عبدالحمید ثانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عبدالحمید ثانی
(عثمانی ترک میں: عبد الحميد ثانی ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Ahamid.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 21 ستمبر 1842[1][2][3][4]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول[5]  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 10 فروری 1918 (76 سال)[6][1][7][3]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول[8]  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن مقبرہ محمود ثانی  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the Ottoman Empire (1844–1922).svg سلطنت عثمانیہ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
زوجہ نازک ادا قادین
نور افسون قادین
بدر فلک قادین
بیدار قادین
دل پسند قادین
مزید مستان قادین
امثال نور قادین
مشفقہ قادین
سازکار خانم
پیوستہ خانم
فاطمہ پسند خانم
بہیجہ خانم
صالحہ ناجیہ خانم  ویکی ڈیٹا پر (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد علویہ سلطان،  محمد سلیم آفندی،  زکیہ سلطان،  فاطمہ نعیمہ سلطان،  نائلہ سلطان،  محمد برہان الدین آفندی،  شادیہ سلطان،  حمیدہ عائشہ سلطان،  رفیہ سلطان،  عبد الرحیم خیری آفندی،  محمد ٰعابد آفندی[9]،  خدیجہ سلطان،  محمد عبد القادر آفندی  ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد عبد المجید اول  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدہ تیر مجگان سلطان  ویکی ڈیٹا پر (P25) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
مراد خامس،  محمد خامس،  سلیمان سلیم افندی،  محمد وحید الدین سادس،  احمد کمال الدین  ویکی ڈیٹا پر (P3373) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
خاندان عثمانی خاندان  ویکی ڈیٹا پر (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
سلطان سلطنت عثمانیہ   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
31 اگست 1876  – 27 اپریل 1909 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png مراد خامس 
محمد خامس  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
عملی زندگی
پیشہ مقتدر اعلیٰ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
Ord.Aquilanera.png آرڈر آف دا بلیک ایگل  ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دستخط
Tughra of Abdülhamid II.svg
 

عبد الحمید ثانی، (عربی: عبد الحميد الثانی، انگریزی: Abdul Hamid II، عثمانی ترکی: عبد الحمید ثانی) 31 اگست 1876ء سے 27 اپریل 1909ء تک خلافت عثمانیہ کی باگ ڈور سنبھالنے والے سلطان تھے۔ وہ سلطنت عثمانیہ کے 34ویں فرماں روا تھے۔ زوال کے اس دور میں آپ نے بلقان کی بغاوت، روس کے ساتھ ایک ناکام جنگ لڑی اور 1897 میں یونان کے ساتھ ایک کامیاب جنگ لڑی۔ آپ نے 23 دسمبر 1876 کو پہلے عثمانی آئین کا اعلان کیا [10] تاہم ، 1878 میں ، پارلیمان سے اختلاف رائے کا حوالہ دیتے ہوئے ، انہوں نے مختصر المدتی آئین اور پارلیمان دونوں کو معطل کر دیا [10]۔ وہ 21 یا 22 ستمبر 1842ء کو استنبول میں پیدا ہوئے 75 برس کی عمر میں 10 فروری 1918ء کو فوت ہوئے۔ عبد الحمید ثانی شاعر بھی تھے اور شرلاک ہومز کے بڑے قدردان تھے۔

عثمانی سلطنت کی جدید کاری ان کے دور حکومت میں جاری رہی ، بشمول بیوروکریسی میں اصلاحات ، روم ایلی ریلوے اور اناطولیہ ریلوے کی توسیع ، بغداد ریلوے کی تعمیر اور حجاز ریلوے شامل ہیں۔ اس کے علاوہ ، 1898 میں پہلے مقامی جدید مکتبِ قانون کے ساتھ ، آبادی کی رجسٹریشن اور پریس ریگولیشن کا ایک نظام قائم کیا گیا تھا۔ اصلاحات کا سب سے دوررس پہلو تعلیم تھا: بہت سارے پیشہ ور اسکول قانون سمیت دیگر شعبوں کے لیے قائم کیے گئے تھے جن میں آرٹس ، تجارت ، سول انجینئری ، ویٹرنری میڈیسن ، کسٹم ، کاشتکاری اور لسانیات۔ اگرچہ عبد الحمید دوم نے 1881 میں جامعہ استنبول بند کردی تھی ، لیکن اسے 1900 میں دوبارہ کھول دیا گیا اور پوری سلطنت میں ثانوی ، پرائمری اور فوجی اسکولوں کا نیٹ ورک بڑھا دیا گیا۔ ریلوے اور ٹیلی گراف کے نظام بنیادی طور پر جرمن فرموں نے تیار کیے تھے۔ ان کے عہد حکومت کے دوران ، سلطنت عثمانیہ دیوالیہ ہو گئی اور اس کے نتیجے میں 1881 میں دیونِ عمومیہ(عوامی قرض انتظامیہ) کا قیام عمل میں آیا۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

