عبدالمجید خواجہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عبدالمجید خواجہ
تفصیل=

نائب شیخ الجامعہ جامعہ ملیہ اسلامیہ دہلی
مدت منصب
1923 – 1925
Fleche-defaut-droite-gris-32.png محمد علی جوہر
ذاکر حسین Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
شیخ الجامعہ جامعہ ملیہ اسلامیہ دہلی
مدت منصب
1936 – 1962
Fleche-defaut-droite-gris-32.png مختار احمد انصاری
ذاکر حسین Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1885  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
علی گڑھ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 2 دسمبر 1962 (76–77 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی کرسٹس  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ وکیل  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

عبد المجید خواجہ(1885–1962) ایک ہندوستانی وکیل، ماہر تعلیم، معاشرتی مصلح اور مجاہد آزادی تھے جو شمالی ہندوستان کی ریاست اترپردیش کے تاریخی شہر علی گڑھ میں پیدا ہوا تھے۔ آپ ایک آزاد خیال مسلمان اور موہن داس گاندھی کے عدم تشدد کے خلاف اخلاقی روش کے پابند تھے۔ آپ نے 1947 میں تقسیم ہند کی فعال طور پر مخالفت کی اور اپنی پوری زندگی ہندو مسلم ہم آہنگی کو فروغ دینے میں صرف کردی۔ آپ نے جدید دور میں ہندوستانی مسلمانوں کی تعلیم میں دیرپا شراکت کی۔

خاندانی پس منظر[ترمیم]

عبد المجید خواجہ کے والدعلی گڑھ کے ممتاز وکیل اور زمیندار محمد یوسف کے دو بیٹوں میں سے چھوٹے بیٹے تھے۔ جن کا پختہ یقین تھا کہ ہندوستانی مسلمانوں کی معاشرتی اور معاشی ترقی کے لیے مغربی طرز کی سائنسی تعلیم انتہائی اہم ہے۔ خواجہ محمد یوسف علی گڑھ تحریک کے ابتدائی حامیوں میں سے ایک تھے جن کی قیادت سر سید احمد خان نے کی ، جو مشہور محمدن اینگلو اورینٹل کالج کے بانی تھے ، جو بعد میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں تبدیل ہوئی۔ خواجہ یوسف نے محمدن اینگلو اورینٹل کالج فنڈ کمیٹی کو بڑی رقم عطیہ کی اور ظہیر حسین اور زین العابین کے ہمراہ ملک کا دورہ کیا۔ خواجہ محمد یوسف 1864 میں سرسید کے ذریعہ قائم کردہ سائنسی سوسائٹی کے امور میں بھی بہت سرگرم تھے تاکہ مغربی کاموں کو اردو میں ترجمہ کیا جاسکے۔

تعلیم[ترمیم]

عبدالمجید روایتی طور پر گھر میں نامور نجی اساتذہ کی تعلیم حاصل کرتے تھے جو انہیں قرآن ، عربی ، اردو ، فارسی اور معاشرتی آداب وغیرہ کی تعلیم دیتے تھے۔تاہم ان کے والد خواجہ محمد یوسف نے اس بات کو یقینی بنایا کہ ان کا بیٹا جدید مغربی طرز کی تعلیم بھی حاصل کر سکے۔ لہذا عبد المجید کو انگلینڈ کیمبرج یونیورسٹی میں کرائسٹس کالج کیمبرج کے ارکان کی حیثیت سے سن 1906 میں اعلیٰ تعلیم کے لیے بھیجا گیا۔ انہوں نے تاریخ میں گریجویشن کیا اور 1910 میں بلایا گیا تھا۔ جواہر لال نہرو ، جمہوریہ ہند کے پہلے وزیر اعظم ، مشہور فقیہ سر شاہ سلیمان اور مشہور فلسفی اور شاعر محمد اقبال کیمبرج میں ان کے ہم عصر تھے۔[1]

وفات[ترمیم]

2 دسمبر 1962 کو آپ کا انتقال ہوا اور آپ کے جسد خاکی کو علی گڑھ کے نواح میں صوفی سنت شاہ جمال کی درگاہ کے قریب خاندانی قبرستان میں سپرد خاک کر دیا گیا۔

بیرونی روابط[ترمیم]

  1. http://www.columbia.edu/itc/mealac/pritchett/00islamlinks/txt_lelyveld_aligarh2a.html