صہبا حسین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
صہبا حسین
معلومات شخصیت
مقام پیدائش لکھنؤ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت بھارت  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ پنسلوانیا
دہلی یونیورسٹی  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سماجی کارکن  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
 فل برائٹ اسکالرشپ  ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

صہبا حسین ایک بھارتی سماجی اور کاروباری کارکن ہیں۔ [1] وہ لکھنؤ میں سیلف ایمپلائیڈ خواتین ایسوسی ایشن (SEWA) کی شریک بانی اور اعزازی خزانچی ہیں۔ [2] [3] 2000ء میں قائم ہونے والی لکھنؤ میں قائم بی ای ٹی آئی (بیٹر ایجوکیشن تھرو انوویشن) فاؤنڈیشن کی بانی بورڈ ممبر اور ایگزیکٹو ڈائریکٹر ہیں۔ ان کا شمار بھارتی مسلم شخصیات میں ہوتا ہے۔

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

صہبا حسین لکھنؤ، اتر پردیش میں پیدا ہوئے۔

اس نے فلبرائٹ اسکالر کے طور پر یونیورسٹی آف پنسلوانیا، فلاڈیلفیا سے پوسٹ گریجویٹ کی تعلیم حاصل کی اور دہلی یونیورسٹی سے طبی اور نفسیاتی سماجی کام میں ماسٹر ڈگری بھی کی۔ [4]

عملی زندگی[ترمیم]

صہبا حسین نے تقریباً 17 سال تک یونیسیف کے ساتھ ایک بین الاقوامی اور قومی پیشہ ور کے طور پر کام کیا، جن میں ان کی ملکی نمائندہ بھوٹان، یونیسیف انڈیا کے ہیلتھ سیکشن کے سربراہ اور بہار اور اترپردیش کے لیے چیف اپر انڈیا آفس کے ذمہ دار کے طور پر ان کی ذمہ داریاں قابل ذکر تھیں۔ ریاستی نمائندہ، یوپی

اس نے 1984ء میں رونا بنرجی کے ساتھ مل کر ایس ای ڈبلیو اے، لکھنؤ کی مشترکہ بنیاد رکھی، جو چکنکاری صنعت میں مصروف خواتین کو منظم کرنے میں شامل رہی ہے۔ اسے اقوام متحدہ ہیبی ٹیٹ کی طرف سے 2006ء کا بہترین طرز عمل کا ایوارڈ دیا گیا تھا۔ [5] 2000ء میں، وہ لکھنؤ میں قائم ہونے والی بی ای ٹی آئی فاؤنڈیشن کی بانی رکن بن گئیں اور بہرائچ، بلرام پور، بارہ بنکی، گونڈا، کھیری، للت پور، لکھنؤ، شراوستی، سیتا پور کے علاقوں میں کام کر رہی ہیں۔ [6]

وہ 2005-2008ء کے دور میں قومی ایڈوائزری کونسل کی رکن رہیں۔

وہ بھارت میں ابتدائی تعلیم کو عالمگیر بنانے کے لیے قومی مشن برائے سروا شکشا ابھیان کی ایگزیکٹو کمیٹی کی رکن بھی ہیں۔ [7] [8]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Strength through SEWA"۔ Hinduonnet.com۔ 1999-03-21۔ 18 دسمبر 2001 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 جولا‎ئی 2010 
  2. "Power Women"۔ Financialexpress.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 جولا‎ئی 2010 
  3. "Board Members"۔ BETI Foundation website۔ 30 جنوری 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 فروری 2023 
  4. "Brief Bio-Data:Sehba Hussain"۔ 01 جون 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 12 جون 2010 
  5. "2006 Best Practices Database"۔ UN-HABITAT۔ 11 جون 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  6. "NGOs Details (NGO Partnership System)"۔ Government of India۔ 08 فروری 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  7. "Government of India Notification on Constitution of National Mission: EXECUTIVE COMMITTEE"۔ Sarva Shiksha Abhiyan, Govt. of India۔ 3 December 2004۔ 26 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 فروری 2023 
  8. "NAC I: The knocks, and the nicks"۔ Indianexpress.com۔ 2010-03-31۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 جولا‎ئی 2010