صيتا بنت عبد العزيز

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
صيتا بنت عبد العزيز
(عربی میں: صيتة بنت عبد العزيز آل سعود ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1930  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ریاض  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 13 اپریل 2011 (80–81 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ریاض  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن ریاض  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Saudi Arabia.svg سعودی عرب  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد عبدالعزیز ابن سعود  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدہ فہدہ بنت عاصی الشریم  ویکی ڈیٹا پر (P25) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
لطیفہ بنت عبد العزیز آل سعود،  الجوہرہ بنت عبد العزیز آل سعود،  البندری بنت عبد العزیز آل سعود،  عبداللہ بن عبدالعزیز،  مساعد بن عبدالعزیز آل سعود،  متعب بن عبدالعزیز آل سعود،  فہد بن عبدالعزیز،  محمد بن عبدالعزیز آل سعود،  ترکی اول بن عبدالعزیز آل سعود،  خالد بن عبد العزیز،  فیصل بن عبدالعزیز آل سعود،  سعود بن عبدالعزیز،  ترکی ثانی بن عبدالعزیز آل سعود،  مشعل بن عبد العزیز آل سعود،  عبدالرحمان بن عبدالعزیز آل سعود،  سطام بن عبدالعزیز آل سعود،  سلطان بن عبدالعزیز،  نائف بن عبدالعزیز آل سعود،  سلمان بن عبدالعزیز،  احمد بن عبدالعزیز آل سعود،  عبدالمجید بن عبدالعزیز آل سعود،  ہذلول بن عبدالعزیز آل سعود،  بدر بن عبدالعزیز آل سعود،  فواز بن عبدالعزیز آل سعود،  مشہور بن عبدالعزیز آل سعود،  عبد الالہ بن عبدالعزیز آل سعود،  بندربن عبدالعزیز آل سعود،  ممدوح بن عبدالعزیز آل سعود،  منصور بن عبدالعزیز آل سعود،  ناصر بن عبدالعزیز آل سعود،  نواف بن عبدالعزیز آل سعود،  طلال بن عبدالعزیز آل سعود،  سعد بن عبدالعزیز آل سعود،  مقرن بن عبدالعزیز آل سعود،  ثامر بن عبدالعزیز آل سعود،  حمود بن عبدالعزیز آل سعود،  عبد المحسن بن عبدالعزیز آل سعود،  ماجد بن عبدالعزیز آل سعود،  مشاری بن عبدالعزیز آل سعود،  ہیا بنت عبد العزیز آل سعود،  لؤلؤہ بنت عبد العزیز آل سعود،  سلطانہ بنت عبد العزیز آل سعود،  نوف بنت عبد العزیز آل سعود  ویکی ڈیٹا پر (P3373) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
خاندان آل سعود  ویکی ڈیٹا پر (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

صیتا بنت عبدالعزیز آل سعود (عربی: صيتة بنت عبد العزيز آل سعود ؛ 1930 - 13 اپریل 2011) سعودی عرب کے شاہ عبدالعزیز کی بیٹی اور شاہ عبداللہ کی چھوٹی ہمشیرہ تھیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

شاہ عبداللہ ، صیتا کا بھائی

شہزادی صیتا 1930 میں پیدا ہوئیں۔ وہ شاہ عبدالعزیز اور فہدہ بنت عاصی الشریم کی بیٹی تھیں جو ان سے شادی شدہ دو راشدی خواتین میں سے ایک تھیں۔ [1] وہ شاہ عبداللہ کی چھوٹی ہمشیرہ تھیں جن کے ساتھ وہ بہت قریب تھیں۔ اس کی ایک بہن بھی تھی، نوف بنت عبدالعزیز، [2] جو اگست 2015 میں انتقال کرگئیں۔

سرگرمیاں[ترمیم]

صیتا بنت عبدالعزیز فلاحی کاموں میں بہت سرگرم تھیں۔ لیکن، وہ خواتین کے گروہوں جیسے شہزادیوں کی کونسل بنانے میں بھی سرگرم تھیں۔ مزید برآں، پہلا اور دوسرا سعودی خواتین کا فورم ان کی سرپرستی میں بالترتیب 2009 اور 2010 میں منعقد ہوا۔ [3] مئی 2011 میں ان کی سرپرستی میں "سعودی خواتین کی کل" کے عنوان سے ایک کانفرنس بھی منعقد ہوئی۔ اس نے مملکت میں بہت سے خیراتی اداروں کو مالی امداد فراہم کی اور مختلف تحقیقی پروگراموں اور خاندانی بہبود کے منصوبوں کے لیے بھی عطیات دیے۔ ان کی سرپرستی میں خواتین کی ملازمت کے حوالے سے یوم عملی زندگی منعقد کیے گئے۔

شہزادیوں کی کونسل[ترمیم]

2003 میں، شہزادی صیتا نے شہزادیوں کی کونسل کا آغاز کیا۔ کونسل کو شاہی خاندان کی ذیلی شاخوں میں سے ہر ایک میں سے ایک رکن کو شامل کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا تھا۔ یہ سعودی عرب میں شاہی خاندان کی خواتین کی پہلی کونسل تھی۔ کونسل کے تمام ممبران سے کہا گیا کہ وہ سماجی کاموں جیسے کہ صحت کی دیکھ بھال، بچوں، خواتین اور کاروبار میں دلچسپی لیں۔ کونسل ایوانِ سعود میں ایک اہم ادارہ بن گئی۔ خیراتی کام پر توجہ دینے کے بجائے، یہ ایک تھنک ٹینک اور لابنگ باڈی کے طور پر کام کرتا ہے۔ [4]

