عبدالحميد بابا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عبد الحمید بابا خیل ماشو
(پشتو میں: حميد مومند ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Abdul-Hameed-Mashokhel.jpg
 

معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش سنہ 1660  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات سنہ 1732 (71–72 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ مصنف  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

عبدالحميد ماشوخیل ( پشتو: عبدالحميد ماشوخېل‎ جن کو عبد الحمید بابا کے نام سے بھی جانا جاتا ہے)، (ولادت: 1664ء - وفات: 1724ء کے بعد) ایک افغان شاعر اور صوفی شخصیت تھے۔[1]

حالات زندگی[ترمیم]

عبد الحمید بابا خیل ماشو 17 ویں صدی عیسوی کے دوسرے نصف میں (1664ء-1724ء کے بعد) ضلع پشاور میں واقع بڈھ بیر کے قریب واقع ایک چھوٹے سے گاؤں خیل ماشو میں ایک پشتون قبیلے میں پیدا ہوئے تھے۔ عبد الحمید بابا نے پشاور کا سفر کیا، جہاں پر انہوں نے اپنی تعلیم حاصل کی، اور ایک پادری بن گئے۔ اس موقع پر، عبد الحمید بابا دانشوروں میں خاصا قد والا آدمی تھے، اور آپ کے پاس آس پاس کے متعدد اضلاع کے طلباء ان سے ہدایت لینے آئے تھے۔[2]

عبد الحامد بابا کی شاعری بنیادی طور پر پشتو زبان میں لکھی گئی تھی۔ ان کی نظموں میں عموما ان کے ساتھ اخلاقی سلوک ہوتا تھا، اور اکثر دنیا کے توہین آمیز لہجے اور اس کی فضیلت کی کمی کے ساتھ رنگین رہتے تھے۔ ان کی نظموں کے اخلاق تصوف پر مبنی تھے۔[2]

وفات[ترمیم]

عبد الحامد بابا کی موت کی صحیح تاریخ معلوم نہیں ہے، لیکن ان کے آبائی گاؤں کے لوگوں نے یہ سوچا ہے کہ اس کی موت سن 1732ء کے قریب ہوئی۔[1] وہ اسی گھر میں انتقال کر گئے جس میں انہوں نے اپنی زندگی کا بیشتر حصہ رہا تھا۔[2] عبد الحمید بابا کی قبر کھنڈرات اور پتھروں کے انبار کے علاوہ کچھ نہیں ہے۔[1]

استقبالیہ[ترمیم]

عبد الحمید بابا کی شاعری فارس میں بھی مشہور تھی، جہاں انہیں "حمید ہیئر اسپلٹر" (Hameed the Hair-splitter) کہا جاتا تھا۔ [2]

انیسویں صدی کے برطانوی افسر اور ماہر لسانیات ہنری جارج ریورٹی نے عبد الحمید بابا کو افغانستان کا مذموم شاعر کہا ہے اور اس کا موازنہ فارس میں سعدی (سن 1210ء) سے کیا ہے، [3] "پاسکو زبان کے سعدی"۔[1]

عبد الحمید بابا کی بڑی تخلیقات، محبت کا شوق، کنگ اور بِگر اور پرل اور کورلز سب کا انگریزی میں ترجمہ ہوچکا ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت "18th century Sufi poet's grave in ruins". 
  2. ^ ا ب پ ت "Abdul Hameed Baba". Dawatan.com. December 29, 2006. اخذ شدہ بتاریخ January 27, 2011. [مردہ ربط]
  3. Henry George Raverty: ÆBD-UL-ḤAMĪD (p. 85–86), in: Selections from the Poetry of the Afghans, from the 16th to the 19th Century: Literally translated from the original Pushto; with notices of the different authors, and remarks on the mystic doctrine and poetry of the Sūfīs (scan of full text), edited by Henry George Raverty, Williams & Norgate, London 1862. p. 85

مزید پڑھیں[ترمیم]