فضائے بسیط

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

دیگر استعمالات کیلئے دیکھئے: فضاء (ضد ابہام) یا خلاء (ضد ابہام)

فضائے بسیط يا خلاء (انگریزی: Outer Space)، جسے بیرونی فضاء بھی کہاجاتا ہے، علمِ فلکیات میں اَجرامِ فلکی کی فضاؤں سے باہر کائنات کے خالی علاقہ کو کہاجاتا ہے. مقبولِ عام سمجھ کے برعکس، خلاء مکمل طور پر خالی نہیں ہے (جیسے کامل فراغ) بلکہ اِس میں تھوڑے مقدار کا ریزہ موجود ہے، زیادہ تر ہائیڈروجن پلازما، اور ساتھ ہی برقناطیسی اشعاع. قیاساً، اِس میں سیاہ مادہ اور سیاہ توانائی بھی موجود ہے۔


تسمیات[ترمیم]

جیسا کہ اُوپر گزر چکا کہ عام خیال یہی کیا جاتا ہے کہ خلاء مکمل طور پر خالی ہے، اِسی خیال کی وجہ سے اِسے خلاء کہاجاتا ہے، اور اگر غور کیا جائے تو یہ خیال غلط ثابت ہوتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ اِسے خلاء کہنا بھی درست نہیں، اِس کیلئے صحیح لفظ فضاء ہوسکتا ہے، تاہم فضاء دو قسم کے ہیں یعنی ایک اجرامِ فلکی کی اپنی فضاء جیسے کرۂ ہوا اور ایک اجرامِ فلکی کی کشش ثقل سے باہر یعنی اجرام کے درمیان کی جگہ، لہٰذا اِن دونوں فضاؤں کیلئے ایک ہی لفظ فضاء استعمال کرنے سے ابہام پیدا ہونے کا اندیشہ ہے، اِس لئے خلاء کیلئے فضائے بسیط ایک موزوں اور صحیح اِصطلاح ہے، علمی لحاظ سے بھی اور ادبی لحاظ سے بھی. دوسری اہم بات یہ کہ اِس کیلئے خلاء کا لفظ استعمال کرنا بھی ضروری ہے کیونکہ اِس کیلئے انگریزی میں لفظ اسپیس استعمال کیا جاتا ہے، اور لفظ اسپیس سے منسلک دوسرے اِصطلاحات کے اُردو متبادلات بنانے یا اپنانے میں اِصطلاح فضائے بسیط استعمال کرنے سے بہت سے مشکلات کا سامنا پڑسکتا ہے، لہٰذا، اُن مرکبات میں لفظ خلاء ہی موزوں ہے جیسے خلائی جہاز، خلائی پرواز، خلائی تحقیق، خلائی مرکز وغیرہ. لفظ خلاء کا اگر مطالعہ کیا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ یہ عربی زبان کا لفظ ہے اور اِس کی وہی معنی ہے جو انگریزی لفظ ویکیوم کی ہے، تاہم ویکیوم کیلئے ایک اَور عربی لفظ فراغ بلاجھجھک استعمال کیا جاسکتا ہے، اِس لئے لفظ خلاء کا اسپیس کیلئے استعمال کسی ابہام کا پیش خیمہ ثابت نہیں ہوسکتا. موقع محل اور اِصطلاح کی مناسبت سے اِس کیلئے بعض اوقات صرف لفظ فضاء بھی استعمال کیا جاتا ہے، جیسے ہوافضاء (aerospace)، سمتیہ فضا اور نمونہ فضا وغیرہ.


ماحول[ترمیم]

خلاء ایک مکمل فراغ نہیں ہے، بلکہ باردار ذرّات، برقناطیسی میدان اور وقوعاً ستاروں کا پلازمائے بُردہ ہے.

فضائے بسیط، کامل فراغ کی قریب ترین طبعی مثال ہے. اِس میں رگڑ ناپید ہے، جو ستاروں، سیّاروں اور چاندوں کو آزاد تیرنے کی قابل بناتی ہے. ستارے، سیّارے، نجمیئے اور چاند اپنے فضاء کششِ ثقل کے ذریعے قائم رکھتے ہیں. اِن کی فضاؤں کی کوئی خاص حد نہیں ہوتی بلکہ جسم سے فاصلہ بڑھنے کے ساتھ ساتھ فضاء کی کثافت بھی کم ہوتی جاتی ہے.

مزید دیکھئے[ترمیم]


حوالہ جات[ترمیم]