عبد الرحمان بجنوری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

ڈاکٹرعبدالرحمٰن بجنوری، اردو ادب کے نقاد، محقق،شاعر، مضمون نگار، مفکر، قانوں دان اور ماہر تعلیم تھے۔

حالات زندگی[ترمیم]

پیدائش و ابتدائی تعلیم[ترمیم]

ڈاکٹرعبدالرحمٰن بجنوری 1885ء میں ہندوستان کے ضلع بجنور میں پیدا ہوئے۔ ابتدائی تعلیم اور میٹرک کا امتحان کوئٹہ، بلوچستان سے پاس کیا۔ 1903ء میں انھوں نے محمڈن اورینٹل کالج، علی گڑھ میں داخل ہوئے۔ 1906ء میں بی اے اور 1909ء میں ایل ایل بی کی اسناد حاصل کیں۔

اعلیٰ تعلیم[ترمیم]

ڈاکٹرعبدالرحمٰن بجنوری نے انگلستان کی لنکنز ان سے بارایٹ لا اور فری برگ یونیورسٹی، جرمنی سے " اسلامی تعزیرات" پر جرمن زبان میں ڈاکٹریٹ کا مقالہ لکھ کر پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی۔

ملازمت[ترمیم]

1904ٰء میں ہندوستان واپسی کے بعد کچھ دن مراد آباد میں وکالت کی۔

تعلیمی خدمات[ترمیم]

عبد الرحمٰن بجنوری وکالت کے ساتھ ساتھ مجوزہ مسلم یونیورسٹی کے دستور بنانے میں بھی مصروف رہے۔ 1916ء میں بھوپال میں مشیر تعلیم مقرر ہوئے۔ 1917ء میں سلطانیہ کالج کے نام سے ایک تعلیمی منصوبہ پیش کیا۔

ادبی خدمات[ترمیم]

1916ء میں بابائے اردو مولوی عبدالحق نے انھیں کلام غالب پر مبسوط مقالہ لکھنے کی ذمہ داری دی جو بعد میں " محاسن کلام غالب" کے نام سے مشہور ہوا۔ بجنوری کا یہ مقولہ کہ " ہندوستان کی الہامی کتابیں دو ہیں۔ مقدس وید اور دیوان غالب " اس کتاب نے غالب کی شعری جمالیات کی وساطت سے اردو کی تاثراتی تنقید اور تبصروں کو نیا رنگ دیا " بجنوری نے کلام غالب کے الہام کو جذباتی انداز میں پرکھتے ہوئے تاثراتی تبصرہ نگاری کو قوت بخشی ۔[1]

بجنوری نے ٹیگور کی "گیتا نجلی" کا اردو میں ترجمہ کیا۔ " باقیات بجنوری" میں 14 نظمیں شائع ہوئیں۔ ترکی کی نظموں کو اردو میں منتقل کیا۔ انھوں نے شاعری بھی کی ،ان کی نظموں میں، معلم الملوت،ناہید، ہندوستان، دعا، یاد گل، موسیقی، مجذوب، صبح بنارس، بچے اور بڑے ( یونانی گیت کا ترجمہ) ،شمع و پروانہ، نٹ راجا، شیوجی کا رقص اور کوئل قابل ذکر ہیں۔ بجنوری نے علامہ اقبال کو فلسفی تسلیم نہیں کیا۔ بجنوری کی طویل نظم "معلم المکوت" جو اقبال کی نظم " جبریل وابلیس" سے دس سال پہلے لکھی گئی کہا جاتا ہے کہ یہ نظم اقبال نے "معلم المکوت" سے متاثر ہوکر لکھی تھی۔ علامہ اقبال نے بجنوری کو اسلامی تہذیب کا دانشور کہہ کر انھیں خراج تحسن پیش کیا تھا۔

بجنوری مزاحمت کار تھے۔ 1907ء میں ایم او کالج، علی گڑھ کی ایک ہڑتال میں حصہ لیتے ہوئے اس کی رہنمائی بھی کی۔

ڈاکٹر حدیقہ بیگم نے 1984ء میں اپنی ڈاکڑیٹ کی تکمیل کے لیے " نقد بجنوری" کے نام سے مقالہ لکھا۔ عبد الرحمٰن بجنوری پر اسلوب احمد انصاری، اشفاق احمد، آصف علی،عبد الوحید اعظمی،محمد معین انصاری،عطا محمد شعلہ،محمد عبد الغفار،خلیفہ حکیم،حسن عسکری پلکھنوی، امتیاز علی عرشی ،جعفر حسن اسیم، خورشید الاسلام، عبد الرحمٰن، گیان چند جین، محمد سلیمانی،سید محمود، سید عبد اللہ، کلیم الدین احمد اور احمد سہیل وغیرہ نے بجنوری پر خاصا صراحت سے لکھا ہے۔ عبد الرحمٰن بجنوری مشرق اور مغرب کی فکری اور علمی بصیرتوں کو اردو سے متعارف کروایا۔ ان کی فکر دو آتشہ میں نہا کر اردو ادب و نقد میں نیا نکھار پیدا کیا اور بالخصوص غالب کے کلام کو نیا تفہیمی اور تشریحی افق دیا۔

وفات[ترمیم]

7 نومبر 1918ء میں 33 سال کی عمر میں انفلوئنزا میں مبتلا ہو کر انتقال کر گئے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. احمد سہیل،" بجنوری، محاسن کلام غالب اور اس کے نقاد"، مشمولہ "تنقیدی تحریریں"،قلم پبلی کیشنز، ممبئی، صفحہ 117