عزالنساء بیگم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عزالنساء بیگم
شریک حیاتشاہ جہاں
نسلجہاں افروزمرزا
خاندانتیموری (بعد نکاح)
والدشاہنواز خان
وفات28 جنوری 1678[1]
آگرہ، بھارت
تدفینسرہندی بیگم کا مقبرہ، پرانی دہلی[2]
مذہباسلام

عزالنساء بیگم مغل بادشاہ شاہ جہاں کی تیسری بیوی تھی۔ وہ اکبرآبادی محل (جو غالبا اس بات کا اشارہ کرتی ہے کہ وہ اکبرآباد شہر سے تعلق رکھتی ہے) کے نام سے بھی مشہور ہے اور شاہجہاں آباد (موجودہ پرانی دہلی ) میں اکبرآبادی مسجد قائم کی۔ عام طور پر انہیں سرہندی بیگم بھی کہا جاتا ہے

کنبہ[ترمیم]

عزالنساء بیگم ، مرزا ایراج کی بیٹی تھیں جن کو شاہنواز خان کا خطاب دیا گیا تھا۔ وہ عبد الرحیم خانِ خانہ کا بیٹا اور بیرام خان کا پوتا تھا۔ بیرام خان قرہ قویونلو قبیلے کے پیرعلی بہارلو کی اولاد تھا۔ اس کا ایک بھائی مرزا خان منوچیر تھا۔

شادی[ترمیم]

سن 1617 میں دکن کی فتح کے بعد شہزادہ خرم (مستقبل کے شاہ جہاں) نے اپنے والد شہنشاہ جہانگیر کو تجویز پیش کی کہ عزیز النساء کے دادا عبدالرحیم خان کو تمام نئے محفوظ جنوبی جزیروں کی گورنری دی جائے۔ انہوں نے عزالنساء کے والد شاہنواز خان کو جنوبی جزیروں کا چیف کمانڈر بھی بنایا۔ دونوں تقرریوں نے شاہ جہاں کے ساتھ اپنی مستقبل کی وفاداری کی ضمانت دی۔ انہوں نے شاہنواز کی جوان بیٹی عزت النساء بیگم کو اپنی تیسری بیوی کے طور پر اپنا کر روایتی انداز میں مزید مضبوطی کے لیے شادی کے بندھن میں باندھ دیا۔ [3] انہوں نے اپنے والد جہانگیر سے مشورہ کرنے کی زحمت تک نہیں کی۔ تاہم شاہ جہاں کے دور کے معاصر عدالت کے سوانح نگار محمد امین قزوینی کے مطابق شہزادہ پر اس شادی کے لیے زبردستی کی گئی تھی۔ [3] یہ شادی 2 ستمبر 1617 کو برہان پور میں ہوئی تھی ۔ [3]

موت[ترمیم]

1666 میں عز النساء کے شوہر کومیں اپنی موت کے وقت ان کی فلاح و بہبود کے بارے میں شدید تشویش تھی۔ 11 سال بعد 28 جنوری 1678 کو آگرہ میں اس کا انتقال ہوا۔ عزت النساء بیگم کو شاہجہان آباد (موجودہ پرانی دہلی) کے مضافات میں سبجی منڈی کے علاقے میں سرہندی بارغ میں سپرد خاک کر دیا گیا۔ اس کی قبر کو سرہندی بیگم کا مقبرہ کہا جاتا ہے۔ یہ عز النساء بیگم کا دوسرا لقب ہے۔

فن تعمیر میں تعاون[ترمیم]

عز-النساء بیگم نے دہلی کے جنوبی حصے کے ایک بڑے بازار میں ایک سرائے اور ایک خوبصورت مسجد تعمیر کرائی۔ شاہ جہاں نے اس مسجد کو 1656 میں اپنی مسجد کی تعمیر تک نماز کے لیے استعمال کیا۔ اب یہ مسجدموجود نہیں ہے لیکن 19ویں صدی کی عکاسیوں سے پتا چلتا ہے کہ یہ مسجد عصری لوگوں کی مساجد سے ملتی جلتی تھی جو فتح پوری محل (شاہ جہاں کی بیویوں میں سے ایک اور) اور جہان آرا بیگم نے بنائی تھی۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Awrangābādī، Shāhnavāz Khān؛ Shāhnavāz، ʻAbd al-Ḥayy ibn؛ Prashad، Baini (1952). The Maāthir-ul-umarā: being biographies of the Muhammādan and Hindu officers of the Timurid sovereigns of India from 1500 to about 1780 A.D. (بزبان انگریزی). ایشاٹک سوسائٹی. صفحہ 924. 
  2. ^ ا ب پ Nicoll 2009.

کتابیات[ترمیم]

  • Nicoll, Fergus (2009). Shah Jahan: The Rise and Fall of the Mughal Emperor. Penguin Books India. ISBN 978-0-670-08303-9.
  • Khan, Inayat; Begley, Wayne Edison (1990). The Shah Jahan nama of 'Inayat Khan: an abridged history of the Mughal Emperor Shah Jahan, compiled by his royal librarian : the nineteenth-century manuscript translation of A.R. Fuller (British Library, add. 30,777). Oxford University Press. p. 71.