ضبط تولید

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
ضبط تولید
Intervention
Package of birth control pills
MeSH D003267

ضبط تولید، جو مانع حمل اور ضبط باروری کے طور پر بھی جانے جاتے ہیں، حمل سے بچنے کے لئے استعمال کئے جانے والے طريقے یا آلات ہیں۔[1] ضبط تولید کی منصوبہ بندی، فراہم کرنے، اور استعمال کرنے کو خاندانی منصوبہ بندی کہاجاتا ہے۔[2][3] قدیم زمانے سے ضبط تولیدی طریقوں کا استعمال کیا گیا ہے، لیکن مؤثر اور محفوظ طریقے صرف 20ویں صدی میں دستیاب ہوئی ہیں۔[4] کچھ ثقافتوں نے مانع حمل تک رسائی کو محدود کر دیا یا مسترد کردیا کیونکہ وہ اسے اخلاقی، مذہبی، یا سیاسی طور پر ناپسندیدہ مانتے ہیں۔[4]

نسبندی مردوں میں مرد نسبندی اور عورتوں میں ٹیوبل بندش رحم کے اندر آلہ (IUDs)، اور امپلانٹ کے لائق ضبط تولید کی زریعہ ضبط تولید سب سے زیادہ مؤثر طریقے ہیں۔ اس کے آگے کئی طرح کے ہارمون کی بنیاد پر طریقوں کے ساتھ ساتھ دہنی گولیاں، پیچ، اندام نہانی رنگ، اور انجکشن شامل ہیں۔ کم مؤثر طریقوں میں طبعی رکاوٹ جیسے کنڈوم، ڈاياپھرام اور ضبط تولید اسپنج اور باروری بیداری طریقیں شامل ہیں۔ سب سے کم مؤثر طریقوں میں اسپرمی سائیڈ اور انخلا طریقہ، انزال سے پہل مرد کا نکالنا ہے حالانکہ نسبندی بہت مؤثر ہے، یہ عام طور پر پر قابل واپسی عمل نہیں ہے؛ دیگر تمام طریقے، استعمال روک دینے کے فورا بعد پر پہلے جیسے ہو جاتے ہیں۔[5] محفوظ جنسی تعلقات، جیسے مرد یا عورت كڈوموں، کے استعمال سے بھی جنسی طور پر منتقل ہونے والی آلودگی سے بچنے میں مدد مل سکتی ہے۔[6][7] ہنگامی ضبط تولید سے غیر محفوظ جماع کے کچھ دنوں بعدحمل سے بچا سکتا ہے۔[8] کچھ لوگجنسی تعلق نہیں بنانا ضبط تولید کی شکل سمجھتے ہے، لیکن بغیر ضبط تولید کی تعلیم کے، اگر صرف جنسی تحمل کی تعلیم دی جائے تو نافرمانی کی وجہ سے نوجوانوں میں حمل بڑھ سکتا ہیں۔[9][10]

نوعمروں میں حمل کے خراب نتائج کا خطرہ بہت زیادہ ہوتا ہے۔ جامع جنسی تعلیم اور ضبط تولید تک پہنچ کی وجہ سے اس عمر میں ناپسندیدہ حمل کی شرح میں کمی آئی ہے۔[11][12] اگرچہ نوجوانوں کے ذریعہ تمام مانع حمل کا استعمال کیا جا سکتا ہے،[13] طویل مدت تک کام کرنے والے قابل واپسی ضبط تولید جیسے امپلانٹ، IUD، یا اندام نہانی رنگ نوعمر حمل کی شرح کو کم کرنے میں خاص طور سے مددگار ہیں۔[12] ایک بچے کی پیدائش کے بعد، ایک عورت جو خاص طور پر دودھ نہیں پلا رہی ہے وہ کم از کم چار سے چھ ہفتے کے بعد دوبارہ حاملہ ہو سکتی ہے۔ مانع حمل کے کچھ طریقے پیدائش کے فورا بعد شروع کئے جا سکتے ہیں، جبکہ دوسرے میں چھ ماہ تک تاخیر کی ضرورت ہوتی ہے۔ دودھ پلانے والی عورتوں میں، مرکبی دہنی مانع حمل گولیاں کے علاوہ صرف-پروجیسٹین طریقوں کو ترجیح دی جاتی ہے۔ سن یاس تک پہنچنے والی خواتین میں، یہ سفارش کی جاتی ہے کہ گزشتہ حیض کے وقت سے ایک سال بعد تک ضبط تولید جاری رکھا جائے۔[13]

