عافیہ سلام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عافیہ سلام
عافیہ سلام
معلومات شخصیت
قومیت پاکستان
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ صحافی
کارہائے نمایاں پہلی خاتونن کرکٹ صحافی

عافیہ سلام ایک صحافی اور پیشے کے لحاظ سے میڈیا ڈویلپمنٹ کی ماہر ہیں۔ وہ پاکستان میں پہلی خاتون کرکٹ صحافی ہونے کی وجہ سے مشہور ہیں۔ وہ پاکستان کے ہوائی ٹریفک کنٹرولرز کے پہلے کھیپ کی ممبر اور کولیشن فار ویمن ان جرنلزم (سی ایف ڈبلیو آئی جے) کی رکن بھی رہ چکی ہیں۔[1][2]

تعلیم[ترمیم]

کراچی کی رہائشی، عافیہ سلام نے 1970 میں سینٹ جوڈس، کراچی میں اپنی ہائی اسکول کی تعلیم مکمل کی۔ انہوں نے 1982 میں جامعہ کراچی سے جغرافیہ میں ماسٹر ڈگری حاصل کی ۔[3]

پیشہ ورانہ زندگی[ترمیم]

عافیہ ایک صحافی ہیں جن کا پرنٹ، الیکٹرانک اور ویب میڈیا میں چار دہائیوں سے زیادہ کا تجربہ ہے۔[4]

عافیہ سلام نے صحافت کے میدان میں اپنے کیریئر کا آغاز 1978 میں انگریزی اور اردو میں ہفتہ وار کالم لکھ کر کیا تھا اور پہلی خاتون کرکٹ صحافی بن گئیں۔ اپنی ماسٹرز ڈگری کے دوران، انہوں نے 1978 میں صحافت کے میدان میں قدم رکھا، جب وہ 13 سال کے وقفے کے بعد پاک بھارت کرکٹ تعلقات کی تجدید سے متاثر ہوئیں۔ [5]

ہندوستانی کرکٹ ٹیم 13 سال بعد بشان سنگھ بیدی کی سربراہی میں پاکستان آئی۔ کرکٹ اور صحافت کے لیے اپنے شوق کو استعمال کرتے ہوئے، عافیہ نے ایک کرکٹ صحافی کا کردار ادا کیا اور وہ پاکستان کی واحد خاتون کھیل صحافی بن گئیں۔ پاک بھارت میچ ان کی پہلی اسائنمنٹ تھی، جس کے بعد انہوں نے کھیل کے دیگر شعبوں کا احاطہ کرنا شروع کیا اور جلد ہی کھیلوں کی صحافی بن گئیں۔ 1996 سے 1999 تک وہ پاکستان کے واحد انگلش کرکٹ میگزین دی کریکٹر کی ایڈیٹر بن گئیں۔[6]

1983 میں، عافیہ نے حیدرآباد میں سول ایوی ایشن ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ میں شمولیت کے لیے درخواست دینے کا فیصلہ کیا جہاں انھیں ائیر ٹریفک کنٹرولر کی حیثیت سے تربیت دی گئی تھی اور وہ پاکستان کی خاتون ہوائی ٹریفک کنٹرولرز کی پہلی رکن بن گئیں۔ بعد میں وہ ہوا بازی اور دفاع سے متعلق ایک رسالہ دی ونگز، میں ترمیم کرتی رہیں۔ بعد میں، عافیہ تشہیر کے متعلقہ شعبے میں چلی گئیں۔ وہ تخلیقی سربراہ اور تین اشتہاری ایجنسیوں آرگس ، بلیزن اور بلٹز - ڈی ڈی بی کے خصوصی منصوبوں کی ڈائریکٹر بن گئیں۔ وہ 15 سال تک اس منصب پر رہیں۔ وہ پاکستان کے پہلے انرجی سیکٹر میگزین انرجی اپڈیٹ میں ایڈیٹر تھیں۔ انہوں نے ڈان نیوز میں بطور سینئر کاپی ایڈیٹر ، ثقافت کے سربراہ اور اس کے فلیگ شپ مارننگ شو کے انچارج مواد کے طور پر بھی کام کیا ہے۔ اس کے بعد وہ متعدد میگزینوں میں بطور ایڈیٹر اور سینئر صحافی کام کرچکی ہیں۔ اسٹار، ڈان نیوز، ٹریبون، نیوز لائن، دی نیوز، پِیک اور اورورا۔ [7] انہوں نے ہندوستانی اخبار دی وائر میں بھی اپنا حصہ ڈالا ہے ۔ [8]

عافیہ ایک فری لانس صحافی ہیں اور سی ایف ڈبلیو آئی جے میں ایک سینئر صحافی بھی ہیں۔[9]

عافیہ انڈس ارتھ ٹرسٹ میں چیئرپرسن ہیں۔ وہ آئی یو سی این میں اس کی تعلیم، مواصلات اور آؤٹ ریچ یونٹ کی سربراہ کی حیثیت سے بھی کام کر چکی ہیں۔[10]

سماجی سرگرمی[ترمیم]

