عہد نامہ جدید کی کتب

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search


عہد نامہ جدید یا نیا عہد نامہ، مسیحی مذہبی کتب کا مجموعہ جس میں اناجیل اربعہ، رسولوں کے اعمال، حواریوں کے خطوط اور مکاشفہ شامل ہیں ان کی کل تعداد موجودہ نسخہ میں 27 ہے۔ کچھ مختلف مسیحی فرقوں کے نسخوں میں کتب کی تعداد الگ الگ ہے۔

فہرست کتب[ترمیم]

(پہلے خانے میں بائبل سوسائٹی (پروٹسٹنٹ)، کے اردو ترجمے میں کتب کے عنوان کا جو تلفظ ہے، وہ درج ہے، دوسرے میں، سینٹ پال آف، روما کے 1958 والے ترجمہ میں کتب کے عنوان کا جو تلفظ ہے، وہ درج ہے۔ اردو ویکی پر تمام مضامین کے اصل عنوان بائبل سوسائٹی والے نسخے کے مطابق ہوتے ہیں، سینٹ پال یا (کیتھولک) نسخے کے تلفظ سے رجوع مکرر بنائے گئے ہیں۔ یاد رئے یہ کتب کا اصل عنوان جو اردو ترجمہ میں ہے اس کے مطابق عنوان ہیں۔ ایک عنوان عہد نامہ کے اندر زمنی طور پر دیا جاتا ہے۔ جیسے رومیوں_کے_نام_کا_خط اصل عنوان ہے اور کتاب کے اندر اسے اس طرح رومیوں کے نام پولس رسول کا خط لکھا جاتا ہے۔ انہی کتب کو مختصر نام سے رومیوں یا رومیوں اوّل، بھی لکھا اور بولا جاتا ہے۔

پروٹسٹنٹ نسخہ

کتاب مقدس

کیتھولک نسخہ

کلام مقدس

تلفظ بائبل سوسائٹی (پروٹسٹنٹ) تلفظ سینٹ پال آف روما (کیتھولک)
متی_کی_انجیل انجیل مقدس بمطابق متی
مرقس کی انجیل انجیل مقدس بمطابق مرقس
لوقا کی انجیل انجیل مقدس بمطابق لوقا
یوحنا کی انجیل انجیل مقدس بمطابق یوحنا
رسولوں کے اعمال رسولوں کے اعمال
خطوط پولوس رسول
رومیوں کے نام رومیوں کے نام خط
کرنتھیوں کے نام کا پہلاعام خط 1- قرنتیوں کے نام
کرنتھیوں کے نام کا دوسرا عام خط 2۔ قرنتیوں کے نام
گلتیوں_کے_نام_کا_خط غلاطیوں کے نام
افسیوں_کے_نام_کا_خط افسیوں کے نام
فلپیوں_کے_نام_کا_خط فیلپیّوں کے نام
کلسیوں_کے_نام_کا_خط کلسیوں کے نام
تھسلنیکیوں_کے_نام_کا_پہلا_خط 1۔ تسالونیکیوں کے نام
تھسلنیکیوں_کے_نام_کا_دوسرا_خط 2۔ تسالونیکیوں کے نام
تیمتھیس_کے_نام_پہلا_خط 1۔ تیموتاؤس کے نام
تیمتھیس_کے_نام_کا_دوسرا_خط 2۔ تیموتاؤس کے نام
ططس کے نام کاخط طیطس کے نام
فلیمون_کے_نام_خط فلیمون کے نام
عبرانیوں_کے_نام_خط عبرانیوں کے نام
یعقوب_کا_عام_خط از یعقوب
پطرس_کا_پہلا_عام_خط 1۔ از پطرس
پطرس_کا_دوسرا_عام_خط 2۔ از پطرس
یوحنا_کا_پہلا_عام_خط 1۔ از یوحنا
یوحنا_کا_دوسرا_خط 2۔ از یوحنا
یوحنا_کا_تیسرا_خط 3۔ از یوحنا
یہوداہ_کا_عام_خط از یہودہ
یوحنا عارف کا مکاشفہ مکاشفہ

تفصیلی فہرست[ترمیم]

نیا عہد نامہ[ترمیم]


<tr style="text-align:center;" | 2 Peterنقص حوالہ: Closing </ref> missing for <ref> tag

