي إِنِّي نَذَرْتُ لِلرَّحْمَنِ صَوْمًا فَلَنْ أُكَلِّمَ الْيَوْمَ إِنسِيًّا﴾ [[[سورہ سانچہ:نام سورہ 19|19]]:26]

قانونی معنوں میں

[ترمیم]

[9]روزہ توڑنے والی چیزوں سے پرہیز کرنا، مخصوص طریقے سے، ایک خاص وقت میں نیت کے ساتھ،" یا: "صبح سے غروب آفتاب تک نیت سے روزہ ٹوٹنے والی چیزوں سے پرہیز کرنا۔" [10][11]جمہور فقہا کے نزدیک روزہ کی نیت ضروری نہیں ہے، خواہ یہ روزے کے ارکان میں سے ہو یا اس کی شرطوں میں سے۔ ثالث کے مصنف نے کہا: "روزہ کھانے پینے، شادی بیاہ اور تقریر سے پرہیز کرنے کا نام ہے۔" الرغیب نے کہا: "روزہ بنیادی طور پر عمل سے پرہیز ہے۔ [12] ابن قدامہ نے کہا: "اسلامی شریعت میں روزہ ایک خاص وقت میں مخصوص چیزوں سے پرہیز کرنا ہے۔"[13] اور آپ نے شریعت میں الذخیرہ روزہ میں فرمایا: "منہ اور شرمگاہ کو شہوتوں سے پرہیز کرنا۔[14] ابن عرفہ کہتے ہیں: "روزہ فجر کے وقت سے لے کر غروب آفتاب تک عبادت کا ایک نفیس عمل ہے"[15][16] ابن رشد نے کہا: "صبح سے غروب آفتاب تک نیت کے ساتھ کھانے پینے اور جماع سے پرہیز کرنا۔" یا یہ ہے کہ: ان چیزوں سے پرہیز جن سے پورے دن کا روزہ ٹوٹ جاتا ہے، فقہا کے نزدیک مخصوص شرائط کے مطابق؛ کیونکہ روزہ ایک عمل ہے اور نیت شرعی طور پر اعمال کے درست ہونے کے لیے ضروری ہے اور روزے کی نیت فقہی مکاتب کے ائمہ کے اجماع کے مطابق ضروری ہے، لہٰذا نیت کے علاوہ روزہ درست نہیں، کیونکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس نے رات کو نیت نہ کی اس کا روزہ نہیں ہے۔ اور نیت کا وقت غروب آفتاب سے طلوع فجر تک ہے۔

اسلام میں روزے کی شرعی حیثیت

[ترمیم]

روزے کا نفاذ

[ترمیم]

روزہ اسلام میں جائز عبادات میں سے ایک ہے اور یہ ہجرت کے دوسرے سال فرض کیا گیا تھا اور اس کے بارے میں قرآن کریم کی آیات نازل ہوئیں، جو مسلمانوں پر اس کی فرضیت کی طرف اشارہ کرتی ہیں اور یہ کہ یہ ان لوگوں پر عائد کی گئی جو ان لوگوں پر فرض ہیں۔ سابقہ ​​قوانین میں ان سے پہلے تھے اور اس کے احکام اور اوقات روزے کی آیات میں بیان کیے گئے تھے اور اس کے احکام اور اوقات کی تفصیلات احادیث نبوی سے واضح کی گئی تھیں۔ کیونکہ حدیث نبوی قرآن کی تشریح کرتی ہے، اللہ تعالیٰ نے فرمایا: "اور ہم نے آپ کی طرف یہ ذکر نازل کیا تاکہ آپ اسے لوگوں پر واضح کر دیں" [النحل: 44] اور اللہ تعالیٰ نے فرمایا: "نہیں۔ آپ کے رب کی قسم وہ اس وقت تک ایمان نہیں لائیں گے جب تک کہ آپ کا فیصلہ نہ کر لیں۔‘‘ کتاب و سنت اور قرآن سے دلائل اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان ہے: {اے ایمان والو تم پر روزے فرض کیے گئے جس طرح پہلے لوگوں پر فرض کیے گئے تھے۔ تاکہ تم پرہیزگار بن جاؤ۔‘‘ (البقرۃ:183) یہ مسلمانوں پر روزے کے فرض ہونے کی دلیل ہے اور یہ اس کے نافذ ہونے کے شروع میں تھا، پھر قرآن کریم سے نازل ہوا جس میں روزے کی مقدار کو بیان کیا گیا اور اس کے اوقات اور اس سے متعلق الفاظ کی طرف اشارہ کیا۔ اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے کہ ، تم میں سے کس نے گواہی دی؟ اس مہینے کو روزہ رکھے (البقرہ: 185) ... اس آیت میں صریح حکم ہے کہ مسلمانوں پر ماہ رمضان کے روزے فرض ہیں۔ اور اس کے اس فرمان کا مفہوم ہے: {اے ایمان والو}: جو خدا اور اس کے رسولﷺ پر ایمان لائے اور ان کا اقرار کیا، {تم پر روزہ فرض کیا گیا ہے} یعنی: تم پر روزے فرض کیے گئے ہیں۔ جیسا کہ تم سے پہلے لوگوں پر فرض کیا گیا تھا۔ پچھلی امتوں میں سے یہ قدیم قوانین میں سے ہے اور یہ انبیا اور ان کی امتوں پر نافذ کیا گیا تھا۔ ابو جعفر الطبری آیت کی تفسیر میں فرمایا: اس نے تم پر وہی فرض کیا جو تم سے پہلے لوگوں پر فرض کیا گیا تھا اور اس نے ان لوگوں کے بارے میں اقوال ذکر کیے جن پر مسلمانوں پر فرض ہونے سے پہلے روزہ فرض کیا گیا تھا اور اس کے معنی ہیں جو اس میں ہے۔ ہمارے روزے اور ہم سے پہلے کے روزوں کے درمیان ایک مشابہت: پہلا: ماہ رمضان کے روزے عیسائیوں پر فرض ہیں اور ان کے روزوں کو مسلمانوں کے روزوں سے تشبیہ دینا وقت اور مقدار میں ان کا اتفاق ہے۔ جس کو نافذ کرنا آج مسلمانوں کے لیے ضروری ہے۔ عیسائیوں پر رمضان کا مہینہ اسی طرح مسلط کیا تھا جیسا کہ اسے نافذ کیا گیا تھا۔ ہم پر تو انھوں نے اسے موسم میں بدل دیا اور یہ اس لیے کہ انھوں نے گرمی میں تیس دن کے روزے رکھے ہوں گے، پھر ان کے بعد ایک صدی آئی، تو انھوں نے اپنے آپ پر اعتماد کیا، اس لیے انھوں نے تیس دن سے پہلے روزہ رکھا۔ اور ایک دن کے بعد دوسرے نے اس سے پہلے صدی کے سال کا انتظار نہیں چھوڑا یہاں تک کہ وہ پچاس ہو گیا اور یہ قول ہے: {تم پر روزے فرض کیے گئے ہیں جیسا کہ تم سے پہلے لوگوں پر فرض کیے گئے تھے۔} بقرہ: 183۔ اور کہا گیا کہ مشابہت صرف اس لیے ہے کہ ان کا روزہ کھانے کے بعد سے لے کر رات کے کھانے کے بعد تک تھا اور یہ وہی ہے جو مسلمانوں پر اس کے نفاذ کے شروع میں عائد کیا گیا تھا۔ ابن جریر الطبری نے روایت کیا ہے: ہم سے پہلے کے عیسائیوں پر بھی رمضان فرض کیا گیا تھا، وہ سونے کے بعد نہ کھائیں اور نہ پییں۔ رمضان کے مہینے میں عورتوں سے نکاح کرنا، یہ دیکھ کر وہ جمع ہوئے اور سردیوں اور گرمیوں کے درمیان میں ایک روزہ رکھا اور کہنے لگے: ہم اپنے کیے کا کفارہ بیس دن بڑھا دیں گے، چنانچہ انھوں نے ان کے پچاس روزے کر لیے۔ اور ایک روایت میں ہے: ان پر اندھیروں کی طرح روزے فرض کیے گئے اور قتادہ کی روایت ہے: رمضان، اللہ تعالیٰ نے ان لوگوں پر فرض کیا جو ان سے پہلے تھے اور مجاہد کی روایت میں ہے: "جس طرح تم سے پہلے لوگوں پر فرض کیے گئے تھے۔ (البقرہ: 183) یعنی: اہل کتاب اور یہ کہتے ہوئے کہ یہ تمام لوگوں پر واجب تھا، ابو جعفر نے کہا: ان اقوال میں سب سے زیادہ صحیح اس شخص کا قول ہے جس نے کہا: آیت: اے ایمان والو تم پر روزے فرض کیے گئے ہیں جس طرح تم سے پہلے اہل کتاب پر فرض کیے گئے تھے، (البقرہ: 184) جو رمضان کا مہینہ ہے۔ ; کیونکہ حضرت ابراہیم علیہ السلام کے بعد انھیں ابراہیم کی پیروی کا حکم دیا گیا تھا اور ہمیں بتایا ہے کہ ان کا دین اسلام تھا۔

پچھلی قوموں میں

[ترمیم]

کتاب و سنت کے شرعی نصوص اس بات کی دلیل دیتے ہیں کہ جو روزے اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں پر فرض کیے تھے وہ پچھلی امتوں پر بھی فرض کیے گئے تھے، جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے اپنے بندوں کے لیے احکام وضع کیے تھے اور یہ عبادت صرف اللہ کے لیے ہے جس کا کوئی شریک نہیں اور اسلامی قانون اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ دین مکمل طور پر خدا کے لیے ہے اور وہی ہے جس نے لوگوں کو پہنچانے کے لیے رسول بھیجے اور انبیا کا دین ایک ہے اور انھیں صرف ایک خدا کی عبادت کرنے کا حکم دیا گیا تھا۔ مفسرین نے ذکر کیا ہے کہ: پچھلی امتوں پر روزے فرض کیے گئے تھے اور اہل کتاب پر «عن دغفل بن حنظلة عن النبي ﷺ عیسائیوں نے رمضان کے روزے رکھے تو ان کا بادشاہ بیمار ہو گیا اور کہنے لگے: اگر اللہ تعالیٰ اسے شفا دے تو سات کا اضافہ کر دے، تو بہار پچاس دن ہو گئی۔ [17]

اس آیت کے متن میں جو روزے کے فرض ہونے پر دلالت کرتی ہے، بہت سے اشارات ہیں، جن میں سے سب سے اہم یہ ہے کہ: لوگوں پر روزے کا فرض اور یہ کہ عبادت کے صحیح ہونے کے لیے صرف اللہ اور اسلام پر ایمان ہی شرط ہے اور اس آیت میں خطاب ان لوگوں سے ہے جو خدا اور اس کے تمام رسولوں پر ایمان رکھتے ہیں اور آیت کا متن اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ تمام مخلوق خدا کی بندگی ہے اور یہ کہ خالق حقیقی معبود واحد خدا ہے جس کا کوئی شریک نہیں۔ اور وہی ہے جس نے تمام رسول بھیجے اور اسی کے پاس خالص دین ہے اور اس آیت سے قرآنی متن میں واضح اشارہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے اپنے بندوں کے لیے اسی طرح احکام وضع کیے جس طرح اس نے روزے کو فرض کیا ہے۔ خدا تعالیٰ فرماتا ہے:﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُواْ كُتِبَ عَلَيْكُمُ الصِّيَامُ كَمَا كُتِبَ عَلَى الَّذِينَ مِن قَبْلِكُمْ لَعَلَّكُمْ تَتَّقُونَ﴾ [[[سورہ سانچہ:نام سورہ 2|2]]:183]

اللہ تعالیٰ نے انبیا اور ان کی امتوں پر جو کچھ فرض کیا ہے وہ روزے کے فرض ہونے کی بنیاد ہے۔ یہ کہنے والوں نے اس کے پہلوؤں کا ذکر کیا، جن میں یہ بھی شامل ہے کہ: اللہ تعالیٰ نے اہل کتاب (یہود و نصاریٰ) پر رمضان کے روزے فرض کیے ہیں، الرازی نے کہا: "جہاں تک یہودیوں کا تعلق ہے، انھوں نے اس مہینے کو چھوڑ دیا اور ایک دن کا روزہ رکھا۔ کیونکہ وہ دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان پر عاشورہ کا دن ہے، جہاں تک عیسائیوں کا تعلق ہے، انھوں نے رمضان کے روزے رکھے، تو اس میں انھیں شدید گرمی کا سامنا کرنا پڑا، اس لیے انھوں نے اسے ایک وقت میں بدل دیا۔ اس میں کوئی تبدیلی نہیں آتی، تو انھوں نے تبدیلی کے وقت کہا: ہم اس میں اضافہ کریں گے، تو انھوں نے دس کا اضافہ کر دیا، دوسرے نے کہا: ان تینوں کا کیا ہے، تو اس نے پچاس دن پورے کیے اور معنی یہ ہے۔ اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان ہے: ﴿اتَّخَذُوا أَحْبَارَهُمْ وَرُهْبَانَهُمْ أَرْبَابًا﴾ "انھوں نے اپنے علما اور راہبوں کو اپنا رب بنا لیا" [التوبہ: 31] اور یہ حسن رضی اللہ عنہ سے مروی ہے۔ الشعبی کی روایت سے مروی ہے کہ: انھوں نے ایک مدت کے لیے سند لے لی، اس لیے انھوں نے تیس دنوں سے پہلے اور بعد میں روزے رکھے، پھر بعد والے نے سال کا خیال رکھا۔ پچھلی صدی تک وہ پچاس دن بن گئے۔ یہی وجہ ہے کہ اسے شبہ کے دن روزہ رکھنے سے نفرت تھی۔ اور تیسرا پہلو: یہ کہ یہ سونے کے بعد کھانے پینے اور جماع کو حرام کرتی ہے، جس طرح تمام امتوں کے لیے حرام تھی اور یہ کہنے والوں نے دلیل کے طور پر اس بات پر استدلال کیا کہ امت کا اجماع ہے کہ اللہ تعالیٰ کا حکم ہے۔ فرمایا: "تمھارے لیے روزے کی رات کو اپنی بیویوں کے لیے حلال ہے" [البقرہ: 187] اس حکم کو نقل کرنا مفید ہے، اس حکم میں اس کے ثابت کرنے کے لیے دلیل ہونی چاہیے اور اس کی کوئی دلیل نہیں ہے۔ سوائے اس تشبیہ کے، جو اس کا فرمان ہے: {جیسا کہ تم سے پہلے لوگوں پر فرض کیا گیا تھا} [البقرہ: 183] پس یہ تشبیہ اس معنی کے ثبوت کے لیے لازم ہے، پہلے قول کے مالکوں نے کہا: ہمارے پاس ہے۔ اس سے معلوم ہوا کہ ایک چیز کو دوسری چیز سے تشبیہ دینا اس بات پر دلالت نہیں کرتا کہ وہ ہر لحاظ سے یکساں ہیں، لہٰذا ہمارے روزوں کو ان کے روزوں سے تشبیہ دینا ضروری نہیں ہے کہ ان کا روزہ رمضان سے مخصوص ہے اور ان کے روزے تیس دن کے ہیں۔

روزے کے جائز ہونے کی حقیقت

[ترمیم]

اسلام میں روزے کا جواز کتاب و سنت سے ثابت ہے، کتاب میں روزے کے احکام کی آیات ہیں، جو یہ ہیں: قرآن مجید کی آیات، سورۃ البقرہ میں، جن میں روزے کے احکام کی آیات ہیں۔ روزے سے متعلق شرعی احکام اور ان میں سب سے اہم چیزیں: مسلمانوں پر روزے کا مسلط ہونا اور روزے کے اوقات کا اشارہ اور بیمار اور مسافر کے لیے رعایت، فدیہ اور روزہ رکھنے کی استطاعت، پھر مفروضہ کے ساتھ ماہ رمضان کی تخصیص اور اس کے روزوں کی تعین اور دوسری فجر کے طلوع ہونے سے لے کر غروب آفتاب تک روزے کے وقت کا تعین کرنے کے لیے آیات نازل ہوئیں اور اعتکاف کے احکام ۔ قرآن کریم سے روزے کے فرض ہونے کی دلیل، اللہ تعالیٰ کے ارشاد:﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُواْ كُتِبَ عَلَيْكُمُ الصِّيَامُ كَمَا كُتِبَ عَلَى الَّذِينَ مِن قَبْلِكُمْ لَعَلَّكُمْ تَتَّقُونَ۝183أَيَّامًا مَّعْدُودَاتٍ فَمَن كَانَ مِنكُم مَّرِيضًا أَوْ عَلَى سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِّنْ أَيَّامٍ أُخَرَ وَعَلَى الَّذِينَ يُطِيقُونَهُ فِدْيَةٌ طَعَامُ مِسْكِينٍ فَمَن تَطَوَّعَ خَيْرًا فَهُوَ خَيْرٌ لَّهُ وَأَن تَصُومُواْ خَيْرٌ لَّكُمْ إِن كُنتُمْ تَعْلَمُونَ۝184شَهْرُ رَمَضَانَ الَّذِيَ أُنزِلَ فِيهِ الْقُرْآنُ هُدًى لِّلنَّاسِ وَبَيِّنَاتٍ مِّنَ الْهُدَى وَالْفُرْقَانِ فَمَن شَهِدَ مِنكُمُ الشَّهْرَ فَلْيَصُمْهُ وَمَن كَانَ مَرِيضًا أَوْ عَلَى سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِّنْ أَيَّامٍ أُخَرَ يُرِيدُ اللّهُ بِكُمُ الْيُسْرَ وَلَا يُرِيدُ بِكُمُ الْعُسْرَ وَلِتُكْمِلُوا الْعِدَّةَ وَلِتُكَبِّرُوا اللَّهَ عَلَى مَا هَدَاكُمْ وَلَعَلَّكُمْ تَشْكُرُونَ۝185﴾ [[[سورہ سانچہ:نام سورہ 2|2]]:183—185]

جہاں تک سنت نبوی سے روزے کے جائز ہونے کا تعلق ہے؛ یہ قرآن کے نصوص کی تفسیر اور اس میں موجود ان احکام کی وضاحت ہے جو اس میں عمومی اور تفصیل سے بیان کی گئی ہیں اور ان قانونی احکام کی وضاحت ہے جن کا ذکر قرآن میں نہیں ہے، لیکن سنت کے متن میں، چونکہ قرآن سنت کے ذریعہ منتقل ہوتا ہے اور وحی یا تو قرآن کا متن ہے یا حدیث نبوی سے، جیسا کہ اس زمانے کا بیان جس کی حدیث اشارہ کرتی ہے۔ لہذا سنت اس کی وضاحت ہے جو خدا چاہتا ہے، لہذا نمازوں کی تعداد، مثال کے طور پر: سنت کے ذریعہ اس کی وضاحت نہیں جانتے تھے اور حدیث میں آیا ہے: «ألا إني أوتيت الكتاب ومثله معه» [18] اور "مجھے کتاب دی گئی" یعنی قرآن "اور اس کے ساتھ اس جیسا": یعنی وہ پوشیدہ وحی جس کی تلاوت نہیں کی جاتی یا ظاہری وحی کی تشریح۔ [19] احادیث میں اس بات کا ثبوت ہے کہ سنت پر عمل کرنا اور اس کو اپنانا واجب ہے، جیسا کہ نصوص قرآن سے اشارہ ملتا ہے۔ [° 1]

روزے کی قانون سازی کے مراحل

[ترمیم]

اسلام میں روزوں کے قانون سازی کے مراحل ہیں اس سے پہلے مسلمانوں کو ماہ رمضان کے روزے رکھنے کی ضرورت تھی جب تک کہ احکام مستحکم نہ ہو جائیں اور دین مکمل نہ ہو جائے۔اسلامی احکام کی قانون سازی کی ایک خصوصیت یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ احکام کو قانون سازی کرنے والا ہے۔ مدینہ کی طرف ہجرت کے بعد، قانون سازی نہیں کی گئی تھی، بلکہ مرحلہ وار قانون سازی کی گئی تھی اور ان پر رمضان کے روزے نافذ ہونے سے پہلے، مسلمان اس دن روزہ رکھتے تھے۔ عاشورہ کے دن اور ہر مہینے کے تین دن اور زمانہ جاہلیت میں لوگ عاشورہ کے دن روزہ رکھتے تھے جب مسلمانوں نے مدینہ منورہ کی طرف ہجرت کی تو انھوں نے یہودیوں کو اس دن روزہ رکھتے ہوئے پایا اور ان سے پوچھا گیا کہ «أن النبي صلى الله عليه وسلم قدم المدينة فوجد اليهود يصومون عاشوراء وقالوا: إن موسى صامه، وإنه اليوم الذي نجوا فيه من فرعون وغرق فرعون فصامه النبي صلى الله عليه وسلم وأمر بصيامه وقال: نحن أحق بموسى منهم» «عن عائشة رضي الله عنها قالت كانت قريش تصوم عاشوراء في الجاهلية وكان رسول الله ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم بھی اس کا روزہ رکھتے تھے۔ [20] النووی رحمہ اللہ کہتے ہیں: علما کا اس بات پر اتفاق ہے کہ عاشورہ کے دن روزہ رکھنا سنت ہے فرض نہیں ہے اور اسلام کے شروع میں اس کے حکم میں اختلاف کیا ہے جب کہ رمضان سے پہلے روزہ رکھنا فرض کیا گیا تھا اور جب اس کی قانون سازی کی گئی تھی، اس قوم میں کبھی فرض نہیں تھا، لیکن یہ یقینی تھا کہ یہ مرغوب ہے، چنانچہ جب رمضان کے روزے اترے تو اس «وأمر بصيامه» کے بغیر یہ مرغوب ہو گیا: «لم يكتب الله عليكم صيامه» اور حدیث ہے: «من شاء صامه ومن شاء تركه» یہ متفقہ طور پر مطلوبہ سال ہے۔ [21]

روزے مسلمانوں پر مسلط ہونے کے شروع میں کئی دنوں میں فرض کیے گئے تھے۔ یعنی چند، جیسا کہ آیت کے متن سے ظاہر ہے:﴿أَيَّامًا مَّعْدُودَاتٍ فَمَن كَانَ مِنكُم مَّرِيضًا أَوْ عَلَى سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِّنْ أَيَّامٍ أُخَرَ وَعَلَى الَّذِينَ يُطِيقُونَهُ فِدْيَةٌ طَعَامُ مِسْكِينٍ فَمَن تَطَوَّعَ خَيْرًا فَهُوَ خَيْرٌ لَّهُ وَأَن تَصُومُواْ خَيْرٌ لَّكُمْ إِن كُنتُمْ تَعْلَمُونَ﴾ [[[سورہ سانچہ:نام سورہ 2|2]]:184][22]

