صہیون واپسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

صہیون واپسی ( عبرانی שִׁיבָת צִיּוֹן شیوات تزیؤن یا שבי ציון شیوی تزیؤن ، ادب. صہیون واپسی ) سے مراد ایزرا نیحمیاہ کی بائبل کی کتابوں میں اس واقعے سے ہے جس میں شہنشاہ کورش اعظم کے شاہی فرمان کے بعد یہود اسیری بابل سے واپس ارض اسرائیل آئے ، 539 قبل مسیح میں جدید بابلی سلطنت کے فاتح ، سائرس کے فرمان کے طور پر بھی جانا جاتا ہے۔ یہ اصطلاح 70ء میں ہیکل دوم کی تباہی کے بعد پہلی بار استعمال ہوا۔[حوالہ درکار]

بعد ازاں صہیون واپسی ، علیا کا بائبلی مطلب اس قدیم واقعہ سے لیا گیا اور یہود کی ارض مقدسہ اور دور جدید میں اسرائیلی ریاست کی جانب تمام تر نقل مکانی وہجرتوں کے لیے استعمال ہوا۔ بابل سے صہیون واپسی اور موجودہ دور کے اسرائیلی قبضہ کے درمیان کی مدت کئی چھوٹے گروہوں کے اسرائیل کی جانب نقل مکانی کی کوششوں پر مشتمل ہے اور اس مدت کو تقریباً دو اقسام میں تقسیم کیا جا سکتا ہے: ایک قرون وسطی اور یورپی نشاۃ ثانیہ کے دوران علیا اور دوم جدید دور (18ویں اور 19 ویں صدی کے شروع میں) کے دوران کے علیا کو ۔

جدید علیا ، 19ویں صدی کے وسط میں یہودا بیباس اور یہوداہ الکلائے ،جو بطور"صیہونیت کےمنّاد" (מבשרי הציונות) جدید صیہونیت کے علمبردار بھی جانے جاتے ہیں ،کے پیروکاروں نے یافا کی جانب شروع کر دیا تھا، جبکہ باقی کے علیا اسرائیل کی ریاست کے قیام کے بعد ہوئے۔

  1. "ترجمہ سکھلائی"۔