فروسيہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
فارس  از جنوری سچودولسکی (1836)

فروسیہ ایک اصطلاح ہے جو  بالعموم قرون وسطی کے دور میں اور بالخصوص صلیبی جنگوں اور مملوک دور میں گھوڑسواری اور دیگر جنگی فنون کے لیے استعمال کی جاتی تھی۔ فارسی عربی  ادب شامل فارسی نامہ فارسی ادبی صنف فروسیہ ادب بھی شامل ہے جو گھوڑوں سے متعلق ایک انسائکلوپیڈیا انداز میں لکھی گئی ایک تالیف ہے۔

یہ ایک شریفانہ فن تھا جس میں جنگ و شکار، گھڑ سواری کے فنون، جنگی حربوں اور حکمت عملی اور شطرنج کی طرح بعض گیمز شامل کیے گئے تھے۔ یہ فن تمام مسلم دنیا میں سکھایا جاتا تھا۔ اس کی سب سے بڑی کامیابی چودھویں صدی میں مصر میں مملوک دور کے دوران دیکھنے میں آءی۔ یہ اس دور کے ایک بڑے علاقائی رجحان کا حصہ تھا جس میں مغربی یوریشیا بشمول یورپی جنگی اشرافیہ شامل  تھی۔