روزہ اپنی مرضی کے مطابق تھا، اس کے نفاذ کے آغاز میں؛ کیونکہ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: اور جو اس کی استطاعت رکھتے ہیں وہ فدیہ ادا کریں، کسی مسکین کو کھانا کھلائیں، پس جو شخص نیکی کرے تو یہ اس کے لیے بہتر ہے۔ بن جبل نے کہا: اس معاملے کے شروع میں جس نے چاہا روزہ رکھا اور جس نے چاہا افطار کر کے کھانا کھلایا۔ چنانچہ بخاری نے سلمہ بن اکوع رضی اللہ عنہ سے روایت کی ہے انھوں نے کہا: جب یہ نازل ہوا: "اور اس کی استطاعت رکھنے والوں پر فدیہ ایک مسکین کو کھانا کھلانا ہے۔" [البقرہ: 184]: جو شخص افطار کرنا چاہتا تھا وہ فدیہ دے گا، یہاں تک کہ وہ نازل ہو جائے، اکثر علما اس بات کی طرف گئے کہ آیت منسوخ ہو گئی جو ابن عمر، سلمہ بن الاکوع وغیرہ کا قول ہے اور وہ یہ ہے کہ اسلام کے آغاز میں انھیں روزہ رکھنے یا افطار کرنے کا اختیار دیا گیا تھا۔ روزہ رکھنا اور ادا کرنا۔ {پس تم میں سے جو کوئی اس مہینے کو دیکھے وہ اس کے روزے رکھے} [البقرہ: 185] اور قتادہ نے کہا: یہ بوڑھے شیخ کے حق میں خاص ہے جو روزے کو برداشت کرسکتا ہے۔ اس کے لیے روزہ رکھنے کی استطاعت رکھنے والا روزہ رکھنے اور افطار کرنے اور فدیہ ادا کرنے کے درمیان افضل ہے، پھر اللہ تعالیٰ کے اس فرمان سے اسے منسوخ کر دیا گیا: {پس تم میں سے جو کوئی اس مہینے کو دیکھے وہ روزہ رکھے۔} البقرہ: 185] اور لائسنس ان لوگوں کے لیے قائم کیا گیا جو اسے برداشت نہیں کر سکتے تھے، اس لیے انھیں روزے کے بدلے فدیہ ادا کرنا ہوگا، روزہ افطار کرنے کا حق ہے اور ہر دن کی جگہ ایک مسکین کو کھانا کھلانا ہے، جو سعید بن جبیر کا قول ہے اور انھوں نے آیت کو فیصلہ کن قرار دیا۔[23]

السدی نے مرہ کی سند سے کہا: جب یہ آیت نازل ہوئی: "اور ان لوگوں پر جو اس کی استطاعت رکھتے ہیں، ایک مسکین کو کھانا کھلانے سے فدیہ دیا جاتا ہے۔" [البقرہ: عبد اللہ نے کہا: جو روزہ رکھنا چاہتا ہے اور جو افطار کرنا چاہتا ہے اور کسی مسکین کو کھانا کھلاتا ہے، پس جو شخص نیکی کرے، (البقرہ: 184) یعنی کسی دوسرے مسکین کو کھانا کھلائے۔ {اس کے لیے بہتر ہے اور تم روزے رکھو تمھارے لیے بہتر ہے} [البقرہ: 184]: وہ ایسے ہی تھے یہاں تک کہ میں نے اسے نقل کیا: "پس تم میں سے جو کوئی اس مہینے کو دیکھے وہ روزہ رکھے۔" بقرہ: 185]۔[24] بخاری نے اپنی سند کے ساتھ عطاء سے روایت کی ہے کہ انھوں نے ابن عباس کو یہ پڑھتے ہوئے سنا: چنانچہ سعید بن جبیر کی سند سے اور ابن عباس کی سند سے اسی طرح ایک سے زیادہ روایتیں ہیں۔ ابن عباس رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ انھوں نے کہا: "اور جو اس کی استطاعت رکھتے ہیں، فدیہ ایک مسکین کو کھانا کھلانا ہے" [البقرہ: 184]، روزہ رکھنے والے بوڑھے کے بارے میں، پھر کمزور ہو جاتا ہے، اس لیے اسے روزانہ ایک مسکین کو کھانا کھلانے کی اجازت ہے۔ ابن ابی لیلیٰ سے مروی ہے کہ انھوں نے کہا: میں رمضان میں عطاء کے پاس گیا اور وہ کھانا کھا رہے تھے، انھوں نے کہا: ابن عباس رضی اللہ عنہما نے کہا: یہ آیت نازل ہوئی: یہ آیت نازل ہوئی اور پہلی آیت منسوخ ہو گئی، سوائے اس کے۔ فانی بوڑھے نے اگر چاہا تو ہر دن کے بدلے ایک مسکین کو کھانا کھلایا اور اس کا روزہ افطار کرایا، تو اس کا خلاصہ یہ ہے کہ صحیح مقیم کے حق میں اس پر روزہ فرض کرنے سے فسخ ہو جاتا ہے: پس تم میں سے جو کوئی اس مہینے کو دیکھے وہ اس کے روزے رکھے۔‘‘ (البقرہ: 185)۔ خلاصہ یہ ہے کہ اسلام کے ابتدائی ایام میں روزے کے حکم کی ابتدا میں انتخاب تھا، پھر رمضان کے روزے کی تصریح کرکے انتخاب کا حکم منسوخ کر دیا گیا اور اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: {اسے روزہ رکھنے دو} [البقرہ : 185] اس سے ثابت ہوا کہ رمضان فرض ہونے والوں پر فرض ہے اور مسلمانوں کا اس پر اجماع ہے۔ اس طرح وہ روزہ دار ہو گیا اور اس پر کھانا پینا حرام ہو گیا اور باقی چیزیں جو روزہ توڑ دیتی ہیں، مسلمانوں کے لیے مشکل ہو گئی۔[25]

بیماری اور سفری روزہ

[ترمیم]

اصول فقہ کے علما کی قانونی معنوں میں اجازت: تعیین کے بدلے میں۔ تو روزے نے عزم کو نافذ کیا اور بیماری یا سفر سے نجات دے کر ان لوگوں کی شرمندگی کو دور کیا جن پر روزہ رکھا گیا ہے: خدا کی طرف سے اجازت؛ کیونکہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:﴿أَيَّامًا مَّعْدُودَاتٍ فَمَن كَانَ مِنكُم مَّرِيضًا أَوْ عَلَى سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِّنْ أَيَّامٍ أُخَرَ وَعَلَى الَّذِينَ يُطِيقُونَهُ فِدْيَةٌ طَعَامُ مِسْكِينٍ فَمَن تَطَوَّعَ خَيْرًا فَهُوَ خَيْرٌ لَّهُ وَأَن تَصُومُواْ خَيْرٌ لَّكُمْ إِن كُنتُمْ تَعْلَمُونَ﴾ [[[سورہ سانچہ:نام سورہ 2|2]]:184] ، "پس تم میں سے جو کوئی بیمار ہو یا سفر میں ہو، تو دوسرے دنوں میں گنتی کر لے۔" [البقرہ: 184] اور مفہوم یہ ہے کہ تم میں سے جس پر روزہ فرض تھا، اس نے روزہ توڑ دیا۔ بیماری کی وجہ سے یا سفر کی وجہ سے اس پر کوئی گناہ نہیں جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے بیمار کو بیماری کی حالت میں روزہ افطار کرنے کی اجازت دی ہے جس کے ساتھ روزہ افطار کرنا جائز ہے اور مسافر کے لیے جس کے ساتھ سفر کرنا جائز ہے۔ روزہ افطار کرنا اور اس کے لیے جس نے اجازت لے کر افطار کیا۔ اس نے جتنے دنوں کے روزے نہیں رکھے تھے، بیماری کے دوران یا سفر کے دوران، دوسرے دنوں میں، یعنی بعد کے دنوں میں اور اس روزے کے ہلکے کرنے میں، اس مریض کے لیے رعایت کے ساتھ جس کی بیماری ہے۔ اس کے لیے مشکل اور مسافر کے لیے سفر کے وقوع پزیر ہونے کے بعد روزہ افطار کرنا جائز ہے، بیمار اور مسافر پر بیماری اور سفر کی حالت میں روزہ نہیں رکھنا چاہیے۔ اس وجہ سے کہ ان کے لیے یہ مشقت ہے، لیکن قانون ساز نے انھیں اختیار دیا کہ وہ رمضان میں دن کے وقت روزہ افطار کریں اور اس کے بعد دوسرے دنوں کے روزوں کی قضا کریں۔

روزے کے دوران آرام

[ترمیم]

مسلمانوں پر دوسرے ہجری سال میں روزہ فرض کیا گیا تھا اور وہ اس روزے کے شروع میں تھے جو ان پر فرض کیا گیا تھا: وہ نماز عصر کے بعد روزہ رکھتے ہیں یا اس سے پہلے سوتے ہیں، یعنی روزہ دار سورج غروب ہونے تک، افطار کے وقت۔ اگلی رات کا روزہ، پس جس وقت میں روزے کی رات کھانا پینا جائز ہے وہ یہ ہے: مغرب کی نماز کا وقت شروع ہونے سے عشاء تک، بشرطیکہ عشاء سے پہلے نہ سوئے ۔ اس پر واجب ہے کہ وہ اپنی رات سے پہلے رات تک پرہیز کرے اور یہ بات سنت نبوی میں واضح ہے، پھر اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں کے لیے اس میں نرمی فرمائی، اس لیے اس نے کھانے پینے کی اجازت کا وقت مقرر کیا۔ دوسری فجر کی ابتدا جب کہ نازل ہونے والی آیت کی طرف اشارہ کیا گیا اور اس کا نزول روزے کے نفاذ کے بعد ہوا اور اس میں ایک ہلکے حکم کے ذریعے سابقہ حکم کی منسوخی شامل تھی، جو کتاب سے سنت کی منسوخی ہے، الفاظ میں۔ اعلیٰ ترین کا:﴿أُحِلَّ لَكُمْ لَيْلَةَ الصِّيَامِ الرَّفَثُ إِلَى نِسَآئِكُمْ هُنَّ لِبَاسٌ لَّكُمْ وَأَنتُمْ لِبَاسٌ لَّهُنَّ عَلِمَ اللّهُ أَنَّكُمْ كُنتُمْ تَخْتانُونَ أَنفُسَكُمْ فَتَابَ عَلَيْكُمْ وَعَفَا عَنكُمْ فَالآنَ بَاشِرُوهُنَّ وَابْتَغُواْ مَا كَتَبَ اللَّهُ لَكُمْ وَكُلُوا وَاشْرَبُوا حَتَّى يَتَبَيَّنَ لَكُمُ الْخَيْطُ الْأَبْيَضُ مِنَ الْخَيْطِ الْأَسْوَدِ مِنَ الْفَجْرِ ثُمَّ أَتِمُّوا الصِّيَامَ إِلَى اللَّيْلِ وَلَا تُبَاشِرُوهُنَّ وَأَنْتُمْ عَاكِفُونَ فِي الْمَسَاجِدِ تِلْكَ حُدُودُ اللَّهِ فَلَا تَقْرَبُوهَا كَذَلِكَ يُبَيِّنُ اللَّهُ آيَاتِهِ لِلنَّاسِ لَعَلَّهُمْ يَتَّقُونَ﴾ [[[سورہ سانچہ:نام سورہ 2|2]]:187] یعنی: خدا نے آپ کو، روزے کی رات، "مبہم" کرنے کی اجازت دی، جو جنسی ملاپ کا استعارہ ہے۔ ابن عباس نے کہا: اللہ تعالیٰ زندہ اور سخی ہے اور جو کچھ قرآن میں براہ راست، چھونے، انزال، داخل ہونے اور فحش کرنے کا ذکر کیا گیا ہے، وہ صرف مباشرت سے مراد ہے۔ الزجاج نے کہا: رفعت ان تمام چیزوں کے لیے جامع لفظ ہے جو مرد عورتوں سے چاہتے ہیں۔

البغوی رحمہ اللہ کہتے ہیں: اہل تفسیر نے کہا: شروع میں اگر کوئی شخص روزہ توڑ دے تو اس کے لیے کھانا، پینا اور جماع جائز تھا یہاں تک کہ وہ آخرت کی نماز پڑھ لے یا اس سے پہلے سو جائے۔ رات کا کھانا یا اس سے پہلے سونا، کھانا اور عورتیں ان پر اگلی رات تک حرام کر دی گئیں، پھر عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ گر پڑے، پھر وہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آئے اور عرض کیا: یا رسول اللہ! خدا کے واسطے میں خدا سے اور آپ سے اپنی طرف سے اس گناہ کی معافی مانگتا ہوں، میں رات کے کھانے کے بعد اپنے گھر والوں کے پاس واپس آیا تو مجھے ایک خوشگوار خوشبو ملی، تو میں نے اپنے آپ سے التجا کی، تو میں نے اپنے گھر والوں سے ہمبستری کی، تو کیا آپ کو معلوم ہوا؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اے عمر، تم اس کے لائق نہیں تھے۔“ تو لوگوں نے کھڑے ہو کر اس کا اقرار کیا اور یہ بات عمر اور ان کے ساتھیوں کے بارے میں نازل ہوئی۔[26]

روزہ فرض ہونے کا ثبوت

[ترمیم]
رمضان کا مہینہ

اجماع سے پہلے روزے کے جائز ہونے کی اصل: کتاب و سنت اور قرآن سے دلائل اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے: {اے ایمان والو تم پر روزے فرض کیے گئے ہیں جیسا کہ پہلے لوگوں پر فرض کیے گئے تھے۔ تاکہ تم پرہیزگار بن جاؤ۔‘‘ (البقرہ: 183) اور اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: تم میں سے اس مہینے میں روزے رکھے۔‘‘ (البقرہ: 185)۔ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: ’’اور تاکہ تم شکر گزار بنو‘‘ (البقرہ: 185)۔ اور سنت سے روزے کے فرض ہونے کی دلیل وہی ہے جو دو صحیحوں میں ثابت ہے: "ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم ان دونوں سے راضی ہوں، انھوں نے کہا: "اسلام کی بنیاد پانچ چیزوں پر ہے: اس بات کی گواہی دینا کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم اللہ کے رسول ہیں، نماز قائم کرنا، زکوٰۃ ادا کرنا، بیت اللہ کی زیارت کرنا اور روزہ رکھنا۔[27]رمضان المبارک پر اتفاق ہوا۔ بخاری کا قول ہے: "اسلام کی بنیاد پانچ چیزوں پر ہے: اس بات کی گواہی دینا کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم اللہ کے رسول ہیں، نماز قائم کرنا، زکوٰۃ دینا، حج کرنا اور رمضان کے روزے رکھنا۔[28][29]" اور مسلم کا قول ہے: "اسلام کی بنیاد پانچ چیزوں پر ہے کہ اللہ تعالیٰ متحد کرتا ہے، نماز قائم کرتا ہے، زکوٰۃ دیتا ہے، رمضان کے روزے رکھتا ہے اور حج کرتا ہے۔"[30]ایک آدمی نے کہا: "حج اور رمضان کے روزے"۔ "نہیں، رمضان کے روزے اور حج۔ اور مسلم کی ایک روایت میں ہے کہ: "اسلام کی بنیاد پانچ چیزوں پر ہے: اللہ کی عبادت کرنا اور اس سے کم تر چیزوں کا کفر کرنا، نماز قائم کرنا، زکوٰۃ دینا، بیت اللہ کا حج کرنا اور رمضان کے روزے رکھنا۔"[31] اور مسلمان کے لیے: "اسلام کی بنیاد پانچ چیزوں پر ہے: اس بات کی گواہی دینا کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور محمد اس کے بندے اور رسول ہیں، نماز قائم کرنا، زکوٰۃ دینا، بیت اللہ کا حج کرنا اور رمضان کے روزے رکھنا۔"[32] اور مسلم کا قول ہے: "میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا: "اسلام کی بنیاد پانچ چیزوں پر ہے: اس بات کی گواہی دینا کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں، نماز قائم کرنا، زکوٰۃ دینا، رمضان کے روزے رکھنا اور ایوان کی زیارت۔[33]

بادشاہ مسجد ( پاکستان ) میں نماز عید

اس حدیث میں رمضان کے مہینے کے روزے رکھنے کی واضح دلیل اس الفاظ کے ساتھ ہے : «وصوم رمضان» جو اسلام میں ﷺ کی سب سے اہم قسم ہے اور یہ اسلام کے پانچ ارکان میں سے ایک ہے۔ عرض کیا یا رسول اللہ مجھے بتائیے کہ اللہ تعالیٰ نے مجھ پر نماز کے سلسلے میں کیا فرض کیا ہے؟آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا «الصلوات الخمس إلا أن تطوع شيئا» روزے کے لحاظ سے کرنا۔" آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «شہر رمضان إلا أن تطوع شيئا» ﷺ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: مجھے بتاؤ کہ اللہ تعالیٰ نے مجھ پر زکوٰۃ کا کیا حکم دیا ہے؟، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پھر اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو اسلام کے قوانین سے آگاہ کیا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اس ذات کی قسم جس نے آپ کو عزت بخشی ہے، میں کسی چیز کو رضاکارانہ طور پر نہیں دیتا اور جو کچھ اللہ نے مجھ پر عائد کیا ہے اس میں کوئی کمی نہیں کرتا۔ آپ صلی ﷺ علیہ وسلم نے فرمایا: «أفلح إن صدق» یا: «دخل الجنة إن صدق» [34] [35] یہ حدیث واضح طور پر اسلام کے ایک اہم اصول کی طرف اشارہ کرتی ہے، جو خدا کی طرف سے عائد کردہ ذمہ داریوں کی وضاحت کر رہا ہے اور یہ کہ مسلمانوں پر جو روزے عائد کیے گئے ہیں وہ ہیں: ماہ رمضان کے روزے اور دیگر جائز روزے رضاکارانہ روزے ہیں۔ عیب یا معاوضے کی کمی کے معاملے میں اس کے سامنے آ سکتا ہے۔

ماہ رمضان کے روزے رکھنا

[ترمیم]
رمضان المبارک میں قرآن کی تلاوت
ہلال کا چاند

ہر سال رمضان کے مہینے کا روزہ مسلمانوں پر متفقہ طور پر فرض کیا جاتا ہے اور یہ اسلام کے پانچ ارکان میں سے ایک ہے اور روزہ کی بہترین قسم ہے۔ حدیث قدسی کے الفاظ کے ساتھ: ’’میرا بندہ مجھے اس سے زیادہ محبوب چیز لے کر نہیں آتا جو میں نے اس پر عائد کی ہے۔‘‘ اور یہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ہجرت کے دوسرے سال نافذ کیا گیا تھا۔ البحوطی کہتے ہیں: "یہ ہجرت کے دوسرے سال متفقہ طور پر نافذ کیا گیا تھا۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے متفقہ طور پر نو رمضان کے روزے رکھے۔[36]" اور روزے کی فرضیت کی بنیاد اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان ہے: {اے ایمان والو تم پر روزے فرض کیے گئے ہیں۔} [البقرہ: 183] اس کے بعد آیت میں ماہ رمضان کے روزوں کی تعریف اس طرح کی گئی ہے۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے: {پس تم میں سے جو کوئی اس مہینہ کو دیکھے وہ اس کے روزے رکھے} [37]حدیث: "اسلام کی بنیاد پانچ پر رکھی گئی" اور ان کا ذکر فرمایا: "رمضان کے روزے"۔ ماہ رمضان کے روزے یا تو چاند دیکھ کر یا شعبان کے تیس دن پورے کرنے سے جب رمضان کا چاند نظر نہ آتا ہو۔ ہر عاقل بالغ مسلمان پر جو روزہ رکھ سکتا ہے، صحت مند ہے، مقیم ہے اور اس پر کوئی عذر نہیں ہے۔ یہ صرف ایک مسلمان سے جائز ہے، کیونکہ اس کے صحیح ہونے کے لیے شرائط درکار ہیں، بشمول: حیض اور ولادت سے عورت کی پاکیزگی۔ رمضان کے روزے دوسری فجر کے طلوع ہونے سے غروب آفتاب تک کے وقت کی فضیلت کے لیے مخصوص ہیں۔ رمضان کے روزے ان لوگوں کے گناہوں کا کفارہ ہیں جنھوں نے ایمان اور ثواب کی امید کے ساتھ روزے رکھے۔

روزے کی فرضیت سب سے پہلی چیز تھی جو مسلمانوں پر اللہ تعالیٰ کے اس فرمان کے مطابق عائد کی گئی تھی: {پس تم میں سے جو کوئی اس مہینے کو دیکھے وہ اس کے روزے رکھے۔} البقرہ: 185۔ اور اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان: "تم پر روزہ فرض کیا گیا ہے" [البقرہ: 183] موقع کی طرف اشارہ کرتا ہے، اس لفظ کے ساتھ: "یہ فرض کیا گیا تھا" [البقرہ: 183] مطلب: اللہ نے تم پر روزہ فرض کیا اور ان لوگوں کے لیے تفویض کا خط جو ایمان کا الزام لگاتے ہیں، یعنی: خدا اور اس کے رسول پر ایمان لاؤ اور تسلیم کرو۔ اور خداتعالیٰ نے فرمایا: {جیسا کہ تم سے پہلے لوگوں پر فرض کیا گیا تھا} [البقرہ: 183] مطلب: یہ بتانا کہ روزے پچھلے قوانین میں فرض تھے اور رمضان کے روزے نافذ ہونے سے پہلے مسلمان روزے رکھتے تھے۔ عاشورہ اور حدیث میں ہے: "عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے، انھوں نے کہا کہ قریش جاہلیت میں عاشورہ کا روزہ رکھتے تھے۔[38]

روزے کے اوقات

[ترمیم]
غروب آفتاب

روزے کے اوقات معلوم حالات ہیں، جن کی وضاحت شریعت کے قیام سے ہوتی ہے، روزے کی عبادت سے متعلق اور ان میں شامل ہیں: مہینے کے آغاز اور اختتام کا وقت، روزے کے دن کے آغاز اور اختتام کا وقت، سحری کا وقت، مسواک کا وقت، افطار کا وقت، ماہ رمضان کا آغاز اور اس کا اختتام اور فرض یا واجب روزوں کی قضا اور قضاء کے اوقات۔ جس میں روزہ رکھنا ممنوع ہے اور آج اس میں روزہ رکھنے کا شرعی وقت ہے اور اس کا آغاز دوسری فجر کا ظہور ہے اور اس کا اختتام غروب ہے۔ ماہ رمضان کے روزوں کا تعلق قمری مہینے کے داخل ہونے سے ہے، جو جائز مہینہ ہے اور قمری سال کے کسی بھی مہینے کے داخل ہونے سے: یہ اس سے پہلے مہینے کے آخر میں داخل ہوتا ہے اور مہینے کا داخل ہونا ممکن ہے۔ چاند کے پہلے مرحلے میں ہلال کو دیکھ کر معلوم ہوتا ہے اور فلکیات اور فلکیاتی اوقات کا حساب کتاب ہے، لیکن اسلامی قانون میں مہینے کے داخلے اور خارج ہونے کا انحصار فلکیاتی ریاضی کی سائنس پر نہیں ہے، جیسا کہ ایسا نہیں تھا۔ قانون کے نصوص میں اس کا حوالہ دینا ضروری ہے، بلکہ قانون کے ضوابط پر عمل کرتے ہوئے یا تو ہلال دیکھ کر یا مہینے کی تعداد تیس دن مکمل کر کے جب مہینے کا چاند نظر نہ آئے۔ «عن عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ اللہ ان دونوں سے راضی ہو کہ رسول ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم پر درود و سلام ہو۔ آپ نے رمضان کا ذکر کیا اور فرمایا: جب تک چاند نہ دیکھ لو روزہ نہ رکھو اور جب تک چاند نہ دیکھ لو روزہ نہ رکھو۔ [39] اور «فإن غم عليكم فاقدروا له» یہ قول: «لا تصوموا حتى تروا الهلال» «فأكملوا العدة ثلاثين» دیکھنے سے پہلے رمضان کے روزے شروع کرنے کی ممانعت پر دلالت کرتا ہے، اس کے اس قول سے: "تو اس کا «عن نافع عن ابن عمر رضي الله عنهما عن النبي صلى الله عليه وسلم أنه ذكر رمضان فقال لا تصوموا حتى تروا الهلال ولا تفطروا حتى تروه فإن أغمي عليكم فاقدروا له» [40] اور ایک روایت میں ہے: «فاقدروا له ثلاثين» اور ایک روایت میں ہے: «إذا رأيتم الهلال فصوموا، وإذا رأيتموه فأفطروا، فإن غم عليكم فاقدروا له» «فإن غم عليكم فصوموا ثلاثين يوما» «فإن غمي عليكم فأكملوا العدد» " اور ایک روایت میں ہے: «فإن عمي عليكم الشهر فعدوا ثلاثين» اور دوسری روایت میں ہے: «فإن أغمي عليكم فعدوا ثلاثين» یہ تمام روایات صحیح مسلم میں اسی ترتیب سے ہیں اور بخاری کی ایک روایت میں ہے: «فإن غبي عليكم فأكملوا عدة شعبان ثلاثين» اور معنی یہ ہے کہ رمضان کے روزوں کا وقت: ماہ شعبان کی تیسویں رات کو غروب آفتاب کے وقت ماہ کا چاند دیکھنے سے طے ہوتا ہے، پس اگر اس وقت چاند نظر آجائے؛ رمضان المبارک کا مہینہ داخل ہو چکا ہے اور اس رات سے ماہ رمضان کا آغاز ہو چکا ہے، اس لیے آج رات دن میں روزہ رکھنا ضروری ہے اور اگر اس وقت چاند نظر نہ آیا ہو؛ شعبان کا مہینہ تیس دنوں پر پورا کرنا ضروری ہے اور اس وقت مہینہ مکمل ہو جاتا ہے، لہٰذا چاند یا تو تیس دنوں کے ساتھ اپنی تعداد پوری کرتا ہے یا ایک دن کم ہو جاتا ہے تو اس کی تعداد انتیس «عن ابن عمر رضي الله عنهما عن النبي ہوتی ہے ﷺ امیہ، ہم اس طرح مہینہ لکھتے یا شمار نہیں کرتے۔" معنی: ایک بار انتیس اور ایک بار تیس۔ [41]

