فلسفہ تاریخ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

تعارف فلسفہ تاریخ

جب انسانیت کا ایک حصہ کسی بڑے قطعہ زمین پر لمبی مدت تک مل جُل کر رہتا ہے تو قدرتِ الٰہیہ اُن کی طبعی ترقی کے ساتھ عقلی اور اخلاقی بلندی کا سامان بھی بہم پہنچاتی ہے۔ یعنی انبیا کرام اور اولیاء عظام کے ساتھ اصلح سلاطین اور حکام بھی پیدا ہوتے ہیں یا حکماء اور شعرا کے ساتھ عدالت شعار بادشاہ اور بلند ہمت سپاہی برسرِکار آتے ہیں۔ اس طرح وہ قوم ترقی کے تمام مدارج طے کرتی ہے۔ اپنی حکومت کا نظام بناتی ہے، جس سے ظلم کی بیخ کنی ہو۔ شہر بساتی ہے، ہُنر پھیلاتی ہے، جس سے رفاہِ عامہ کا سامان بہم پہنچتا ہے۔ اس کی ہمسایہ قومیں اس کی رفاقت اور سرپرستی میں اپنی فلاح سمجھتی ہیں۔ اگر اس کی اجتماعی تاریخ کو انسانیت کے عام پسند عقلی افکارواخلاق پر مرتب کیا جاءے تو اسے "حکمتِ الادیان" یا "فلسفہءِ تاریخ" کہا جاءے گا۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. خطبات و مقالات امام عبید اللہ سندھیؒ از مفتی عبد الخالق آزادؔ صاحب