عرب دنیا میں ترک

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عرب دنیا کا نقشہ. یہ عرب دنیا کی معیاری علاقائی تعریف پر مبنی ہے جس میں عرب لیگ کی ریاستوں اور علاقوں پر مشتمل ہے۔

عرب دنیا میں ترک سے مراد نسلی ترک افراد ہیں جو عرب دنیا میں رہتے ہیں۔ شمالی افریقہ ، لیونت اور جزیرہ نما عرب میں ترکوں کی نمایاں آبادی بکھری ہوئی ہے ۔

لیبیا میں ، کچھ ایسے لوگ ہیں جو اپنے آپ کو ترک سمجھتے ہیں یا ترک فوجیوں کی اولاد ہیں جو سلطنت عثمانیہ کے زمانے میں اس علاقے میں آباد ہوئے تھے مصر میں ایک ترک اقلیت بھی ہے ( مصر میں ترک دیکھیں)۔ [1]

لیونٹ میں ، ترک پورے خطے میں رہتے ہیں۔ عراق اور شام میں عام طور پر ترک اقلیتوں کو "ترکمن" ، "ترکمان" اور "ترکومان" کہا جاتا ہے۔ تاریخی طور پر ، یہ اصطلاحات عرب علاقوں میں ترک بولنے والوں یا شیعہ علاقوں میں سنی مسلمانوں کے نامزد کرنے کے لیے استعمال ہوتی رہی ہیں۔ عراقی ترکمان اور شامی ترکمن کی اکثریت عثمانی ترک آباد کاروں کی اولاد ہے۔ [2] اور ترکی ، خاص طور پر اناطولیانی خطے کے ساتھ گہری ثقافتی اور لسانی روابط کا اشتراک رکھتے ہیں۔ اردن میں ترک اقلیتیں ( اردن میں ترک ) اور لبنان ( لبنان میں ترک ) بھی ہیں۔ لبنانی ترک بنیادی طور پر اکر ضلع کے ادمون اور کوآچرا گاؤں کے علاوہ بعلبک ، بیروت اور طرابلس میں رہتے ہیں ۔

جزیرۃالعرب میں ، ترک اقلیتیں ہیں جو عثمانی دور کے بعد سے اس خطے میں مقیم ہیں۔ ترک بنیادی طور پر سعودی عرب ( سعودی عرب میں ترک دیکھیں) اور یمن ( یمن میں ترک کو دیکھیں)میں رہتے ہیں۔

ترک اقلیتوں کی آبادی[ترمیم]

ملک موجودہ ترک آبادی مزید معلومات ترکوں کی فہرستیں
ربط=|حدود Flag of Egypt.svg مصر 1،500،000 (1993 کا تخمینہ)



</br> (میں 150،000 Arish ، اس کے علاوہ 100،000 Cretan کی کیکس ) [3]



</br> تقریبا 3 3٪ مصریوں کا تعلق ایشین معمولی (تقریبا 2. 2.8 ملین) سے ہوتا ہے
مصر میں ترک
ربط=|حدود Flag of Iraq.svg عراق 3،000،000 (2013 عراقی وزارت منصوبہ بندی کا تخمینہ) [4] عراقی ترکمنستان
ربط=|حدود Flag of Jordan.svg اردن 60،000



</br>



</br> فلسطینی ترک مہاجرین کے علاوہ:



</br> 55،000 میں اربیڈ



</br> عمان کے قریب 5000



</br> ال-Sahne میں 5،000



</br> ال رییان میں 3،000



</br> الباکا میں 2،500



</br> ال زیرکا میں 1،500



</br> صحابہ میں 1،500
اردن میں ترک
ربط=|حدود Flag of Lebanon.svg لبنان 80،000 [5]



</br> علاوہ ازیں 125،000 سے ڈیڑھ لاکھ تک شامی ترکمن مہاجرین
لبنان میں ترک
ربط=|حدود Flag of Libya.svg لیبیا لیبیا کی آبادی کا 4.7٪ (1936 مردم شماری)



</br> صرف 100،000 کریٹن ترک (1971 کا تخمینہ)