روزے کی رات

[ترمیم]
کیروان کی عظیم مسجد میں نماز تراویح۔ رمضان 2012

روزے کی رات یہ ہے: وہ محدود مدت جس میں روزہ دار کے لیے کھانا، پینا اور دیگر چیزیں جن سے روزہ ٹوٹ جاتا ہے، غروب آفتاب سے لے کر دوسری فجر کے طلوع ہونے تک حلال ہے اور یہ اس دن کے بدلے میں ہے روزے کا وقت، جس طرح رات اس میں روزہ رکھنے کی جگہ نہیں ہے اور ہجرت کے دوسرے سال مسلمانوں پر روزہ فرض کیا گیا تھا اور وہ رات کے کھانے کے بعد روزہ رکھتے تھے یا اس سے پہلے سوتے تھے، اس لیے اللہ تعالیٰ نے ان کے لیے آسانیاں پیدا کیں۔ چنانچہ اس نے ان کو ان چیزوں کی اجازت دی جو روزے کی پوری رات میں دوسری فجر تک افطار کرتی ہیں اور اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان نازل ہوا:﴿أُحِلَّ لَكُمْ لَيْلَةَ الصِّيَامِ الرَّفَثُ إِلَى نِسَآئِكُمْ هُنَّ لِبَاسٌ لَّكُمْ وَأَنتُمْ لِبَاسٌ لَّهُنَّ عَلِمَ اللّهُ أَنَّكُمْ كُنتُمْ تَخْتانُونَ أَنفُسَكُمْ فَتَابَ عَلَيْكُمْ وَعَفَا عَنكُمْ فَالآنَ بَاشِرُوهُنَّ وَابْتَغُواْ مَا كَتَبَ اللَّهُ لَكُمْ وَكُلُوا وَاشْرَبُوا حَتَّى يَتَبَيَّنَ لَكُمُ الْخَيْطُ الْأَبْيَضُ مِنَ الْخَيْطِ الْأَسْوَدِ مِنَ الْفَجْرِ ثُمَّ أَتِمُّوا الصِّيَامَ إِلَى اللَّيْلِ وَلَا تُبَاشِرُوهُنَّ وَأَنْتُمْ عَاكِفُونَ فِي الْمَسَاجِدِ تِلْكَ حُدُودُ اللَّهِ فَلَا تَقْرَبُوهَا كَذَلِكَ يُبَيِّنُ اللَّهُ آيَاتِهِ لِلنَّاسِ لَعَلَّهُمْ يَتَّقُونَ﴾ [[[سورہ سانچہ:نام سورہ 2|2]]:187] اور روزے کی رات کا وقت غروب آفتاب کے ساتھ شروع ہوتا ہے اور اس وقت مغرب کی نماز کا پہلا وقت داخل ہوتا ہے اور روزہ دار کے افطار کا وقت ہوتا ہے اور اس میں مستحب ہے کہ دوسری فجر کے قریب سحری کھائیں۔ اور اس میں نیت قائم کی جاتی ہے اور رمضان کے مہینے میں نماز تراویح۔ رات اور دن وقت کے دو متواتر ادوار ہیں، ان میں سے ایک کا پہلا وقت دوسرے کے آخر میں داخل ہوتا ہے اور ان کی قدر: چوبیس فلکیاتی گھنٹے ان پر پورے قمری سال میں ایک درست ترتیب میں تقسیم ہوتے ہیں اور دن۔ روشنی کی خصوصیت ہے اور رات کو تاریکی سے اور اسلامی قانون نے روزے کی رات کے احکام کی وضاحت کی ہے اور اس کی مدت کا تعین کیا ہے اور اس سے کیا تعلق ہے۔

البیضاء شہر میں 20 رمضان 2012 کا چاند

اور روزے کی رات کا وقت رات کے اختتام اور اس کی تاریکی کے ساتھ ختم ہو جاتا ہے، صحیح فجر سے دن کی پہلی سفیدی کے ظہور کے آغاز میں اور خدا تعالیٰ نے اس کا ذکر یہ فرما کر فرمایا: ﴿ اور کھاؤ پیو۔ یہاں تک کہ تم پر فجر کے سیاہ دھاگے سے سفید دھاگہ واضح ہو جائے (البقرہ: 187) یعنی میں اسے حلال کر دوں گا کہ تم روزے کی پوری رات کھاؤ پیو، یہاں تک کہ دن کی سفیدی تم پر ظاہر ہو جائے۔ اور اس کا اظہار "سفید دھاگے" سے ہوتا ہے اور یہ سفیدی رات کی تاریکی سے الگ اور الگ ہوتی ہے، جس کا اظہار "سیاہ دھاگے" سے ہوتا ہے اور اس کا مطلب یہ ہے: حقیقی صبح کا آغاز، اتھارٹی پر سہل بن سعد سے مروی ہے کہ یہ آیت نازل ہوئی: "اور کھاؤ پیو یہاں تک کہ سفید دھاگہ سیاہ دھاگے سے ممتاز ہو جائے" (البقرہ: 187) اور (صبح سے) نازل نہیں ہوئی (البقرہ: 187) آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اگر آدمی روزہ رکھنا چاہتے ہیں تو ان میں سے کوئی ایک سیاہ دھاگہ اور ایک سفید دھاگہ اپنی ٹانگوں میں باندھ لے، وہ کھاتا پیتا رہتا ہے یہاں تک کہ اس پر واضح ہو جاتا ہے، اس کے بعد اللہ تعالیٰ نے نازل فرمایا: من الفجر" [البقرہ: 187] تو وہ جان گئے کہ اس سے مراد رات اور دن ہے۔ اس کی دلیل ایک حدیث سے ملتی ہے: عدی بن حاتم رضی اللہ عنہ سے مروی ہے، انھوں نے کہا: جب میں نے وحی کی: {یہاں تک کہ تم سفید دھاگے کو کالے دھاگے سے الگ کر لو} [البقرہ: 187] میں۔ ایک سیاہ سر کی پٹی اور ایک سفید سر پر پٹی باندھی، چنانچہ میں نے انھیں اپنے تکیے کے نیچے رکھ لیا، چنانچہ میں رات کو دیکھنے لگا تو معلوم نہیں ہوا کہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوا۔ اور اس کا ذکر ان سے کیا تو آپ نے فرمایا: یہ رات کی سیاہی اور دن کی سفیدی ہے۔ اس حدیث میں مفہوم واضح ہے، ایک روایت میں ہے: آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس سے فرمایا: کیا میں نے تم سے نہیں کہا تھا: {فجر سے} [البقرہ: 187]، تو یہ دونوں دھاگے کالے پن کا استعارہ ہیں۔ رات اور دن کی سفیدی، کیونکہ رات کی تاریکی سے تھوڑی سی سفیدی پھوٹ پڑتی ہے [الانعام: 96] یعنی اس کا نور رات کی تاریکی سے چمکتا ہے اور اللہ تعالیٰ نے فرمایا: "وہ رات کو دن میں داخل کرتا ہے اور دن کو رات میں داخل کرتا ہے" [الحج: 61] یہ اس میں داخل ہوتا ہے اور یہ اسی سے نکلتا ہے، چنانچہ عرب ہر چیز کے دھاگے میں بنے ہوئے ہیں۔ طبری نے کہا: اور یہ عربوں کی تقریر میں مشہور ہے، ابو داؤد العیادی نے کہا: میرا وعدہ اس کی طرف غفلت نہیں ہے۔ اس لیے کہ اس نے تلفظ کی حقیقت کو لیا اور سچائی ہی اہمیت کی اصل ہے، جس طرح دھاگے کے علامتی معنی شاید بعض عربوں کو معلوم نہ ہوں۔[42]

اس سے مراد یہ ہے کہ قبض کا وقت ہے: دوسری فجر کا ظہور، جو نماز فجر کے برابر ہے اور اذان صرف وقت کی طرف اشارہ ہے اور قبل از وقت تاخیر کرنا مستحب ہے۔ فجر کا کھانا فجر کے دوسرے وقفے کے قریب تک اور افضل یہ ہے کہ فجر کے وقت کے اختتام اور فجر کی نماز کے پہلے وقت کے درمیان پچاس متوسط آیات کی مقدار سے الگ کیا جائے اور اس کی طرف اشارہ کیا جائے، جسے بخاری نے روایت کیا ہے۔ «عن أنس عن زید بن ثابت رضی اللہ عنہ سے روایت ہے، انھوں نے کہا: ہم نے ﷺ علیہ وسلم کے ساتھ سحری کھائی، پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نماز کے لیے اٹھے۔ آپ نے فرمایا: اذان اور فجر کے کھانے کے درمیان کتنا وقت تھا؟ فرمایا: پچاس آیات کا اندازہ لگاؤ ۔ [43] سحری کا وقت دوسری فجر کے ظہور سے پہلے تک جاری رہتا ہے اور اس کا وقت طلوع فجر کے ساتھ ختم ہو جاتا ہے جو امامت کا وقت ہے اور صبح «عن عائشة رضي الله عنها أن بلالا كان يؤذن بليل فقال رسول الله ﷺ جب تک فجر نہ ہو جائے نماز کی اذان نہیں دی جاتی۔ القاسم نے کہا: اور ان کی اذان کے درمیان کوئی چیز نہیں تھی سوائے اس کے کہ ایک چڑھ گیا اور دوسرا اترا۔ [44] سمرہ بن جندب رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول ﷺ «لا يمنعكم من سحوركم أذان بلال ولا الفجر المستطيل، ولكن الفجر المستطير في الأفق» «لا يغرنكم نداء بلال ولا هذا البياض حتى يبدو الفجر وينفجر» [45] بلال رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انھوں نے کہا «أتيت النبي ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے آپ کو نماز پڑھنے کا حکم دیا اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم روزہ رکھنا چاہتے تھے۔ [46]

روزے کے فضائل

[ترمیم]

روزے کی فضیلت

[ترمیم]

اسلام میں روزے کی بہت سی فضیلتیں اور متعدد فوائد ہیں جن کی نشان دہی قرآن و سنت سے اسلامی قانون کی نصوص سے ہوتی ہے اور یہ ان خصوصیات کا مجموعہ ہے جس میں اس کی حیثیت اور اہمیت کی نشان دہی ہوتی ہے اور یہ یا تو تمام اقسام کے لیے عام ہے۔ روزہ یا بعض قسموں میں مخصوص۔: ماہ رمضان کے روزے ، اس لیے یہ اس لحاظ سے فرض ہونے کے لیے مخصوص ہے کہ فرض عبادت سے افضل عبادت ہے اور فرض کے ساتھ خدا کا قرب حاصل کرنا قربت سے بہتر درجہ ہے۔ فضیلت والے اعمال کے لیے جس طرح رمضان کا مہینہ اس میں قرآن کے نزول اور اس کی راتوں وغیرہ کی فضیلت کے لیے مخصوص کیا گیا ہے اور روزوں کی بعض اقسام کے لیے خاص فضائل ہیں، جیسے: عاشورہ اور محرم وغیرہ کے روزوں کی فضیلت۔ بخاری میں شامل ہے: "حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ «الصيام جنة، فلا يرفث ولا يجهل وإن امرؤ قاتله أو شاتمه فليقل: إني صائم مرتين والذي نفسي بيده لخلوف فم الصائم أطيب عند الله تعالى من ريح المسك يترك طعامه وشرابه وشهوته من أجلي الصيام لي وأنا أجزي به والحسنة بعشر أمثالها» [47] اور موطا میں ہے: «والحسنة بعشر أمثالها، إلى سبعمائة ضعف، إلا الصيام فهو لي وأنا أجزي به» [48] ابن حجر عسقلانی نے کہا: اور جم کو شامل کرنے سے جنت حفاظت اور پردہ پوشی ہے، لہذا یہ آگ کے عذاب سے حفاظت ہے، جیسا کہ نسائی نے اس لفظ کے ساتھ نکالا ہے: «الصيام جنة من النار» اس کی روایت میں اس لفظ کے ساتھ ہے: «الصيام جنة كجنة أحدكم من القتال» : «جنة وحصن حصين من النار» اور ابو عبیدہ بن الجراح سے روایت ہے: «الصيام جنة ما لم يخرقها» الدارمی نے مزید کہا: «ما لم يخرقها بالغيبة» اور آخر کے مالک نے ڈھال ہونے کا معنی کہا: یہ اپنے مالک کو اس چیز سے بچاتا ہے جو اسے خواہشات سے نقصان پہنچاتی ہے اور قرطبی نے کہا: جنت، معنی: سترہ کا مطلب ہے: اس کی شرعی حیثیت کے مطابق، پس روزہ۔ انسان کو چاہیے کہ اس کو اس چیز سے بچائے جو اسے بگاڑ دے اور اس کے اجر میں کمی کر دے اور اس کا مطلب یہ ہے کہ یہ اپنے فائدے کے مطابق ایک سترہ ہے جو نفس کی خواہشات کو کمزور کر رہی ہے۔ کیونکہ روزہ دار اپنی شہوت کو چھوڑ دیتا ہے اور اس کا مطلب یہ ہے کہ اس کو جو ثواب ملتا ہے اور نیکیوں میں کئی گنا اضافہ ہوتا ہے اس کے مطابق ڈھال ہے اور عیاد نے تکمیل میں کہا : اس سے مراد گناہوں سے پردہ ہے یا آگ سے۔ ان سب سے اور آخر میں جوہری دعویٰ اور ابن العربی نے کہا: روزہ آگ سے ڈھال ہے۔ کیونکہ یہ خواہشات کی قبض ہے اور آگ خواہشات سے بھری ہوئی ہے۔ بات یہ ہے کہ اگر اس نے اپنے آپ کو دنیا میں خواہشات سے روکا تو یہ اس کے لیے آخرت میں آگ سے پردہ ہوگا۔ ابن حجر کی بات مختصراً ختم ہوئی۔ [49]

روزے کی فضیلت میں سے یہ ہے کہ یہ گناہوں کے کفارہ میں سے ایک ذریعہ ہے جیسا کہ صحیح مسلم میں ہے: " حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم آپ صلی اللہ علیہ وسلم پر درود و سلام بھیجیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا «الصلاة الخمس والجمعة إلى الجمعة كفارة لما بينهن ما لم تغش الكبائر» [50] اور مسلم کی ایک روایت میں ہے: "ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ «الصلوات الخمس والجمعة إلى الجمعة ورمضان إلى رمضان مكفرات ما بينهن إذا اجتنب الكبائر» [51]۔

اور یہ اکثر اثاثوں میں اس الفاظ کے ساتھ آیا: «إذا اجتنب الكبائر» "، جس کا انجام ایک متفقہ بی کے ساتھ ہوتا ہے۔ النووی نے اسے پکڑ لیا اور کہا: یہ دونوں سچے اور ظاہر ہیں۔ [52] «صيام يوم عرفة أحتسب على الله أن يكفر السنة التي قبله والسنة التي بعده وصيام يوم عاشوراء أحتسب على الله أن يكفر السنة التي قبله» [53] «قال وسئل عن صوم يوم عرفة فقال يكفر السنة الماضية والباقية قال وسئل عن صوم يوم عاشوراء فقال يكفر السنة الماضية» ۔ [54] «عن حذيفة قال: قال عمر رضى الله تعالى عنه من يحفظ حديثا عن النبي ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث کس کو یاد ہے؟ حذیفہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے انھیں کہتے سنا: آدمی کی اس کے گھر والوں، مال اور پڑوسی میں فتنہ نماز، روزہ اور صدقہ سے کفارہ ہو جاتا ہے، قیامت کے دن ہم نے مسروق سے کہا، ان سے پوچھو: کیا عمر رضی اللہ عنہ کو معلوم تھا کہ کون تھا؟ تو اس نے اس سے پوچھا تو اس نے کہا: ہاں، جیسا کہ وہ جانتا ہے کہ کل رات ہونے سے پہلے ۔ [55]

روزے کی فضیلت میں سے یہ ہے کہ یہ دعا کے جواب کا سبب «وعن أبي هريرة عن ﷺ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:" تین آدمیوں پر خدا کا حق ہے کہ وہ ان کی دعا کو رد نہ کرے: روزہ دار جب تک افطار نہ کر لے، مظلوم جب تک کہ وہ فتح نہ کر لے اور مسافر جب تک کہ وہ واپس نہ آجائے۔ رواه الترمذي باختصار المسافر وبغير هذا السياق رواه البزار» ۔ [56] روزے کی فضیلت میں سے ایک یہ ہے کہ یہ قیامت کے دن اپنے مالک کی شفاعت کرے گا، جب کہ امام احمد اور دیگر نے روایت کیا ہے: "عبد اللہ بن عمرو «الصيام والقرآن يشفعان للعبد، يقول الصيام: أي رب إني منعته الطعام والشهوات بالنهار فشفعني فيه، ويقول القرآن: منعته النوم بالليل فشفعني فيه، فيشفعان»ﷺ رات کو سو جاؤ، تو مجھے اس کی شفاعت کرنے دو، وہ شفاعت کریں گے ۔ [57] [58] [59]

روزے کا ثواب

[ترمیم]

«كل عمل ابن آدم يضاعف: الحسنة بعشر أمثالها إلى سبعمائة ضعف، قال الله تعالى: إلا الصوم، فإنه لي وأنا أجزي به، يدع شهوته وطعامه وشرابه من أجلي» مثلاً نماز: قول و فعل اور زکوٰۃ ادا کرنا: کام۔ کیونکہ یہ ایک عمل ہے لیکن نہ قول ہے اور نہ عمل، بلکہ یہ ان چیزوں کو چھوڑنے کے معنی میں ہے جن سے روزہ ٹوٹ جاتا ہے اور ترک کرنا قول یا فعل نہیں مانا جاتا، «إلا الصوم فإنه لي وأنا أجزي به» تمام اعمال سے مختلف ہے جو فرشتے کسی شخص کے لیے شمار کرتے ہیں، جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے اسے اجر دینے کے لیے مخصوص کیا ہے۔ کیونکہ روزہ ایک ایسی عبادت ہے جو ظاہر نہیں ہوتی اس لیے اسے اس کا ثواب ملتا ہے کیونکہ وہ جانتا ہے کہ اس میں کون مخلص ہے۔ «عن أبي هريرة قال قال رسول الله ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ابن آدم کا ہر عمل نیکی کو دس گنا بڑھا دیتا ہے۔ اور اپنے رب سے ملاقات کی خوشی اور روزہ دار کے منہ کی بو اللہ کے نزدیک مشک کی خوشبو سے بھی بہتر ہے۔ [60] «عن أبي هريرة قال قال رسول الله ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تمھارا رب فرماتا ہے: ہر نیکی کو دس گنا تک بڑھایا جاتا ہے، سات گنا تک۔ سو مرتبہ اور روزہ میرے لیے ہے اور میں اس کی جزا روزوں کو آگ سے ڈھال کے طور پر دوں گا، اگر کوئی روزہ دار ہو تو کہے کہ میں روزہ دار ہوں۔ [61] [62] «والذي نفسي بيده لخلوف فم الصائم أطيب عند الله تعالى من ريح المسك يترك طعامه وشرابه وشهوته من أجلي الصيام لي وأنا أجزي به والحسنة بعشر أمثالها» [63] ۔

«عن سهل رضى الله تعالى عنه عن النبي ﷺ ان کے علاوہ کسی اور سے کہا جاتا ہے کہ روزہ دار کہاں ہیں؟ تو وہ اٹھتے ہیں اور کوئی اس میں سے داخل نہیں ہوتا، اگر وہ داخل ہوتا ہے تو وہ بند ہو جاتا ہے اور کوئی اس سے داخل نہیں ہوتا۔ [64] «عن أبي هريرة رضى الله تعالى عنه أن رسول الله ﷺ قال: من أنفق زوجين في سبيل الله نودي من أبواب الجنة يا عبد الله هذا خير فمن كان من أهل الصلاة؛ دعي من باب الصلاة، ومن كان من أهل الجهاد؛ دعي من باب الجهاد، ومن كان من أهل الصيام؛ دعي من باب الريان، ومن كان من أهل الصدقة دعي من باب الصدقة ، فقال أبو بكر رضى الله تعالى عنه: بأبي وأمي يا رسول الله ما على من دعي من تلك الأبواب، من ضرورة فهل يدعى أحد من تلك الأبواب كلها؟ قال: نعم، وأرجو أن تكون منهم».[65]

«عن أبي صالح الزَّيَّات أنه سمع ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کو یہ کہتے ہوئے سنا: اللہ کے رسول صلی ﷺ ، اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم! فرمایا : اللہ تعالیٰ نے فرمایا: ابن آدم کا ہر عمل اس کے لیے ہے سوائے روزے کے، کیونکہ وہ میرے لیے ہے اور میں ہی اس کی جزا دوں گا اور روزہ ڈھال ہے اور اگر تم میں سے کوئی روزے کا دن ہو۔ فحش یا اونچی آواز میں نہ ہو اور اگر کوئی اسے گالی دے یا اس سے لڑے تو وہ کہے کہ میں روزہ دار ہوں اور اس ذات کی قسم جس کے ہاتھ میں محمد کی جان ہے: روزہ دار کے منہ کی بو بہتر ہے۔ اللہ کے نزدیک مشک کی خوشبو سے زیادہ [66] اور حدیث میں ہے: «للصائم فرحتان: فرحة عند فطره، وفرحة عند لقاء ربه» یعنی افطار کے وقت دنیا میں خوشیاں منائی جاتی ہیں اور یوم القدس۔ آخرت میں اجر ملے گا جب اسے روزے کا ثواب ملے گا بشرطیکہ وہ خدا سے مخلص ہو۔ "روزہ دار کے منہ کی بُو اللہ کے نزدیک مشک کی خوشبو سے بہتر ہے" اور روزہ دار کے منہ کی بو اللہ کے نزدیک مشک کی خوشبو سے بہتر ہے۔

رمضان المبارک کے روزوں کی فضیلت

[ترمیم]

