عرب سرما

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
Arab Winter
Destroyed neighborhood in Raqqa.png
تاریخ2014-present
وجہ
مقاصد
طریقہ کار

عرب سرما [1] [2] [3] دوران آمریت ، مطلق العنان بادشاہتوں اور اسلامی انتہا پسندی کی بحالی ہوئی تھی۔ [4]

عرب سرما 2014 میں شروع ہوا تھا اور عرب بہار کے بعد [5] [6] چار سال بعد ہوا تھا۔ [7] اس میں خانہ جنگی ، بڑھتے ہوئے علاقائی عدم استحکام ، [8] عرب ممالک کیمعاشی اور آبادیاتی کمی ، [9]اور نسلی مذہبی جنگیں شامل ہیں۔ [10]

2014 کے موسم گرما تک ، عرب سرما کے نتیجے میں قریب چوتھائی ملین یا ڈھائی لاکھ اموات اور لاکھوں پناہ گزین ہوچکے تھے۔ [11]شاید سب سے اہم واقعہ دولت اسلامیہ عراق اور لیونت کا 2014 ء [12] سے عروج تھا۔

کیا ہوا؟[ترمیم]

چینی پروفیسر جانگ ویوی نے فرانس فوکیوما کے ساتھ جون 2011 میں ہونے والے اپنے مباحثے میں سب سے پہلے "عرب موسم سرما" کی پیش گوئی کی تھی۔ [24] "مشرق وسطی کے بارے میں میری سمجھ سے مجھے یہ نتیجہ اخذ کرنا پڑتا ہے کہ مغرب کو زیادہ خوش نہیں ہونا چاہئے۔ اس سے امریکی مفادات میں بے پناہ پریشانی آئے گی۔ اسے ابھی کے لئے "عرب بہار" کہا جاتا ہے ، اور میرا اندازہ ہے کہ جلد ہی مشرق وسطی میں موسم سرما میں تبدیل ہوجائے گا۔ " [25]

2016 کے شروع میں ، دی اکنامسٹ نے کہا کہ سرما کا سلسلہ جاری ہے اور "پہلے سے کہیں زیادہ خراب" ہے۔ [26]

نتائج[ترمیم]

مشرق وسطی اور افریقی مطالعات کے لئے موشے دایان سنٹر کے مطابق ، جنوری 2014 تک ، عرب سرما میں عرب لیگ کو 800 بلین امریکی ڈالر لاگت آئے گی۔ 2014 میں ، شام ، مصر ، عراق ، اردن اور لبنان میں سولہ ملین لوگوں کو امداد کی ضرورت کی توقع کی گئی تھی۔ [27]

امریکی یونیورسٹی بیروت کے مطالعے کے مطابق ، 2014 کے موسم گرما تک ، ایک ملین کا ایک چوتھائی مر گیا ، اور لاکھوں مہاجر ہوئے۔

سیاسی کالم نگار اور کمنٹیٹر جارج ول نے کہا کہ 2017 کے اوائل تک ، لیبیا میں 30،000 سے زیادہ افراد ہلاک ہوئے ، 220،000–320،000 شام میں ہلاک ہوئے ، اور 4 لاکھ مہاجرین تنہا شام کی خانہ جنگی سے فرار ہوگئے تھے۔ [6]

شام شامی شہریوں کے لئے ترکی شام سرحد کے قریب ایک ایسی جگہ جو شام کی خانہ جنگی (2012) سے فرار ہونا چاہتے ہیں۔ بہت سے گھروں سے محروم ہوگئے۔

افراتفری اور تشدد ہے۔ اتنے سارے لوگ مشرق وسطی اور شمالی افریقہ سے یورپ چلے گئے ، یہ یورپی تارکین وطن کے بحران کا نتیجہ ہے۔ [28] اس کے نتیجے میں ، "کشتی کے لوگ" ، جو کبھی ویتنام کے کشتیوں میں عام طور پر جانا جاتا تھا ، اکثر استعمال ہوتا ہے۔ ان میں بحیرہ روم کے پار یورپی یونین فرار ہونے والے لیبیا یا تیونس سے آنے والے مہاجرین شامل ہیں۔[29] کچھ یورپی سیاستدانوں کو خوف ہے کہ مہاجر ان کے کنارے "سیلاب" ڈال سکتے ہیں۔ بہت سارے یورپی افراد اپنی قوموں کی سرحدوں پر پہنچنے والوں کے انتظام میں مدد کے لئے قوانین پر کام کر رہے ہیں۔ [30]