ترقی پذیر ممالک میں تقریبا 222 ملین خواتین حاملہ ہونے سے بچنے کے لئے جدید ضبط تولید کے طریقہ کار کا استعمال نہیں کر رہی ہیں۔[14][15] ترقی پزیر ممالک میں ضبط تولید کے استعمال سے حمل کے دوران یا اس کے آس پاس کے وقت میں اموات کی تعداد میں 40 فیصد (2008 میں تقریبا 270،000 اموات سے بچا گیا) تک کمی آئی ہے، اور 70 فیصد تک روکا جا سکتا ہے اگر ضبط تولید کی مکمل مانگ پوری کی گئی ہوتی۔[16][17] حمل کے درمیان وقت بڑھا کر، ضبط تولید بالغ خواتین میں ولادت کے نتائج اور ان کے بچوں کے بقا کو بہتر بنا سکتا ہے۔[16] ترقی پذیر ممالک میں خواتین کی کمائی، اثاثے، وزن، اور ان کے بچوں کی اسکول کی تعلیم اور صحت سب میں ضبط تولید تک بہت بہتر رسائی کے وجہ بہتری آیا ہے۔[18] ضبط تولید اقتصادی ترقی بڑھاتا ہے کیونکہ منحصر بچوں کی تعداد کم ہو جاتی ہے، مزید خواتین افرادی قوت میں حصہ لیتی ہیں، اور نایاب وسائل کم استعمال ہوتا ہے۔[18][19]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Definition of Birth control". MedicineNet. اخذ کردہ بتاریخ 9 August 2012. 
  2. Oxford English Dictionary. Oxford University Press. June 2012. http://www.oed.com/view/Entry/19395. 
  3. World Health Organization (WHO). "Family planning". Health topics. World Health Organization (WHO). 
  4. ^ 4.0 4.1 Hanson، S.J.; Burke، Anne E. (21 December 2010). "Fertility control: contraception, sterilization, and abortion". in Hurt، K. Joseph; Guile، Matthew W.; Bienstock، Jessica L. et al۔. The Johns Hopkins manual of gynecology and obstetrics (4th ed.). Philadelphia: Wolters Kluwer Health/Lippincott Williams & Wilkins. صفحات۔382–395. https://books.google.com/books?id=4Sg5sXyiBvkC&pg=PR232. 
  5. World Health Organization Department of Reproductive Health and Research (2011). Family planning: A global handbook for providers: Evidence-based guidance developed through worldwide collaboration (Rev. and Updated ed.). Geneva, Switzerland: WHO and Center for Communication Programs. http://www.fphandbook.org/sites/default/files/hb_english_2012.pdf. 
  6. Taliaferro، L. A.; Sieving، R.; Brady، S. S.; Bearinger، L. H. (2011). "We have the evidence to enhance adolescent sexual and reproductive health--do we have the will?". Adolescent medicine: state of the art reviews 22 (3): 521–543, xii. PMID 22423463. 
  7. Chin، H. B.; Sipe، T. A.; Elder، R.; Mercer، S. L.; Chattopadhyay، S. K.; Jacob، V.; Wethington، H. R.; Kirby، D. et al۔ (2012). "The Effectiveness of Group-Based Comprehensive Risk-Reduction and Abstinence Education Interventions to Prevent or Reduce the Risk of Adolescent Pregnancy, Human Immunodeficiency Virus, and Sexually Transmitted Infections". American Journal of Preventive Medicine 42 (3): 272–294. doi:10.1016/j.amepre.2011.11.006. PMID 22341164. http://www.ajpmonline.org/article/S0749-3797(11)00906-8/abstract. 
  8. Gizzo، S; Fanelli، T; Di Gangi، S; Saccardi، C; Patrelli، TS; Zambon، A; Omar، A; D'Antona، D et al۔ (October 2012). "Nowadays which emergency contraception? Comparison between past and present: latest news in terms of clinical efficacy, side effects and contraindications.". Gynecological endocrinology : the official journal of the International Society of Gynecological Endocrinology 28 (10): 758–63. doi:10.3109/09513590.2012.662546. PMID 22390259. 