رمضان المبارک کا مہینہ مسلمانوں کے لیے روزوں کا مہینہ ہونے کے لیے مخصوص ہے اور یہ بہترین قسم کے روزے ہونے کے لیے مخصوص ہے، اس لیے یہ اس لحاظ سے فرض ہونے کے لیے مخصوص ہے کہ فرض عبادات نفلی عبادات سے بہتر ہے، واجبات کے ذریعے خدا کا قرب فضیلت کے کاموں کے قریب ہونے سے بہتر درجہ ہے، جس طرح رمضان کا مہینہ اس میں قرآن کے نزول اور اس کی راتوں اور دیگر چیزوں کی فضیلت کے لیے مخصوص کیا گیا ہے۔ اور رمضان کا مہینہ صبر کا مہینہ کہلاتا ہے اور صبر کا بدلہ جنت ﷺ «من قام ليلة القدر إيمانا واحتسابا غفر له ما تقدم من ذنبه ومن صام رمضان إيمانا واحتسابا غفر له ما تقدم من ذنبه»،’’جس نے لیلۃ القدر کی نماز ایمان کے ساتھ اور ثواب کی امید کے ساتھ پڑھی اس کے پچھلے گناہ بخش دیے جائیں گے اور جس نے رمضان کے روزے ایمان اور امید کے ساتھ رکھے اس کے پچھلے گناہ معاف کر دیے جائیں گے۔‘‘ ۔ [67]

رمضان المبارک ﷺ روزے ان لوگوں کے گناہوں کا کفارہ ہوں گے جنھوں نے اللہ پر ایمان اور اس کے اجر اور «من صام رمضان إيمانا واحتسابا، غفر له ما تقدم من ذنبه»، اخلاص کے ساتھ روزے رکھے۔ [68] اور اس کا مفہوم: جس نے رمضان کے روزے ایمان کے ساتھ رکھے: خدا پر ایمان رکھتے ہوئے اور اجر کی امید رکھتے ہوئے: خدا کا قرب حاصل کرنے کی نیت سے اس کے پچھلے گناہ معاف کر دیے جائیں گے اور جس نے شب قدر کو ایمان کے ساتھ پڑھا ثواب کی امید رکھے اس کے پچھلے گناہ معاف کر دیے جائیں گے۔ کیونکہ روزہ خدا کا قرب حاصل کرنے کی نیت سے ہے اور نیت اس کے وقوع کے لیے شرط ہے۔ [69] حضرت ابوہریرہ ﷺ اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «إذا جاء رمضان فتحت أبواب الجنة»، ’’جب رمضان آتا ہے تو جنت کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں۔‘‘ [70]۔

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ نے فرمایا: جب رمضان کا مہینہ شروع ہوتا ہے تو آسمان کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں، جہنم کے دروازے بند کر دیے جاتے ہیں اور شیاطین کو زنجیروں میں جکڑ دیا جاتا ہے۔ "[71]

ابوہریرہ رضی اللہ عنہ، سعید مروی رضی اللہ عنہ کہتے ہیں: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم، "تمھارے پاس رمضان کا مہینہ آیا ہے، اس سے منع کیا گیا تھا"۔[72]

روزے کی فضیلت کا بیان

[ترمیم]

ابوہریرہ اور ابو سعید رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ انھوں نے کہا: رسول ﷺ «إن الله يقول: إن الصوم لي وأنا أجزي به، وإن للصائم فرحتين: إذا أفطر فرح، وإذا لقي الله فرح، والذي نفس محمد بيده لخلوف فم الصائم أطيب عند الله من ريح المسك» ، اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: روزہ میرے لیے ہے اور میں ہی اس کی جزا دوں گا اور روزہ دار کے لیے دو خوشیاں ہیں: جب وہ افطار کرتا ہے تو خوش ہوتا ہے اور جب وہ اللہ سے ملتا ہے تو خوش ہوتا ہے۔". اور ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ انھوں نے کہا: رسول ﷺ «كل عمل ابن آدم يضاعف الحسنة عشر أمثالها إلى سبعمائة ضعف قال الله تعالى: إلا الصوم فإنه لي وأنا أجزي به يدع طعامه وشرابه وشهوته من أجلي، للصائم فرحتان فرحة عند فطره وفرحة عند لقاء ربه ولخلوف فم الصائم أطيب عند الله من ريح المسك، الصوم جنة الصوم جنة»، ابن آدم کا ہر عمل نیکی کو دس گنا سات سو گنا تک بڑھا دیتا ہے، اللہ تعالیٰ نے فرمایا: سوائے روزے کے، کیونکہ یہ میرے لیے ہے اور میں اس کا اجر دوں گا، وہ اپنا کھانا پینا اور خواہشات میرے لیے چھوڑ دیتا ہے۔ روزہ دار کے لیے دو خوشیاں ہیں: افطار کرتے وقت خوشی اور اپنے رب سے ملاقات کی خوشی۔ روزہ جنت ہے » [73]

عیاد بن غطیف سے مروی ہے کہ ہم ابو عبیدہ رضی اللہ عنہ کے پاس گئے تو انھوں نے فرمایا: «الصوم جنة ما لم يخرقها» اور عیاض بن غطیف سے مروی ہے کہ وہ کہتے ہیں کہ ہم ابو عبیدہ بن الجراح کے پاس ان کی بیماری میں داخل ہوئے تو انھوں نے کہا: میں نے رسول ﷺ اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا: «الصوم جنة ما لم يخرقها»،"روزہ ڈھال ہے جب تک کہ اس سے ٹوٹ نہ جائے۔" [74]

ابوبردہ سے مروی ہے کہ ابو موسیٰ سے مروی ہے کہ انھوں نے کہا: ہم سمندر میں تھے تو ہم کشتی چلا رہے تھے، ہم نے کشتی اٹھائی، ہم نے کوئی جزیرہ یا کوئی چیز نہیں دیکھی، جب ہم نے پکارنے کی آواز سنی۔ پکارتے ہوئے کہا: اے کشتی کے لوگو، روکو، میں تم سے کہتا ہوں، ہم نے دیکھا تو ہمیں کچھ نظر نہ آیا، تم ہمارا حال دیکھ رہے ہو اور ہم اس پر قائم نہیں رہ سکتے، اس نے کہا: کیا میں تمھیں خدا کے فیصلے کی خبر نہ دوں؟ ابو اسامہ نے مزید کہا کہ جو بندہ گرم دن میں خدا کے لیے پیاسا ہے اس کے بارے میں خدا نے قیامت کے دن بیان کیا ہے۔ [75] حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے ﷺ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «الصائم لا ترد دعوته»،"روزہ دار کی دعا رد نہیں ہوتی۔" [76]ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول «لكل أهل عمل باب من أبواب الجنة يدعون منه بذلك العمل ولأهل الصيام باب يقال له الريان»، ’’ہر شخص جو نیک عمل کرتا ہے اس کے لیے جنت کے دروازوں میں سے ایک دروازہ ہے جس سے وہ اس عمل کے لیے دعا کرتا ہے اور روزہ دار کے لیے ایک دروازہ ہے جسے ریان کہتے ہیں۔‘‘[77]

روزے کا ادب اور روزہ دار کا سلوک

[ترمیم]

ابن عباس رضی اللہ عنہما نے فرمایا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: نیکی میں لوگوں میں سب سے زیادہ سخی اور رمضان میں سب سے زیادہ سخی تھے جب جبرائیل علیہ السلام آپ سے ملے اور جبرائیل علیہ السلام رمضان کی ہر رات آپ سے ملتے تھے یہاں تک کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم پھسل جاتے تھے۔ اس کے پاس قرآن تھا، اگر جبرائیل علیہ السلام ان سے ملتے تو وہ ہوا کے بھیجے جانے سے بھی زیادہ نیکی کے ساتھ سخی ہوتے۔ [78] روزے دار کو جن آداب کی پابندی کرنی چاہیے ان میں سے: اعضاء کی حفاظت، فضول گفتگو، فحش زبان، جھگڑے اور جھگڑے سے پرہیز اور پرسکون اور باوقار رہنا۔ کیونکہ وہ عبادت میں ہے اور حدیث میں ہے: "حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ «الصيام جنة فلا يرفث ولا يجهل وإن امرؤ قاتله أو شاتمه فليقل إني صائم (مرتين)، والذي نفسي بيده لخلوف فم الصائم أطيب عند الله تعالى من ريح المسك، يترك طعامه وشرابه وشهوته من أجلي، الصيام لي وأنا أجزي به، والحسنة بعشر أمثالها»، "روزہ ایک ڈھال ہے، نہ فحش ہے اور نہ جاہل اور اگر کوئی اس سے لڑے یا اسے گالی دے تو وہ کہے کہ میں (دو مرتبہ) روزہ سے ہوں۔ "[79]

اور چونکہ روزے کا اجر اللہ کے ہاں ایک جگہ ہے۔ روزہ دار کے لیے ضروری تھا کہ وہ اس فضیلت کو محفوظ رکھے اور ہر اس چیز سے بچتا رہے جو اس سے چھوٹ جاتی ہے، کیونکہ روزے میں لغو باتوں اور فحش باتوں کا مطلب یہ نہیں کہ روزہ فاسد ہو جائے، بلکہ اس سے روزے کی فضیلت ضائع ہو جاتی ہے اور ثواب کم ہو جاتا ہے۔ یہ اس شخص کی طرح ہے جو جمعہ کے خطبہ میں تقریر کرے یا مسجد میں شور و غل مچائے اور حدیث «وإذا كان يوم صوم أحدكم فلا يرفث ولا يصخب، فإن سابه أحد أو قاتله، فليقل: إني امرؤ صائم»،"اگر تم میں سے کوئی روزہ دار ہو تو اسے چاہیے کہ وہ فحش باتیں نہ کرے اور نہ اونچی آواز میں اور اگر کوئی اسے گالی دے یا اس سے لڑے تو کہے: میں روزے سے ہوں۔"

روزے کے فوائد

[ترمیم]

روزہ کے حسی اور اخلاقی فوائد ہیں، کیونکہ یہ نفسیاتی رویے کو نکھارتا ہے اور روح کی کجی کو درست کرتا ہے اور اس طرز کو بدل دیتا ہے جس کا انسان اپنی روزمرہ کی زندگی میں عادی ہوتا ہے۔ اور غریبوں کے درمیان ہمدردی، پیار اور ہمدردی حاصل کرنے کے لیے۔ اور حدیث میں ہے: «وَالصِّيَامُ جُنَّةٌ» [80] اس لحاظ سے کہ یہ آگ سے حفاظت ہے، جس طرح اسلام میں روزے کا ایک فائدہ یہ ہے کہ یہ روح کو پاک کرنے میں مدد کرتا ہے اور ان لوگوں کی خواہش کو توڑنے میں مدد کرتا ہے جو اپنے لیے برہمی سے ڈرتے ہیں اور اس کا ثبوت ایک حدیث سے ملتا ہے: علقمہ کی سند پر ابراہیم کی حکومت، ہم ﷺ «من استطاع الباءة فليتزوج فإنه أغض للبصر وأحصن للفرج ومن لم يستطع فعليه بالصوم فإنه له وجاء» [81] استطاعت رکھنے والے کے لیے نکاح مستحب ہے اور جو اس کی استطاعت نہ رکھتا ہو اسے روزہ رکھنا چاہیے، کیونکہ یہ اس کے لیے شہوت کو توڑنے کا طریقہ ہے اور اس کے لیے روزے کے علاوہ کوئی راستہ نہیں ہے۔ ابن کثیر نے اپنی تفسیر میں کہا: « اس میں جسم کی تطہیر اور شیطان کے راستوں کا تنگ ہونا ہے۔ اسی لیے دو صحیحوں میں یہ ثابت ہوا: "اے نوجوانو، تم میں سے جو شادی کرنے کی استطاعت رکھتا ہو، وہ شادی کر لے اور جو اس کی استطاعت نہ رکھتا ہو، وہ روزہ رکھے، کیونکہ یہ اس کے لیے ہے اور وہ آیا۔ "[82]

روزے کے فقہی احکام

[ترمیم]

اسلامی فقہ کی شاخوں کی سائنس میں روزے کی دفعات اسلامی قانون کے شواہد سے اخذ کردہ روزے کی دفعات کا قانونی مطالعہ ہے۔ فقہ کے علما نے روزے کے موضوع میں دلچسپی لی ہے اور اسے روزے کا ایک حصہ بنایا ہے ۔ عبادات کی فقہ جسے "کتابِ روزہ" کہا جاتا ہے، اس میں ابواب، ابواب، سوالات اور دیگر شاخیں شامل ہیں۔ اس کا حکم، اس کے جواز کی بنیاد، روزے کے ستون، اس کی شرائط اور اس کے باطل ہونے، مستحب اور ناپسندیدہ حصے۔ روزہ، ماہ رمضان کے روزے، روزوں کی اقسام اور اقسام اور اس کی تقسیم ، ممنوع روزے، روزے کی نیت کے احکام اور نیت کا تعین، رمضان المبارک میں روزہ توڑنے کے احکام، قضاء فدیہ ادا کرنا، سفر میں روزہ رکھنا، بیمار کا روزہ ، حیض والی عورت کا روزہ اور روزے کے احکام میں مذکور آیات، روزے کے اوقات، روزے کی رات کے احکام، روزے کی رات کے احکام۔ رمضان کا چاند، شبہ کا دن، بادلوں کا دن ، فجر کا آغاز، ماہ رمضان کی راتوں میں شب قدر ، رمضان کی راتوں میں نیک اعمال کرنا، رمضان کی رات کی نماز پڑھنا، مکمل کرنا۔ رمضان کا مہینہ تیس دن جب شوال کا چاند نظر نہ آئے اور شعبان کا مہینہ تیس دن تک مکمل ہو جائے جب رمضان کا چاند نظر نہ آئے اور نفلی روزے جیسے عاشورہ کا روزہ اور محرم کا روزہ۔

روزے کی اقسام

[ترمیم]

اس سے متعلق شرعی احکام کے لحاظ سے روزے کی اقسام میں متعدد قسمیں شامل ہیں اور فقہا نے متعدد تقسیمیں ذکر کی ہیں اور یہ تقسیم خواہ کتنی ہی مختلف کیوں نہ ہوں، شرعی احکام کی تقسیم کے اعتبار سے ان کی دو قسموں سے انحراف نہیں ہوتا، i یہ واجب ہے اور شریعت اس بات کا تقاضا کر سکتی ہے کہ اسے واجب کے طور پر چھوڑ دیا جائے یا نہ رکھا جائے، روزہ یا تو وہ ہے جو کرنا ضروری ہے یا نہیں، پس یہ دو حصے ہیں اور ان میں سے ہر ایک فرض کی طرف ہے۔ یا بغیر فرض کے ۔ شرعی حکم کے مطابق یہ چار حصے ہیں۔ روزہ۔ کیونکہ یہ عبادت ہے اور عبادت کو جائز قرار نہیں دیا گیا ہے۔ اس تقسیم کے مطابق روزے یا تو وہ ہیں جو شریعت میں فرض کے طور پر کرنے کی ضرورت ہے اور اس کی پہلی قسمیں ہیں: فرض روزہ، جو رمضان کے مہینے کے روزے ادا اور قضا میں، کفارہ کے روزے ہیں۔ اور روزہ کی قسم کھائی۔ جمہور فقہا کے نزدیک واجب، واجب اور واجب میں کوئی فرق نہیں ہے، کیونکہ یہ تمام مترادف اصطلاحات ہیں جو ایک معنی کے حامل ہیں، حنفیہ کے برعکس، جہاں انھوں نے فرض اور واجب میں فرق کیا ہے اور ہر صورت میں، اس قسم کے روزے اس طریقے سے کیے جاتے ہیں جو فرض ہے۔ اور اگر روزہ شریعت میں واجب ہے نہ کہ فرض کے طور پر۔ یہ روزے کی شاخوں کا دوسرا حصہ ہے جو سنت روزہ ہے اور اس میں تمام قسم کے نفلی روزے اور ان کی بہت سی قسمیں شامل ہیں، جیسے: عاشورہ کے دن کا روزہ جو محرم کی دسویں تاریخ ہے اور اس کے ساتھ اس سے پہلے یا بعد کے روزے اور محرم کے روزے اور شوال کے چھ روزے اور ہر مہینے کے تین دن اور دوسرے روزے رکھنے کی تصدیق ہوتی ہے۔ . روزے کی دوسری قسم یہ ہے کہ: شریعت میں جس چیز کو چھوڑنا ضروری ہے، وہ روزہ جو حرام ہے یا تو واجب طریقے سے، جو: حرام روزہ، یعنی: یہ شریعت میں اپنے آپ میں حرام ہے۔ ایک ایسی ممانعت جو اسے کرنے والے کے گناہ کا تقاضا کرتی ہے۔ یہ عید الفطر اور عید الاضحی کے دنوں اور تشریق کے تین دنوں میں روزہ ہے۔ اس حصے میں وہ سب کچھ شامل ہے جس کے نتیجے میں مرتکب کا گناہ ہوتا ہے، جیسے حیض والی عورت کا روزہ کی نیت سے جان بوجھ کر روزہ رکھنا۔ اس میں وہ نفرت انگیز روزہ بھی شامل ہے جو حرام کے طور پر ناپسندیدہ ہے، جیسے شبہ کے دن کا روزہ۔ یا ایسا ہو سکتا ہے کہ شریعت اس کو چھوڑنے کا تقاضا کرتی ہے، نہ کہ فرض کی طرف، جیسے: حاجی کے لیے عرفہ کے دن روزہ رکھنا اور جمعہ کے دن اکٹھا کرنا۔

روزے کے ستون

[ترمیم]

روزے کے ستون، یعنی: روزے کی فطرت کے وہ حصے جو ان کے بغیر درست نہیں۔ یہ ہے: قبض۔ روزہ اس کی اصل میں ہے: "صبح سے لے کر غروب آفتاب تک روزہ کو توڑ دینے والی چیزوں سے پرہیز کرنا۔" مالکیہ اور شافعیہ کے نزدیک روزہ کی نیت روزے کے ارکان میں سے ایک ہے اور بعض فقہا نے اسے ترجیح دی ہے۔ نیت روزے کی شرطوں میں سے ہے ، یہ کہنا کہ یہ ستون یا شرط ہے اور معنی یہ ہے کہ روزہ صرف نیت کے ساتھ درست نہیں۔ بعض فقہا نے روزے کے ستونوں میں ایک تیسرا ستون شامل کیا ہے، جو یہ ہے: روزہ دار، یعنی: وہ شخص، جس کے پیش نظر روزہ دار کے لیے شرعی طور پر روزہ رکھنا جائز نہیں۔

روزے کی شرائط

[ترمیم]

روزے کی شرائط یہ ہیں: روزے کی فرضیت کی شرائط اور اس کے صحیح ہونے کی شرائط، بشمول: فرض اور صحیح ہونے کی شرائط اور عمل کے صحیح ہونے کی شرائط۔ عام طور پر روزے کی شرائط یہ ہیں: بلوغت، عقل، اسلام، قابلیت (یعنی روزہ رکھنے کی صلاحیت)، صحت اور رہائش۔ بیمار پر روزہ رکھنا واجب نہیں اور نہ سفر میں روزہ رکھنا ، بلکہ مسافر کے لیے رمضان میں روزہ افطار کرنا جائز ہے اور اس کی استطاعت نہ رکھنے والے پر روزہ فرض نہیں ہے۔ عاقل اور سمجھدار مسلمان کے علاوہ روزہ صحیح نہیں ہے اور اس کے لیے حیض اور نفلی سے پاک ہونا ضروری ہے اور روزہ کے لیے مناسب وقت کا علم ہونا چاہیے، جس طرح روزے کے لیے نیت ضروری ہے، اسی طرح اس کے بغیر روزہ درست نہیں ہے۔ یہ. فقہ کی شاخوں کی سائنس کی کتابوں میں مکمل تفصیلات موجود ہیں۔

روزہ باطل کرنے والے عمل

[ترمیم]

روزہ کے باطل کرنے والے یا: روزہ کو باطل کرنے والے، باطل اور باطل عبادات میں ایک لحاظ سے، صحیح کے خلاف۔ جس سے روزہ ٹوٹ جاتا ہے، مطلب: روزہ کو کس چیز سے باطل کرتا ہے۔ روزہ باطل ہونے کے بعد ضروری ہے۔ باقی دن وقت کی حرمت کے لیے پرہیز کرنا اور اس کے بعد قضاء کرنا۔ جہاں تک عذر کرنے والے کو روزہ افطار کرنے کی اجازت ہے، جیسے مریض؛ اسے پکڑنے کی ضرورت نہیں ہے۔ جن لوگوں پر روزہ رکھنا حرام ہے ان کے لیے جان بوجھ کر قبض کے ساتھ جاری رکھنا منع ہے جیسا کہ حیض والی عورت کے روزے کے معاملے میں ہوتا ہے۔ روزے کو باطل کرنے والی چیزیں یعنی روزہ توڑنے والی چیزیں یہ ہیں:

  • جو چیز جان بوجھ کر معدہ تک پہنچ جائے، جیسے: کھانا پینا اور کھانے پینے سے کیا مراد ہے، نیت، علم اور پسند کی حالت، پس جو چیز جان بوجھ کر معدہ تک پہنچ جائے اس سے روزہ فاسد ہو جاتا ہے، جیسے: حلق ، معدہ اور دماغ ، تو وہ ہر اس چیز سے روزہ افطار کرتا ہے جو روزہ دار جان بوجھ کر اپنے پیٹ میں ڈالتا ہے یا اس کے جسم میں کھوکھلا ہوتا ہے جیسے اس کا دماغ اور حلق۔ انتخاب کے ذریعے اور یہ ایسی چیز ہے جس سے بچایا جا سکتا ہے، خواہ وہ معمول کے مطابق منہ سے آئے یا عادت سے باہر، جیسے شرم اور کڑواہٹ یا ناک سے، جیسے نسوار، جو دوا کے ذریعے دوا کا تعارف ہے۔ ناک یا جو کان سے دماغ میں داخل ہوتی ہے۔ یا جو مقعد یا مقعد کے راستے معدے میں داخل ہوتی ہے، جیسے انجکشن یا جو معدہ سے معدے میں پہنچتی ہے یا ماں کی دوا سے اس کے دماغ تک، یہ سب اس کا روزہ توڑنا اس لیے کہ وہ اپنے پیٹ میں انتخاب سے پہنچ گیا، تو وہ کھانے کے مشابہ تھا اور اسی طرح اگر اس نے اپنے آپ کو زخمی کیا یا کسی اور نے اسے پسند سے زخمی کیا اور وہ اپنے پیٹ تک پہنچا، خواہ وہ اس کے پیٹ میں جائے یا واپس آکر اس سے نکل آئے اور یہ سب شافعی نے کہا۔ مالک نے کہا: نسوار سے روزہ نہیں ٹوٹتا جب تک کہ حلق تک نہ اتر جائے اور اگر جماعت اور مرنے والے کے ساتھ حسن سلوک کرے تو روزہ نہیں ٹوٹتا۔ اور اس نے سرنج میں اس سے اختلاف کیا اور اس کے حق میں دلیل دی کہ اس میں سے کچھ بھی حلق تک نہیں پہنچا، اس سے زیادہ وہ چیز جو دماغ یا معدے تک نہیں پہنچی۔ ابن قدامہ نے بیان کیا کہ وہ روزہ دار کے معدے میں انتخاب کے ساتھ پہنچا تو وہ روزہ افطار کرتا ہے جیسا کہ حلق تک پہنچتا ہے اور دماغ کھوکھلا ہوتا ہے اور جو اس تک پہنچتا ہے وہ اس کی پرورش کرتا ہے تو وہ روزہ افطار کرتا ہے جسم. [83] اور ضروری ہے کہ جو چیز معدے میں پہنچے وہ جان بوجھ کر جائے لیکن اگر بھول کر داخل ہو جائے تو اس کا روزہ باطل نہیں ہوتا۔ حدیث: جو بھول کر کھا پی لے وہ اپنا روزہ پورا کرے۔

لعاب نگلنے سے روزہ نہیں ٹوٹتا خواہ وہ منہ میں جمع ہو جائے اور روزے کے لیے لعاب کا خارج ہونا ضروری نہیں ہے جیسا کہ بعض کو وہم ہو سکتا ہے، قصر کرنے سے روزہ نہیں ٹوٹتا۔