عبد الحمید ثانی 21 ستمبر 1842 کو توپ قاپی میں پیدا ہوئے۔ وہ سلطان عبد المجید اول کے بیٹے تھے۔ ان کی والدہ کی وفات کے بعد ان کی سوتیلی والدہ نے اپنا منہ بولا بیٹا بنا لیا۔ وہ ایک ہنر مند بڑھئی تھے اور انہوں نے ذاتی طور پر کچھ اعلیٰ معیار کا فرنیچر تیار کیا تھا ، جسے آج استنبول کے یلدز محل ، سیل کوسکو اور بیلربے محل میں دیکھا جاسکتا ہے۔ عبد الحمید ثانی کو اوپیرا میں بھی دلچسپی تھی اور انہوں نے ذاتی طور پر متعدد اوپیرا کلاسیکیوں کے پہلے ترک ترجمے لکھے۔ انہوں نے مرکز ہمائیوں (عثمانی مہتران / آرکسٹرا ، جو ان کے دادا محمود دوم نے قائم کیا تھا) کے لیے متعدد اوپیرا بھی مرتب کی۔

بہت سے دوسرے عثمانی سلطانوں کے برخلاف ، عبدالحمید دوم نے دور دراز کے ممالک کا دورہ کیا۔ تخت سنبھالنے سے نو سال قبل ، وہ اپنے چچا سلطان عبد العزیز کے ساتھ کئی یورپی دارلحکومتوں اور شہروں کے دورے پر گئے جن میں پیرس (30 جون تا 10 جولائی 1867) ، لندن (12–23 جولائی 1867) ، ویانا (28-30 جولائی 1867) شامل ہیں (وہ 21 جون 1867 کو قسطنطنیہ سے روانہ ہوئے اور 7 اگست 1867 کو واپس آئے)۔[11]

تخت نشینی[ترمیم]

عبدالحمید 31 اگست 1876 کو اپنے بھائی مراد کے معزول ہونے کے بعد تخت نشین ہوئے۔ آپ کی تخت نشینی کی تقریب بھی باقی عثمانی سلطانوں کی طرح حضرت ابو ایوب انصاری کے مزار پر ہوئی جہاں آپ کو عثمانی تلوار پیش کی گئی۔ زیادہ تر لوگوں کو عبد الحمید ثانی سے آزاد خیال تحریکوں کی حمایت کی توقع تھی ، تاہم ، انہیں سلطنت کے لیے ایک انتہائی مشکل اور نازک دور میں 1876 میں تخت نشین کیا گیا۔ اقتصادی اور سیاسی انتشار ، بلقان میں مقامی جنگیں اور 1877–78 کی روسی-عثمانی جنگ نے سلطنت عثمانیہ کے وجود کو خطرہ بنایا۔ عبد الحمید نے جنگ سے بھرا یہ مشکل وقت مطلق العنان حکومت کو بحال کرنے کے لیے استعمال کیا۔

فلسطین پر مؤقف[ترمیم]