مذید دیکھیں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Analysis: Arab Winter is coming to Baghdad". The Telegraph. The Jerusalem Post. اخذ شدہ بتاریخ October 8, 2014. 
  2. "Expert Warns of America's Coming 'Arab Winter'". CBN. 2014-09-08. اخذ شدہ بتاریخ October 8, 2014. 
  3. "Arab Spring or Arab Winter?". The New Yorker. اخذ شدہ بتاریخ October 8, 2014. 
  4. Yun Ru Phua. "After Every Winter Comes Spring: Tunisia's Democratic Flowering – Berkeley Political Review". Bpr.berkeley.edu. اخذ شدہ بتاریخ 11 فروری 2017. 
  5. Ahmed H Adam and Ashley D Robinson. Will the Arab Winter spring again in Sudan?. Al-Jazeera. 11 June 2016. "The Arab Spring that swept across the Middle East and succeeded in overthrowing three dictatorships in Tunisia, Egypt and Libya in 2011 was a pivotal point in the history of nations. Despite the subsequent descent into the "Arab Winter", the peaceful protests of young people were heroic..."
  6. ^ ا ب James Y. Simms, Jr. "Arab Spring to Arab Winter: a predictable debacle in the Middle East". richmond.com. اخذ شدہ بتاریخ July 7, 2017. 
  7. Radoslaw Fiedler, Przemyslaw Osiewicz. Transformation processes in Egypt after 2011. 2015. p182.
  8. "From Egypt to Syria, this could be the start of the Arab Winter". The Conversation. April 17, 2014. اخذ شدہ بتاریخ October 23, 2014. 
  9. Rivlin، P (Jan 2014)، Iqtisadi (PDF)، Dayan Research Center، مورخہ October 23, 2014 کو اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ، اخذ شدہ بتاریخ October 18, 2014 
  10. Malmvig، Lassen (2013)، Arab uprisings: regional implication (PDF)، IEMED 
  11. "Displacement in the Middle East and North Africa – between the Arab Winter and the Arab Spring" (PDF)، International Affairs، LB، August 28, 2013 
  12. "Analysis: Arab Winter is coming to Baghdad - Middle East - Jerusalem Post". 
  13. Karber، Phil (2012-06-18). Fear and Faith in Paradise. ISBN 978-1-4422-1479-8. اخذ شدہ بتاریخ October 23, 2014. 
  14. "Arab Winter". America Staging. 2012-12-28. اخذ شدہ بتاریخ October 23, 2014. 
  15. "Analysis: Arab Winter is coming to Baghdad". The Jerusalem Post. اخذ شدہ بتاریخ October 23, 2014. 
  16. "Egypt and Tunisia's new 'Arab winter'". Euro news. 2013-02-08. اخذ شدہ بتاریخ October 23, 2014. 
  17. "Lecture Explores Past and Future Arab Spring". The Daily Gazette. October 10, 2014. اخذ شدہ بتاریخ October 19, 2014. 
  18. "Yemen's Arab winter". Middle East Eye. اخذ شدہ بتاریخ October 23, 2014. 
  19. "Egypt & Tunisia's new Arab winter"، Euro news، February 8, 2013 
  20. The Coup in Egypt: An Arab Winter?. July 5, 2013. doi:ڈی او ئي. http://www.thenation.com/article/175121/coup-egypt-arab-winter۔ اخذ کردہ بتاریخ November 1, 2014. 
  21. Jones، Sophia (January 21, 2014). "In Egypt, Arab Spring Gives Way To Military Winter". The World Post. The Huffington Post. اخذ شدہ بتاریخ November 1, 2014. 
  22. "In Mali AQ achieved to infiltrate and take over Tuareg insurgency. If AQ succeeds to keep the Arab Spring countries destabilized, this will lead to a viral reproduction of ازواد scenario. AQ is the "Islamic Winter"."
  23. "Egypt & Tunisia's new Arab winter"، Euro news، February 8, 2013 
  24. 张维为. "观天下讲坛| 张维为:话语自信——回望六年前与福山的那场辩论". www.guancha.cn (بزبان چینی). 
  25. "谁的终结?——福山与张维为对话"中国模式"-张维为、弗朗西斯·福山". guancha (بزبان چینی). اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2018. 而且我自己对中东的了解使我得出这样的结论,西方千万不要太高兴,这会给美国的利益会带来很多的问题。现在叫中东的春天,我看不久就要变成中东的冬天。 
  26. The Arab winter. 2016-01-09. doi:ڈی او ئي. https://www.economist.com/news/middle-east-and-africa/21685503-five-years-after-wave-uprisings-arab-world-worse-ever۔ اخذ کردہ بتاریخ July 7, 2017. 
  27. Rivlin، P (Jan 2014)، Iqtisadi (PDF)، Dayan Research Center، مورخہ October 23, 2014 کو اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ، اخذ شدہ بتاریخ October 18, 2014 
  28. “Displacement in the Middle East and North Africa: Between an Arab Winter and the Arab Spring”. "In the midst of ongoing uprisings, violence, and political turmoil, widespread population displacement took place as a result of the conflict in Libya, the violence in Syria and upheaval in Yemen. In each of these contexts, the new waves of displacement took place in or to areas already struggling with previous waves, leading to multi-layered and complex crises."
  29. Khallaf، Shaden (August 2013). Displacement in the Middle East and North Africa: Between an Arab Winter and the Arab Spring. Working Paper Series. Issam Fares Institute for Public Policy and International Affairs, American University of Beirut. doi:ڈی او ئي. https://www.aub.edu.lb/ifi/international_affairs/Documents/working_paper_series/20130828_IA_WP_AUB_Paper_on_Displacement_in_Arab_Spring.pdf. 
  30. Khallaf، Shaden (August 2013). Displacement in the Middle East and North Africa: Between an Arab Winter and the Arab Spring. Working Paper Series. Issam Fares Institute for Public Policy and International Affairs, American University of Beirut. doi:ڈی او ئي. https://www.aub.edu.lb/ifi/international_affairs/Documents/working_paper_series/20130828_IA_WP_AUB_Paper_on_Displacement_in_Arab_Spring.pdf. 

بیرونی روابط[ترمیم]