عافیہ ایک سرگرم کارکن بھی ہیں جنھوں نے پاکستان کے ماحولیاتی تبدیلیوں، خواتین کے حقوق، میڈیا اخلاقیات اور بہت سے دوسرے معاشرتی امور کی بھی حمایت کی ہے۔ [11] وہ بہت سی مختلف این جی اوز کا حصہ ہیں جہاں وہ آب و ہوا کی تبدیلی اور اس کے اثرات کو دور کرنے کے لیے کام کرتی ہیں۔[12][13]

تنظیم "بولو بھی" ایک ایسا ہی پلیٹ فارم ہے جہاں عافیہ نے میڈیا اور آؤٹ ریچ مشیر کی حیثیت سے کام کیا ہے۔ عافیہ اس تنظیم کے ساتھ پاکستانی حکومت کی جانب سے یوٹیوب پر پابندی ختم کرنے کے لیے لڑی جانے والی تنظیم میں شامل تھیں۔ وہ صحافت کی صنعت میں خواتین کو فروغ دینے کے لیے کام کرنے والی تنظیم سی ایف ڈبلیو آئی جے کا ایک حصہ ہیں۔[14][15]

عافیہ نے سی ایف ڈبلیو آئی جے کے ساتھ مل کر تربیتی سیشنوں کا انعقاد کرنے کے لیے کام کیا ہے جو صحافت میں خواتین کے لیے مسائل کو حل کرنے اور میڈیا انڈسٹری میں ان کی شمولیت کی حوصلہ افزائی کرتی ہے۔[16][17]

وہ موسمیاتی تبدیلی، صنفی مساوات، مزدوری کے حقوق اور میڈیا اخلاقیات جیسے موضوعات پر بھی بہت سے اخبارات کے لیے مضامین لکھ چکی ہیں۔ وہ ان موضوعات پر میڈیا کو بھی تربیت دیتی ہیں۔[18][19][20][21]

2010 کے سیلاب اور 2011 کے بدین بادل پھٹنے کے دوران، عافیہ نے سیلاب سے متاثرہ علاقوں کو امداد، بحالی اور تعمیر نو کی سرگرمیاں فراہم کرنے کے لیے عمران خان فاؤنڈیشن کے سندھ کوآرڈینیٹر کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔[22]

عافیہ اس وقت انڈس ارتھ ٹرسٹ، واٹر فار ویمن، پروگرام کے منصوبے پر عمل کرنے والی ٹیم کے ایک حصے کے طور پر کام کر رہی ہیں۔ وہ میرین پروٹیکٹڈ ایریاز کے قیام کے لیے آئی یو سی این اور حکومت کے زیر اہتمام ایک ورکنگ گروپ میں شامل ہیں ، جس میں کامیابی بلوچستان میں جزیرہ آستولا کا اعلان تھا۔[23]

  1. "Afia Salam:The News on Sunday (TNS) » Weekly Magazine - The News International". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  2. "EVENT: Challenges and solutions for women journalists in Pakistani newsrooms". The Coalition For Women In Journalism (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  3. Tavaana (2012-09-18). "Interview with Afia Salam". Tavaana (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  4. "Afia Salam – 021Disrupt" (بزبان انگریزی). 28 نومبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  5. https://www.youlinmagazine.com، Youlin Magazine. "AFIA SALAM'S ROAD LESS TRAVELLED - Aiza Azam - Youlin Magazine". www.youlinmagazine.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  6. "Afia Salam :: Pasha Fund for Social Innovation" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  7. "Afia Salam, Author at The Express Tribune". The Express Tribune (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  8. "Afia Salam : Exclusive News Stories by Afia Salam on Current Affairs, Events at The Wire". The Wire. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  9. "Afia Salam, Author at Profit by Pakistan Today". Profit by Pakistan Today (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  10. "Afia Salam". Indus Earth Trust (بزبان انگریزی). 28 نومبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  11. "With Glaciers Melting And Temps Soaring, Pakistan Pursues Big Action On Climate Change". NPR.org (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  12. Female؛ Sindh؛ Pakistan. "Afia Salam's Page". climatechangemedia.ning.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  13. WUVM. "glaciers melting and temperatures soaring Pakistan". 
  14. "CFWIJ organizes mentorship accelerator around challenges, solutions for Pakistani women in journalism". The Nation (بزبان انگریزی). 2019-11-14. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  15. "Talk held on challenges Pakistani women face in journalism | Pakistan Today". www.pakistantoday.com.pk. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  16. Dawn.com (2019-11-14). "Female journalists call upon male counterparts to highlight challenges faced by women in news industry". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  17. "CFWIJ organizes mentorship accelerator around challenges, solutions for Pakistani women in journalism | Pakistan Press Foundation (PPF)". www.pakistanpressfoundation.org (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  18. "May 2018: Online safety of journalists and press freedom are imperative for countries to thrive -" (بزبان انگریزی). 2018-06-13. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  19. "Afia Salam". Newsline (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  20. "Afia Salam". ProWomen (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  21. Salam، Afia؛ August 13؛ 2018. "The changemakers of the Soan river basin". The Third Pole (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  22. "CSCCC | Civil Society Coalition for Climate Change". www.csccc.org.pk. اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020. 
  23. "Vulture-Safe Livestock Vaccination Drive Launched in Thar – SECMC" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2020.