فسق

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(فاسق سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search

فسق کے لفظی معنی خروج اور باہر نکل جانے کے ہیں اصطلاح شرع میں اللہ تعالیٰ کی اطاعت سے نکل جانے کو فسق کہتے ہیں اور اطاعت الہیہ سے نکل جانا کفر وانکار کے ذریعہ بھی ہوتا ہے اور عملی نافرمانی کے ذریعہ بھی اس لیے لفظ فاسق کافر کے لیے بھی بولا جاتا ہے قرآن کریم میں بیشتر لفظ فاسقین کافروں ہی کے لیے استعمال ہوا ہے اور مومن گنہگار کو بھی فاسق کہا جاتا ہے فقہاء کی اصطلاح میں عموماً لفظ فاسق اسی معنی کے لیے استعمال ہوا ہے ان کی اصطلاح میں فاسق کو کافر کے بالمقابل اس کی قسیم قرار دیا گیا ہے جو شخص کسی کبیرہ گناہ کا ارتکاب کرے اور پھر اس سے توبہ بھی نہ کرے یا صغیرہ گناہ پر اصرار کرے اس کی عادت بنالے وہ فقہا کی اصطلاح میں فاسق کہلاتا ہے (مظہری) اور جو شخص یہ فسق کے کام اور گناہ علانیہ جرأت کے ساتھ کرتا پھرے اس کو فاجر کہا جاتا ہے،[1] لفظ فسق اصل میں قرآن سے اخذ کی جانے والی ایک اصطلاح ہے جو خاصے مختلف مفاہیم میں استعمال میں دیکھنے میں آتا ہے ؛ قرآن میں فسق کا لفظ فاسق کی صورت میں سورت حجرات کی چھٹی آیت میں آتا ہے۔ اسی لفظ کو اردو کی لغات میں بھی متعدد معنوں میں درج کیا جاتا ہے جیسے منافق، غیر عادل، فاسد، کافر، دہریہ اور ملحد وغیرہ۔ جبکہ اگر قرآن میں اس کے معنے دیکھے جائیں تو وہ ناحق اور یا نافرمانی کے آتے ہیں۔ 49 ویں سورت الحجرات کی آیت 6 میں فسق کا لفظ آیا ہے اور اس کا ترجمہ یوں ہے کہ

  • ترجمہ: اے ایمان والو! اگر کوئی نافرمان تمہارے پاس کوئی خبر لائے تو تحقیق کرلو، ایسا نہ ہو کہ تم نادانی سے کسی قوم پر جا پڑو اور پھر اپنے کیے پر پشیمان ہو جاؤ۔ قرآن سورت 49 آیت 06 [2]

مندرجہ بالا اردو ترجمۂ قرآن میں عربی لفظ فاسق کے لیے جو لفظ اختیار کیا گیا ہے وہ ---- نافرمان ---- کا ہے جبکہ انگریزی کے ایک آن لائن ترجمۂ قرآن میں عربی فاسق کے متبادل لفظ کو ---- iniquitous ---- لکھا گیا ہے،[3] جس کے معنی اردو لغات میں بے انصاف، غیر عادل اور شریر کے آتے ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. تفسیر معارف القرآن مفتی محمد شفیع زیر تفسیر سورۃ البقرہ آیت 26
  2. قرآن کا اردو ترجمہ
  3. Quran in English 49:06