فریج

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
شارپ ادارے کا ایک جدید فریج جس کے دروازے کو دونوں جانب سے کھولا جاسکتا ہے۔ یہ ایک گھریلو استعمال کا فریج ہے جو عام طور پر الماری نما ہوتے ہیں، اسکے برعکس تجربہ گاہوں میں استعمال کیے جانے والے سردخانے اکثر صندوق نما ہوا کرتے ہیں جو ان میں کیمیائی مرکبات کو سیدھا رکھنے اور نکالنے میں سہولت فراھم کرتے ہیں۔

فریج (refrigerator) ایک ایسی جگہ یا برقی نفاذیہ (appliance) (جو عموماً الماری نما ہوتی ہے) کو کہا جاتا ہے کہ جہاں حراری حاجز (thermal insulation) کی موجودگی میں اسکے اندر سے حرارت کو آلات کی مدد سے نکال کر باہر خارج کردیا جاتا ہے اور اسطرح اس الماری یا صندوق کے اندر کا درجۂ حرارت اسکے محاصری (ambient) درجۂ حرارت سے کم ہو کر اسکے اندر ٹھنڈک پیدا کرتا ہے اور حاجز یا عزل کی موجودگی اس سردی کو طویل عرصے اور کم برقی خرچ پر برقرار کھنے میں مدد دیتی ہے۔

میکینزم[ترمیم]

فریج میں ٹھنڈک پیدا کرنے کے کئی طریقے ہیں۔ کسی ایک فریج میں صرف ایک طریقہ استعمال ہوتا ہے۔

  • کمپریسر اور ریفریجرنٹ والا طریقہ۔ کوئی بھی گیس جب دبتی ہے تو گرم ہو جاتی ہے اور جب پھیلتی ہے تو سرد ہو جاتی ہے۔ اس طریقے میں کمپریسر کی مدد سے ریفریجرنٹ گیس کو دبایا جاتا ہے جس سے وہ گرم ہو جاتی ہے۔ پھر اسے کمرے کے درجہ حرارت تک ٹھنڈا کر کے فریج کے اندرونی حصہ میں لے جا کر پھیلنے کا موقع دیا جاتا ہے۔ گیس کے پھیلنے سے پیدا ہونے والی ٹھنڈک فریج کے اندر رکھی چیزوں کو ٹھنڈا کر دیتی ہے۔ اس طرح فریج کا کمپریسر ریفریجرنٹ کی مدد سے فریج کے اندر کی گرمی کو باہر دھکیل دیتا ہے۔

گھر دفتر اور کارخانوں میں استعمال ہونے والے فریج اور ائیر کنڈشنر کے کمپریسر بجلی سے چلتے ہیں مگر گاڑیوں میں استعمال ہونے والے ائیر کنڈشنر کے کمپریسر براہ راست بیلٹ کے ذریعے انجن سے جڑے ہوتے ہیں اور بجلی کی بجائے انجن کی طاقت سے چلتے ہیں۔

