عمرو بن شرجیل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عمرو بن شرجیل
معلومات شخصیت

عمروبن شرجیلؒ تابعین میں سے ہیں۔

نام ونسب[ترمیم]

عمرو نام، ابو میسرہ کنیت، نسباقبیلہ ہمدان سے تعلق رکھتے تھے۔

فضل وکمال[ترمیم]

علمی اعتبار سے فضلائے تابعین میں تھے، حافظ صفی الدین خزرجی ان الفاظ کے ساتھ ان کا تذکرہ کرتے ہیں عمرو بن شرجیل الھمدانی ابو میسرۃ الکوفی احد الفضلا، ان کے قبیلہ میں کوئی ان کا ہمسر نہ تھا، ابو وائل کہتے تھے کہ ہمدانیوں میں کوئی شخص ابو میسرہ کا مثل نہ تھا، کسی نے کہا مسروق ابو وائل نے جواب مسروق بھی نہیں۔ [1]

تفسیر[ترمیم]

آیاتِ قرآنی کی تفسیر وتاویل پر پوری نظر تھی اوربعض آیات کی تفسیر میں ان کا خیال مشہور صحابی حضرت عبداللہ بن مسعود سے متوارد ہوجاتا تھا، ایک مرتبہ ابن مسعودؓ نے ان سے پوچھا ا"لخنس الجوار الکنس" کے بارہ میں تمہاری کیا رائے ہے انہوں نے کہا میرے نزدیک نیل گاؤ مراد ہے، ابن مسعودؓ نے کہا میری بھی یہی رائے ہے۔ [2]

حدیث[ترمیم]

حفظِ حدیث کے لحاظ سے اوسط درجہ کے حفاظ میں شمار تھا، حضرت عمرؓ، حضرت علیؓ، عبداللہ بن مسعودؓ، حذیفہؓ، سلمانؓ، قیس بن سعد بن عبادہؓ، معقل بن متقرنؓ مزنی، نعمان ابن بشیرؓ، اورام المومنین عائشہ صدیقہؓ وغیرہ اکابر صحابہ سے سماع حدیث کیا تھا۔ [3] ابو وائل، ابو اسحٰق سبیعی، ابوعمار ہمدانی، قاسم بن مخیمرہ، محمد بن منتشر اورمسروق وغیرہ ان کے زمرہ تلامذہ میں تھے۔ [4]

عبادت وریاضت[ترمیم]

علم کے ساتھ اسی درجہ کا عمل بھی تھا، بڑے عابدوزاہد بزرگ تھے ابن حبان لکھتے ہیں کہ وہ عبادت گزار لوگوں میں تھے، نمازوں کی کثرت سے (ان کے جوڑوں پر)اونٹوں کی طرح گھٹے پڑ گئے تھے۔ [5]

عبادت میں طہارت کا لحاظ[ترمیم]

عبادت میں طہارت اورپاکی کا بڑا لحاظ رکھتے تھے، فرماتے تھے کہ خدا کا ذکر پاک ہی مقام پر کرنا چاہئے۔ [6]

صدقات[ترمیم]

اپنی حیثیت کے مطابق مخیر اورفیاض بھی تھے، اپنی آمدنی کا کچھ نہ کچھ حصہ ضرور خیرات کرتے تھے، یونس کا بیان ہے کہ جب ان کا وظیفہ ملتا تھا تو اس میں سے وہ خیرات کیا کرتے تھے۔ [7]

وفات[ترمیم]

62 میں وفات پائی [8] مرض الموت میں لوگوں سے فرمایا، میں مرنے کے لیے بالکل آمادہ ہوں پیش آنے والے مرحلہ کے علاوہ اورکسی شے کا خوف دل میں نہیں ہے، نہ میرے پاس مال ودولت ہے(کہ اس کا افسوس ہو)اورنہ مجھ پر کسی کا قرض ہے (کہ اس کی فکر ہو)نہ میرے پاس عبال ہیں (کہ اپنے بعد ان کی فکر ہو)میرے مرنے کی خبر کسی کو نہ دی جائے، جنازہ لے چلنے میں جلدی کرنا، قبر پر ہری شاخ رکھنا کہ مہاجرین اس کو مستحب سمجھتے تھے، قبر اونچی نہ کرنا کہ اس کو وہ ناپسند کرتے تھے، آخر وقت لا الہ الا اللہ کی تلقین کرنا، ان ہدایات کے بعد وفات پائی قاضی شریح نے نمازِ جنازہ پڑھائی۔ (ابن سعد:6/73)

حوالہ جات[ترمیم]

  1. (تہذیب الکمال:290)
  2. (ابن سعد:6/72)
  3. (تہذیب التہذیب:8/47)
  4. (تہذیب التہذیب ایضاً)
  5. (تہذیب التہذیب ایضاً)
  6. (ابن سعد:6/72)
  7. (ابن سعد ایضاً)
  8. (تہذیب تہذیب:8/47)