عبد المجید سالک

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عبد المجید سالک
معلومات شخصیت
پیدائش 12 ستمبر 1894  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بٹالا  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 27 ستمبر 1959 (65 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور،  پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن مسلم ٹاؤن، لاہور  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
Flag of the United Kingdom.svg مملکت متحدہ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی ذاکر حسین دہلی کالج  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مترجم،  شاعر،  افسانہ نگار  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کارہائے نمایاں روزنامہ انقلاب، لاہور  ویکی ڈیٹا پر (P800) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P literature.svg باب ادب

مولانا عبد المجید سالک (پیدائش: 12 ستمبر، 1894ء - وفات: 27 ستمبر، 1959ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو کے نامور شاعر، صحافی، افسانہ نگار اور کالم نگار تھے۔

حالات زندگی و ادبی خدمات[ترمیم]

عبد المجید سالک 12 ستمبر، 1894ء کو بٹالہ، گرداسپور، برطانوی ہندوستان میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے ابتدائی تعلیم بٹالہ اور پٹھان کوٹ میں حاصل کی اور پھر اینگلو عربک کالج دہلی سے تکمیل کی۔ انہوں نے 1914ء میں رسالہ فانوس خیال جاری کیا۔ پھر 1915ء سے 1920ء تک وہ ماہنامہ تہذیب نسواں، ماہنامہ پھول اور ماہنامہ کہکشاں کے مدیر رہے۔ 1920ء میں وہ روزنامہ زمیندار کے عملۂ ادارت میں شامل ہوئے۔ 1927ء میں انہوں نے مولانا غلام رسول مہر کے اشتراک سے انقلاب جاری کیا جس کے ساتھ وہ اکتوبر 1949ء میں اس کے خاتمے تک وابستہ رہے۔ عبد المجید سالک اخبار روزنامہ انقلاب میں ایک کالم افکار و حوادث کے نام سے لکھا کرتے تھے، یہی کالم ان کی پہچان بن گیا۔ ان کے خودنوشت سوانح سرگزشت کے نام سے اشاعت پزیر ہوئی۔ ان کی دیگر تصانیف میںذکرِ اقبال، یاران کہن، میراث اسلام اور مسلم ثقافت ہندوستان میں کے علاوہ ان کا مجموعہ کلام راہ و رسم منزلہا شامل ہیں۔[1]

تصانیف[ترمیم]

  • میراث اسلام
  • مسلم ثقافت ہندوستان میں
  • ذکر اقبال (اقبالیات)
  • سرگزشت (آپ بیتی)
  • راہ و رسم منزلہا (شاعری)
  • چمپا اور دوسرے افسانے (افسانے)
  • یاران کہن
  • تشکیلِ انسانیت (ترجمہ)
  • اسلام اور تحریکِ تجرّد مصر میں (ترجمہ)
  • تاریخ بھی مزے کی چیز ہے (ترجمہ)
  • انڈونیشیا اور اس کے لوگ
  • امداد باہمی
  • بوڑھا بگولا (ترجمہ)
  • مسئلے کیوں کر حل ہوں (ترجمہ)
  • خودکشی کی انجمن
  • ایجادات
  • قدیم تہذیبیں
  • کاریگری
  • آئین حکومت ہند
  • چترا (ترجمہ)

نمونۂ کلام[ترمیم]

غزل

چراغ زندگی ہو گا فروزاں ہم نہیں ہوں گے چمن میں آئے گی فصلِ بہاراں ہم نہیں ہوں گے
جوانو اب تمہارے ہاتھ میں تقدیرِ عالم ہےتمہیں ہوگے فروغ بزم امکاں ہم نہیں ہوں گے
جئیں گے جو وہ دیکھیں گے بہاریں زلفِ جاناں کی سنوارے جائیں گے گیسوئے دوراں ہم نہیں ہوں گے
ہمارے ڈوبنے کے بعد ابھریں گے نئے تارےجبیں دہر پر چھٹکے گی افشاں ہم نہیں ہوں گے
نہ تھا اپنی ہی قسمت میں طلوعِ مہر کا جلوہسحر ہو جائے گی شامِ غریباں ہم نہیں ہوں گے
اگر ماضی منور تھا کبھی تو ہم نہ تھے حاضرجو مستقبل کبھی ہو گا درخشاں ہم نہیں ہوں گے
ہمارے دور میں ڈالیں خرد نے الجھنیں لاکھوںجنوں کی مشکلیں جب ہوں گی آساں ہم نہیں ہوں گے
کہیں ہم کو دکھا دو اک کرن ہی ٹمٹماتی سیکہ جس دن جگمگائے گا شبستاں ہم نہیں ہوں گے
ہمارے بعد ہی خونِ شہیداں رنگ لائے گایہی سرخی بنے گی زیبِ عنواں ہم نہیں ہوں گے

وفات[ترمیم]

عبد المجید سالک 27 ستمبر، 1959ء کو لاہور، پاکستان میں وفات پا گئے اور لاہور میں مسلم ٹاؤن کے قبرستان میں سپرد خاک ہوئے۔[1][2][3]

حوالہ جات[ترمیم]