فریج اور ائیر کنڈشنر کے کام کرنے کا اصول: 1)دبی ہوئی گرم گیس کو ٹھنڈا کرنے والا کنڈنسنگ کوائل جو فرج کے باہر ہوتا ہے, 2)دبی ہوئی گیس کا تنگ نلکی سے گزر کر پھیلنا اور بہت ٹھنڈا ہو جانا 3)فرج کے اندر چُھپے ہوئے کوائل, 4) گیس کو دبانے والا کمپریسر
  • [1] Absorption refrigerator: سوئزرلینڈ کی Electrolux کمپنی نے عام گھریلو استعمال کے لیے ایسے فریج بنائے ہیں جو بجلی کی بجائے کیراسن تیل (مٹی کا تیل) سے ٹھنڈک پیدا کرتے ہیں اور ان گاؤں دیہاتوں میں استعمال ہوتے ہیں جہاں بجلی نہیں ہے۔ ان فریج میں کمپریسر نہیں ہوتا۔ کیراسن تیل جلا کر ایک دیا روشن کیا جاتا ہے جس کی گرمی ریفریجرنٹ گیس کو گردش دیتی ہے۔ یہ ریفریجیریٹر آئن اسٹائن اور اس کے ایک شاگرد کی ایجاد تھا۔ ان دونوں نے اس کے پیٹنٹ کے حقوق صرف 750 ڈالر کے عوض Electrolux کمپنی کو بیچے تھے۔[2]
  • تھرمو الیکٹرک کولنگ (Thermoelectric cooling)۔ اس طریقے میں Peltier effect کو استعمال کر کے ٹھنڈک حاصل کی جاتی ہے۔ ایسے کولر حال ہی میں دستیاب ہوئے ہیں اور ابھی عام استعمال میں نہیں ہیں۔ اس طریقے میں بجلی زیادہ خرچ ہوتی ہے مگر جب بہت چھوٹے پیمانے پر ٹھنڈک حاصل کرنی ہو (جیسے ٹرانسسٹر یا کمپیوٹر پروسیسر کو ٹھنڈا رکھنا) تو کمپریسر اور ریفریجرنٹ والا طریقہ مہنگا پرٹا ہے۔ یہ تھرمو الیکٹرک کولر بیٹری یا ڈی سی پر چلتے ہیں اور اے سی (آلٹرنیٹننگ کرنٹ) پر کام نہیں کرتے۔
پیلٹیئر کولر (Peltier Cooler) کا خاکہ۔ جب بجلی گزرتی ہے تو اس کی ایک سطح ٹھنڈی جبکہ دوسری سطح گرم ہونے لگتی ہے۔

پیداوار بلحاظ ملک[ترمیم]

  1. چین 29,871,000[3] (2005)
  2. ریاستہائے متحدہ امریکہ 11,639,000 [3] (2003)
  3. اطالیہ 7,201,000[3] (2004)
  4. جنوبی کوریا 7,122,000[3] (2004)
  5. ترکی 4,867,000[3] (2003)
  6. بھارت 3,715,000[3] (2003)
  7. برازیل 3,544,000[3] (2003)
  8. جاپان 2,821,000[3] (2005)
  9. میکسیکو 2,291,000[3] (2004)
  10. تھائی لینڈ 2,246,000[3] (1996)
  11. جرمنی 2,061,000[3] (2004)
  12. مجارستان 1,625,000[3] (2004)
  13. پولینڈ 1,618,000[3] (2005)
  14. ہسپانیہ 1,269,000[3] (1995)
  15. پاکستان 1,222,860 [3] (2012 )
  16. رومانیہ 1,169,000[3] (2010)
  17. بیلاروس 995,000[3] (2005)
  18. سلووینیا 863,000[3] (1995)
  19. مصر 808,000[3] (2003)
  20. برطانیہ 745,000[3] (2003)
  21. جنوبی افریقہ 711,000[3] (2003)
  22. سویڈن 639,000[3] (2004)
  23. یوکرین 562,000[3] (1995)
  24. فرانس 544,000[3] (2003)
  25. آسٹریلیا 423,000[3] (1995)
  26. پرتگال 399,000[3] (2004)
  27. بلغاریہ 353,000[3] (2005)
  28. سلوواکیہ 330,000[3] (1995)
  29. انڈونیشیا 291,000[3] (1995)
  30. ملائشیا 187,000[3] (2003)
  31. الجزائر 150,000[3] (2003)
  32. لتھووینیا 107,000[3] (2004)
  33. فنلینڈ 104,000[3] (1995)
  34. ارجنٹائن 49,000[3] (1995)
  35. مالدووا 24,300[3] (1995)
  36. ازبکستان 18,600[3] (1995)
  37. آذربائیجان 13,400[3] (2005)
  38. قازقستان 10,900[3] (1995)
  39. تاجکستان 50[3] (1995)

ماخذ: http://statinfo.biz/Geomap.aspx?lang=2&act=6132

بیرونی ربط[ترمیم]

5 ڈالر سے یو ایس بی پورٹ کی توانائی سے ٹھنڈک پیدا کریں

حوالہ جات[ترمیم]