فتح پور سیکری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(فتح پور سکری سے رجوع مکرر)
بلند دروازہ, the 54-میٹر-high (177 فٹ) entrance to Fatehpur Sikri complex
بلند دروازہ, the 54-میٹر-high (177 فٹ) entrance to Fatehpur Sikri complex
فتح پور سیکری is located in اتر پردیش
فتح پور سیکری
فتح پور سیکری is located in بھارت
فتح پور سیکری
فتح پور سیکری کا محل وقوع
متناسقات: 27°05′28″N 77°39′40″E / 27.091°N 77.661°E / 27.091; 77.661متناسقات: 27°05′28″N 77°39′40″E / 27.091°N 77.661°E / 27.091; 77.661
ملکبھارت
بھارت کی ریاستیں اور یونین علاقےاتر پردیش
ضلعضلع آگرہ
قائم ازجلال الدین اکبر
آبادی
 • کل32,905
زبان
 • دفتریہندی زبان
 • اضافی دفتریاردو
منطقۂ وقتبھارتی معیاری وقت (UTC+5:30)
گاڑی کی نمبر پلیٹUP-80
ویب سائٹ
یونیسکو عالمی ثقافتی ورثہ
معیارCultural: ii, iii, iv
حوالہ255
کندہ کاری1986 (10 اجلاس)

فتِح پور سیکری بھارت کے صوبہ اتر پردیش میں واقع ایک شہر ہے۔ یہ شہر ضلع آگرہ کا حصہ ہے۔ اس کی تعمیر مغل شہنشاہ اکبر نے 1570ء میں شروع کی اور شہر 1571ء سے 1585ء تک مغل سلطنت کا دار الحکومت رہا۔ شہر کی باقیات میں سے مسجد اور محل عالمی ثقافتی ورثہ قرار دیے جا چکے ہیں اور سیاحت کے لیے مشہور ہیں۔ فتح پور سیکری کا پرانا نام وجے پور تھا۔ جب مغل شہنشاہ اکبر نے فتح کیا تو اس شہر کا وجے پور سے تبدیل کرکے فتح پور رکھ دیا۔ شہر کا نام سیکری نامی گاؤں سے ماخوذ ہے۔ 1999ء سے 2000ء کے دوران آرکیالوجیکل سروے آف انڈیا کی کھدائی سے پتہ چلتا ہے کہ اکبر نے اپنا دار الحکومت بنانے سے پہلے یہاں مکانات، مندر اور تجارتی مراکز موجود تھے۔ یہ علاقہ سُنگوں نے اپنی توسیع کے بعد آباد کیا تھا۔ 7ویں سے 16ویں صدی عیسوی تک خانوا کی لڑائی (1527ء) تک اس پر ساکروار راجپوتوں کا قبضہ تھا۔

شیخ سلیم چشتی کی خانقاہ اس جگہ پہلے سے موجود تھی۔ اکبر کا بیٹا، جہانگیر ، 1569ء میں اپنی پسندیدہ بیوی مریم الزمانی کے ہاں سیکری کے گاؤں میں پیدا ہوا تھا۔ [1] اور اسی سال اکبر نے شیخ کی یاد میں خانقاہ کی تعمیر شروع کی جنھوں نے پیدائش کی پیشین گوئی کی تھی۔ جہانگیر کی دوسری سالگرہ کے بعد، اس نے یہاں ایک فصیل دار شہر اور شاہی محل کی تعمیر شروع کی۔ یہ شہر فتح پور سیکری کے نام سے جانا جاتا ہے، اکبر کی 1573ء میں گجرات کی فاتح مہم کے بعد اسے "فتح کا شہر" بھی کہا جاتا تھا۔ 1803ء میں آگرہ پر قبضہ کرنے کے بعد ایسٹ انڈیا کمپنی نے یہاں ایک انتظامی مرکز قائم کیا اور جو 1850ء تک قائم رہا۔ 1815ء میں فرانسس روڈون ہیسٹنگز نے سیکری میں یادگاروں کی مرمت کا حکم دیا۔

مغل سلطنت کے دار الحکومت کے طور پر اس کی تاریخی اہمیت اور اس کے شاندار فن تعمیر کی وجہ سے، فتح پور سیکری کو 1986ء میں یونیسکو کے عالمی ثقافتی ورثے کا درجہ دیا گیا تھا۔ [2] [3]

تاریخ[ترمیم]

آثار قدیمہ کے شواہد پینٹڈ گرے ویئر کے دور سے اس خطے کی آباد کاری کی طرف اشارہ کرتے ہیں۔ مورخ سید علی ندیم رضوی کے مطابق، یہ خطہ سنگا کے دور حکومت میں اور پھر سکورور راجپوتوں کے دور میں پروان چڑھا، جنھوں نے 7ویں سے 16ویں صدی تک خانوا کی جنگ (1527) تک اس علاقے پر قبضہ کرتے ہوئے ایک قلعہ بنایا۔ یہ علاقہ بعد میں دہلی سلطنت کے زیرِ اقتدار آیا اور اس جگہ پر بہت سی مساجد تعمیر کی گئیں جو خلجی خاندان کے دور میں بڑھیں۔ [4] [5]

نگار خانہ[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Muhammad Qasim Hindu Shah۔ Gulshan-I-Ibrahimi۔ صفحہ: 223 
  2. "Fatehpur Sikri"۔ UNESCO World Heritage Centre (بزبان انگریزی)۔ 15 فروری 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 فروری 2022 
  3. "30 Years as World Heritage Site: Fatehpur Sikri"۔ 22 March 2016۔ 13 جنوری 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جنوری 2022 
  4. Syed Ali Nadeem Rezavi (2013)۔ Sikri before Akbar۔ Oxford University Press۔ ISBN 978-0-19-908256-8۔ 13 جنوری 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جنوری 2020 
  5. Rana Safvi (10 December 2017)۔ "The secrets about Fatehpur Sikri"۔ The Hindu (بزبان انگریزی)۔ 13 جنوری 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جنوری 2020