فرید ایاز

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
فرید ایاز
معلومات شخصیت
پیدائش 1952
حیدرآباد، بھارت[1]
قومیت پاکستانی
والد منشی رضی الدین
عملی زندگی
پیشہ قوال

استاد غلام فرید الدین ایاز الحسینی قوال (حیدرآباد ، انڈیا میں پیدا ہوئے ) ۔ وہ ایک پاکستانی قوال ہیں۔ [2] ان کا تعلق دہلی کے قوال بچوں کا گھرانہ سے ہے۔ وہ اور اس کے رشتہ دار موسیقی کے اس اسکول ( گھرانہ ) کے پرچم بردار ہیں، جسے اس شہر کے نام سے دہلی گھرانہ کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ وہ مختلف اصناف موسیقی جیسا کہ ہندوستانی کلاسیکی موسیقی بروپد ، خیال ، ترانا ، ٹھمری ، اور دادرا میں اپنا کلام پیش کرتے ہیں۔ اایاز اپنے چھوٹے بھائی استاد ابو محمد کے ساتھ قوال پارٹی کی قیادت کرتے ہیں۔ [3]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

فرید ایاز 1952 میں حیدرآباد ، بھارت میں پیدا ہوئے۔ 1956 میں ان کا خاندان کراچی، پاکستان منتقل ہو گیا۔ [4] انہوں نے کلاسیکی موسیقی کی تربیت اپنے والد استاد منشی رضی الدین احمد خان قوال سے شروع کی۔ ان کی جڑیں امیر خسرو کے ابتدائی شاگردوں کے ایک خاندان سے ملتی ہیں۔ [5] ان کے والد منشی رضی الدین قوال بھی اپنے کیریئر کے شروع میں اپنے کزن قوال بہاؤالدین خان اور منظور نیازی قوال (فرید کے ماموں) کے ساتھ گایا کرتے تھے۔ اسکول کی تعلیم مکمل کرنے کے بعد انہیں اعلیٰ ثانوی تعلیم مکمل کرنے کے لیے کراچی کے پی ای سی ایچ ایس کالج میں داخل کرایا گیا۔ ان کی قابلیت کو دیکھتے ہوئے نیشنل کالج کی طلبہ یونین کے سیکرٹری جنرل فصاحت علی خان نے انہیں 1975-76 کے تعلیمی سال کے دوران نیشنل کالج میں داخلہ لینے پر آمادہ کیا۔ اس نے اکثر انٹر کالج میوزیکل مقابلوں میں حصہ لیا اور ہر بار کالج کے لیے پہلا انعام اور ٹرافی جیتی۔ اس نے اس سال سولو پرفارمنس میں کسی بھی فرد کی طرف سے جیتی گئی سب سے زیادہ ٹرافیوں کے تمام سابقہ ریکارڈ توڑ ڈالے۔ ان کی جیتی ہوئی ٹرافیاں آج بھی نیشنل کالج کراچی کے قیمتی خزانوں میں شامل ہیں۔ چند مقابلوں میں، ججوں نے ان کی شرکت پر سوال اٹھایا گویا وہ ایک پیشہ ور گلوکار ہیں کیونکہ یہ مقابلے شوقیہ افراد کے لیے تھے۔ اپنی نوعمری میں، وہ پہلے ہی بہت سے لوگوں کی طرف سے ہندوستانی موسیقی کی نیم کلاسیکی صنف کا ایک انتہائی باصلاحیت گلوکار سمجھا جاتا تھا۔[حوالہ درکار]

کیریئر[ترمیم]

فرید ایاز اور ابو محمد قوال برادران اپنی صوفی پرفارمنس کے لیے مشہور ہیں۔ انہیں پاکستان کی مقبول ترین قوال جماعت اور صرف چند موجودہ بہترین قوالوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔ انہوں نے برطانیہ ، امریکہ ، کینیڈا ، فرانس ، جرمنی ، اٹلی ، ہالینڈ ، پرتگال ، آسٹریا ، بھارت ، کینیا ، نیپال ، زمبابوے ، بنگلہ دیش ، کروشیا ، ترکی ، مراکش ، یونان ، مصر ، بلغاریہ ، تیونس ، بیلجیم میں اپنے فن کا مظاہرہ کیا ہے۔ ایران ، عمان ، متحدہ عرب امارات ، سعودی عرب ، اردن ، رومانیہ ، ماریشس ، ہانگ کانگ اور جنوبی افریقہ بزم چراغ فقیر چشتی انٹرنیشنل ایک غیر منافع بخش صوفی تنظیم میں فن کا مظاہر کیا۔ [6] [7] [8]

انہوں نے ٹائمز آف انڈیا اور پاکستان کے جنگ گروپ کے زیر اہتمام امن کی آشا میں بھی پرفارم کیا۔ [9]

گانے[ترمیم]

مزید دیکھیں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. فرید ایاز کا انٹرویو: ایک اٹوٹ روایت ڈان (اخبار)، شائع شدہ 18 اگست 2013، بازیافت 26 اکتوبر 2017
  2. "Tehran Times: 'We preach the message of love through Sufi music'". old.tehrantimes.com website. 30 August 2009. 03 جون 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 اکتوبر 2017. 
  3. Qawwali night takes listeners back in time Daily Times (newspaper), Published 9 April 2004, Retrieved 26 October 2017
  4. Fareed Ayaz, Abu Muhammad Qawwal and Brothers on nycnow.com website آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ nycnow.com (Error: unknown archive URL), Published 6 May 2017, Retrieved 26 October 2017
  5. Spotlight: An esoteric experience Dawn (newspaper), Published 25 August 2002, Retrieved 26 October 2017
  6. Sufi Cultural Festival arranged in Hong Kong Daily Times (newspaper), Published 19 August 2017, Retrieved 26 October 2017
  7. Spiritualism, culture and art come under one roof at International Sufi Music Festival Daily Times (newspaper), Published 30 October 2008, Retrieved 26 October 2017
  8. Fareed Ayaz and Abu Muhammad Qawwal and Brothers perform at the Pakistan High Commission in Delhi Times of India (newspaper), Published 12 December 2014, Retrieved 26 October 2017

 

بیرونی روابط[ترمیم]