  9. DiCenso A, Guyatt G, Willan A, Griffith L (June 2002). "Interventions to reduce unintended pregnancies among adolescents: systematic review of randomised controlled trials". BMJ 324 (7351): 1426. doi:10.1136/bmj.324.7351.1426. PMID 12065267. 
  10. Duffy، K.; Lynch، D. A.; Santinelli، J. (2008). "Government Support for Abstinence-Only-Until-Marriage Education". Clinical Pharmacology & Therapeutics 84 (6): 746–748. doi:10.1038/clpt.2008.188. PMID 18923389. http://www.nature.com/clpt/journal/v84/n6/full/clpt2008188a.html. 
  11. Black، A. Y.; Fleming، N. A.; Rome، E. S. (2012). "Pregnancy in adolescents". Adolescent medicine: state of the art reviews 23 (1): 123–138, xi. PMID 22764559. 
  12. ^ 12.0 12.1 Rowan، S. P.; Someshwar، J.; Murray، P. (2012). "Contraception for primary care providers". Adolescent medicine: state of the art reviews 23 (1): 95–110, x–xi. PMID 22764557. 
  13. ^ 13.0 13.1 World Health Organization Department of Reproductive Health and Research (2011). Family planning: A global handbook for providers: Evidence-based guidance developed through worldwide collaboration (Rev. and Updated ed.). Geneva, Switzerland: WHO and Center for Communication Programs. صفحات۔260–300. http://www.fphandbook.org/sites/default/files/hb_english_2012.pdf. 
  14. "Costs and Benefits of Contraceptive Services: Estimates for 2012" (pdf). United Nations Population Fund. June 2012. صفحہ 1. 
  15. Carr، B.; Gates، M. F.; Mitchell، A.; Shah، R. (2012). "Giving women the power to plan their families". The Lancet 380 (9837): 80–82. doi:10.1016/S0140-6736(12)60905-2. PMID 22784540. http://www.thelancet.com/journals/lancet/article/PIIS0140-6736(12)60905-2/fulltext. 
  16. ^ 16.0 16.1 Cleland، J; Conde-Agudelo, A; Peterson, H; Ross, J; Tsui, A (Jul 14, 2012). "Contraception and health.". Lancet 380 (9837): 149–56. doi:10.1016/S0140-6736(12)60609-6. PMID 22784533. 
  17. Ahmed، S.; Li، Q.; Liu، L.; Tsui، A. O. (2012). "Maternal deaths averted by contraceptive use: An analysis of 172 countries". The Lancet 380 (9837): 111–125. doi:10.1016/S0140-6736(12)60478-4. PMID 22784531. http://www.thelancet.com/journals/lancet/article/PIIS0140-6736(12)60478-4/fulltext. 
  18. ^ 18.0 18.1 Canning، D.; Schultz، T. P. (2012). "The economic consequences of reproductive health and family planning". The Lancet 380 (9837): 165–171. doi:10.1016/S0140-6736(12)60827-7. PMID 22784535. http://www.thelancet.com/journals/lancet/article/PIIS0140-6736(12)60827-7/fulltext. 
  19. Van Braeckel، D.; Temmerman، M.; Roelens، K.; Degomme، O. (2012). "Slowing population growth for wellbeing and development". The Lancet 380 (9837): 84–85. doi:10.1016/S0140-6736(12)60902-7. PMID 22784542. http://www.thelancet.com/journals/lancet/article/PIIS0140-6736(12)60902-7/fulltext.