عبد الحمید ثانی کو صیہونیت کے بانی تھیوڈور ہرزل نے خط لکھا جس میں اس نے فلسطین کو یہودیوں کے حوالے کرنے اور اس کے بدلے ایک سو پچاس ملین پاؤنڈ دینے کی آفر کی۔ خلیفہ عبدالحمید ثانی نے جواب دیا  : ” جناب ہرزل کو میں نصیحت کرنا چاہتا ہوں کہ آئندہ وہ اس موضوع کے بارے میں نہ سوچیں اس لئے کہ فلسطین میری ملکیت نہیں ، میں فلسطین کی زمین کا ایک بالشت بھی نہیں بیچ سکتا، فلسطین سارے مسلمانوں کی ملکیت ہے، اس مٹی کی خاطر میرے آباؤ اجداد عثمانیوں نے سینکڑوں سال جہاد کیا اس کی مٹی میں مسلمانوں کا خون شامل ہے جس کی گواہی میری عوام نے دی ہے ۔یہودیوں کو میری نصیحت ہے کہ وہ اپنے پیسے اپنے پاس سنبھال کر رکھیں اور اگر خلافت کا شیرازہ بکھر گیا تو فلسطین کو بغیر قیمت کے لے لیں لیکن جب تک میں زندہ ہوں اللہ کی قسم کھا کر کہتا ہوں کہ چھری کے ساتھ میرے بطن کو کاٹنا آسان ہے اس بات سے کہ دیار اسلام سے فلسطین کو کاٹا جائے۔“

معزولی[ترمیم]

سابق سلطان کو سالونیکا (جسے اب تھیسالونیکی کہا جاتا ہے) میں جلا وطن کر دیا گیا تھا۔ 1912 میں ، جب سالونیکا یونان کے قبضہ میں آ گیا، انہیں استنبول میں نظر بند کر دیا گیا۔ انہوں نے اپنے آخری دن اپنی بیویوں اور بچوں کی صحبت میں باسفورس میں واقع بےلربے محل میں اپنی یادداشتیں لکھنے، مطالعہ کرنے اور لکڑی کا کام کرتے گزارے جہاں وہ اپنے بھائی سلطان محمد خامس سے چند ماہ قبل 10 فروری 1918 کو فوت ہو گئے۔ انہیں استنبول میں سپرد خاک کر دیا گیا۔

ازواج[ترمیم]

ان کی کثیر تعداد میں شادیاں کیں۔ ان کی ازواج کے نام درجِ ہیں۔

اس کے علاوہ بھی انہوں نے تقریباً نو شادیاں کیں۔ اور ان سب سے ان کی کثیر تعداد میں اولاد بھی ہے۔

سلطان عبدالحمید کے مقبرہ کا مرکزی دروازہ

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب دائرۃ المعارف بریطانیکا آن لائن آئی ڈی: https://www.britannica.com/biography/Abdulhamid-II — بنام: Abdulhamid II — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — عنوان : Encyclopædia Britannica
  2. Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/abd-ul-hamid-abd-ul-hamid-ii — بنام: Abd ül-Hamid (Abd ül-Hamid II.)
  3. ^ ا ب Proleksis enciklopedija ID: https://proleksis.lzmk.hr/6598 — بنام: Abdul Hamid II. — عنوان : Proleksis enciklopedija
  4. Hrvatska enciklopedija ID: https://www.enciklopedija.hr/Natuknica.aspx?ID=84 — بنام: Abdul Hamid II. — عنوان : Hrvatska enciklopedijaISBN 978-953-6036-31-8
  5. ربط : https://d-nb.info/gnd/118646435  — اخذ شدہ بتاریخ: 11 دسمبر 2014 — اجازت نامہ: CC0
  6. مدیر: الیکزینڈر پروکورو — عنوان : Большая советская энциклопедия — اشاعت سوم — باب: Абдул-Хамид II
  7. گرین انسائکلوپیڈیا کیٹلینا آئی ڈی: https://www.enciclopedia.cat/ec-gec-0000167.xml — بنام: Abdülhamit II — عنوان : Gran Enciclopèdia Catalana
  8. ربط : https://d-nb.info/gnd/118646435  — اخذ شدہ بتاریخ: 31 دسمبر 2014 — اجازت نامہ: CC0
  9. مصنف: ڈئریل راجر لنڈی — خالق: ڈئریل راجر لنڈی
  10. ^ ا ب "Abdülhamid II". Encyclopedia Britannica. اخذ شدہ بتاریخ 8/9/2020. 
  11. "Sultan Abdul Aziz". اخذ شدہ بتاریخ 8/9/2020. 
عبدالحمید ثانی
پیدائش: 21 ستمبر 1842 وفات: 10 فروری 1918
شاہی القاب
ماقبل  سلطان سلطنت عثمانیہ
31 اگست 1876 – 27 اپریل 1909
مابعد 
مناصب سنت
ماقبل  خلیفہ
31 اگست 1876 – 27 اپریل 1909
مابعد 
Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔

سانچہ:عثمانی شجرہ نسب