عزیز میرٹھی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عزیز میرٹھی
پیدائش 1939ء
میرٹھ، اتر پردیش، برطانوی ہندوستان
وفات 22 فروری 2014(2014-20-22) (عمر  74–75 سال)
لاہور، پنجاب میں مدفون
پیشہ منصف، ڈائریکٹر، فلم سازی
قومیت Flag of Pakistan (bordered).svg پاکستان
شہریت پاکستانی
دور 1959ء1991ء
اہم اعزازات نگار ایوارڈ
اولاد انور عزیز

عزیز میرٹھی (انگریزی: Aziz Merthi) ‏ نے بھی کچھ سپر ہٹ فلموں کے لیے کہانیوں کو بھی لکھا. خیل قیصر کے ناگن (1959ء)، اسلم ڈار کے بشیرا (1972ء)، دل لگی (1974ء)، زبیدہ (1976ء) اور اقبال کشمیری کے بنارسی ٹھگ (1973ء) ان کی کچھ بڑی فلمیں کہانی اور ڈائیلاگ کے مصنف تھے. 22 فروری، 2014ء کو لاہور میں انتقال ہوا. وہ 80 سال کی تھی.

حالات زندگی[ترمیم]

عزیز میرٹھی 1939ء میں میرٹھ (بھارت) میں پیدا ہوئے تھے. وہ بنیادی طور پر ایک فلم کا مصنف تھا، جنہوں نے اپنی صلاحیتوں کو ریاض شاہد، شباب کیرانوی، علی سفیان آفاقی اور سید نور جیسے ڈائریکٹر کے طور پر بھی جائزہ لیا. مصنف کے طور پر، وہ فلموں کی بنیاد پر جادو، کپڑے اور پریوں کی کہانیوں کی کہانیاں لکھتے ہیں اور شروع میں وہ اس طرح کی کہانیوں کے لیے مصنف کو لیبل لگا رہا تھا. لیکن اسلم ڈار کی فلموں جیسے بشیرا اور دل لگی کے لیے ایک مختلف کہانی کے بارے میں ایک تحریری تحریری لکھنے کے بعد، فلم کے مصنف کی حیثیت سے ان کی کریڈٹیٹی کو فلم سے متعلق زندگی کے تمام پہلوؤں سے قبول کیا گیا تھا. اس کے بعد انہوں نے اپنی قابل قدر ثابت کی اور وہ فلم انڈسٹری کے بہترین فلم کے مصنف بن گئے. خلیل قیصر نے اپنی فلم کیریئر شروع کرنے کے بعد ایک فلم ڈائریکٹر، عزیز میرٹھی نے اپنی فلم یار بیلی کی کہانی لکھی. اپنی تفصیلی فلمی شکل دیکھیں.

ڈائریکٹر[ترمیم]

فلم ڈائریکٹر کے طور پر جیسا کہ ڈائریکٹر عزیز میرٹھی نے حُسنِ عشق، ہزارو داستان، ستمگر، لالہ رخ، پرستان، یادیں اور پیاسی فلموں کو ہدایت کی.  

وفات[ترمیم]

عزیز میرٹھی کو لاہور کے ایک مقامی ہسپتال میں 2013ء میں بہت اہم مرحلے پر داخلہ دیا گیا تھا، ابتدائی طور پر ان کی صحت کی حالت بہتر ہو گئی تھی لیکن پھر یہ شوڈیر بن گیا اور آخر میں 22 فروری 2014ء کو مر گیا.

بیرونی روابط[ترمیم]