عبد اللہ مگسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پروفیسر عبد اللہ مگسی
پیدائشعبد اللہ مگسی
27 دسمبر 1947(1947-12-27)ء
گاؤں گل محمد مگسی، ضلع دادو، صوبہ سندھ، پاکستان
وفات1 اپریل 1993(1993-40-01) (عمر  45 سال)
کراچی، پاکستان
پیشہپروفیسر، محقق، مورخ، ادیب
زبانسندھی
قومیتFlag of پاکستانپاکستانی
نسلسندھی
شہریتFlag of پاکستانپاکستانی
تعلیمایم اے سیاسیات
مادر علمیسندھ یونیورسٹی
موضوعسندھ کی تاریخ
نمایاں کامسندھ جی تارخ جو جدید مطالعو

پروفیسر عبد اللہ مگسی (انگریزی: Abdullah Magsi) (پیدائش: 27 دسمبر، 1947ء - وفات: یکم اپریل، 1993ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے سندھی زبان کے مشہور ادیب، پروفیسر، محقق اور مورخ تھے۔ اس کے لاتعداد ادبی و تاریخی مضامین اور کتب شائع ہوئی ہیں۔[1]

حالات زندگی اور تعلیم[ترمیم]

پروفیسر عبد اللہ مگسی 27 دسمبر، 1947ءکو گاؤں گل محمد مگسی، ضلع دادو، صوبہ سندھ، پاکستان میں پرائمری استاد دھنی بخش مگسی کے گھر میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے پرائمری تعلیم اپنے گاؤں گل محمد مگسی میں حاصل کی۔ تعلیم کے حصول کے لیے اس کے والد گاؤں چھوڑ کر خاندان کے ساتھ دادو شہر میں رہائش پزیر ہوئے۔ پروفیسر عبد اللہ مگسی نے میٹرک اور انٹرمیڈیٹ کی تعلیم ضلع دادو میں سے حاصل کی۔ سندھ یونیورسٹی جامشورو سے ایم اے (سیاسیات) میں ڈگری حاصل کی۔ ان کے والد بھی مصنف تھے جن کی تربیت کی وجہ سے عبد اللہ بھی تصنیف و تالیف کی طرف مائل ہوئے۔ انہوں نے بچپن میں 1960ء سے لکھنے کی شروعات کی۔ وہ پہلے پبلک ورکس ڈیپارٹمنٹ حکومت سندھ میں کلرک مقرر ہوئے۔ سندھ پبلک سروس کمیشن کا امتحان پاس کیا اور لیکچرار مقرر ہوئے، بعد ازاں ترقی کرتے ہوئے پروفیسر کے عہدے پر فائز ہوئے۔ ابتدا میں نواب شاہ کالج میں تقرر ہوا، بعد ازاں ان کا تبادلہ ڈگری کالج دادو میں ہوا۔ ان کی کتاب “سندھ جی تارخ جو جدید مطالعو” کو بڑی اہمیت حاصل ہے۔[2]

وفات[ترمیم]

پروفیسر عبد اللہ مگسی یکم اپریل، 1993ء کو کراچی میں انتقال کر گئے۔

حوالہ جات[ترمیم]