کونسل کو مہینے میں دو بار، ہر دوسرے ہفتے میں دو یا تین گھنٹے تک مشاورت کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا تھا۔ ملاقاتوں میں خواتین سے متعلقہ موضوعات پر توجہ مرکوز کرنے والے سماجی مسائل پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ ان ملاقاتوں کے نتائج زیادہ تر بعض مسائل کے حل کے لیے غیر پابند تجاویز، اور متعلقہ سرکاری اداروں کو درخواستیں تھے۔ ابتدائی مرحلے میں کونسل کے ارکان کی تعداد بائیس تھی۔ 2011 تک کونسل کے ارکان کی تعداد تیس شاہی خواتین تھی۔

ذاتی زندگی[ترمیم]

عبداللہ بن محمد بن سعود اور ان کے بچے ترکی، بندر، نورا اور فہد (1961)

صیتا بنت عبدالعزیز نے عبداللہ بن محمد بن سعود الکبیر کو ہٹانے کے بعد اپنی پہلی کزن سے شادی کی۔ [5] وہ محمد بن سعود الکبیر کے بڑے بیٹے اور صیتا کی خالہ نورا بنت عبدالرحمن اور سعود الکبیر کے پوتے تھے۔ [6] عبداللہ بن محمد آل سعود خاندان کونسل کے ارکان میں سے ایک تھے جو جون 2000 میں اس وقت کے ولی عہد عبداللہ نے نجی امور پر بات کرنے کے لیے قائم کی تھی، جس میں شہزادوں کی کاروباری سرگرمیاں اور شہزادیوں کی غیر شاہی خاندانوں سے شادیاں شامل تھیں۔ [7] ان کا انتقال جنوری 1994 میں 68 سال کی عمر میں ہوا۔

صیتا بنت عبدالعزیز اور عبداللہ بن محمد کے پانچ بچے تھے، تین بیٹے، ترکی، فہد اور بندر اور دو بیٹیاں، نورا اور نوف۔ [2] ان کا بیٹا ترکی شاہ عبداللہ کے مشیروں میں سے ایک تھا اور 1980 کی دہائی میں قومی گارڈ میں سابق فوجی افسر تھا۔ [8] ایک اور بیٹا فہد سابق معاون وزیر دفاع ہے۔ [9] شہزادی صیتا کے بیٹوں کو آل سعود کی الکبیر شاخ کا اہم رکن سمجھا جاتا ہے۔ [6] اس کی بیٹی نورا بنت عبداللہ (پیدائش 1958) کی شادی شاہ عبداللہ کے بڑے بیٹے خالد بن عبداللہ سے ہوئی۔ [6] ایک اور بیٹی نوف 1963 میں پیدا ہوئی۔ [6]

موت[ترمیم]

صیتا بنت عبدالعزیز طویل علالت کے بعد 13 اپریل 2011 کو انتقال کر گئیں۔[10] ان کی نماز جنازہ 14 اپریل 2011 کو ریاض کی امام ترکی بن عبداللہ مسجد میں ادا کی گئی۔ [10] نماز جنازہ میں شاہ عبداللہ، ولی عہد سلطان، شہزادہ نایف، شہزادہ سلمان، شہزادہ بندر، شہزادہ ترکی، سعد حریری اور دیگر اعلیٰ شہزادوں نے شرکت کی۔ صدر بارک اوباما نے شاہ عبداللہ کو فون کرکے تعزیت کا اظہار کیا۔ [11]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Madawi Al Rasheed (1991). Politics in an Arabian Oasis. The Rashidis of Saudi Arabia. New York: I. B. Tauirs & Co. Ltd. صفحہ 9. ISBN 9781860641930. 
  2. ^ ا ب "Biography of Her Royal Highness Princess Seetah bint Abdulaziz". Seetah Award. اخذ شدہ بتاریخ 02 جولا‎ئی 2020. 
  3. "About Us". SIC Group. 04 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2012. 
  4. Haifa Al Dosari (9 April 2019). "Princess Lolowah Al Faisal's celebrated journey for women's rights". Women 2030. اخذ شدہ بتاریخ 02 جولا‎ئی 2020. 
  5. ^ ا ب پ ت Sabri Sharif (2001). The House of Saud in Commerce: A Study of Royal Entrepreneurship in Saudi Arabia. New Delhi: I. S. Publications. صفحہ 151. ISBN 978-81-901254-0-6. 
  6. Simon Henderson (August 2009). "After King Abdullah: Succession in Saudi Arabia". The Washington Institute. اخذ شدہ بتاریخ 27 مئی 2012. 
  7. "The role of Saudi princes in uniform". Wikileaks. 27 May 1985. اخذ شدہ بتاریخ 25 مئی 2012. 
  8. ^ ا ب "King Abdullah attends Princess Seeta's funeral prayer". Life in Riyadh. 15 April 2011. 28 جنوری 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 25 مئی 2012. 
  9. "King Abdullah receives telephone call from U.S. President". Royal Embassy, Washington D.C. 16 April 2011. 05 نومبر 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 25 مئی 2012.