مندرجات کا رخ کریں

عبد الالہ بن کیرران

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
عبد الالہ بن کیرران
(عربی میں: عبد الإله بنكيران ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
 

مناصب
وزیر اعظم المغرب   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
29 نومبر 2011  – 15 مارچ 2017 
عباس الفاسی  
سعد الدین عثمانی  
معلومات شخصیت
پیدائش 4 اپریل 1954ء (70 سال)[1][2]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رباط   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت المغرب   ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت جسٹس اینڈ ڈویلپمنٹ پارٹی   ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ محمد وی   ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان ،  استاد جامعہ   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان عربی   ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عربی ،  فرانسیسی   ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دستخط
 

عبد الالہ بن کیرران (انگریزی: Abdelilah Benkirane) (عربی: عبد الإله بنكيران معیاری امازیغی: ⵄⴱⴷⵉⵍⴰⵀ ⴱⵏⴽⵉⵔⴰⵏ, پیدائش 1954) ایک المغرب کے سیاست دان ہیں جو نومبر 2011ء سے مارچ 2017ء تک المغرب کے وزیر اعظم رہے۔ [3][4] [5][6][7]

مزید دیکھیے

[ترمیم]

حوالہ جات

[ترمیم]
  1. Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/benkirane-abdelilah — بنام: Abdelilah Benkirane
  2. Munzinger person ID: https://www.munzinger.de/search/go/document.jsp?id=00000029065 — بنام: Abdelilah Benkirane — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  3. "Le Parti justice et développement aux portes du pouvoir - France 24"۔ France 24 (بزبان فرانسیسی)۔ 2011-11-26۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 فروری 2018 
  4. "Morocco's new govt targets 5.5 pct GDP growth | Reuters"۔ Reuters.com۔ 2012-01-19۔ 17 اکتوبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  5. "Législatives 2011: Trois scénarios pour une victoire"۔ L'économiste۔ 24 November 2011۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 نومبر 2011 
  6. "Marocco: leader partito islamico, garantiremo le liberta' individuali"۔ Adnkronos۔ 13 دسمبر 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 نومبر 2011 
  7. "Fin des travaux sur la culture de la réforme au Maroc"۔ Le Matin۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 نومبر 2011 [مردہ ربط]