</br> 1،400،000 - کل ترک اقلیت (2019 کا تخمینہ) [6]
لیبیا میں ترک
ربط=|حدود Flag of Palestine.svg فلسطین یہ 40000 سے 500،000 تک (1987 کا تخمینہ)



</br> ویسٹ بینک : 35،000 سے 40،000



</br>
فلسطین میں ترک
ربط=|حدود Flag of Saudi Arabia.svg سعودی عرب 150،000 [7] سعودی عرب میں ترک
ربط=|حدود Flag of Syria.svg سوریہ تخمینے سینکڑوں ہزاروں سے لے کر ساڑھے تین لاکھ تک ہیں [8] شامی ترکمان باشندے
ربط=|حدود Flag of Tunisia.svg تونس تقریبا 500،000 -2،000،000 تیونس میں ترک
ربط=|حدود Flag of the United Arab Emirates.svg متحدہ عرب امارات 10،000 [9] متحدہ عرب امارات میں ترک
ربط=|حدود Flag of Yemen.svg یمن 10،000 سے 100،000 [10] یا 200،000 سے زیادہ یمن میں ترک

یہ بھی دیکھیں[ترمیم]

نوٹ[ترمیم]

^ a:  عراقی ترکمن ساتویں صدی سے سلطنت عثمانیہ حکمرانی تک ترک ہجرت کی مختلف لہروں کی نسل ہیں۔ ساتویں صدی کے تارکین وطن کی آج کی بیشتر نسل مقامی عرب قوم آبادی میں شامل ہوگئی ہے۔ [11] اس طرح آج کے عراقی ترکمن اکثریت عثمانی کی اولاد ہیں۔ فوجی ، تاجر اور سرکاری ملازمین جو سلطنت عثمانیہ کے دور میں عراق لائے گئے تھے۔ [12][13][14][15]
ساتویں صدی کے تارکین وطن کی آج کی بیشتر اولاد مقامی عرب آبادی میں ضم ہو گئی ہے ۔ اس طرح ، آج کے عراقی ترکمنین کی اکثریت عثمانی فوجیوں ، تاجروں اور سرکاری ملازمین کی اولاد ہے جنھیں عثمانی سلطنت کے دور میں عراق لایا گیا تھا۔ </br>

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Nkrumah، Gamal (2016). "Did the Turks sweeten Egypt's kitty?". Al-Ahram Weekly. اخذ شدہ بتاریخ 30 اکتوبر 2016. Today, the number of ethnic Turks in Egypt varies considerably, with estimates ranging from 100,000 to 1,500,000. Most have intermingled in Egyptian society and are almost indistinguishable from non-Turkish Egyptians, even though a considerable number of Egyptians of Turkish origin are bilingual. 
  2. نیو یارک ٹائمز (2015). "Who Are the Turkmens of Syria?". In the context of Syria, though, the term ["Turkmen"] is used somewhat differently, to refer mainly to people of Turkish heritage whose families migrated to Syria from Anatolia during the centuries of the Ottoman period — and thus would be closer kin to the Turks of Turkey than to the Turkmens of Central Asia...Q. How many are there? A. No reliable figures are available, and estimates on the number of Turkmens in Syria and nearby countries vary widely, from the hundreds of thousands up to 3 million or more. 
  3. Rippin، Andrew (2008). "World Islam: Critical Concepts in Islamic Studies". روٹلیج. ISBN 0415456533. 
  4. Bassem، Wassim (2016). "Iraq's Turkmens call for independent province". Al-Monitor. 17 اکتوبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. Turkmens are a mix of Sunnis and Shiites and are the third-largest ethnicity in Iraq after Arabs and Kurds, numbering around 3 million out of the total population of about 34.7 million, according to 2013 data from the Iraqi Ministry of Planning. 
  5. Al-Akhbar. "Lebanese Turks Seek Political and Social Recognition". اخذ شدہ بتاریخ 02 مارچ 2012. 
  6. Tastekin، Fehim (2019). "Are Libyan Turks Ankara's Trojan horse?". Al-Monitor. اخذ شدہ بتاریخ 15 ستمبر 2019. 
  7. Güzel، Hasan Celâl (2016). "Orta Doğuda Türk/Türkmen Varlığı" (PDF). Yeni Turkiye. صفحہ 150. Bunların dışında, Suudî Arabistan’da 150 bin Türk nüfusu, Mısır’da 150 bin civarında Ariş Türkleri, Yemen’de en az 200 bin Türk, Ürdün’de çok sayıda Türk asıllı nüfus yaşamaktadır. Mısır nüfusunun üçte birinin, yani 25 milyon nüfusun Türk asıllı olduğu ileri sürülmektedir. 
  8. برطانوی نشریاتی ادارہ (2015). "Who are the Turkmen in Syria?". There are no reliable population figures, but they are estimated to number between about half a million and 3.5 million. 
  9. Turks living in the UAE vote in presidential elections
  10. "Yemen Raporu". Union of NGOs of The Islamic World. 2014. صفحہ 26. Bu noktadan hareketle, bölgede yaklaşık 10 bin ila 100 bin arasında Türk asıllı vatandaş bulunduğu tahmin edilmektedir. 
  11. International Crisis Group 2008، 16.
  12. Library of Congress، Iraq: Other Minorities، Library of Congress Country Studies، اخذ شدہ بتاریخ 2011-11-24 
  13. Jawhar 2010، 314.