  • سو جانا، سو جانے سے روزہ فاسد ہو جاتا ہے، یعنی: روزہ دار جان بوجھ کر اپنے پیٹ سے قے نکالتا ہے۔ اس کا روزہ فاسد ہو جاتا ہے اور اسی طرح اگر اسے قے ہو گئی اور وہ زبردستی باہر نکلا اور جان بوجھ کر پیٹ میں لوٹا دیا تو اس کا روزہ باطل ہے۔ اس لیے کہ اگر اسے واپس کر دیا جائے تو یہ معدہ میں آنکھ کی ترسیل شمار ہوتا ہے اور اس سے روزہ ٹوٹ جاتا ہے۔ اگر وہ قے سے مغلوب ہو گیا، یعنی اس پر قابو پا لیا اور اسے نکالنے کا ارادہ کیے بغیر باہر نکل گیا۔ اس کا روزہ فاسد نہیں ہوتا اور اس وقت اس پر وہ چیز واجب نہیں ہوتی جو اس کے اختیار سے باہر ہو، الا یہ کہ وہ جان بوجھ کر اسے اپنے پیٹ میں لوٹا دے۔ اور اگر بھول کر روزہ رکھ کر قے کر لے تو اس کا روزہ فاسد نہیں ہوتا، جیسا کہ جان بوجھ کر پیٹ سے تھوک نکالنا۔ اس سے اس کا روزہ نہیں ٹوٹتا۔ اس کا ثبوت حدیث سے ملتا ہے: "جس کو قے آ جائے تو اس پر قضاء نہیں ہے اور جس کو جان بوجھ کر قے آئے وہ قضا کرے۔" [84]
  • ختنہ کی ملاقات اور انزال ہونے یا نہ ہونے کے دو طریقوں میں سے کسی ایک طریقے سے ہمبستری کرنا علم، ارادہ اور انتخاب کی حالت ہے۔ روزے کی وجہ سے گناہ کے ساتھ اس کا روزہ فاسد ہو جاتا ہے اور اس دن کے روزے کی قضاء لازم ہے جسے اس نے خراب کیا اور اس روزے کا کفارہ ادا کرنا چاہیے جو غلام آزاد کر رہا ہے، اگر اسے نہ ملے۔ پھر دو مہینے لگاتار روزے رکھے۔ ساٹھ مسکینوں کو کھانا کھلانا۔ اگر رمضان المبارک میں دن کے وقت روزہ باطل کر دے تو ضروری ہے کہ کفارہ کی قضاء کرے اور رمضان میں دن کے وقت کی حرمت کو مدنظر رکھتے ہوئے باقی دن روزہ رکھے۔
  • جان بوجھ کر براہ راست منی کا انزال، معنی: شہوت کے ساتھ براہ راست منی کا اخراج اور وہ یہ ہے کہ روزہ توڑنے والی چیزوں کو ترک کرنے کے لحاظ سے روزہ جس میں معدہ اور شرمگاہ کی شہوتوں سے پرہیز کرنا ہے۔ جہاں تک خواب میں منی کے اخراج کا تعلق ہے، یعنی نیند کے دوران؛ اس سے روزہ نہیں ٹوٹتا۔
  • حیض اور نفلی خون نکلنا ہے، لہٰذا عورت کا روزہ روزہ کے دوران حیض یا نفلی خون کے نکلنے سے فاسد ہو جاتا ہے، یہاں تک کہ غروب آفتاب سے ایک لمحہ پہلے تک اور اس پر علما کا اجماع ہے۔ اس پر ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ کی حدیث ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ ﷺ آتا ہے تو وہ نماز یا روزہ نہیں رکھتی؟ اسے بخاری و مسلم اور معاذ کی حدیث میں شامل ہے، جب میں نے عائشہ رضی اللہ عنہا سے بغیر نماز کے روزے کی قضاء کے بارے میں پوچھا، تو انھوں نے کہا «كان يصيبنا على عهد رسول الله ﷺ اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں ہوا کرتا تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے نماز پڑھی تو ہمیں روزے کی قضا کا حکم دیا گیا لیکن ہمیں نماز کی قضا کا حکم نہیں دیا گیا۔ [85]

امام نووی نے حیض والی عورت کے روزے کے بارے میں ذکر کیا ہے کہ: علما کا اجماع ہے کہ حیض والی عورت کے لیے روزہ درست نہیں ہے اور نفلی خون آنے پر بھی یہی بات لاگو ہوتی ہے۔

  • ولادت، جو بچے کا نکلنا ہے، خواہ وہ خشک ہو۔ کیونکہ یہ اس چیز کی وجہ سے پیچیدہ ہے جس کی وجہ سے دھونا ضروری ہے اور بچے کے نکلنے کے بعد اکثر نفلی خون کا اخراج ہوتا ہے، لیکن اگر بچہ خشک ہوا اور نفلی خون کے بعد باہر نہ آیا ہو؛ ولادت کی وجہ سے عورت کا روزہ ٹوٹ جاتا ہے۔
  • پاگل پن اگر روزے دار کو ہو تو ایک لمحے کے لیے بھی۔
  • فجر سے غروب آفتاب تک دن بھر بیہوش ہونا عام ہے اور روزہ کی قضاء ضروری ہے۔ اور اگر دن کے کسی حصہ میں بیدار ہو تو اس کا روزہ صحیح ہے۔
  • جان بوجھ کر نشہ کرے، اگر سارا دن کرے لیکن نیند نہ آئے تو روزہ نہیں ٹوٹتا۔
  • ارتداد واضح کفر کے ساتھ انتخاب کے ذریعے اسلام سے کفر کی طرف واپسی ہے۔

روزے کی سنتیں

[ترمیم]
استنبول، ترکی میں رمضان افطار

مستحب روزہ یا: روزے کی سنتیں وہ نمائندے ہیں جن کا لانا روزہ دار کے لیے مستحب ہے اور ان کا جواز یا تو ہے۔ متن کے ساتھ اس کے مطلوبہ ہونے کی نشان دہی کرتا ہے یا: متن کے معنی اور مفہوم سے اور اس میں یہ شامل ہے: ماہ رمضان کے روزے رکھنے سے متعلق مستحب اور روزوں کی دوسری اقسام ،[86] بشمول: وقت کے شروع میں روزہ افطار کرنے میں جلدی کرنا۔ اور تازہ کھجور پر روزہ افطار کرے اور اگر نہ ملے تو کھجور سے روزہ افطار کرے، ورنہ پانی پی کر افطار کرے اور سحری کے کھانے میں کسی رشتہ دار تک تاخیر کرے، دوسری فجر کا آغاز زبان کی حفاظت کرے۔ فضول گفتگو اور فحاشی سے، ناشتے میں دعا وغیرہ۔ [° 2] روزہ کے ﷺ میں سے ایک سحری ہے اور بہت سی احادیث اس کی رغبت اور ترغیب پر دلالت کرتی ہیں۔ [87] سحری - سین کھول کر - معنی: جو کچھ کھایا جاتا ہے، جیسے روٹی اور دیگر یا معنی: وہ کھانا جو روزہ دار دوسری فجر سے پہلے کھاتا ہے یا - سین کو شامل کرکے - فعل اور مصدر ہے اور یہ روزہ کے مستحبات میں سے ہے اور اس میں برکت کی وجہ روزہ دار کو روزہ رکھنے کی تقویت دینا، اسے توانائی بخشنا، اس کے ساتھ خوش کرنا اور اس کے لیے آسانیاں پیدا کرنا ہے۔ [88] «عن عمرو بن العاص رضي الله عنه، قال: قال رسول الله ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ہمارے روزوں اور روزہ کے درمیان جدائی۔ اہل کتاب کا روزہ جادو کھا رہا ہے۔" [89] «عن أبي سعيد قال: قال رسول الله ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سحری سے پہلے کھانا برکت ہے، لہٰذا اسے نہ چھوڑو، اگرچہ تم میں سے کوئی ایک گھونٹ پی لے۔ پانی، کیونکہ خدا اور اس کے فرشتے سحری کھانے والوں کو برکت دیتے ہیں۔"

الجزائر میں رمضان کا ناشتا

النووی کہتے ہیں: ہمارے اصحاب اور دیگر علما کا اس بات پر اتفاق ہے کہ فجر سے پہلے کا کھانا سنت ہے اور اس میں تاخیر کرنا افضل ہے اور یہ کہ افطار میں جلدی کرنا غروب آفتاب کے بعد سنت ہے۔ اور اس لیے کہ ان میں روزے کی مدد ہوتی ہے اور اس لیے کہ ان میں کفار کی مخالفت ہوتی ہے۔ صحیح مسلم میں ہے: عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ: رسول ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «فصل ما بين صيامنا وصيام أهل الكتاب أكلة السحر» مسلم نے روایت کیا ہے۔ حمزہ کھول کر جادو کھانا سحری ہے۔ اور چونکہ روزے کی جگہ دن میں ہے اس لیے افطار میں تاخیر اور رات کے آخر میں سحری چھوڑنے کا کوئی مطلب نہیں ہے۔ اور چونکہ غروب آفتاب سے روزہ ٹوٹ گیا، اس لیے افطار میں تاخیر کا کوئی فائدہ نہیں۔ سحری کا وقت آدھی رات اور فجر کے درمیان ہوتا ہے اور سحری بہت زیادہ کھائی جاتی ہے اور تھوڑی ہوتی ہے اور یہ «عن أبي سعيد قال: قال رسول الله ﷺ ، اللہ اور اس کے فرشتے جادو کرنے والوں پر درود بھیجتے ہیں۔ [90] فجر سے پہلے کے کھانے کو دوسری فجر تک مؤخر کرنا افضل ہے اور روزہ دار کے لیے کھجور سے افطار کرنا افضل ہے ، اور اگر نہ ملے تو «إذا أفطر أحدكم فليفطر على تمر، فإن لم يجد فليفطر على ماء فإنه طهور»» افضل ہے۔ پھر پانی سے ﷺ «إذا أفطر أحدكم فليفطر على تمر، فإن لم يجد فليفطر على ماء فإنه طهور»» [91] انس رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ انھوں نے کہا: « [92] روزہ دار کے لیے مستحب ہے کہ افطار کرتے وقت یہ دعا کرے اور افطار کرتے وقت یہ کہے: "اے اللہ، تو خاموش ہے اور میں نے تیرے رزق سے روزہ افطار کیا۔" «كان رسول الله ﷺ اللہ علیہ وسلم جب روزہ رکھتے اور افطار کرتے تو فرماتے: اے اللہ، تو خاموش ہے اور میں آپ کا روزہ افطار کرتا ہوں۔ رزق." [93] « » [94] مروان ہاتھ سے « کاٹتے دیکھا۔ [95] اور روزہ دار کے لیے مستحب ہے کہ افطار کرتے وقت دعا کرے، امام نووی کہتے ہیں: «عن ابن عمرو بن العاص أن النبي صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "روزہ دار کی ایک دعا ہے جو افطار کرتے وقت رد نہیں ہوتی" ﷺ عمرو جب افطار کرتے تو کہتے: "اے اللہ! تیری رحمت جو ہر چیز پر محیط ہے، مجھے معاف فرما۔‘‘ [93] روزہ دار کے لیے مستحب ہے کہ افطار کے وقت افطار کرے۔ زید بن خالد جہنی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: « [96] اور اس کو وہی ملے گا جس سے روزہ افطار کرے، یہاں تک کہ ایک کھجور یا پانی یا دودھ پینے سے بھی اگر وہ رات کا کھانا نہ کھاسکے۔ الماوردی رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ بعض صحابہ نے عرض کیا: یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہم میں سے ہر ایک کو روزہ دار کے افطار کے لیے کوئی چیز نہیں ملتی، تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اللہ تعالیٰ یہ ثواب روزہ دار کو ایک تاریخ کو افطار کرنے، پانی پینے یا دودھ کا ذائقہ چکھنے کا دیتا ہے [93] ۔

سحری میں تاخیر

[ترمیم]
اردنی سحری

فجر سے پہلے کے کھانے کو فجر کے دوسرے افطار تک مؤخر کرنا مستحب ہے اور یہ سب سے افضل ہے، حدیث «عن أبي زر قال: قال رسول الله ﷺ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم پر درود و سلام ہو۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”میری امت اس وقت تک ٹھیک رہے گی جب تک وہ افطار میں جلدی کرے اور سحری کھانے میں تاخیر کرے۔ [97] [98] حدیث سے معلوم ہوتا ہے کہ روزہ دار کے لیے سحری کھانا مستحب ہے، یعنی: سحری کی نماز سے پہلے کھانا اور اسے کہتے ہیں: مبارک دوپہر کا کھانا اور اس کا وقت اس وقت ختم ہوتا ہے جب فجر کی نماز کا وقت ہو اور یہ سحری کو فجر کے وقت سے پہلے تک مؤخر کرنا مستحب ہے۔ کیونکہ اس سے مراد حاصل کرنے میں یہ سب سے زیادہ فصیح ہے اور دو «عن أنس عن زيد بن ثابت رضي الله عنه قال: تسحرنا مع النبي ﷺ علیہ وسلم نے دعا کی، پھر آپ نماز کے لیے اٹھے۔ [97] اسی طرح سحری کا وقت نماز فجر کے وقت شروع ہونے کے ساتھ ہی مسواک کا وقت شروع ہونے تک ہوتا ہے، لیکن سحری اور نماز کے درمیان تھوڑا وقفہ کرنا افضل ہے تاکہ روزہ دار نماز کی تیاری کر سکے۔ اس وقت سے شراب پینا، ذکر کرنا، استغفار کرنا اور قرآن پڑھنا، انس سے پوچھا گیا: زید بن ثابت رضی اللہ عنہ سے اس وقت کے بارے میں کیا گیا جو طلوع فجر کے کھانے کے اختتام سے شروع ہونے کے درمیان تھا؟ «عن أنس عن زيد بن ثابت رضي الله عنه قال: تسحرنا مع النبي ﷺ کے ساتھ سحری کی، پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نماز کے لیے اٹھے، میں نے عرض کیا: اذان اور سحری کے درمیان کتنا وقت تھا؟ فرمایا: پچاس آیات کا اندازہ لگاؤ ۔ [99] زید بن ثابت کا قول ہے: "پچاس آیات کی مقدار" کا مطلب ہے: درمیانی، طویل یا مختصر نہیں، تیز یا سست، جو اس صورت حال میں وقت کا تخمینہ ہے، وقت کی مقدار کا اندازہ لگانے کے لیے۔ : حلب کی قدر ایک بھیڑ ہے۔ اور اونٹ کو ذبح کرنے کی قیمت، تو زید بن ثابت نے پڑھ کر اس کو تخمینہ میں بدل دیا۔ اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ وہ وقت تلاوت سے عبادت کا وقت تھا۔ ابن ابی جمرہ کہتے ہیں: اس میں اشارہ ہے کہ ان کا وقت عبادت میں مشغول تھا۔ ابن حجر نے کہا « انھوں نے یہ بھی کہا کہ کھانے کی عام ضرورت کی وجہ سے اس سے روزے کو تقویت ملتی ہے اور اگر اسے چھوڑ دیا جائے تو ان میں سے بعض کے لیے مشکل ہو جائے گی، خاص طور پر جن کو یرقان ہے، کیونکہ وہ بے ہوش ہو سکتا ہے اور رمضان میں روزہ توڑ سکتا ہے۔ فرمایا: اور حدیث میں ہے کہ نیک آدمی نے اپنے ساتھیوں کو کھانے میں راحت بخشی اور ضرورت کے لیے رات کو پیدل چلنا جائز ہے؛ کیونکہ زید بن ثابت رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ کے ساتھ نہیں سوتے تھے۔ اور اس میں فجر سے پہلے کے کھانے پر ملاقات اور اس میں حسن اخلاق اس لیے کہ آپ صلی اللہ وسلم نے فرمایا: "ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ سحری کرتے ۔" » [100]

سحری کے آخری وقت اور فجر کی نماز کے درمیان پچاس آیتوں سے الگ کرنا افضل ہے۔ دو صحاحوں کی خبر کے لیے، جیسا کہ سحری کا وقت ختم ہوتا ہے، یہ دوسری فجر کے ظہور تک پھیلا ہوا ہے۔ اس حدیث سے بھی اشارہ ملتا ہے: «إن بلالا يؤذن بليل، فكلوا واشربوا حتى يؤذن ابن أم مكتوم» [101] اور حدیث ہے: «لا يمنعكم سحوركم أذان بلال» «عن عائشة: أن رسول الله ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "بلال کی اذان تمھیں نماز کے لیے نہ روکے۔ فجر سے پہلے کے کھانے سے، کیونکہ وہ رات کو اذان دیتا ہے، لہٰذا اس وقت تک کھاؤ پیو جب تک تم ابن ام مکتوم کی اذان نہ سن لو، کیونکہ وہ فجر کے طلوع ہونے تک اذان نہیں دیتے۔ بخاری کا قول، حماد کی روایت سے، ابراہیم کی سند سے، انھوں نے کہا: "سحری رات میں ہے اور وتر رات میں ہے۔" [102] « ۔ [103] بلال رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انھوں نے کہا «أتيت النبي ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو نماز کے لیے بلائیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم روزہ رکھنا چاہتے تھے۔ اور عامر بن مطر سے مروی ہے کہ انھوں نے کہا: میں عبد اللہ بن مسعود کے پاس ان کے گھر آیا، تو انھوں نے فجر سے پہلے کا کھانا نکالا، تو ہم نے ان کے ساتھ کھانا کھایا، پھر نماز قائم ہوئی۔ باہر نکل کر نماز پڑھی۔" اور ابی حذیفہ کے آزاد کردہ غلام سالم کی سند سے، انھوں نے کہا: "میں اور ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ رمضان میں ایک چھت پر تھے، تو میں ایک رات آیا اور کہا: اے جانشین، کیا تم کھانا نہیں کھاؤ گے؟ خدا کی، خدا کی دعائیں اور سلامتی ہو؟ چنانچہ اس نے ہاتھ سے رکنے کا اشارہ کیا، پھر میں دوبارہ اس کے پاس آیا اور اس سے کہا: اے رسول اللہ کے جانشین، کیا تم کھانا نہیں کھاؤ گے؟ اس نے رکنے کے لیے ہاتھ ہلایا۔ پھر میں دوبارہ اس کے پاس آیا اور کہا: اے خدا کے رسول کے جانشین کیا تم نہیں کھاتے؟ تو اس نے فجر کی طرف دیکھا، پھر رکنے کے لیے ہاتھ سے سر ہلایا۔ پھر میں اس کے پاس آیا اور کہا: اے خدا کے رسول کے جانشین کیا تم نہیں کھاتے؟ اس نے کہا: دوپہر کا کھانا لے آؤ۔

فجر سے پہلے کے کھانے کو فجر کی نماز سے الگ کرنا افضل ہے۔ اس کا ثبوت انس نے معاذ بن جبل کی روایت سے دو صحیحوں میں نقل کیا ہے کہ: «قدر خمسين آية» یہ کہ فجر سے پہلے کے کھانے کی تکمیل فجر سے پہلے تھی، لہذا یہ حذیفہ کے اس قول کے خلاف ہے: دن ہے لیکن سورج طلوع نہیں ہوا۔ میں ختم کرتا ہوں۔ اور جواب: کہ اس میں کوئی مخالفت نہیں ہے، بلکہ حالات کے فرق کے مطابق عمل کیا جاتا ہے، لہٰذا ان میں سے کسی ایک کی روایت میں کوئی ایسی چیز نہیں ہے جو تسلسل محسوس کرتی ہو، اس لیے حذیفہ کا قصہ پہلے ہے اور وہ اس سے ہے۔ زید بن ثابت کی مسند یا انس کی مسند سے؟ [104] «عن عاصم عن زر عن حذيفة قال: كان النبي صلى الله عليه وسلم يتسحر وما أرى مواقع النبل. قال: قلت: أبعد الصبح؟ قال: هو الصبح إلا أنه لم تطلع الشمس» ۔ ابن کثیر نے کہا: یہ ایک ایسی حدیث ہے جسے عاصم بن ابی النجود نے منفرد انداز میں روایت کیا ہے، اسے نسائی نے کہا ہے اور اس نے اسے دن کے قریب سے تعبیر کیا ہے جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:﴿فإذا بلغن أجلهن فأمسكوهن بمعروف أو فارقوهن بمعروف﴾ [105]یعنی: عدت ختم ہونے کے قریب ہے، اس لیے یا تو وہ کھانا چھوڑ دے یا جدائی کے لیے نکل جائے اور یہی فرمایا جس پر واجب ہے۔ اور ابو جعفر ابن جریر نے ان میں سے بعض کے بارے میں اپنی تفسیر میں بیان کیا ہے کہ: طلوع آفتاب سے پرہیز کرنا اسی طرح واجب ہے جس طرح غروب ہونے پر افطار کرنا جائز ہے۔ میں نے کہا: میں نہیں سمجھتا کہ اہل علم میں سے کوئی اس قول پر اکتفا کرے گا، کیونکہ یہ قرآن کی عبارت کے خلاف ہے جب کہ یہ کہتا ہے: ’’اور کھاؤ پیو یہاں تک کہ سفید دھاگہ تمھارے لیے سیاہ سے ممتاز ہو جائے۔ فجر کے وقت دھاگا پھر رات تک روزہ پورا کرو۔[106]

افطار

[ترمیم]

روزہ کے مستحبات میں سے ایک یہ ہے کہ مغرب کی نماز کے وقت کے شروع میں افطار کرنے میں جلدی کرے، یعنی: روزہ دار کے لیے مستحب ہے کہ وقت کے شروع میں افطار میں جلدی کرے اور تاخیر نہ کرے اور یہ سنن کی ایک حدیث سے ثابت ہے: "سہل بن سعد رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «لا يزال الناس بخير ما عجلوا الفطر» " [107] ابن حجر نے کہا: ابن عبد البر نے کہا: افطار میں جلدی کرنے اور فجر سے پہلے کھانے میں تاخیر کی حدیثیں صحیح اور متواتر ہیں۔ اور عبد الرزاق اور دیگر کے مطابق، راویوں کے صحیح سلسلے کے ساتھ، عمرو بن میمون العودی کی سند سے، انھوں نے کہا: «كان أصحاب محمد ﷺ وسلم کے اصحاب سب سے تیز رفتار لوگ تھے۔ ناشتے میں اور سحری میں سب سے سست۔ [108] اور یہ اس وقت ہوتا ہے جب سورج غروب ہوتا ہے اور جو کوئی پہاڑوں کی عمارتوں کے پیچھے ہوتا ہے اور غروب آفتاب کا مشاہدہ نہیں کرتا تھا۔ پھر وقت قریب ترین مقام کے غروب کے ساتھ داخل ہو گا اور یہ رات کی تاریکی اور دن کی روشنی کے غائب ہونے کا وقت ہو گا اور اس کی طرف ایک حدیث سے اشارہ ہے: " عاصم کی سند سے۔ بن عمر بن الخطاب اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ اللہ ﷺ رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «إذا أقبل الليل من ها هنا وأدبر النهار من ها هنا وغربت الشمس فقد أفطر الصائم» ۔" یعنی: افطار کا وقت شروع ہو گیا ہے۔ [109]

غیر معمولی روزے

[ترمیم]