Catholic, E. Orthodox, پروٹسٹنٹ,

and most Oriental Orthodox

Traditional
Luther Bible[N 1]
Syriac
Orthodox
[N 2]
Original language
(کوئنے یونانی)
انجیل
Matthew Matthew Matthew Greek (majority view: see note)[N 3][1][2][3]
Mark Mark Mark Greek
Luke Luke Luke Greek
John John John Greek
Apostolic History
Acts Acts Acts
Greek
Pauline epistles
Romans Romans Romans
Greek
1 Corinthians 1 Corinthians 1 Corinthians Greek
2 Corinthians 2 Corinthians 2 Corinthians Greek
Galatians Galatians Galatians Greek
Ephesians Ephesians Ephesians Greek
Philippians Philippians Philippians Greek
Colossians Colossians Colossians Greek
1 Thessalonians 1 Thessalonians 1 Thessalonians Greek
2 Thessalonians 2 Thessalonians 2 Thessalonians Greek
1 Timothy 1 Timothy 1 Timothy Greek
2 Timothy 2 Timothy 2 Timothy Greek
Titus Titus Titus Greek
Philemon Philemon Philemon Greek
General epistles
Hebrews Hebrews[N 1] Hebrews
Greek[4]
James James[N 1] James Greek
Greek
1 John 1 John

<td style="background:#696; vertical-align:top;" | 3 John[N 2] 1 John

Greek
2 John 2 John 2 John[N 2] Greek
3 John 3 John 3 John[N 2] Greek
Jude Jude[N 1] Jude[N 2] Greek
یوحنا کا مکاشفہ
Revelation Revelation[N 1] Revelation[N 2] Greek

مزید دیکھیے

  • عہد نامہ قدیم کی کتب
  • عہد نامہ قدیم کی گم شدہ کتب کی فہرست
  • بائبلی_ایپوکریفا
  • عہد نامہ قدیم
  • ملاحظات

    حوالہ جات[ترمیم]

    1. Eusebius, Ecclesiastical History, Book 3, Chapter 39.15-16
    2. Eusebius Sophronius Hieronymous (JeromeOn Illustrious Men (Fathers of the Church)۔ The Catholic University of America Press۔ صفحہ 200۔ آئی ایس بی این 978-0-8132-0100-9۔
    3. آبائے کلیسیا; Alexander Roberts, James Donaldson Philip Schaff (editors)۔ The Nicene and Post-Nicene Fathers. Series II, Volume VI: Jerome, Letters and Select Works۔ Hendrickson۔ صفحہ 8000۔ آئی ایس بی این 978-1-56563-116-8۔
    4. Contemporary scholars believe the Hebrews to have been written in Greek, though a minority believe it was originally written in Hebrew, then translated into Greek by Luke. See Wikipedia's عہد_نامہ_جدید article.

    <link rel="mw:PageProp/Category" href="./زمرہ:عہد_نامہ_جدید_سے_متعلق_فہارس" role="navigation" aria-labelledby=".D8.B9.DB.81.D8.AF_.D9.86.D8.A7.D9.85.DB.81_.D9.82.D8.AF.DB.8C.D9.85_.DA.A9.DB.8C_.DA.AF.D9.85_.D8.B4.D8.AF.DB.81_.DA.A9.D8.AA.D8.A8"/>

    1. ^ ا ب پ ت ٹ Four New Testament works were questioned or "spoken against" by مارٹن لوتھر, and he changed the order of his New Testament to reflect this, but he did not leave them out, nor has any Lutheran body since. Traditional German "Luther Bibles" are still printed with the New Testament in this changed "Luther Bible" order.
    2. ^ ا ب پ ت ٹ ث نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ Peshitta نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
    3. See Rabbinical translations of Matthew. Most modern scholars consider the متی کی انجیل to have been composed in Koine Greek, see Language of the New Testament. According to tradition as expressed by Papias of Hierapolis, writing in the late first or early second centuries, the Gospel was originally composed in the "Hebrew dialect" (which at the time was largely the related Aramaic) and then translated into Greek (Eusebius, "Ecclesiastical History", 3.39.15-16; Epiphanius of Salamis, Panarion 30:3). According to جیروم, Hebrew manuscripts of Matthew were extant while he was translating the ولگاتا: "Matthew ... composed a gospel of Christ at first published in Judea in Hebrew for the sake of those of the circumcision who believed, but this was afterwards translated into Greek though by what author is uncertain. The Hebrew itself has been preserved until the present day in the library at Caesarea, which Pamphilus so diligently gathered (St Jerome, "On Illustrious Men", Chapter 3).