کتابیات[ترمیم]

  • Akar، Metin (1993)، "Fas Arapçasında Osmanlı Türkçesinden Alınmış Kelimeler"، Türklük Araştırmaları Dergisi، 7: 91–110 
  • Baedeker، Karl (2000)، Egypt، Elibron، ISBN 1-4021-9705-5 
  • Doğanay، Hayati (1995)، "Cumhuriyetin 70.Yılında Türk Dünyası'nın Siyasi Sınırları"، Doğu Coğrafya Dergisi، 1 (1): 23–56 
  • Hizmetli، Sabri (1953)، "Osmanlı Yönetimi Döneminde Tunus ve Cezayir'in Eğitim ve Kültür Tarihine Genel Bir Bakış" (PDF)، Ankara Üniversitesi İlahiyat Fakültesi Dergisi، 32 (0): 1–12 
  • International Crisis Group (2008)، Turkey and the Iraqi Kurds: Conflict or Cooperation?، Middle East Report N°81 –13 November 2008: International Crisis Group، مورخہ 12 جنوری 2011 کو اصل سے آرکائیو شدہ 
  • Jawhar، Raber Tal’at (2010)، "The Iraqi Turkmen Front"، بہ Catusse، Myriam؛ Karam، Karam، Returning to Political Parties?، The Lebanese Center for Policy Studies، صفحات 313–328، ISBN 1-886604-75-4 .
  • Karpat، Kemal H. (2004)، Studies on Turkish Politics and Society: Selected Articles and Essays:Volume 94 of Social, economic, and political studies of the Middle East، BRILL، ISBN 90-04-13322-4 .
  • Kibaroğlu، Mustafa؛ Kibaroğlu، Ayșegül؛ Halman، Talât Sait (2009)، Global security watch Turkey: A reference handbook، Greenwood Publishing Group، ISBN 0-313-34560-0 .
  • Oxford Business Group (2008)، The Report: Algeria 2008، Oxford Business Group، ISBN 1-902339-09-6 .
  • Özkaya، Abdi Noyan (2007)، "Suriye Kürtleri: Siyasi Etkisizlik ve Suriye Devleti'nin Politikaları" (PDF)، Review of International Law and Politics، 2 (8)، مورخہ 2011-01-24 کو اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ، اخذ شدہ بتاریخ 2010-09-10 
  • Pan، Chia-Lin (1949)، "The Population of Libya"، Population Studies، 3 (1): 100–125، doi:10.1080/00324728.1949.10416359 
  • Park، Bill (2005)، Turkey's policy towards northern Iraq: problems and perspectives، Taylor & Francis، ISBN 0-415-38297-1 .
  • Taylor، Scott (2004)، Among the Others: Encounters with the Forgotten Turkmen of Iraq، Esprit de Corps Books، ISBN 1-895896-26-6 

بیرونی روابط[ترمیم]