فاضل روزہ یا رضاکارانہ روزہ، فاضل روزہ اس معنی میں: واجب پر ایک خاص طریقے سے جائز اضافہ اور رضاکارانہ طور پر اس معنی میں: جو بغیر واجب کے کرنا مشروع ہے اور اسے یہ بھی کہا جاتا ہے: مستحب یا مستحب روزہ۔ ، جو یہ ہے کہ: قانون کو بغیر ذمہ داری کے کیا کرنے کی ضرورت ہے۔ اور جو روزہ شرعاً واجب ہے وہ یا تو فرض ہے، یعنی: ماہِ رمضان کے روزے اور ہر روزہ نذر یا چھوڑے ہوئے روزہ وغیرہ سے فرض ہے یا غیر واجب طریقے سے۔ جو: نفلی روزہ ، جو روزوں کی دوسری قسم ہے، جو ہے: جو فرض نہیں ہے، لہٰذا یہ مستحب کے معنی میں ہے، خواہ ممنوع ہو یا مطلق اور اس میں متعدد قسمیں شامل ہوں، نفلی روزے فرض کیے گئے ہیں۔ فرض نماز میں ہونے والے عدم توازن کو دور کرنے کے لیے اور ثواب میں اضافہ کرنے کے لیے۔ سیدنا ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انھوں نے کہا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جس نے اللہ کی رضا کے لیے ایک دن کا روزہ رکھا ﷺ «من صام يوما في سبيل الله بَعَّدَ الله وجهه عن النار سبعين خريفا» اس پر «من صام يوما في سبيل الله بَعَّدَ الله وجهه عن النار سبعين خريفا» [110] [111] اور عبد اللہ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ انھوں نے کہا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اللہ کے ﷺ «إن أحب الصيام إلى الله صيام داود، وأحب الصلاة إلى الله صلاة داود، كان ينام نصف الليل ويقوم ثلثه وينام سدسه، وكان يصوم يوما ويفطر يوما» [112] «عن عامر بن مسعود عن النبي ﷺ علیہ وسلم نے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: سردیوں میں روزہ رکھنا سرد غنیمت ہے"۔ [113] [114]

فضول روزے کی اقسام، یہ یا تو ہے؛ مطلقاً ممنوعہ یا ممنوع بالا عمل وہ ہے جس کی شریعت میں بغیر کسی پابندی کے سفارش کی گئی ہے ، جیسے کہ کوئی شخص ایک دن روزہ رکھنا چاہتا ہے، تو وہ ان اوقات کے علاوہ جن میں روزہ رکھنا منع ہے، روزہ رکھ سکتا ہے۔ ممنوعہ بالادستی وہ ہے جس کی شریعت میں خاص طور پر سفارش کی گئی ہے اور یہ مختلف اقسام کی ہے، بشمول: عاشورہ کے دن روزہ رکھنا اور پیر اور جمعرات کو روزہ رکھنا۔ . روزہ چونکہ ایک ایسی عبادت ہے جس کے ذریعے بندہ خدا کا قرب حاصل کرتا ہے یا تو فرض ہے یا نفلی، فرض وہ بہترین عمل ہے جس سے بندہ قرب حاصل کرتا ہے اور حدیث قدسی میں ہے: «وما تقرب إلي عبدي بشيء أحب إلي مما افترضته عليه» حدیث قدسی: «ولا يزال عبدي يتقرب إلي بالنوافل حتى أحبه. . »

اسلامی قانون میں عبادت میں بہت گہرائی تک جانا منع ہے، یعنی اس میں مبالغہ آرائی کرنا جو ایک قسم کا تکبر سمجھا جاتا ہے۔ اور جو چیز اسلام میں مشروع ہے وہ عبادت میں ثالثی ہے، اس معنی میں کہ سب سے زیادہ اعتدال پسند، عادلانہ، اور سب سے زیادہ محبوب چیزوں کو خدا کے نزدیک لے جانا اور جو چیز عبادت میں مبالغہ آرائی کی ممانعت پر دلالت کرتی ہے وہ ہے جسے بخاری نے اپنی صحیح میں نقل کیا ہے۔ ابن مالک «جاء ثلاثة رهط إلى بيوت أزواج النبي ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم کی ازواج مطہرات کے گھر آئے، آپ صلی اللہ علیہ ﷺ ﷺ عبادت کے بارے میں پوچھا۔ کبھی نہیں اور دوسرے نے کہا: میں ہمیشہ روزہ رکھوں گا اور کبھی نہیں توڑوں گا اور دوسرے نے کہا: میں عورتوں سے پرہیز کروں گا اور کبھی شادی نہیں کروں گا، پھر رسول اللہ ﷺ اللہ علیہ وسلم ان کے پاس تشریف لائے اور فرمایا: وہ ہیں جنھوں نے فلاں فلاں کہا، میری سنت مجھ سے نہیں ہے۔ [115] اس حدیث میں عبادات میں بہت زیادہ گہرائی تک جانے کی ممانعت کا ثبوت ہے، کیونکہ اس میں ان واجبات اور فضیلتوں کے بارے میں کہا گیا ہے جو اس کے ساتھ مشروع ہیں اور انتہا پسندی یا انتہا پسندی کے معنی میں بہت گہرائی میں جانا جو شریعت سے متصادم ہے اور اس کے تصویر روزے اور ابدیت کے روزے کے سلسلے میں ظاہر ہوتی ہے۔ عبادات میں مبالغہ آرائی کی ممانعت کی وجہ یہ ہے کہ یہ واجبات کو ترک کرنے کا باعث بنتی ہے، جس طرح فرض نمازوں تک محدود رہنے اور ضرورت سے زیادہ چیزوں کو چھوڑنے کا عمل عبادت پر سستی اور بے عملی کو ترجیح دینے کا باعث بنتا ہے اور درمیانی امور میں سب سے بہتر ہے۔ نیز عبادات میں سختی کا تعارف اس کی اصلیت کے دوٹوک غضب کا باعث بنتا ہے۔ اور اس کا مفہوم: « : الزامی لام پر تاکید کرتے ہوئے، یعنی: ان میں سے ہر ایک نے دیکھا کہ وہ کم ہے اور انھوں نے یہ تعبیر کیا کہ جو شخص جانتا ہے کہ اللہ تعالیٰ نے اسے اس کے ماضی اور گناہوں کو معاف کر دیا ہے۔ بعد کے گناہوں کو مزید کام کی ضرورت نہیں ہے اور جو یہ نہیں جانتا کہ یہ اس کے ساتھ ہوا ہے اس کے ساتھ عبادت میں مبالغہ آرائی کی ضرورت ہے۔ اور اس نے حدیث میں بیان کیا کہ اس کا ہونا ضروری نہیں ہے اور اس نے اشارہ کیا کہ یہ ان میں سب سے زیادہ خوفناک ہے، الوہیت کے پہلو میں غلامی کے مقام کے بارے میں اور انھوں نے عائشہ کی حدیث میں اشارہ کیا اور المغیرہ نے رات کی نماز میں ایک اور معنی یہ کہہ کر کہ: «أفلا أكون عبدا شكورا» خدا کی معرفت اور اس کے حق کی ضرورت کا علم محض جسمانی عبادت سے بڑھ کر ہے۔ اور اس کا یہ قول: «أما والله إني لأخشاكم لله وأتقاكم له» ابن حجر نے کہا: اس کے جواب کی طرف اشارہ ہے جس پر انھوں نے اپنا معاملہ بنایا ہے کہ معاف کرنے والوں کو زیادہ ضرورت نہیں ہے۔ دوسروں کے برعکس عبادت کرو، جو سخت ہیں اور ایسا ہی تھا کیونکہ جو سخت ہے وہ اعتدال کے برعکس غضب سے محفوظ نہیں ہے، کیونکہ اس کا تسلسل ممکن ہے اور بہترین کام اس وقت تک ہے جب تک اس کا مالک ثابت قدم رہے۔ اور دوسری حدیث میں ان کے اس قول میں اس کی رہنمائی کی گئی تھی: «المنبت لا أرضا قطع ولا ظهرا أبقى»۔ آپ کا یہ قول: «فمن رغب عن سنتي فليس مني» : صرف عبادت میں مبالغہ آرائی کی وجہ سے « سے نکلنا ضروری نہیں اور ان کے الفاظ میں: کہ اس حدیث میں علمی مسائل پر بحث کرتے وقت خدا کی حمد و ثنا کو ترجیح دینے، ذمہ داروں کے لیے احکام واضح کرنے اور مجتہدوں کے شکوک و شبہات کو دور کرنے کی طرف اشارہ ہے۔[116]

نفلی روزے

[ترمیم]

فاضل روزہ اس لحاظ سے واجب سے زیادہ ہے کہ نفلی روزہ رکھنے والا عبادت میں ہے جو اس پر فرض نہیں ہے اور اس کے لحاظ سے روزہ ایک ایسی عبادت ہے جو شریعت کے مطابق واجب ہے۔ فرض روزہ کون سا فرض روزہ ہے، رمضان المبارک کا کون سا روزہ ہے اور کون سا فرض ہے جیسے نذر اور قضاء کے روزے، جہاں تک فضیلت کے روزے ہیں تو اس کے متعلق بھی تحفظات ہیں کیونکہ یہ نفلی ہے۔ عبادت کا عمل اور عبادت کا رضاکارانہ عمل اس کے آغاز میں ضروری نہیں ہے۔ یا تو عذر کے ساتھ ہو یا بغیر عذر کے اور اگر عذر کے ساتھ ہو؛ عذر کی وجہ سے اس میں خلل ڈالنا جائز ہے اور یہ حج کے برعکس ہے، کیونکہ اگر یہ نماز استغفار ہے، تو اس میں خلل نہیں ہوتا جب تک کہ وہ عذر نہ ہو، اس صورت میں عمرہ کرنا جائز ہے، اس صورت میں اس سے مستثنیٰ ہے۔ اس کی دو باتیں ہیں، ان میں سے ایک: عبادت میں خلل ڈالنا کام کو باطل کر دیتا ہے اور اللہ تعالیٰ نے فرمایا:﴿ولا تبطلوا أعمالكم﴾ اور رضاکار نے اپنے آپ کو انجام دیا ہے، اس لیے اس کا کام شروع کرنے کے بعد باطل نہیں ہوتا اور دوسرا: یہ کہ رضاکار پر فرض نماز بالکل واجب نہیں ہے۔ [117]اور جدہ اپنی دادی ام ہانی رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ان کے پاس تشریف لائے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے پینے کے لیے بلایا تو آپ نے پی لیا، پھر اس نے اسے دیا تو اس نے پی لیا اور اس نے کہا: یا رسول اللہ میں روزے سے تھی۔ انھوں نے کہا: صحابہ کرام رضی اللہ عنہم میں سے بعض اہل علم کے نزدیک یہ عمل ہے کہ اگر کوئی نفلی روزہ افطار کرے تو اس پر واجب نہیں ہے۔ [118]اس کی قضاء کرو جب تک کہ وہ قضاء کرنا پسند نہ کرے، یہی سفیان الثوری، احمد، اسحاق اور شافعی کا قول ہے۔ [119]انھوں نے سنن الترمذی کی تفسیر میں کہا ہے: اس کا یہ قول: "وہ اپنے آپ کے ساتھ امانت دار ہے" اسم میں، اس نے مرکب میں کہا، اس کا مطلب ہے: اگر وہ اپنے ساتھ امانت دار ہے تو اپنی امانت کو جس طرح چاہے تصرف کرے۔ . اور اپنے لیے حاکم کے معنی یہ ہیں کہ وہ روزے میں داخل ہونے کے بعد اپنے لیے حاکم ہے، اگر چاہے تو روزہ رکھے۔[120]

عون بن ابی جحیفہ «آخى النبي ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم، سلمان اور ابو درداء کے درمیان ہیں، چنانچہ سلمان ابو درداء کے پاس گئے۔ اس نے ام درداء کو بے حیائی دیکھا تو اس سے کہا: تمھارا کیا کام ہے، اس نے کہا: تمھارے بھائی ابو درداء کو دنیا کی کوئی ضرورت نہیں، تو ابو درداء آئے اور اس کے لیے کھانا بنایا، آپ نے فرمایا: کھا لو۔ اس لیے کہ میں روزے سے ہوں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: میں اس وقت تک نہیں کھاتا جب تک تم نہ کھاؤ، چنانچہ جب رات ہوئی تو ابو درداء اٹھے اور کہا: سو جاؤ، پھر سو گئے اور کہا: سو جاؤ، جب رات ختم ہو گئی۔ رات کو سلمان نے کہا: اب اٹھو، تم پر تمھارے رب کا حق ہے ﷺ اور تمھاری جان کا تم پر حق ہے اور تمھارے گھر والوں کا تم پر حق ہے، لہٰذا ہر ایک کو اس کا حق دو ﷺ (أبو جحيفة وهب السوائي يقال وهب الخير)» ابن حجر نے کہا: اور سلمان کی حدیث مہمان کی قیمت «نهانا رسول الله ﷺ اللہ علیہ وسلم نے ہمیں مہمان کے لیے بہت زیادہ ہونے سے منع کیا ہے۔" اسے احمد نے ہدایت کی تھی۔ اور الحاکم اور اس میں سلمان کا اپنے مہمان کے ساتھ واقعہ ہے، جہاں اس نے اس سے جو کچھ اسے دیا گیا تھا اس سے زیادہ مانگا، تو اس نے اس کی وجہ سے اپنا طہارت گروی رکھ لیا، پھر جب وہ فارغ ہوا تو اس شخص نے کہا: الحمد للہ۔ خدا کے لیے جس نے ہمیں جو کچھ دیا ہے اس سے ہمیں راضی کیا ہے۔ سلمان نے اس سے کہا: اگر میں راضی ہو جاتا تو میری طہارت بیعت نہ ہوتی۔ [121]

اور جو شخص نفلی روزے یا نفلی نماز میں داخل ہو تو اس کے لیے مستحب ہے کہ وہ ان کو پورا کرے جو شافعی کا قول ہے اور شافعیوں کا بھی یہی قول ہے جیسا کہ امام نووی نے روایت کیا ہے۔ المجموع میں ہے اور اس نے مزید کہا کہ اگر وہ عذر کے ساتھ یا اس کے بغیر ان کو منسوخ کر دے تو وہ ایسا کر سکتا ہے، لیکن بغیر عذر کے ان کو منسوخ کرنا ناپسندیدہ ہے، کیونکہ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:﴿ولا تبطلوا أعمالكم﴾جہاں تک عذر کے ساتھ نکلنے کا تعلق ہے تو یہ ناپسندیدہ ہے اور نہ اابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول «لكل أهل عمل باب من أبواب الجنة يدعون منه بذلك العمل ولأهل الصيام باب يقال له الريان» [122]س کی قضاء ہے اور اس کے لیے ضروری ہے کہ وہ اس کی قضاء کرے خواہ عذر کے ساتھ ہو یا بغیر عذر کے۔ اور احناف کے نزدیک: روزے کی ابتدا کرکے اس کی قضاء واجب ہے، یعنی شروع کرنے کے بعد فاسد روزہ واجب ہوجاتا ہے اور اس کے باطل ہونے کے لیے اس کی قضا لازم ہے۔[123][124]

اور ابن قدامہ نے المغنی میں اپنے اس قول کی عبارت پر اپنی تقریر میں ذکر کیا ہے: « اور اگر اس نے قضاء کی تو یہ ہے۔ اچھا۔ وہ اس سے باہر ہو گیا، تو اسے خرچ نہ کرو۔ ابن عمر اور ابن عباس سے مروی ہے کہ انھوں نے روزہ رکھا اور پھر افطار کر لیا، ابن عمر نے کہا: اس میں کوئی حرج نہیں جب تک کہ رمضان کی نذر یا قضا نہ ہو، ابن عباس نے کہا: اگر آدمی نفلی روزہ رکھتا ہے اور پھر اس میں خلل ڈالنا چاہتا ہے تو اسے توڑ دیتا ہے اور اگر نفلی نماز میں داخل ہو اور پھر اس میں خلل ڈالنا چاہے تو اسے توڑ دیتا ہے، ابن مسعود رضی اللہ عنہ نے کہا: جب تم روزہ رکھنا چاہتے ہو تو تم آخری پر ہو۔ دو باتیں اگر چاہو تو روزہ رکھو اور چاہو تو افطار کرو۔ [125] النخعی، ابوحنیفہ اور مالک نے کہا: اس پر شروع کرنا واجب ہے اور وہ اسے عذر کے بغیر نہیں چھوڑتا اور اگر وہ نکل جائے تو اس پر فیصلہ کیا جائے گا۔ مالک کے نزدیک: اس پر قضاء لازم نہیں۔

اور جو لوگ کہتے ہیں کہ اس پر قضاء واجب ہے انھوں نے عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت کی ہے کہ انھوں نے کہا «أصبحت أنا وحفصة صائمتين متطوعتين، فأهدي لنا حيس فأفطرنا، ثم سألنا رسول الله ﷺ اللہ علیہ وسلم نے دعا کی اور فرمایا: "ایک دن اس کی جگہ گزارو۔" [126] اور جن لوگوں نے کہا کہ روزہ کی قضاء واجب نہیں ہے وہ نقل کرتے ہیں جو مسلم، ابوداؤد اور نسائی نے عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت کی ہے، انھوں نے کہا: "رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم، اللہ ﷺ اور سلام۔ وہ ایک دن میرے پاس آئے اور کہا: تمھارے پاس کچھ ہے؟ اور میں نے کہا: نہیں۔ اس نے کہا: میں روزے سے ہوں۔ پھر اس کے بعد وہ دن گذر گیا اور مجھے حیس دیا گیا تو میں نے اس میں سے کچھ اس کے لیے چھپا دیا اور اس نے حیس کو پسند کیا، یہ اس شخص کی طرح ہے جو اپنے مال میں سے صدقہ کرتا ہے اور اگر چاہے تو خرچ کرتا ہے۔ کاش وہ اسے روک لے۔" «دخلت على رسول الله ﷺ خدمت میں حاضر ہوئی، آپ صلی اللہ علیہ وسلم ایک مشروب لائے، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے پلایا، میں نے اس میں سے پیا، پھر میں نے عرض کیا: یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم میں نے افطار کیا اور میں روزہ سے تھا، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان سے فرمایا: کیا تم نے کچھ قضاء کی ہے؟ اس نے کہا: نہیں۔ «قلت: إني صائمة فقال رسول الله ﷺ نے فرمایا: "رضاکار خود اس کا حاکم ہے، اس لیے اگر تم چاہو تو روزہ رکھو اور اگر تم چاہو تو روزہ رکھو۔" کاش، افطار کرو۔" اور اس لیے کہ ہر روزہ اگر پورا ہو تو نفلی تھا، اگر چھوڑ دیا تو اس کی قضا نہیں، گویا یہ خیال ہے کہ رمضان کا ہے، پھر شعبان کا ہے یا شوال کا۔[127]

نفلی روزے کی اقسام

[ترمیم]

ماہ محرم کے روزے رکھنا

[ترمیم]

محرم کا مہینہ مرغوب ہے اور یہ فضیلت والے روزوں میں سے ایک قسم ہے جس کے بارے میں حدیث سے ثابت ہے کہ روزہ رکھنا مستحب ہے اور اس کی فضیلت بیان کی جاتی ہے، ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انھوں نے کہا: رسول اللہ صلی اللہ ﷺ نے فرمایا: آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا گیا کہ فرض کے بعد کون سی نماز افضل ہے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «الصلاة في جوف الليل» پوچھا گیا: پھر رمضان کے بعد کون سے روزے افضل ہیں؟آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا «شہر الله الذي تدعونه المحرم» ۔ اسے احمد، مسلم، ابوداؤد نے روایت کیا ہے۔ اور ایک روایت میں ہے « اسے بخاری کے علاوہ کسی جماعت نے روایت کیا ہے اور ابن ماجہ میں صرف روزہ کی فضیلت ہے ۔ [128]

عاشورہ کا روزہ

[ترمیم]

عاشورہ کے دن کا روزہ محرم کی دسویں تاریخ ہے اور یہ اسلام میں قانون سازی کے مراحل میں جائز روزوں میں سے ایک ہے، ان پر ماہ رمضان کے روزے رکھنا فرض تھا اور اب اس کو ادا کرنے کی کوئی درخواست نہیں ہے۔ یہ شریعت کے مطابق جیسا کہ ماضی میں تھا۔ اور حدیث میں ہے: « [129] «حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ قریش زمانہ جاہلیت میں عاشورہ کے دن روزہ رکھتے تھے، پھر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے انھیں روزہ رکھنے کا حکم دیا۔ یہاں تک کہ رمضان آگیا اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو چاہے روزہ رکھے اور جو چاہے افطار کر لے۔   [130] «سمعت رسول الله ﷺ اللہ علیہ وسلم کو آج تک یہ فرماتے ہوئے سنا: یہ یوم عاشورہ ہے اور اللہ تعالیٰ نے تم پر اس کا روزہ فرض نہیں کیا۔ اور میں روزے سے ہوں. النووی نے کہا: « معاویہ بن ابی سفیان رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انھوں نے کہا: میں نے رسول اللہ ﷺ «إن هذا يوم عاشوراء، ولم يكتب عليكم صيامه، وأنا صائم، فمن شاء صام، ومن شاء فليفطر» ۔ ابن عباس رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ انھوں نے کہا: ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم مدینہ تشریف لائے اور یہودیوں کو عاشورہ کا روزہ رکھتے ہوئے دیکھا، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «ما هذا؟» انھوں نے کہا: ایک نیک دن، جس میں اللہ تعالیٰ نے موسیٰ اور بنی اسرائیل کو ان کے دشمنوں سے نجات دی، اس لیے موسیٰ نے روزہ رکھا اور آپ ﷺ علیہ وسلم نے فرمایا: «أنا أحق بموسى منكم» اس نے روزہ رکھا اور روزہ رکھنے کا حکم دیا۔ اتفاق کیا اور ابو موسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انھوں نے فرمایا: یہ عاشورہ کا دن تھا جس کی تعظیم یہودیوں نے کی اور اسے تہوار کے طور پر منایا، چنانچہ رسول اللہ صلی اللہ ﷺ وسلم نے «صوموه أنتم» : «صوموه أنتم» اتفاق کیا ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ انھوں نے کہا: جب ﷺ اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے عاشورہ کے دن روزہ رکھا اور روزہ رکھنے کا حکم دیا تو انھوں نے کہا: اے اللہ! رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم: یہ وہ دن ہے جس کی یہود و نصاریٰ تسبیح کرتے ہیں۔ . اس نے کہا: «إذا كان العام المقبل -إن شاء الله- صمنا اليوم التاسع» ﷺ اسے مسلم اور ابو داؤد نے روایت کیا ہے۔ اور ایک اور نسخہ میں: "رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «لئن بقيت إلى قابل لأصومن التاسع» یعنی عاشورہ کے دن۔ اسے احمد اور مسلم نے روایت کیا ہے۔ علمائے کرام نے روزے کے تین طریقے بتائے ہیں، جن میں سے ایک یہ ہے: صرف محرم کی دسویں تاریخ کا روزہ، دوسرا: نویں اور دسویں تاریخ کا روزہ اور تیسرا: تین روزے: نویں، دسویں اور گیارہویں کا۔

شوال کے چھ روزے رکھنا

[ترمیم]

فضول روزوں میں سے ایک قسم شوال کے مہینے کے چھ روزے ہیں اور شوال کا مہینہ قمری سال کے مہینوں کی ترتیب میں دسواں مہینہ ہے اور یہ ماہ رمضان کے بعد آتا ہے اور یہ مستحب ہے۔ اس کے چھ روزے رکھنا، چاہے لگاتار ہوں یا چھٹپٹ، سوائے شوال کے پہلے دن کے، جو عید الفطر کا دن ہے، اس صورت میں روزہ رکھنا جائز ہے، جیسا کہ روزہ رکھنا حرام ہے۔ عید الفطر اور الاضحی کے ایام۔ شوال کے چھ روزے رکھنے کی رغبت کا ثبوت: مسلم نے اپنی صحیح میں روایت کیا ہے: "ابو ایوب الانصاری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انھوں نے ان سے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اللہ ﷺ نماز پڑھتے ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «من صام رمضان ثم أتبعه ستا من شوال كان كصيام الدهر» اور ایک روایت میں ہے «   ’’جس نے رمضان کے روزے رکھے اور اس کے بعد شوال کے چھ روزے رکھے تو گویا اس نے عمر بھر کے روزے رکھے‘‘۔[131]

عرفہ کے دن کا روزہ غیر حاجیوں کے لیے

[ترمیم]
نویں ذی الحجہ کو کوہِ عرفہ پر کھڑے حجاج

یوم عرفہ جو عشرہ ذو الحجہ میں سے ایک ہے اور یہ ذو الحجہ کا نواں دن ہے اور اس کا روزہ رکھنا مستحب ہے کیونکہ حدیث میں آیا ہے: عرفہ دو سال کا کفارہ ہے، اس سے ایک سال پہلے اور ایک سال بعد۔ کیونکہ عرفات میں کھڑے ہونے کی صورت میں اس وقت کا روزہ اسے اس دن ذکر و عبادت سے کمزور کر دیتا ہے اور اس کے روزے کی ممانعت ایک حدیث میں ہے: ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: : "رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے عرفات میں عرفات کے دن روزہ رکھنے سے منع فرمایا ہے۔" اسے احمد، ابوداؤد، نسائی اور ابن ماجہ نے روایت کیا ہے۔ ترمذی کہتے ہیں کہ اہل علم نے عرفہ کے دن روزہ رکھنے کی سفارش کی ہے سوائے عرفہ کے۔[132] اور ام الفضل سے روایت ہے کہ: "انھوں نے عرفہ کے دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے روزے میں شک کیا۔ اتفاق کیا اور ابوداؤد کی سنن میں عکرمہ سے مروی ہے کہ انھوں نے کہا: ہم ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کے ساتھ ان کے گھر میں تھے، انھوں نے ہمیں بتایا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس دن روزہ رکھنے سے منع فرمایا ہے۔ عرفہ میں عرفہ کا۔ ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کی اس حدیث کا ظاہری مفہوم یہ ہے کہ عرفات میں روزہ رکھنا جائز نہیں ہے اور ممانعت کا اصول یہ ہے کہ یہ حرام ہے، لیکن علما نے بغیر ممانعت کے اسے ناپسندیدہ قرار دیا ہے، اس دن روزہ رکھنا ہر اس شخص کے لیے مستحب ہے جو عرفات میں روزہ رکھے۔ ان لوگوں سے نفرت ہے جو عرفات میں بطور حجاج ہیں۔ الخطابی نے کہا: یہ شہوت کی ممانعت ہے، واجب کی ممانعت نہیں، کیونکہ احرام والے نے اس خوف سے منع کیا کہ کہیں وہ اس جگہ دعا اور استغفار میں کمزور ہو جائے گا، یہ دو سال کا کفارہ ہے، ایک سال پہلے۔ اور اس کے ایک سال بعد۔ یہ غیر حاجیوں کے لیے عرفہ کے دن روزہ رکھنے کی رغبت کی دلیل ہے، جہاں تک عرفہ کے دن حاجی کے روزے کے بارے میں اختلاف ہے، عثمان بن ابی العاص رضی اللہ عنہ سے روایت ہے۔ اور ابن الزبیر کہتے ہیں کہ وہ روزہ رکھتے تھے اور احمد بن حنبل نے کہا: اگر وہ روزہ رکھنے کی استطاعت رکھتا ہو تو روزہ رکھتا ہے اور اگر افطار کر لے تو اس کی ضرورت کا دن ہے۔ اپنے روزے کو حاجی کے لیے ترجیح دیتے تھے اور عطاء فرماتے تھے: میں سردیوں میں روزہ رکھتا ہوں اور گرمیوں میں روزہ نہیں رکھتا اور مالک اور سفیان ثوری حاجی کے لیے ناشتا کا انتخاب کرتے تھے اور شافعی بھی۔ . اور ابن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ انھوں نے کہا: "نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے روزہ نہیں رکھا، نہ ابوبکر، نہ عمر، نہ عثمان اور نہ میں نے روزہ رکھا۔ اسے روزہ رکھو۔" اس نے ختم کیا۔ [133]اور صحیح البخاری میں ہے: "ام الفضل بنت الحارث سے مروی ہے کہ عرفہ کے دن لوگوں نے ان سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے روزے کے بارے میں بحث کی اور بعض نے فرمایا: انھوں نے کہا کہ وہ روزے سے ہے اور ان میں سے بعض نے کہا کہ میں روزہ نہیں رکھتا۔ اور بخاری کی ایک روایت میں یہ بھی ہے: "میمونہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ لوگوں نے عرفہ کے دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے روزے کے بارے میں شک کیا، اس لیے انھوں نے ایک پیغام بھیجا۔[134] جب وہ پارکنگ میں کھڑا تھا تو اس نے دودھ پی لیا جب لوگ دیکھ رہے تھے۔ الشوکانی نے کہا: اور جان لو کہ مسلم اور سنن کے مرتبین کے نزدیک ابی قتادہ کی حدیث کا ظاہری مفہوم عرفہ کے دن روزہ رکھنے کو پچھلے دو سال اور آئندہ کے کفارہ کے طور پر قرار دیا گیا ہے۔ ہرگز روزہ رکھنا کیونکہ یہ قربانی کے دن اور ایام تشریق کی یاد کے قریب ہے اور اس کی وجہ یہ ہے کہ وہ عیدیں ہیں اور یہ کھانے پینے کے دن ہیں۔ اور عرفہ کے دن روزہ رکھنا حاجی کے لیے ناپسندیدہ ہونے کی وجہ یہ ہے کہ اس سے عرفہ کے دن دعا اور یاد میں اور حج کے کام کرنے میں کمزوری پیدا ہو سکتی ہے۔ اور کہا گیا: بلکہ اس لیے کہ یہ اہلِ جماعت کے لیے عید کا دن ہے کیونکہ وہ اس میں جمع ہوتے ہیں اور ابو قتادہ کی حدیث اس کی تائید کرتی ہے۔ اور ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کی حدیث میں ہے کہ یہ اعلان ان کے روزے سے بالکل منع کرتا ہے۔ اور جو اس بات پر دلالت کرتا ہے کہ اس کا روزہ حاجی کے لیے پسندیدہ نہیں ہے: جو ابوداؤد نے اپنی سنن میں ام الفضل بنت الحارث کی روایت سے نقل کیا ہے کہ عرفہ کے دن لوگ ان سے عرفہ کے روزے کے بارے میں جھگڑ رہے تھے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور ان میں سے بعض نے کہا کہ میں روزے سے ہوں اور بعض نے کہا کہ میں روزہ نہیں رکھتا۔ المنذری نے کہا: اسے بخاری اور مسلم نے شامل کیا ہے۔[135]

پیر اور جمعرات کو روزہ رکھنا

[ترمیم]

سوموار اور جمعرات کے روزوں میں سے ایک قسم کا روزہ ہے اور یہ ہفتے کے دوران مطلوبہ روزہ ہے، جو اس شخص کے لیے ہے جو رضاکارانہ طور پر ہفتے کے «إن ﷺ رکھنا چاہتا ہے۔ [136] [137] اور ان کے روزوں کی مستحسن ہونے کی ترغیب کی دلیل سے یہ ثابت ہوا کہ پیر اور جمعرات کے دن ان پر اعمال کا نزول ہوتا ہے اور اس کی وجہ یہ ہے کہ روزہ عمل ہے اس لیے مسلمان کے لیے مستحب ہے۔ روزے کی حالت میں اپنے اعمال کو ظاہر کرنے کے لیے ان پر روزہ رکھو اور اس کا ثبوت ایک حدیث سے ملتا ہے: ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ: "رسول ﷺ علیہ وسلم نے فرمایا: «تعرض الأعمال كل إثنين وخميس فأحب أن يعرض عملي وأنا صائم» ۔ «تعرض الأعمال كل إثنين وخميس فأحب أن يعرض عملي وأنا صائم» ۔ [138] [139] سوموار کے روزے کے بارے میں بھی ایک حدیث بیان کی گئی ہے: ابو قتادہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ: " ﷺ صلی اللہ علیہ وسلم سے سوموار کے روزے کے بارے میں پوچھا گیا، تو آپ «ذلك يوم ولدت فيه، وأنزل علي فيه» [140] اور مسلم کا قول ہے: "ابو قتادہ الانصاری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے پیر کے دن روزہ رکھنے کے بارے میں پوچھا گیا تو آپ نے فرمایا: «فيه ولدت وفيه أنزل علي» [141] سوموار اور جمعرات کو روزہ رکھنے کی مستحسن دلیل میں؛ کیونکہ یہ دو دن ہیں جن میں اعمال پیش کیے جاتے ہیں اور حدیث میں ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «ذلك يوم ولدت فيه وأنزل علي فيه» اور پیر وہ دن ہے جس دن آپ صلی اللہ علیہ وسلم پیدا ہوا اور یہ وہ دن بھی ہے جس دن خدا نے اس پر وحی نازل کی۔ [142]

ہر مہینے تین روزے رکھنا

[ترمیم]

«عن ابوہریرہ رضی اللہ عنہ نے فرمایا: میرے دوست، ﷺ رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے اس کی نصیحت کی۔ تین چیزیں: ہر مہینے میں تین دن کے روزے رکھنا، دو دو رکعت نماز ادا کرنا اور سونے سے پہلے وتر پڑھنا۔ [143] ابن دقیق العید کہتے ہیں: ان امور کی تصدیق کے لیے ان کا حکم دینے کی نیت سے دلائل موجود ہیں اور حدیث میں تین دن کے روزے رکھنے کا ذکر آیا ہے، جو مہینے کا ثواب جمع کرنے والا ہے، اس لیے کہ ایک نیکی دس گنا ہے اور ہم اس میں جو کچھ ہے اس کا تذکرہ کیا ہے اور جو لوگ دیکھتے ہیں کہ یہ بغیر دگنا ثواب ہے، مہینہ کی قدر میں روزے رکھنے اور تحقیق کے روزوں کے درمیان فرق حاصل کرنے کے لیے۔ حدیث میں ہر مہینے کے تین دن کے روزے رکھنے اور ظہر کی نماز کے مستحب ہونے کی دلیل ہے۔ ابوذر رضی اللہ عنہ سے روایت «أمرنا رسول الله ﷺ وسلم نے ہمیں مہینے میں تین سفید دنوں کے روزے رکھنے کا حکم دیا: تیرہ، چودہ اور پندرہ۔ [144]

ایک دن روزہ رکھنا اور ایک دن افطار کرنا

[ترمیم]

فضول روزہ کی اقسام میں سے ایک روزہ ایک دن روزہ رکھنا اور ایک دن افطار کرنا ہے جو خدا کے نبی حضرت داؤد علیہ السلام کا روزہ ہے اور یہ ان لوگوں کے لیے مستحب ہے جو عشرہ کے تمام دنوں میں اپنی مرضی سے روزہ رکھنا چاہتے ہیں۔ سال، رمضان کے مہینے کے روزوں کے علاوہ اور ان دنوں میں جن میں روزہ رکھنا منع ہے اور اس قسم کے روزے ان لوگوں کے لیے ہیں جو زیادہ فضیلت والے روزوں کی خواہش رکھتے ہیں اور اپنے آپ میں پاتے ہیں، وہ اسے حق ضائع کیے بغیر کر سکتا ہے۔ فرائض اور جہاں تک اس سے تجاوز کرنے کا تعلق ہے، یہ حرام ہے۔ «عن عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہ کی روایت سے کہ اللہ تعالیٰ ان دونوں سے راضی ہو، ﷺ اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی روایت سے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تین دن کے روزے رکھو۔ میں مزید سنبھال سکتا ہوں اور وہ اس وقت تک جاری رہا جب تک اس نے تین میں کہا ۔ [145] اور ابی سلمہ بن عبد الرحمٰن سے، عبد اللہ بن عمرو کی سند سے، انھوں نے کہا: "رسول ﷺ «لقد أخبرت أنك تقوم الليل وتصوم النهار» «فصم، وافطر وصل ونم، فإن لجسدك عليك حقا، وإن لزوجك عليك حقا، وإن لزورك عليك حقا، وإن بحسبك أن تصوم من كل شہر ثلاثة أيام» «فصم من كل جمعة ثلاثة أيام» چنانچہ میں نے زور دیا، آپ نے مجھے تاکید کی، تو میں نے عرض کیا: یا رسول اللہ، میں طاقت پاتا ہوں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا «صم صوم نبي الله داود، ولا تزد عليه» میں نے «صم صوم نبي الله داود، ولا تزد عليه» کیا: یا رسول اللہ اور داؤد «كان يصوم يوما، ويفطر يوما» " [146] «عن عبد الله بن عمرو بن العاص قال: قال رسول الله ﷺ کے نزدیک سب سے زیادہ پسندیدہ روزے داؤد علیہ السلام کا روزہ ہے اور سب سے زیادہ محبوب روزہ ہے۔ خدا سے دعا داؤد کی دعا ہے۔ [147]

نگار خانہ

[ترمیم]

روزے کے فضائل فرمودات نبوی کی روشنی میں

[ترمیم]

احادیث کریمہ میں روزے کے بہت سے فضائل بیان کیے گئے ہیں۔ حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے ارشادات ملاحظہ فرمائیں:

  1. جب رمضان آتا ہے آسمان کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں اور ایک روایت میں ہے کہ رحمت کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں اور جہنم کے دروازے بند کر دے ئے جاتے ہیں۔ اور شیاطین زنجیر وں میں جکڑ دیے جاتے ہیں [148]
  2. جنت ابتدائے سال سے، سال آئندہ تک رمضان کے لیے آراستہ کی جاتی ہے اور جب رمضان کا پہلا دن آتا ہے تو جنت کے پتوں سے عرش کے نیچے ایک ہوا حور عین پر چلتی ہے وہ کہتی ہیں۔ اے رب ! تو اپنے بندوں سے ہمارے لیے ان کو شوہر بنا جن سے ہماری آنکھیں ٹھنڈی ہوں اور ان کی آنکھیں ہم سے ٹھنڈی ہوں [149]
  3. جنت میں آٹھ دروازے ہیں ان میں سے ایک دروازہ کا نام ریان ہے۔ اس دروازے سے وہی جائیں گے جو روزہ رکھتے ہیں۔[150][مکمل حوالہ درکار]
  4. روزہ دار کے لیے دو خوشیاں ہیں۔ ایک افطار کے وقت اور ایک اپنے رب سے ملنے کے وقت اور روزہ دار کے منہ کی بو، اللہ عزوجل کے نزدیک مشک سے زیادہ پا کیزہ ہے۔[151]
  5. رمضان المبارک کا مہینہ وہ مہینہ ہے کہ اس کا اول رحمت ہے۔ اور اس کا اوسط (درمیانہ حصہ) مغفرت ہے اور آخر، جہنم سے آزادی۔[149]
  6. روزہ اللہ عزوجل کے لیے ہے اس کا ثواب اللہ عزوجل کے سوا کوئی نہیں جانتا [152]
  7. ہر شے کے لیے زکوۃ ہے اور بدن کی زکوٰۃ روزہ ہے اور نصف صبر ہے۔[153]
  8. روزہ دار کی دعا افطار کے وقت رد نہیں کی جاتی۔[154]
  9. اگر بندوں کی معلوم ہوتا کہ رمضان کیا چیز ہے تو میری امت تمنا کرتی کہ پورا سال رمضان ہی ہو۔[155]
  10. میری امت کو ماہ رمضان میں پانچ باتیں دی گئیں کہ مجھ سے پہلے کسی نبی کو نہ ملیں۔ وہ پانچ باتیں درج ذیل ہیں
  • اول یہ کہ جب رمضان کی پہلی رات ہوتی ہے اللہ عزوجل ان کی طرف نظر فرماتا ہے۔ اور جس کی طرف نظر فرمائے گا۔ اسے کبھی عذاب نہ کرے گا۔
  • دوسری یہ کہ شام کے وقت ان کے منہ کی بو، اللہ کے نزدیک مشک سے زیادہ اچھی ہے۔
  • تیسری یہ کہ ہر دن اور رات میں فرشتے ان کے لیے استغفار کرتے ہیں۔
  • چوتھی یہ کہ اللہ عزوجل جنت کو حکم فرماتا ہے۔ کہتا ہے مستعد ہو جا اور میرے بندوں کے لیے مزیں ہو جا (بن سنور جا) قریب ہے کہ دنیا کی تعب (مشقت تکان) سے یہاں آکر آرام کریں۔
  • پانچویں یہ کہ جب آخر رات ہوتی ہے۔ تو ان سب کی مغفرت فرما دیتا ہے۔ کسی نے عرض کی کیا وہ شب قدر ہے؟ فرمایا ’’نہیں‘‘ کیا تو نہیں دیکھتا کہ کام کرنے والے کام کرتے ہیں جب کام سے فارغ ہوتے ہیں۔ اس وقت مزدوری پاتے ہیں؟ [149]

11۔ اللہ عزوجل رمضان میں ہر روز د س لاکھ کو جہنم سے آزاد فرماتا ہے۔ اور جب رمضان کی انتیسویں رات ہوتی ہے تو مہینے بھر میں جتنے آزاد کیے ان کے مجموعہ کے برابر اس ایک رات میں آزاد کرتا ہے۔ پھر جب عید الفطر کی رات آتی ہے۔ ملائکہ خوشی کرتے ہیں اور اللہ عزوجل اپنے نور کی خاص تجلی فرماتا اور فرشتوں سے فرماتا ہے ’’ اے گروہ ملائکہ اس مزدور کا کیا بدلہ ہے جس نے کام پورا کر لیا؟ فرشتے عرض کرتے ہیں ۔۔ ’’اس کو پورا اجر دیا جائے‘‘ اللہ عزوجل فرماتا ہے میں تمھیں گواہ کرتا ہوں کہ میں ان سب کو بخش دیا۔[156]

روزے کی اقسام

[ترمیم]

روزے کی پانچ اقسام ہیں:

  1. فرض
  2. واجب
  3. نفل
  4. مکروہ تنزیہی
  5. مکروہ تحریمی

بیرونی روابط

[ترمیم]

روزہ، احکام، فضاہل و مساہل پر اردو، انگریزی، سندھی، بنگلہ اور عربی میں کتب

حوالہ جات

[ترمیم]
  1. قاموس معجم المعاني - معنى كلمة صوم
  2. سورة البقرة الآية: (183)
  3. سورة البقرة، الآية: (185)
  4. مختار الصحاح للرازي، حرف الصاد (ص و م)، ج1 ص180 و181.
  5. القاموس المحيط مجد الدين محمد بن يعقوب الفيروزآبادي، باب الميم فصل الصاد، ج1 ص 1042
  6. مختار الصحاح للرازي، حرف الصاد (ص و م)، ج1 ص180 و181.
  7. القاموس المحيط مجد الدين محمد بن يعقوب الفيروزآبادي، باب الميم فصل الصاد، ج1 ص 1042.
  8. معجم مقاييس اللغة كتاب الصاد، باب الصاد والواو وما يثلثهما، ج3 ص324.
  9. سورة مريم آية: (26)
  10. تفسير الطبري، سورة البقرة، آية: (183)، القول في تأويل قوله تعالى: ، ج3 ص409 وما بعدها
  11. تفسير الطبري، سورة البقرة، آية: (183)، القول في تأويل قوله تعالى: ، ج3 ص409 وما بعدها
  12. ،فتح الباري شرح صحيح البخاري، أحمد بن علي بن حجر العسقلاني، كتاب الصوم، باب وجوب صوم رمضان، ص: (123)، (124)
  13. المبسوط، لمحمد بن أحمد بن أبي سهل السرخسي، (كتاب الصوم)، الجزء الثالث، ص: (55)
  14. المغني لابن قدامة كتاب الصيام ص: (3)و (4)
  15. مواهب الجليل في شرح مختصر الشيخ خليل، محمد بن محمد الحطاب، كتاب الصيام، باب ما يثبت به رمضان، ج2 ص: (377) وما بعدها، دار الفكر ط3
  16. مواهب الجليل في شرح مختصر الشيخ خليل، محمد بن محمد الحطاب، كتاب الصيام، باب ما يثبت به رمضان، ج2 ص: (377) وما بعدها، دار الفكر ط3
  17. فتح القدير للشوكاني ج1 ص116 وما بعدها دار المعرفة
  18. سنن أبي داود، كتاب السنة، باب لزوم السنة حديث رقم: (4604)
  19. محمد شمس الحق العظيم آبادي (1415 هـ/ 1995م)۔ عون المعبود، كتاب السنة، باب لزوم السنة حديث رقم: (4604)۔ دار الفكر۔ صفحہ: 277 وما بعدها 
  20. صحيح مسلم كتاب الصيام باب صوم يوم عاشوراء حديث رقم: (1125)
  21. النووي (1416هـ / 1996م)۔ شرح النووي على مسلم كتاب الصيام باب صوم يوم عاشوراء حديث رقم: (1125)۔ دار الخير۔ صفحہ: 198 وما بعدها 
  22. تفسير القرآن العظيم، لابن كثير، تفسير سورة البقرة تفسير قوله تعالى: ، ج1 ص: (500).
  23. الحسين بن مسعود البغوي۔ تفسير البغوي، سورة البقرة، تفسير قوله تعالى: ﴿أياما معدودات فمن كان منكم مريضا أو على سفر فعدة من أيام أخر﴾ آية: 184، ج1۔ دار طيبة۔ صفحہ: 196 وما بعدها 
  24. تفسير القرآن العظيم، لابن كثير، تفسير سورة البقرة تفسير قوله تعالى: ، ج1 ص: (500).
  25. تفسير القرآن العظيم، لابن كثير، تفسير سورة البقرة تفسير قوله تعالى: ، ج1 ص: (399).
  26. الحسين بن مسعود البغوي۔ سورة البقرة، تفسير قوله تعالى: «أحل لكم ليلة الصيام الرفث إلى نسائكم هن لباس لكم وأنتم لباس لهن» الجزء الأول (بزبان العربية)۔ دار طيبة۔ صفحہ: 206 وما بعدها۔ 8 أغسطس 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  27. متفق عليه، رياض الصالحين للنووي، باب وجوب الحج وفضله، حديث رقم: (1271)
  28. صحيح البخاري، كتاب الإيمان، باب قول النبي صلى الله عليه وسلم بني الإسلام على خمس، حديث رقم: (8) انظر الفتح ص60
  29. أحمد بن علي بن حجر العسقلاني (1407 هـ/ 1986م)۔ شرح صحيح البخاري كتاب الإيمان باب قول النبي صلى الله عليه وسلم: بني الإسلام على خمس، حديث رقم: 8 ج1 (بزبان العربية)۔ دار الريان للتراث۔ صفحہ: 60 وما بعدها 
  30. صحيح مسلم، كتاب الإيمان، باب بيان أركان الإسلام ودعائمه العظام حديث رقم: (16) ح1
  31. صحيح مسلم، كتاب الإيمان، باب بيان أركان الإسلام ودعائمه العظام حديث رقم: (16) ح2
  32. صحيح مسلم، كتاب الإيمان، باب بيان أركان الإسلام ودعائمه العظام حديث رقم: (16) ح3
  33. صحيح مسلم، كتاب الإيمان، باب بيان أركان الإسلام ودعائمه العظام حديث رقم: (16) ح4
  34. صحيح البخاري، حديث رقم: (1792)
  35. أحمد بن علي بن حجر العسقلاني (1407 هـ/ 1986م)۔ فتح الباري شرح صحيح البخاري، كتاب الصيام، باب وجوب صوم رمضان، حديث رقم: (1792) (بزبان العربية)۔ دار الريان للتراث۔ صفحہ: 123 و124 
  36. فتح الباري شرح صحيح البخاري، كتاب الرقائق، باب التواضع، ص349 وما بعدها، حديث رقم: (6137) آرکائیو شدہ 2017-08-07 بذریعہ وے بیک مشین
  37. كشف القناع، مقدمة كتاب الصيام، الجزء الثاني، ص: (300).
  38. كشف القناع، مقدمة كتاب الصيام، الجزء الثاني، ص: (300).
  39. صحيح البخاري، باب قول النبي صلى الله عليه وسلم إذا رأيتم الهلال فصوموا وإذا رأيتموه فأفطروا وقال صلة عن عمار من صام يوم الشك فقد عصى أبا القاسم صلى الله عليه وسلم
  40. يحيى بن شرف النووي (1416 هـ/ 1996م)۔ المنهاج شرح صحيح مسلم بن الحجاج كتاب الصوم، باب وجوب صوم رمضان لرؤية الهلال والفطر لرؤية الهلال، وأنه إذا غم في أوله أو آخره أكملت عدة الشهر ثلاثين يوما، حديث رقم: (1080) (بزبان العربية)۔ دار الخير۔ صفحہ: 154 وما بعدها۔ 6 أكتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 ربيع الثاني/ 1436 هـ 
  41. أحمد بن علي بن حجر العسقلاني (1407 هـ/ 1986م)۔ شرح صحيح البخاري، كتاب الصيام، باب قول النبي صلى الله عليه وسلم: «لا نكتب ولا نحسب»، رقم الحديث: (1814) (بزبان العربية)۔ دار الريان للتراث۔ صفحہ: 152 
  42. محمد بن جرير الطبري۔ تفسير الطبري تفسير سورة البقرة، القول في تأويل قوله تعالى: «وكلوا واشربوا حتى يتبين لكم الخيط الأبيض من الخيط الأسود من الفجر»، الجزء الثالث۔ دار المعارف۔ صفحہ: 509 إلى 529 
  43. صحيح البخاري، باب قدر كم بين السحور وصلاة الفجر، ص: 678
  44. صحيح البخاري، باب قول النبي صلى الله عليه وسلم لا يمنعنكم من سحوركم أذان بلال، ص: 678
  45. تفسير (الطبري)، محمد بن جرير الطبري، الجزء الثالث، ص: (516)- (517)، تفسير سورة البقرة، القول في تأويل قوله تعالى: ﴿أُحِلَّ لَكُمْ لَيْلَةَ الصِّيَامِ الرَّفَثُ إِلَى نِسَآئِكُمْ هُنَّ لِبَاسٌ لَّكُمْ وَأَنتُمْ لِبَاسٌ لَّهُنَّ عَلِمَ اللّهُ أَنَّكُمْ كُنتُمْ تَخْتانُونَ أَنفُسَكُمْ فَتَابَ عَلَيْكُمْ وَعَفَا عَنكُمْ فَالآنَ بَاشِرُوهُنَّ وَابْتَغُواْ مَا كَتَبَ اللَّهُ لَكُمْ وَكُلُوا وَاشْرَبُوا حَتَّى يَتَبَيَّنَ لَكُمُ الْخَيْطُ الْأَبْيَضُ مِنَ الْخَيْطِ الْأَسْوَدِ مِنَ الْفَجْرِ ثُمَّ أَتِمُّوا الصِّيَامَ إِلَى اللَّيْلِ وَلَا تُبَاشِرُوهُنَّ وَأَنْتُمْ عَاكِفُونَ فِي الْمَسَاجِدِ تِلْكَ حُدُودُ اللَّهِ فَلَا تَقْرَبُوهَا كَذَلِكَ يُبَيِّنُ اللَّهُ آيَاتِهِ لِلنَّاسِ لَعَلَّهُمْ يَتَّقُونَ﴾ [[[سورہ سانچہ:نام سورہ 2|2]]:187] ﴿وكلوا واشربوا حتى يتبين لكم الخيط الأبيض من الخيط الأسود من الفجر﴾.
  46. محمد بن جرير الطبري۔ تفسير الطبري تفسير سورة البقرة، القول في تأويل قوله تعالى: «وكلوا واشربوا حتى يتبين لكم الخيط الأبيض من الخيط الأسود من الفجر»، الجزء الثالث۔ دار المعارف۔ صفحہ: 509 إلى 529 
  47. صحيح البخاري، كتاب الصوم، باب فضل الصوم، حديث رقم: (1795)
  48. الفتح ص125
  49. فتح الباري شرح صحيح البخاري ص125
  50. صحيح مسلم، كتاب الطهارة، باب الصلوات الخمس والجمعة إلى الجمعة ورمضان إلى رمضان مكفرات لما بينهن ما اجتنبت الكبائر، حديث رقم: (233)
  51. صحيح مسلم، 233
  52. شرح النووي على مسلم، يحيي بن شرف أبو زكريا النووي، كتاب الطهارة، باب الصلوات الخمس والجمعة إلى الجمعة ورمضان إلى رمضان مكفرات لما بينهن ما اجتنبت الكبائر، حديث رقم: (233)، ص469 و470، دار الخير، 1416 هـ/ 1996م.
  53. صحيح مسلم، كتاب الصيام، باب استحباب صيام ثلاثة أيام من كل شہر وصوم يوم عرفة وعاشوراء والإثنين والخميس، الحديث الثالث رقم: (1162)
  54. صحيح مسلم، كتاب الصيام، باب استحباب صيام ثلاثة أيام من كل شہر وصوم يوم عرفة وعاشوراء والإثنين والخميس، الحديث الرابع رقم: (1162)
  55. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب الصوم كفارة حديث رقم: 1796 (بزبان العربية) 
  56. نور الدين علي بن أبي بكر الهيثمي (1414 هـ/ 1994م)۔ مجمع الزوائد ومنبع الفوائد، كتاب الأدعية، باب فيمن لا يرد دعاؤهم من مظلوم وغائب وغيره رقم الحديث: (17228)۔ مكتبة القدس۔ 5 أبريل 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  57. رواه البيهقي في شعب الإيمان.
  58. علي بن سلطان محمد القاري (1422 هـ/ 2002م)۔ مرقاة المفاتيح شرح مشكاة المصابيح كتاب الصوم حديث رقم: (1963)۔ دار الفكر۔ صفحہ: 1366۔ 7 أغسطس 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  59. "الدر المنثور للسيوطي"۔ 07 اگست 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 جولا‎ئی 2023 
  60. ابن ماجه۔ سنن ابن ماجه، كتاب الصوم باب، حديث رقم: 1638 (بزبان العربية)۔ 6 مارس 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  61. رواه الترمذي وقال: «وفي الباب عن معاذ بن جبل وسهل بن سعد وكعب بن عجرة وسلامة بن قيصر وبشير ابن الخصاصية واسم بشير زحم بن معبد والخصاصية هي أمه، قال أبو عيسى: وحديث أبي هريرة حديث حسن غريب من هذا الوجه».
  62. محمد بن عبد الرحمن بن عبد الرحيم المباركفوري۔ تحفة الأحوذي شرح سنن الترمذي كتاب الصوم، باب ما جاء في فضل الصوم حديث رقم: (764) (بزبان العربية)۔ دار الكتب العلمية۔ صفحہ: 393۔ 6 مارس 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  63. صحيح البخاري، كتاب الصوم، باب فضل الصوم
  64. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب الريان للصائمين، حديث رقم: 1797 (بزبان العربية) 
  65. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب الريان للصائمين، حديث رقم: 1798 (بزبان العربية) 
  66. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب هل يقول إني صائم إذا شُتِمَ؟، حديث رقم: 1805، انظر أيضا: فتح الباري ص142 (بزبان العربية) 
  67. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب من صام رمضان إيمانا واحتسابا ونية وقالت عائشة رضى الله تعالى عنها عن النبي صلى الله عليه وسلم يبعثون على نياتهم، حديث رقم: 1802 (بزبان العربية) 
  68. صحيح البخاري كتاب الإيمان، باب صوم احتسابا من الإيمان، حديث رقم: (38)
  69. الفتح ص138..
  70. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب هل يقال رمضان أو شهر رمضان ومن رأى كله واسعا، وقال النبي من صام رمضان، وقال لا تقدموا رمضان. حديث رقم: 1799 (بزبان العربية) 
  71. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب هل يقال رمضان أو شهر رمضان ومن رأى كله واسعا، وقال النبي من صام رمضان، وقال لا تقدموا رمضان، حديث رقم: 1800 (بزبان العربية) 
  72. الأمالي الخمسينية للشجري، في ذكر ليلة القدر وفضلها حديث رقم: (1007).
  73. عبد الله بن محمد بن أبي شيبة (1414 هـ/ 1994م)۔ المصنف، كتاب الصيام، (1012) (3) فضل الصيام وثوابه، الجزء الثاني (بزبان العربية)۔ دار الفكر۔ صفحہ: 423 وما بعدها۔ 8 أغسطس 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  74. عبد الله بن محمد بن أبي شيبة (1414 هـ/ 1994م)۔ المصنف، كتاب الصيام، (1012) (3) فضل الصيام وثوابه، الجزء الثاني (بزبان العربية)۔ دار الفكر۔ صفحہ: 423 وما بعدها۔ 8 أغسطس 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  75. عبد الله بن محمد بن أبي شيبة (1414 هـ/ 1994م)۔ المصنف، كتاب الصيام، (1012) (3) فضل الصيام وثوابه، الجزء الثاني (بزبان العربية)۔ دار الفكر۔ صفحہ: 423 وما بعدها۔ 8 أغسطس 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  76. عبد الله بن محمد بن أبي شيبة (1414 هـ/ 1994م)۔ المصنف، كتاب الصيام، (1012) (3) فضل الصيام وثوابه، الجزء الثاني (بزبان العربية)۔ دار الفكر۔ صفحہ: 423 وما بعدها۔ 8 أغسطس 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  77. عبد الله بن محمد بن أبي شيبة (1414 هـ/ 1994م)۔ المصنف، كتاب الصيام، (1012) (3) فضل الصيام وثوابه، الجزء الثاني (بزبان العربية)۔ دار الفكر۔ صفحہ: 423 وما بعدها۔ 8 أغسطس 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  78. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب أجود ما كان النبي صلى الله عليه وسلم يكون في رمضان، حديث رقم: 1803 (بزبان العربية) 
  79. محمد بن إسماعيل البخاري (1414 هـ/ 1993م)۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب وجوب صوم رمضان وقول الله تعالى: ﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُواْ كُتِبَ عَلَيْكُمُ الصِّيَامُ كَمَا كُتِبَ عَلَى الَّذِينَ مِن قَبْلِكُمْ لَعَلَّكُمْ تَتَّقُونَ﴾ [[[سورہ [[:سانچہ:نام سورہ 2]]|2]]:183]، حديث رقم: 1795 (بزبان العربية)۔ دار ابن كثير۔ صفحہ: 669 ما بعدها۔ 23 مارس 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 ربيع الثاني/ 1436 هـ  وصلة إنترويكي مضمنة في URL العنوان (معاونت)
  80. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب هل يقول إني صائم إذا شتم؟، حديث رقم: 1805 
  81. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب الصوم لمن خاف على نفسه العزوبة، حديث رقم: 1806 (بزبان العربية)۔ دار ابن كثير۔ صفحہ: 673 و674 
  82. تفسير القرآن العظيم، لابن كثير، الجزء الأول، تفسير سورة البقرة تفسير قوله تعالى: ﴿{{{1}}}﴾، ص: (397).
  83. موفق الدين عبد الله بن أحمد بن قدامة۔ المغني لابن قدامة، الجزء الثالث، كتاب الصيام، مبطلات الصيام، الفصل الثالث: يفطر بكل ما أدخله إلى جوفه أو مجوف في جسده (الأولى ایڈیشن)۔ دار إحياء التراث العربي۔ صفحہ: (2020) 
  84. رواه الخمسة إلا النسائي عن أبي هريرة. نيل الأوطار للشوكاني، ج4 ص204. الفقه الإسلامي ج3 ص1706.
  85. متفق عليه
  86. رواه أحمد
  87. رواه البخاري ومسلم.
  88. يحيى بن شرف النووي۔ المجموع شرح المهذب كتاب الصيام، باب السحور في الصوم، ج6 (بزبان العربية) (ط.د د.ط ایڈیشن)۔ مطبعة المنيرية۔ صفحہ: 404 وما بعدها 
  89. رواه مسلم في صحيحه
  90. يحيى بن شرف النووي۔ المجموع شرح المهذب كتاب الصيام، باب السحور في الصوم، ج6 (بزبان العربية) (ط.د د.ط ایڈیشن)۔ مطبعة المنيرية۔ صفحہ: 404 وما بعدها 
  91. رواه أبو داود والترمذي وقال: هو حديث حسن صحيح.
  92. رواه أبو داود والترمذي وقال: حديث حسن ورواه الدارقطني، وقال: إسناده صحيح.
  93. ^ ا ب پ الإمام النووي۔ المجموع شرح المهذب، كتاب الصيام، ما يفطر عليه الصائم ج6 (د.ت د.ط ایڈیشن)۔ مطبعة المنيرية۔ صفحہ: 407 وما بعدها۔ 7 أغسطس 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  94. رواه أبو داود والنسأئي
  95. سنن أبي داود، باب القول عند الإفطار، وفي بعض النسخ باب ما يقول إذا أفطر. (2357).
  96. رواه الترمذي وقال: هو حديث صحيح ورواه النسائي أيضا وغيره.
  97. ^ ا ب يحيى بن شرف النووي۔ المجموع شرح المهذب كتاب الصيام، باب السحور في الصوم، ج6 (بزبان العربية) (ط.د د.ط ایڈیشن)۔ مطبعة المنيرية۔ صفحہ: 404 وما بعدها 
  98. رواه أحمد انظر المجموع للنووي
  99. صحيح البخاري، كتاب الصوم، باب قدر كم بين السحور وصلاة الفجر. رقم: (1821).
  100. فتح الباري شرح صحيح البخاري، كتاب الصوم، باب قدر كم بين السحور وصلاة الفجر، صفحة رقم: (165).
  101. رواه البخاري ومسلم
  102. تفسير الطبري
  103. صحيح البخاري، كتاب الصوم باب تأخير السحور، حديث رقم: (1820).
  104. فتح الباري شرح صحيح البخاري، كتاب الصوم، باب قدر كم بين السحور وصلاة الفجر، صفحة رقم: (165).
  105. سورة الطلاق آية: (2)
  106. تفسير ابن كثير، سورة البقرة ج1 ص513 وما بعدها
  107. صحيح البخاري كتاب الصوم، باب تعجيل الفطر حديث رقم: (1856).
  108. فتح الباري شرح صحيح البخاري لابن حجر العسقلاني حديث رقم: (1856) ص234 وما بعدها.
  109. ابن حجر العسقلاني۔ فتح الباري شرح صحيح البخاري كتاب الصوم، باب: متى يحل فطر الصائم رقم الحديث: 1853۔ دار الريان للتراث۔ صفحہ: 231۔ 7 أغسطس 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  110. ابن دقيق العيد (1416 هـ/ 1995م)۔ إحكام الأحكام شرح عمدة الأحكام، كتاب الصيام، حديث من صام يوما في سبيل الله، رقم: (204) الحديث الثامن۔ دار الجيل 
  111. متفق عليه وأخرجه البخاري في كتاب الصيام الجهاد والسير ـ باب فضل الصوم في سبيل الله ـ برقم: (2840).
  112. إحكام الأحكام شرح عمدة الأحكام كتاب الصيام حديث أحب الصيام إلى الله صيام داود، 198 - الحديث الثاني
  113. قال أبو عيسى هذا حديث مرسل عامر بن مسعود لم يدرك النبي صلى الله عليه وسلم وهو والد إبراهيم بن عامر القرشي الذي روى عنه شعبة والثوري.
  114. سنن الترمذي كتاب الصوم عن رسول الله صلى الله عليه وسلم، باب ما جاء في الصوم في الشتاء، رقم: (797).
  115. محمد بن إسماعيل البخاري الجعفي، صحيح البخاري (1414 هـ/ 1993م)۔ كتاب النكاح، باب الترغيب في النكاح، الجزء الخامس. بسم الله الرحمن الرحيم كتاب النكاح باب الترغيب في النكاح لقوله تعالى فانكحوا ما طاب لكم من النساء الآية، حديث رقم: (4776)۔ دار ابن كثير۔ صفحہ: 1949 
  116. أحمد بن علي بن حجر العسقلاني (1407 هـ/ 1986م)۔ كتاب النكاح، باب الترغيب في النكاح، حديث رقم: (4776) (بزبان العربية)۔ دار الريان للتراث۔ صفحہ: 7 و8 
  117. شرح الكوكب المنير في أصول الفقه، لابن النجار الفتوحي، فصل: (المندوب) ج1، ص408 آرکائیو شدہ 2020-01-26 بذریعہ وے بیک مشین
  118. سنن الترمذي حديث رقم: (732)
  119. سنن الترمذي كتاب الصوم عن رسول الله ، باب ما جاء في إفطار الصائم المتطوع، رقم: (732)
  120. محمد بن عبد الرحمن بن عبد الرحيم المباركفوري۔ شرح سنن الترمذي كتاب الصوم عن رسول الله صلى الله عليه وسلم، باب ما جاء في إفطار الصائم المتطوع، رقم: (732)۔ دار الكتب العلمية۔ صفحہ: 356 وما بعدها 
  121. أحمد بن علي ابن حجر العسقلاني (1407 هـ/ 1986م)۔ فتح الباري شرح صحيح البخاري، كتاب الآداب، باب صنع الطعام والتكلف للضيف، حديث رقم: (5788)۔ دار الريان للتراث۔ صفحہ: 551 
  122. عبد الله بن محمد بن أبي شيبة (1414 هـ/ 1994م)۔ المصنف، كتاب الصيام، (1012) (3) فضل الصيام وثوابه، الجزء الثاني (بزبان العربية)۔ دار الفكر۔ صفحہ: 423 وما بعدها۔ 8 أغسطس 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  123. أبو بكر مسعود بن أحمد الكاساني (1406هـ/1986م)۔ بدائع الصنائع في ترتيب الشرائع، كتاب الصوم (الثانية ایڈیشن)۔ دار الكتب العلمية۔ صفحہ: 75 وما بعدها 
  124. فصل حكم فساد الصوم ج2 ص94 وما بعدها آرکائیو شدہ 2017-08-07 بذریعہ وے بیک مشین
  125. موفق الدين عبد الله بن أحمد بن قدامة (1405 هـ/ 1985م)۔ المغني لابن قدامة كتاب الصيام مسألة من دخل في صيام تطوع فخرج منه فلا قضاء عليه، الجزء الثالث، مسألة رقم: (2097) (الأولى ایڈیشن)۔ دار إحيار التراث العربي۔ صفحہ: 44 وما يليها 
  126. موفق الدين عبد الله بن أحمد بن قدامة (1405 هـ/ 1985م)۔ المغني لابن قدامة كتاب الصيام مسألة من دخل في صيام تطوع فخرج منه فلا قضاء عليه، الجزء الثالث، مسألة رقم: (2097) (الأولى ایڈیشن)۔ دار إحيار التراث العربي۔ صفحہ: 44 وما يليها 
  127. موفق الدين عبد الله بن أحمد بن قدامة (1405 هـ/ 1985م)۔ المغني لابن قدامة كتاب الصيام مسألة من دخل في صيام تطوع فخرج منه فلا قضاء عليه، الجزء الثالث، مسألة رقم: (2097) (الأولى ایڈیشن)۔ دار إحيار التراث العربي۔ صفحہ: 44 وما يليها 
  128. محمد بن علي الشوكاني (1413هـ/1993م)۔ نيل الأوطار، أبواب صلاة التطوع، باب ما جاء في قيام الليل، الجزء الثالث حديث رقم: (949) (الأولى ایڈیشن)۔ دار الحديث۔ صفحہ: 69 
  129. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب وجوب صوم رمضان وقول الله تعالى: ، حديث رقم: 1793 (بزبان العربية) 
  130. محمد بن إسماعيل البخاري۔ صحيح البخاري، كتاب الصوم باب وجوب صوم رمضان وقول الله تعالى: ، حديث رقم: 1794 (بزبان العربية) 
  131. مسلم بن الحجاج القشيري النيسابوري۔ صحيح مسلم كتاب الصيام، باب استحباب صوم ستة أيام من شوال إتباعا لرمضان، الجزء الثاني، (1984) باب استحباب صوم ستة أيام من شوال إتباعا لرمضان رقم الحديث: (1164)۔ دار إحياء الكتب العربية۔ صفحہ: 822 
  132. محمد شمس الحق العظيم آبادي (1415 هـ/ 1995م)۔ عون المعبود سنن أبي داود، كتاب الصوم، باب في صوم يوم عرفة بعرفة، باب في صوم يوم عرفة بعرفة، حديث رقم: (2440)۔ دار الفكر۔ صفحہ: 85 
  133. صحيح البخاري، كتاب الصوم، باب صوم يوم عرفة، حديث رقم: (1887).
  134. صحيح البخاري حديث رقم: (1888)
  135. محمد شمس الحق العظيم آبادي (1415 هـ/ 1995م)۔ عون المعبود سنن أبي داود، كتاب الصوم، باب في صوم يوم عرفة بعرفة، باب في صوم يوم عرفة بعرفة، حديث رقم: (2441)۔ دار الفكر 
  136. رواه الخمسة إلا أبا داود، لكنه له من رواية أسامة بن زيد. قال الترمذي: حسن صحيح.
  137. محمد بن علي الشوكاني (1413 هـ/ 1993م)۔ نيل الأوطار، كتاب الصيام، أبواب صوم التطوع، باب الحث على صوم الإثنين والخميس، الجزء الرابع، رقم الحديث: (1725) (1 ایڈیشن)۔ دار الحديث۔ صفحہ: 295 
  138. رواه أحمد والترمذي، ولابن ماجه معناه ولأحمد والنسائي هذا المعنى من حديث أسامة بن زيد.
  139. محمد بن علي الشوكاني (1413 هـ/ 1993م)۔ نيل الأوطار، كتاب الصيام، أبواب صوم التطوع، باب الحث على صوم الإثنين والخميس، الجزء الرابع، رقم الحديث: (1726) (1 ایڈیشن)۔ دار الحديث۔ صفحہ: 294 و295 
  140. رواه أحمد ومسلم وأبو داود.
  141. صحيح مسلم، كتاب الصيام، باب استحباب صيام ثلاثة أيام من كل شہر وصوم يوم عرفة وعاشوراء والإثنين والخميس، الحديث الخامس رقم: (1162)
  142. محمد بن علي الشوكاني (1413 هـ/ 1993م)۔ نيل الأوطار، كتاب الصيام، أبواب صوم التطوع، باب الحث على صوم الإثنين والخميس، الجزء الرابع، رقم الحديث: (1727) (1 ایڈیشن)۔ دار الحديث۔ صفحہ: 294 و295 
  143. ابن دقيق العيد (1416 هـ/ 1995م)۔ إحكام الأحكام شرح عمدة الأحكام كتاب الصيام حديث أوصاني خليلي بثلاث، الحديث الثالث رقم: (199)۔ دار الجيل۔ صفحہ: 416 وما بعدها 
  144. أخرجه النسائي في السنن الصغرى حديث رقم: (2390)
  145. رواه البخاري في كتاب الصوم باب صوم يوم وإفطار يوم، حديث رقم: (1877)
  146. مسند الإمام أحمد حديث رقم: (6690)
  147. إحكام الأحكام شرح عمدة الأحكام، لابن دقيق العيد، كتاب الصيام حديث أحب الصيام إلى الله صيام داود، الحديث الثاني رقم: (198)
  148. صحیحین
  149. ^ ا ب پ بیہقی
  150. ترمذی
  151. بخاری و مسلم
  152. طبرانی
  153. ابن ماجہ
  154. بہیقی
  155. ابن خزیمہ
  156. اصبہانی